Project Description

Destiny, Fate, Karma, Qadar, Determinism and Freewill-1

Please read Do not blame your destiny, Freewill in Religion, Evil not to be attributed to God, Options Theory, A Universe of Possibilities in conjunction with this article. OR Read the compilation of all six Articles here Determinism and Freewill(Complete).

People ask is there a freewill for us or everything is already determined. This is an old debate in science and philosophy. Philosophers extend this issue up till God that God cannot have free will. A benevolent god always chooses the path that causes most good so therefore has no real choice. Also because an all knowing God instantly knows all of its future actions and its knowledge cannot be wrong, it therefore has no free will to choose otherwise. However a god with no free will cannot be a moral being; it must be morally neutral. Also, if an all powerful and all knowing God exists then this by a long chain of cause and effect denies any free will of any living being.

Free will of God and the problem of evil

Our feelings derive from our personality and character, and our choices are influenced by the things we have learned in life: God has the power to change any of the circumstances that form our personality and character, and the things we learn in life are purely down to the providence of God, or, to a long chain of cause and effect which did begin with God and no other. They further say that the free will of god is important for resolving the problem of evil. If God has free will, but never chooses evil, then it could have created life in the same way: With free will, but also never choosing evil. If God has no free will but is still good then there was no point creating evil to grant humans free will as it is possible to be good with no free will. If God, angels and other beings in heaven have free will where there is no evil or suffering, then it cannot be true that god lets evil exist because it is a required side effect of free will.”

Freewill is an illusion: Consciousness ultimately obeys the Laws of physics

After modern discoveries in physics and biochemistry they say that free will is an illusion. Our amazingly, wonderfully complex brains are comprised of various cognitive systems cycling amongst themselves and generating our thoughts, consciousness, choices and behavior. These systems and their effects all result from the mechanical, inorganic laws of physics, over which we have no control. Consciousness is presented to us as a result of our neurons, our brains, our senses. When we lose these, we lose consciousness. These systems are governed and controlled by neuro chemicals, hormones, ionization, impulses: in short, by biochemistry. Biochemistry is in turn merely a type of chemistry, and when we look at the molecules and atoms that make up our chemistry, they obey the laws of physics.

Is there really any room for a nonphysical mind?

When the advocate of freewill say that our ‘minds’ are separate to our bodies because of this, our minds are therefore free from cause and effect. They reply that there are conceptual problems with this idea. Most thought must follow cause and effect in order to be coherent. Thinking randomly is no more free will than having your thoughts controlled by neurons. So, our minds must still run along lines of logical cause and effect, or, in other words, in a cycle of thought and after thought. To break this chain of causality is to break the very flow of consciousness. If thoughts are not random, there must be factors which influence what thoughts are thought, and what choices are made. We know that most of those factors are purely physical  sex drives, hunger, hormone driven emotions and the like. They make little sense without a physical foundation. Is there really any room for a nonphysical mind?

Freewill and Time travel Paradox

One philosopher explains all this in another way by taking into account time travel and creating a paradox that If when traveling back in time we changed the facts of history  however minor  then in the future when we go back, we will not be able to make those changes because they will not have occurred. As we can’t make those changes, it means they will always occur as they did originally. He imagined as follows:

Disappointed in love, I wish myself dead. More than that, I wish that I had never lived. Given that I have a time machine, I am in a position to bring this about. So I travel back to some suitably distant moment before my conception, find a relevant relative e.g my grandparent and strike them dead. I thus bring it about that I was never conceived. If my action is successful, who is it who prevents my conception? It cannot be me, for it is now apparently true that I was never conceived, and so never grew up to step into a time machine to prevent my conception. I cannot, then, prevent my conception. This itself may seem to have further worrying implications. For if I cannot prevent my own conception, despite being present at the right time. Does this not suggest that I am not, as a traveller into the past, a free agent? If this is an implication, then it extends to our ordinary, non time traveling situation. For I am not free to change the future, either.

يتسائل الناس هل هناك ما يُسمى بالإرادة الحُرة أم أنّ كل شيء مُحددُ بالفعل. تلك مناظرةٌ قديمةٌ في العلم والفلسفة. لقد جعل الفلاسفة ذلك الأمر يتسع ليشمل الله، أن الله لا يمتلك إرادةً حرةً؛ فالإله الخيّر دائمًا ما يختار الطريق الذي سيؤدى إلى الخير، فلذا لايوجد هناك أي اختيار حقيقيّ. وأيضًا لأنّ الله الواسع العلم، العليم بكل شيء، والذي يعلم كل المستقبل، ولا يُمكن أن تكون معرفته خاطئة، ولذا فلا توجد هناك إرادة حرة لنختار منها. ومع ذلك، فإنّ الإله الذي لا يملك إرادةً حرةً لا يُمكن أن يكون أخلاقيًا، فيجب أن تكون طبيعته أخلاقية. وأيضًا، إذا كان الله العليم القويّ موجود عبر سلسلةٍ طويلةٍ من الأسباب والتأثيرات، فسوف يُنكر أي إرادة حرة لأي مخلوق حيّ. مشاعرُنا تأتي من شخصياتنا، وخياراتنا تتأثر بالأشياء التي تعلمناها في حياتنا: والله لديه القوة لتغيير أي ظروفٍ من شخصياتنا، والأشياء التي تعلمناها في الحياة هى محض عناية من الله، أو بسبب سلسلةٍ طويلةٍ من التأثير والسبب والذي يكون مع الله ولا أحد أخر. إنّهم يقولون أيضًا أنّ إرادة الله الحرة مهمة لحل مسألة الشر. إذا كان الله يمتلك الإرادة الحرة، ولكنّه لم يختر الشر أبدًا، إذن فإنّ الله كان بإمكانه أنّ يخلق الحياة بنفس الطريقة ولكن بدون أن يختار الشر. وإذا لم يكن لله إرادة حرة ولكنّه مازال جيدًا، فإنّه لامعنى لخلق الشر لضمان إرادة البشر الحرة حيث أنّه من الممكن أن تكون جيدًا بدون الإرادة الحرة. إذا كان الله، الملائكة، والمخلوقات الاخرى في الجنة، كانت لديهم الإرادة الحرة؛ فلن يكون هناك شرٌ أو معاناة. ثم لايمكن أن يكون صحيحًا أن الله سمح للشر بالوجود، لأن هذا هو أثر جانبيّ للإرادة الحرة”

بعد الاكتشافات الحديثة في الفيزياء والكيماء الحيويّة إنهم يقولون أنّ الإرادة الحرة وهم. وأن عقولنا الخياليّة، الوهميّة تتآلف من مجموعة من الأنظمة التي تدور وتتوائم فيما بينها وتولد أفكارنا، وعينا، واختيارتنا وسلوكنا. تلك الأنظمة وتأثيراتهم تنتج من قوانين الفيزياء أو القوانين الطبيعيّة، والتي لا نملك أي سيطرةٍ عليها. الوعي يُقدّم إلينا في وعينا عبر الخلايا العصبية، عقولنا، حواسنا. وعندما نفقد هؤلاء، نفقد الوعيّ. تلك الأنظمة محكومة ويتم التحكم فيها عبر المواد الكيمائيّة، الهرمونات، التاين، النبضات، باختصار: عبر الكيماء الحيويّة. الكيمياء الحيويّة هى نوع من الكيمياء، وعندما ننظر إلى الجزئيات والذرات التي كونت الكيمياء، فإنّهم يتبعون قوانين الفيزياء.

عندما يقولُ المدافع عن الإرادة الحُرة أن “عقولنا” منفصلةٌ عن أجسادنا فإذًا، فإن عقولنا حرةٌ من قوانين السبب والنتيجة. ويجيبون أن هناك مشاكل مفاهيمية مع هذه الفكرة. يجبُ على مُعظم الأفكار أن تتبع قوانين السبب والنتيجة لكي تبدو مُتسقةً. التفكير بشكل عشوائي ليس نابعًا من الإرادة الحُرة أكثر من أفكارك التي تُسيطر عليها الخلايا العصبية. لذلك، فإن عقولنا لا تزال تعمل وفقًا لمنطق السبب والنتيجة، أو، بعبارةٍ أخرى، في دائرةٍ من التفكير ومابعد التفكير. ولكسر هذه السلسلة من السببية يجب كسر تدفق الوعي. إذا كانت الأفكارُ ليست عشوائيةً، فيجب أن تكون هناك عواملُ تؤثر على ما هي الأفكار، وعلى الخيارات التي يتم اتخاذها. ونحن نعلم أن مُعظم هذه العوامل هي عوامل فيزيائيّة محضة – مُثيرات الجنس، الجوع، العواطف التي تُحركها الهرمونات، إلى آخره. فهي لا معنى لها دون أساسٍ مادي. هل هناك حقا أي مساحةٍ للعقل غير المادي؟

يُفسر أحدُ الفلاسفةِ كلَ هذا بطريقةٍ أخرى، إذا جعلنا السفر عبر الزمن مثالًا، وخلقنا مفارقةً أنه إذا كان السفرُ إلى الماضي في الوقت المناسب يُساعدنا على تغير حقائق التاريخ – مهما كانت طفيفةً – فإننا عندما نعود إلى المستقبل ،فإننا لن تكون قادرين على إجراء تلك التغييرات لأنها لن تحدث. وبما أننا لا نستطيع إجراء هذه التغييرات، فهذا يعني أنها ستحدث دائما كما حدثت في السابق. وتَخيّل الآتي: لقد فشلتُ في الحب، أتمنى أن أموتَ، وأكثر من ذلك، أتمنى لو لم أولد أصلًا. وبما أنّي أمتلك آلة الزمن، وبما أنّي أمتلك القدرة على تحقيق هذا، لذلك أسافر إلى الماضي في اللحظة المُناسبة قبل حملي، أعثر على قريبٍ لي مثل جدتي، ثم أقوم بضربها حتى الموت. أنا بذلك لن أجعل نفسي موجودًا أبدًا. إذا نجح عملي، فمن هو هذا الذي يمنع ولادتي؟ لا يمكن أن يكون أنا، لأنه من الواضح أنيّ لم أكن لأكون موجودًا الأن، وبالتالي لم أكن لأكبر وأنمو وأخطو داخل آلة الزمن لمنع ولادتي. لا يُمكن أن يكون أنا. يبدو أن هذا الأمر ينطوي على أشياء أكثر إثارة للقلق. لأنه إذا لم أستطع منع ولادتي، على الرغم من كوني موجودٌ في الوقت المناسب. وهل هذا لا يُوحي بأنني لست مسافرًا في الماضي، عميلًا حرً؟ إذا كان هذا ضمنًا، فإنه يمتد إلى وضعنا العادي، وإلى حالة عدم السفر الزمنيّ. لأنني لست حرًا في تغيير المستقبل

As pessoas perguntam se existe um livre arbítrio para nós ou se tudo já está determinado. Este é um antigo debate em ciência e filosofia. Filósofos estendem esta questão até Deus, que Deus não pode ter livre arbítrio. Um deus benevolente sempre escolhe o caminho que causa mais bem, portanto, não tem escolha real. Também porque um Deus que tudo conhece instantaneamente conhece todas as suas ações futuras e seu conhecimento não pode estar errado, portanto, não tem livre arbítrio para escolher o contrário. No entanto, um deus sem livre arbítrio não pode ser um ser moral; deve ser moralmente neutro. Além disso, se um Deus todo poderoso e todo conhecedor existe, então isto por uma longa cadeia de causa e efeito nega qualquer livre arbítrio de qualquer ser vivo. Nossos sentimentos derivam de nossa personalidade e caráter, e nossas escolhas são influenciadas pelas coisas que aprendemos na vida: Deus tem o poder de mudar qualquer uma das circunstâncias que formam nossa personalidade e caráter, e as coisas que aprendemos na vida são puramente para baixo. para a providência de Deus, ou para uma longa cadeia de causa e efeito que começou com Deus e nenhum outro. Eles ainda dizem que o livre arbítrio de Deus é importante para resolver o problema do mal. Se Deus tem livre-arbítrio, mas nunca escolhe o mal, então poderia ter criado a vida da mesma maneira: com livre-arbítrio, mas nunca escolhendo o mal. Se Deus não tem livre-arbítrio, mas ainda é bom, então não há sentido em criar o mal para conceder aos humanos o livre-arbítrio, pois é possível ser bom sem o livre-arbítrio. Se Deus, anjos e outros seres no céu têm livre arbítrio onde não há mal ou sofrimento, então não pode ser verdade que Deus permite que o mal exista porque é um efeito colateral requerido do livre arbítrio. ”

Após as descobertas modernas em física e bioquímica, eles dizem que o livre arbítrio é uma ilusão. Nossos cérebros incrivelmente maravilhosos e complexos são compostos de vários sistemas cognitivos que circulam entre si e geram nossos pensamentos, consciência, escolhas e comportamento. Todos esses sistemas e seus efeitos resultam das leis mecânicas e inorgânicas da física, sobre as quais não temos controle. A consciência nos é apresentada como resultado de nossos neurônios, nossos cérebros, nossos sentidos. Quando perdemos isso, perdemos a consciência. Esses sistemas são governados e controlados por substâncias químicas neurais, hormônios, ionização, impulsos: em suma, por bioquímica. A bioquímica, por sua vez, é apenas um tipo de química, e quando olhamos para as moléculas e átomos que compõem nossa química, eles obedecem às leis da física.

Quando o defensor do livre arbítrio diz que nossas “mentes” estão separadas de nossos corpos por causa disso, nossas mentes estão, portanto, livres de causa e efeito. Eles respondem que existem problemas conceituais com essa ideia. A maior parte do pensamento deve seguir causa e efeito para ser coerente. Pensar aleatoriamente não é mais livre-arbítrio do que ter seus pensamentos controlados por neurônios. Assim, nossas mentes ainda devem seguir linhas de causa e efeito lógicos, ou, em outras palavras, em um ciclo de pensamento e depois de pensamento. Quebrar essa cadeia de causalidade é quebrar o próprio fluxo da consciência. Se os pensamentos não são aleatórios, deve haver fatores que influenciam o que os pensamentos são pensados ​​e quais escolhas são feitas. Sabemos que a maioria desses fatores são impulsos sexuais puramente físicos, fome, emoções induzidas por hormônios e coisas do tipo. Eles fazem pouco sentido sem uma base física. Existe realmente algum espaço para uma mente não-física?

Um filósofo explica tudo isso de outra maneira, levando em conta as viagens no tempo e criando um paradoxo que, quando viajando de volta no tempo, mudamos os fatos da história, por menores que sejam no futuro, quando voltarmos, não conseguiremos fazer isso. muda porque eles não terão ocorrido. Como não podemos fazer essas mudanças, isso significa que elas sempre ocorrerão como originalmente. Ele imaginou o seguinte:
“Desapontado no amor, eu me desejo morto. Mais do que isso, gostaria que nunca tivesse vivido. Dado que tenho uma máquina do tempo, estou em condições de fazer isso. Então eu viajo de volta para um momento distantemente adequado antes da minha concepção, encontro um parente relevante, por exemplo meu avô, e os atordoo. Assim, faço com que eu nunca tenha sido concebido. Se minha ação é bem sucedida, quem é que impede minha concepção? Não pode ser eu, pois agora é aparentemente verdade que eu nunca fui concebido e, portanto, nunca cresci para entrar em uma máquina do tempo para impedir minha concepção. Não posso, então, impedir minha concepção. Isso por si só pode parecer ter implicações mais preocupantes. Pois se não posso evitar minha própria concepção, apesar de estar presente no momento certo. Isso não sugere que eu não seja, como um viajante no passado, um agente livre? Se isso é uma implicação, então ele se estende à nossa situação normal de não viajar no tempo. Porque também não estou livre para mudar o futuro.

La gente pregunta si hay libertad para nosotros o si todo está determinado. Este es un viejo debate en ciencia y filosofía. Los filósofos extienden esta cuestión hasta Dios que Dios no puede tener libre albedrío. Un dios benévolo siempre elige el camino que causa más bien, por lo tanto, no tiene una opción real. También porque un Dios que todo lo sabe conoce al instante todas sus acciones futuras y su conocimiento no puede estar equivocado, por lo tanto, no tiene libre albedrío para elegir lo contrario. Sin embargo, un dios sin libre albedrío no puede ser un ser moral; debe ser moralmente neutral. Además, si existe un todopoderoso y omnisciente Dios, esto por una larga cadena de causa y efecto niega la libre voluntad de cualquier ser viviente. Nuestros sentimientos derivan de nuestra personalidad y carácter, y nuestras elecciones están influenciadas por las cosas que hemos aprendido en la vida: Dios tiene el poder de cambiar cualquiera de las circunstancias que forman nuestra personalidad y carácter, y las cosas que aprendemos en la vida son puramente a la providencia de Dios, o, a una larga cadena de causa y efecto que comenzó con Dios y no con otros. Dicen además que el libre albedrío de Dios es importante para resolver el problema del mal. Si Dios tiene libre albedrío, pero nunca elige el mal, entonces podría haber creado la vida de la misma manera: con libre voluntad, pero nunca eligiendo el mal. Si Dios no tiene libre albedrío, pero sigue siendo bueno, entonces no tenía sentido crear el mal para otorgar libre albedrío a los humanos, ya que es posible ser bueno sin libre albedrío. Si Dios, los ángeles y otros seres en el cielo tienen libre albedrío donde no existe el mal o el sufrimiento, entonces no puede ser cierto que Dios deja que el mal exista porque es un efecto secundario requerido del libre albedrío “.

Después de los descubrimientos modernos en física y bioquímica, dicen que el libre albedrío es una ilusión. Nuestros cerebros sorprendentemente, maravillosamente complejos se componen de varios sistemas cognitivos que circulan entre ellos y generan nuestros pensamientos, conciencia, opciones y comportamiento. Estos sistemas y sus efectos son el resultado de las leyes mecánicas e inorgánicas de la física, sobre las cuales no tenemos control. La conciencia se nos presenta como resultado de nuestras neuronas, nuestros cerebros, nuestros sentidos. Cuando perdemos esto, perdemos la conciencia. Estos sistemas están gobernados y controlados por neuroquímicos, hormonas, ionización, impulsos: en resumen, por bioquímica. La bioquímica es a su vez simplemente un tipo de química, y cuando miramos las moléculas y átomos que componen nuestra química, obedecen las leyes de la física.

Cuando el defensor del libre albedrío dice que nuestras “mentes” están separadas de nuestros cuerpos debido a esto, nuestras mentes están libres de causa y efecto. Responden que hay problemas conceptuales con esta idea. La mayoría del pensamiento debe seguir la causa y el efecto para ser coherente. Pensar al azar no es más libre albedrío que tener tus pensamientos controlados por neuronas. Entonces, nuestras mentes todavía deben seguir líneas de causa y efecto lógico, o, en otras palabras, en un ciclo de pensamiento y pensamiento posterior. Romper esta cadena de causalidad es romper el flujo mismo de la conciencia. Si los pensamientos no son aleatorios, debe haber factores que influyen en qué pensamientos se piensan y qué opciones se toman. Sabemos que la mayoría de esos factores son impulsos sexuales puramente físicos, hambre, emociones impulsadas por hormonas y similares. Tienen poco sentido sin una base física. ¿Hay realmente lugar para una mente no física?

Un filósofo explica todo esto de otra manera, teniendo en cuenta los viajes en el tiempo y creando una paradoja: si al viajar atrás en el tiempo cambiamos los hechos de la historia, pero menores en el futuro cuando regresemos, no podremos hacerlos cambios porque no habrán ocurrido. Como no podemos hacer esos cambios, significa que siempre ocurrirán como lo hicieron originalmente. Él imaginó lo siguiente:
“Decepcionado en amor, me deseo muerto. Más que eso, desearía no haber vivido nunca. Dado que tengo una máquina del tiempo, estoy en condiciones de lograrlo. Así que vuelvo a un momento adecuadamente distante antes de mi concepción, encuentro a un pariente relevante, por ejemplo, mi abuelo, y los mato. Por lo tanto, logro que nunca fui concebido. Si mi acción es exitosa, ¿quién es el que impide mi concepción? No puedo ser yo, porque ahora parece ser cierto que nunca fui concebido, por lo que nunca crecí para entrar en una máquina del tiempo para evitar mi concepción. No puedo, entonces, prevenir mi concepción. Esto en sí mismo puede parecer tener implicaciones más preocupantes. Porque si no puedo evitar mi propia concepción, a pesar de estar presente en el momento correcto. ¿Esto no sugiere que no soy, como viajero en el pasado, un agente libre? Si esto es una implicación, entonces se extiende a nuestra situación ordinaria, que no viaja en el tiempo. Porque tampoco soy libre de cambiar el futuro “.

لوگ پوچھتے ہیں کہ ہمارے لئے کیا کوئی آذاد مر ضی ہے یا ہر چیز پہلے ہی سے طے شدہ ہے۔  یہ سائنس  اور فلسفے  میں ایک پرانی بحث ہے ۔ فلاسفر اس مسئلے کو خدا تک لے جاتے ہیں  – کہ خدا  کی کوئی آزادانہ رائے نہیں ہے۔  ایک رحیم خدا ہمیشہ وہ راستہ چنے گا جو  ذیادہ سے ذیاہ  بھلائی کا سبب بنے اس لئے یہ کوئی اصلی انتخاب نہیں ہے۔   مزید اس لئے کہ سب جاننے والا خدا فوراً سےاپنے  مستقبل کے  بارے میں  سب جان  لیتا ہے اور اس کا  علم غلط نہیں ہو سکتا لہٰذ ا  اس کے پاس اور کچھ انتخاب کا راستہ نہیں ہے۔ تاہم وہ خدا جس کے پاس آذاد مرضی نہ ہو وہ اخلاقی وجود نہیں ہو سکتا؛  بلکہ  اخلاقی طور پر غیر جانبدار ھوگا۔ اس لئے اگر ایک قادر مطلق اور سب کچھ جاننے والے خدا کا وجود ہے تو یہ اسباب اور وجوھات کی ایک طویل زنجیر کے سبب  سے کسی بھی زندہ ہستی  کی آذاد مرضی  کو رد کرتا ہے۔  ہمارے احساسات ہماری شخصیت اور کردار سے اخذ ھوتے ھیں۔ اور ہمارے انتخابات مرھون منت ہیں  ان چیزوں کے جو ہم نے زندگی کے تجربات سے سیکھیں ھیں : خدا کے پاس ہر قسم کے حالات کو بدلنے کی طاقت ہے جو ہماری شخصیت اور کردار کو  مرتب کرتے ہیں ۔ اور  جو چیزیں  ہم زندگی میں سیکھتےہیں وہ وہ سب خدا کے ہاتھ میں ہیں  یا اس  وجوہات اور اسباب کی طویل زنجیر  کے ہاتھ میں ہیں جو خدا کے علاوہ اور کسی سے شروع نہیں ہوئی۔  وہ مزید یہ کہتے ہیں کہ خدا کی آذادانہ مرضی برائی کے مسائل کو سلجھانے کے لئے  ضروری ہے۔ اگر خدا کے پاس آذاد مرضی ہے  اور اس نے  برائی کا کبھی چناؤ نہی کیا تو وہ اسی طرح سے زندگی کو بھی وجود میں لا سکتا تھا: یعنی آذاد مرضی کے ہوتے ہوئے بھی برائی کا انتخاب نہ کرنا ۔ اگر خدا کی کوئی آزاد مرضی نہیں ہے  لیکن پھر بھی وہ بھلا ہے  توپھر برائی کو پیدا کرنے اور انسانوں کو آذاد مرضی بخشنے  کا کوئی  مطلب نہیں ہے کیونکہ بغیر آذاد مرضی کے بھلا رہنا ممکن ہے۔  اگر خدا، فرشتے اور آسمان کی اور مخلوقات کو آذاد مرضی حاصل ہے جہاں کوئی برائی اور دکھ نہیں ہے تو یہ سچ نہیں ہو سکتا کہ خدا برائی کا وجود اس لئے رہنے دے کیونکہ یہ آذاد مرضی کا ایک  ضروری منفی اثر ہے۔

طبعیات اور کیمیا حیاتیات میں جدید دریافتوں کے بعد  وہ کہتے ہیں کہ آذاد مرضی ایک  دھوکہ ہے۔ ہمارے حیران کن طور  پر پیچیدہ ذہن کئی ادراکی نظاموں پر مشتمل ہیں   جو آپس میں گھوم رہے ہیں اور ہماری سوچوں ، خیالوں ، انتخابات اور رویوں کو جنم دے رہے ہیں ۔ یہ نظام اور ان کے اثرات  تمام مکینکی اور طبعیات کے غیر نامیاتی  قوانین  کا نتیجہ ہیں ۔  روح یا ضمیر ہمارے نیورونز، ذہن اور احساسات کی پیشکش ہے ۔   جب ہم انہیں کھو دیتے ہیں ہم اپنے ضمیر یا روح کو کھو دیتےہیں ۔ یہ نظام نیورو کیمیکل ، ہارمونز، آیونائزیشن ، محرکات کے ماتحت ہیں : مختصراً کیمیائی حیاتیات کے ذریعے سے۔  کیمیائی حیاتیات  ، نتیجتاً کیمیا کی محض ایک  قسم ہے  اور جب ہم  ایٹمز اور مالیکیولز کو دیکھتے ہیں  جو ہماری کیمیا بناتے ہیں تو وہ طبعیات کےقوانین کے تحت کام کرتے ہیں ۔

جب آذاد مرضی کے وکیل یہ کہتے ہیں کہ  ہمارے “ذہن ” ہمارے اجسام سے الگ ہیں  اور اس لئے ہمارے دماغ اسباب و وجوہات سے مبرا ہیں ۔  تو دوسرے جواب دیتے ہیں کہ  اس نظریے میں تصوراتی مسائل ہیں ۔  بہت سی سوچوں کو مربوط ہونے کے لئے  اسباب و وجوہات کے مطابق چلنا ضروری ہے۔  بے ربط طور پر سوچنا اس سے ذیادہ آذاد مرضی نہیں رکھتا  جتنا کہ آپ کی سوچوں کو نیورونز کے ذریعے قابو کیا جائے ۔  لہٰذا ہمارے  ذہنوں کو منطقی وجہ و سبب  کے مطابق چلنا چاہئے یا دوسرے الفاظ میں  سوچ در سوچ کے ایک چکر میں ۔  سبب کی اس زنجیر کو توڑنا  شعور کی زنجیر کو توڑنے کے برابر ہے۔  اگر سوچیں بے ترتیب نہیں ہوتیں تو کوئی ایسے اسباب ہونگے جو یہ طے کریں کہ کونسی سوچ سوچ ہے اور اس کو کہ کونسے چناؤ کرنے چاہیئں ۔  ہم جانتے ہیں کہ ان میں سے بہت سے اسباب جسمانی ہیں  – جنسی روشیں ، بھوک، ہارمونز کے سبب سے جذبات اور اس جیسے اور۔ یہ جسمانی  یا ظاہری بنیاد کے بغیر کم سمجھ میں آتے  ہیں ۔ تو کیا ایک غیر جسمانی دماغ کی حقیقت میں کوئی جگہ ہے؟

ایک فلاسفر اسے ایک اور طرح سے وقت کے سفر کو مد نظر رکھتے ہوئے اور ایک  متناقضہ بناتے ہوئے بیان کر تا ہے  کہ اگر وقت میں واپس سفر کرتے ہوئے ہم تاریخ کے حقائق کو بدل دیں  – جتنے بھی  کم سے کم  – پھر جب مستقبل میں ہم واپس جائیں  تو ہم وہ تبدیلیاں نہیں کر سکیں گےکیونکہ وہ  وقو ع پذیر ہی نہیں ہوئیں ہوں گی۔  اگر ہم تبدیلیاں  نہیں کرسکتے تو اس کا مطلب ہے کہ وہ ہمیشہ ہوں  گے جیسے کہ حقیقت میں تھا۔  اس نے اس طرح  تصور کیا:

” محبت میں مایوس، میں چاہتا ہوں کہ مر جاؤں۔  اس سے ذیادہ میں چاہتا ہوں کہ میں پیدا ہی نہ ہوتا۔ اس کے مد نظر میرے پاس ایک  ٹائم مشین ہے تو میں ایسا کر سکتا ہوں ۔ لہٰذا  اپنی پیدائش سے پہلے کے  کچھ مناسب لمحات میں ایک متعلقہ رشتے دار ڈھونڈنے کو واپس گیا جیسے کہ میرے دادا دادی اور انہیں جان سے مار دیا۔ اس سے میں نے یہ کر لیا کہ میرا وجود ہی نہ ہو۔ اگر میرا یہ فعل کامیاب ہے تو وہ کون ہے جو میری پیدائش کو روکے گا؟  وہ میں نہیں ہو سکتا کیونکہ یہ ظاہراً سچ ہے کہ میں  کبھی پیدا ہی نہیں ہوا اور اس لئے اپنی پیدائش روکنے کے لئے مشین میں گیا ہی نہیں ۔  تو پھر میں اپنی پیدائش نہیں روک سکتا۔  اس کے مزید پریشان کن نتائج  ہیں ۔ کیونکہ اگر میں خود صحیح وقت پر موجود ہونے کے باوجود  اپنی پیدائش نہیں روک سکتا ۔ کیا یہ نہیں بیان کرتا کہ میں ماضی میں سفر کرنے والا آذاد ذات نہیں ہوں ؟  اگر یہ ایک نتیجہ ہےتو یہ ہماری عام ، بغیر وقت میں سفر کی صورتحال تک جاتا ہے۔ کیونکہ میں مستقبل کو بھی تبدیل کرنے کی آذادی نہیں رکھتا ۔ “