Project Description

Destiny, Fate, Karma, Qadar, Determinism and Freewill-4

Please read Free will is an illusion, Do not blame your destinyFreewill in ReligionOptions Theory, A Universe of Possibilities in conjunction with this article. OR Read the compilation of all six Articles here Determinism and Freewill(Complete).

God’s knowledge is different from the knowledge of his creation as it’s not preceded by ignorance not that God did not know and then he learned nor is it followed by forgetfulness that he now knows but in the future it may slip from His memory.

Evil is not be attributed to God

God created the actions of people. They are attributed to God as He created them put them into existence. It is not that God created Good and evil actions it is that He made their existence possible but the human beings earned the action. Evil is not be attributed to God. Evil is relative as for example poison of snake is an evil for human beings but a good thing for snake, teeth and claws of tiger have evil for other animals but blessing for him, horns of bull have evil for other but good for his defense. So as in the Last scripture God says  “Say, I seek refuge in the Lord of daybreak From the evil of that which He created And from the evil of darkness when it settles”. Here God says to seek refuge from the evil of that (creation) which he created and not saying from the evil of which He created. So creation, events, aspects exist which have evil in them but they are not created as pure evil. Even Devil God created is not pure Evil or created for the purpose of evil. It is like a by product of creation as you get from your factories during manufacturing something good. And its purpose is to make this universe a trial without devil how do we get rewarded as if there is no negative thought and only good exist than there is no  purpose of creating this universe If God had willed that all should be good and pious and obey Him he would not have created you, as those beings which are with Him enough for His praises and glorify him morning and evening.

We are responsible for the effort not for the results

O people our responsibility is to do struggle to put our effort and than to pray and ask for God’s help. We are just responsible for the effort not for the results, leave results on God, as if succeeds then good. And even if no result and success here you will be successful in hereafter. Specially Whenever you do struggle for God’s cause, for some bigger objective, above yourself for the sake of humanity than remember success is not a criteria. As Jesus is one of the biggest prophets of God but apparently failed in world. While there are some slaves of your Lord who were extremely successful in this world in their missions. It doesn’t matter if 4000 are watching this program or 4000 million. If God Wills then a time will come that He will put effect in it.  As mentioned in the last scripture I want to live my life like that and to proclaim that. “Indeed my prayer, my rites, my rituals, my work, my living and my dying are for God, Lord of the worlds. He has no partner; with this I have been commanded. And I am the first of those who surrender to Him.

If my Lord Wills I will continue and conclude this topic in next program.

إن معرفة الله عزّ وجلّ تختلف عن معرفة الخَلق، لأنّ معرفة الله لم يسبقها الجهل، فلم يكن لا يعلم ثم تعلّم، ولا يتبعهُ النسيان مما يجعله الآن يعرف ولكن في المستقبل قد تتعثّر ذاكرته.

خلق الله تصرفات الناس. هم ينسبون إلى الله كما خلقهم وضعهم في الوجود. ليس أن الله خلق أعمال الخير والشر هو أنه جعل وجودها ممكنًا ولكن البشر كسبوا العمل. لا ينسب الشر إلى الله. الشر نسبيّ ، على سبيل المثال ، سم الثعبان هو شرّ للبشر ، لكن شيئًا جيدًا بالنسبة إلى الثعابين والأسنان ومخالب النمر ، لديه شرٌّ لحيواناتٍ أخرى ، ولكنه يباركه ، ولقرن الثور شريرٌ للآخر ، لكنه جيد للدفاع عنه. وكما في الكتاب الأخير ، يقول الله: “قل ، أعوذ بالرب من الفجر الذي خلقه ومن شر الظلم عندما يستقر”. هنا يقول الله أن يلجأ إلى شر ذلك الخلق (الخلق) الذي خلقه ولا يقوله عن الشر الذي خلقه. لذا فإن الخلق ، والأحداث ، والجوانب ، موجودة لديهم شر فيهم ، لكنهم لا يخلقون شرًا خالصًا. حتى الشيطان الذي خلقه الله ليس شرًا خالصًا أو مخلوقًا لغرض الشر. هو مثل منتج من ابتكار كما تحصل من المصانع الخاصة بك أثناء تصنيع شيء جيد. والغرض منه هو جعل هذا الكون تجربة بدون شيطان كيف نحصل على المكافأة كما لو لم يكن هناك فكر سلبي ووجود جيد فقط من عدم وجود أي غرض لخلق هذا الكون إذا كان الله قد نصح بأن الجميع يجب أن يكونوا جيدين وتقيدين ويطيعون لم يكن ليخلقك ، مثل تلك الكائنات التي معه ما يكفي لمدحه وتمجيده الصباح والمساء.

يا أيّها النّاس؛ مسئوليّتنا هي أن نناضل ونبذل قصارى مجهودنا ثم نصلّي ونسأل الله العون. نحن فقط مسئولون عن المجهود لا عن النتائج، اترك النتائج على الله، إذا نجحت فهذا جيّد وحتّى لو لم يكن هناك نجاح في الدنيا، فسيكون النجاح في الآخره. خاصًّة كلّما كان النضال من أجل الله، من أجل قضيّة أكبر، من أجل الإنسانيّة، فتذكّر دائمًا أن النجاح ليس معيارًا. مثل يسوع فهو واحد من أنبياء الله ولكنه لم ينجح في العالم، بينما يوجد بعض من عباد الله ناجحين للغاية في هذا العالم في مهامهم. لا يهمّ إذا ما كان يشاهد هذا البرنامج 4000 شخص او 4000 مليون، إذا أراد الله سيأت الوقت الذي يحدث فيه هذا. كما ذُكر في القرآن الكريم، أودّ أن أحيا بهذة الطريقة ولتأكيد هذا: ” قُلْ إِنَّ صَلَاتِي وَنُسُكِي وَمَحْيَايَ وَمَمَاتِي لِلَّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ، لَا شَرِيكَ لَهُ ۖ وَبِذَٰلِكَ أُمِرْتُ وَأَنَا أَوَّلُ الْمُسْلِمِينَ”.

فإذا أراد الله، سوف أستمرّ. ختام هذا الموضوع في الحلقة القادمة.

O conhecimento de Deus é diferente do conhecimento de sua criação, pois não é precedido pela ignorância, não que Deus não soubesse e, em seguida, ele aprendeu, nem é seguido por esquecimento que ele agora sabe, mas no futuro pode escapar de sua memória.

Deus criou as ações das pessoas. Eles são atribuídos a Deus como Ele os criou e os colocam em existência. Não é que Deus criou boas e más ações é que Ele fez a sua existência possível, mas os seres humanos ganharam a ação. O mal não é atribuído a Deus. O mal é relativo, por exemplo, veneno de cobra é um mal para os seres humanos, mas uma coisa boa para cobra, dentes e garras de tigre tem mal para outros animais, mas bênção para ele, chifres de touro têm mal para outro, mas bom para sua defesa. Assim como na Última Escritura, Deus diz: “Diga, eu busco refúgio no Senhor do alvorecer Do mal do que Ele criou E do mal das trevas quando se instala”. Aqui Deus diz procurar refúgio do mal daquela (criação) que ele criou e não dizendo do mal do qual Ele criou. Então criação, eventos, aspectos existem que têm mal neles mas eles não são criados como puro mal. Mesmo o Diabo que Deus criou não é puro Mal ou criado para o propósito do mal. É como um subproduto da criação que você obtém de suas fábricas durante a fabricação de algo bom. E o seu propósito é fazer deste universo uma provação sem o diabo como seremos recompensados ​​como se não houvesse pensamento negativo e só existisse o bem do que não há propósito de criar este universo Se Deus quisesse que tudo fosse bom e piedoso e obedecesse Ele não teria criado você, como aqueles seres que estão com Ele o suficiente para louvá-lo e glorificá-lo de manhã e à noite.

Ó povo, nossa responsabilidade é lutar para nos esforçar e orar e pedir a ajuda de Deus. Somos apenas responsáveis ​​pelo esforço não pelos resultados, deixamos resultados em Deus, como se conseguissem bons resultados. E mesmo se nenhum resultado e sucesso aqui você será bem sucedido no futuro. Especialmente Sempre que você luta pela causa de Deus, por algum objetivo maior, acima de si para o bem da humanidade, lembre-se que o sucesso não é um critério. Como Jesus é um dos maiores profetas de Deus, mas aparentemente falhou no mundo. Enquanto existem alguns escravos do seu Senhor que foram extremamente bem sucedidos neste mundo em suas missões. Não importa se 4000 estão assistindo este programa ou 4000 milhões. Se Deus Quer, então chegará o tempo em que Ele entrará em efeito. Como mencionado na última escritura, quero viver minha vida assim e proclamar isso. “Realmente minha oração, meus ritos, meus rituais, meu trabalho, minha vida e minha morte são para Deus, Senhor dos mundos. Ele não tem parceiro; com isto eu fui comandado. E eu sou o primeiro daqueles que se renderam a ele.

Se meu Senhor quiser, continuarei e terminarei esse assunto no próximo programa.

El conocimiento de Dios es diferente del conocimiento de su creación, ya que no está precedido por la ignorancia, no es que Dios no sabía y luego aprendió ni le sigue el olvido que ahora sabe, pero que en el futuro puede pasar de su memoria.

Dios creó las acciones de las personas. Se los atribuye a Dios cuando los creó para ponerlos en existencia. No es que Dios haya creado acciones buenas y malas, sino que hizo posible su existencia, pero los seres humanos se ganaron la acción. El mal no se debe atribuir a Dios. El mal es relativo como por ejemplo el veneno de serpiente es un mal para los seres humanos pero una cosa buena para serpiente, dientes y garras de tigre tiene maldad para otros animales pero bendición para él, cuernos de toro tienen maldad para otros pero buenos para su defensa. Así que, como en la última escritura Dios dice: “Di, busco refugio en el Señor del amanecer, del mal de lo que creó y del mal de las tinieblas cuando se asienta”. Aquí Dios dice buscar refugio del mal de esa (creación) que creó y no decir del mal que creó. De modo que existen creación, eventos, aspectos que tienen maldad en ellos pero no son creados como maldad pura. Incluso el Dios del Diablo creado no es puro Mal ni creado para el mal. Es como un subproducto de la creación a medida que se obtiene de sus fábricas durante la fabricación de algo bueno. Y su propósito es hacer de este universo una prueba sin demonios, ¿cómo seremos recompensados ​​como si no hubiera pensamiento negativo y solo existiera el bien que no hay ningún propósito de crear este universo si Dios hubiera querido que todos fueran buenos y piadosos y obedecieran? Él no te habría creado, como aquellos seres que están con Él lo suficiente para Sus alabanzas y lo glorificará mañana y tarde.

Oh gente, nuestra responsabilidad es esforzarnos para poner nuestro esfuerzo y luego orar y pedir la ayuda de Dios. Solo somos responsables por el esfuerzo, no por los resultados, dejamos resultados en Dios, como si tuvieran éxito entonces bueno. E incluso si no hay resultados y éxitos aquí tendrá éxito en el más allá. Especialmente cuando luches por la causa de Dios, por un objetivo mayor, por encima de ti mismo por el bien de la humanidad, recuerda que el éxito no es un criterio. Como Jesús es uno de los mayores profetas de Dios, pero aparentemente falló en el mundo. Si bien hay algunos esclavos de su Señor que fueron extremadamente exitosos en este mundo en sus misiones. No importa si 4000 están viendo este programa o 4000 millones. Si Dios quiere, llegará un momento en el que pondrá efecto en él. Como mencioné en la última escritura, quiero vivir mi vida así y proclamar eso. “De hecho, mi oración, mis ritos, mis rituales, mi trabajo, mi vida y mi muerte son para Dios, Señor de los mundos. Él no tiene pareja; con esto me han ordenado. Y yo soy el primero de los que se rinden a él.

Si mi Señor Wills, continuaré y concluiré este tema en el próximo programa.

خدا کا علم اس کی مخلوق کے علم سے مختلف ہے کیونکہ یہ جہالت سے پیدا نہیں ہوا ہے ۔ ایسا نہیں ہے کہ خدا کو علم نہیں تھا اور اسے بعد میں معلوم ہوا ، نہ ہی اس میں بھولے جانے کا کوئی امکان ہے کہ اسے ابھی علم ہے لیکن مستقبل میں وہ اس کے ذہن سے نکل سکتا ہے۔

خدا نے انسانوں کے افعال تخلیق کیے ہیں ۔ وہ خدا سے منسلک ہیں کیونکہ وہ ان کا خالق ہے اور انہیں وجود میں لایا ہے ۔ ایسا نہیں ہے کہ خدا نے اچھے اور بُرے افعال تخلیق کیے ہیں بلکہ اس نے ان کے وجود کو ممکن بنایا ہے لیکن افعال یا اعمال انسانوں کی کما ئی ہیں ۔ بُرائی کو خدا کے منسلک نہیں کرنا چاہیے۔ برائی متعلقہ ہے ۔ مثلاً سانپ کا زہر انسان کے لئے بُرا ہے لیکن سانپوں کے لئے وہ اچھا ہے۔ شیر کے پنجے اور دانت دوسرے جانوروں کے لئے بُرے لیکن شیر کے لئے نعمت ہیں ۔ بیل کے سینگ دوسروں کے لئے بُرے مگر اس کے خود کے لئے اس کا دفاع ہیں ۔ لہٰذا جیسے آخری صحیفے میں خدا کہتا ہے ” کہو، میں فلق کے رب کی پناہ مانگتا ہوں  ہر چیز کی بدی سے جو اس نے پیدا کی اور اندھیرے کی برائی سے جب وہ چھا جائے”۔ یہاں خدا اس برائی(مخلوق کی برائی) سے بچنے کو کہتا ہے جسے اس نے پیدا کیا ۔ یہ نہیں کہتا کہ اس برائی سے   جواس نے پیدا کی ۔ اس لئے مخلوق ، حالات اور واقعات اپنا وجود رکھتے ہیں جن میں برائی ہو سکتی ہے لیکن وہ مکمل برائی کے طور پر پیدا نہیں کئے گئے۔  یہانتکہ کہ شیطان جو خدا نے بنایا مکمل برائی نہیں بنایا یا برائی کے مقصد سے نہیں بنایا گیا ۔ یہ تخلیق کی ضمنی پیداوار ہے جیسے کہ آپکو آپ کی فیکٹریوں کی مصنوعات پیدا کرتے ہوئے ملتا ہے ۔  اور اس کا مقصد اس دنیا کو ایک آزمائش گاہ بنانا ہے ۔شیطان کے بغیر  ہمیں اجر کیسے ملے گا اگر کوئی منفی سوچ کا وجود نہ ہواور صرف اچھائی ہی بسے۔ پھر اس کائنات کو تخلیق کرنے کا کوئی مقصد نہیں ہے ۔ اگر خدا کی یہ مرضی ہوتی کہ سب اچھا ، پاک اور اس کا تابعدار ہو تو اس نے آپ کو تخلیق نہ کیا ہوتا کیونکہ وہ مخلوقات جو اس کے ساتھ ہیں اس کی بڑائی کے لئے اور اسے صبح شام جلال دینے کے لئے کافی ہیں ۔

اے لوگو، تمہاری ذمے داری اپنی کوشش کرنا ہے اور پھر خدا سے اس کے لئے مدد مانگنا ہے۔ ہم صرف کوشش کے لئے ذمے دار ہیں نتائج کے لئے نہیں ۔ نتائج کو خدا پر چھوڑ دیں کیونکہ اگر کامیابی ملے تو اچھا ہو گا۔ اور چاہے اگر کو ئی کامیابی یا نتیجہ یہاں نہیں ملتا توآپ آخرت میں کامیاب ہونگے۔ خاصکر اگر آپ کسی بڑے مقصد کے حصو ل کے لئے خدا کی راہ میں کوئی کوشش کرتے ہیں جو آپ سے بڑھ کر انسانیت کے لئے ہے تو یاد رکھئے کامیا بی اس کا معیار نہیں ہے۔ کیونکہ یسوع مسیح خدا کے بڑے  ترین نبیوں میں تھےلیکن ظاہراً دنیا میں ناکام ہوئے۔ جبکہ آپ کے خداوند کی اس دنیا میں کچھ بندے ایسے ہو ئے ہیں جو اپنے مقصد میں بہت کامیاب ہو ئے ۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ 400 لوگ اس پروگرام کو دیکھ رہے ہیں یا 4000 ملین ۔ اگر خدا کی مرضی ہوئی تو وہ وقت آئے گا جب وہ اس میں اثر پیدا کرے گا۔ جیسے کہ آخری صحیفے میں بیان کیا گیا ہے تو میں اپنی زندگی ایسے گزارنا چاہتا ہوں اور یہ اعلان کرتا ہوں کہ۔ ” درحقیقت میری عبادت میری کاوشیں، میری رسومات، میرا کام، میرا جینا  اور مرنا خدا کے لئے ہے جو تمام جہانوں کا رب ہے۔ اس کا کوئی شریک نہیں ؛ اسی چیز کا مجھے حکم دیا گیا ہے۔ اور میں ان میں سے پہلا ہوں جو خود کو اس کے تابع کرتا ہوں ۔

اگر میرے خداوند کی مرضی ہوئی میں اس مضمون کو اگلے پروگرام میں جاری رکھتے ہوئے اسے مکمل کرونگا۔