Project Description

Determinism And Free Will

Destiny, Fate, Determinism and Free Will: Scientific and Religious Analysis

Free Will Is An Illusion!

Please read If there is God then why so much Injustice aroundWhy righteous get more afflictionsWhich religion’s followers will go in paradiseEvery incident happen to you has its reasons, Take care of your three billion brothersOne single secret of successThis Universe is not perfect before or in conjunction with this article.

The Nature of Free Will. The Doctrine of Determinism

Determinism and Free will

Does Free Will Exist In The Universe?

People ask is there a freewill for us or everything is already determined. This is an old debate in science and philosophy. Philosophers extend this issue up till God that God cannot have free will. A benevolent god always chooses the path that causes most good so therefore has no real choice. Also because an all knowing God instantly knows all of its future actions and its knowledge cannot be wrong, it therefore has no free will to choose otherwise. However a god with no free will cannot be a moral being; it must be morally neutral. Also, if an all powerful and all knowing God exists then this by a long chain of cause and effect denies any free will of any living being.

Free Will Of God And The Problem Of Evil

Our feelings derive from our personality and character, and our choices are influenced by the things we have learned in life: God has the power to change any of the circumstances that form our personality and character, and the things we learn in life are purely down to the providence of God, or, to a long chain of cause and effect which did begin with God and no other. They further say that the free will of god is important for resolving the problem of evil. If God has free will, but never chooses evil, then it could have created life in the same way: With free will, but also never choosing evil. If God has no free will but is still good then there was no point creating evil to grant humans free will as it is possible to be good with no free will. If God, angels and other beings in heaven have free will where there is no evil or suffering, then it cannot be true that god lets evil exist because it is a required side effect of free will.”

Neuroscience Of Free Will

After modern discoveries in physics and biochemistry they say that free will is an illusion. Our amazingly, wonderfully complex brains are comprised of various cognitive systems cycling amongst themselves and generating our thoughts, consciousness, choices and behavior. These systems and their effects all result from the mechanical, inorganic laws of physics, over which we have no control. Consciousness is presented to us as a result of our neurons, our brains, our senses. When we lose these, we lose consciousness. These systems are governed and controlled by neuro chemicals, hormones, ionization, impulses: in short, by biochemistry. Biochemistry is in turn merely a type of chemistry, and when we look at the molecules and atoms that make up our chemistry, they obey the laws of physics.

Freewill and Determinism

Is Free Will Real, Or Is It Just An Illusion?

When the advocate of freewill say that our ‘minds’ are separate to our bodies because of this, our minds are therefore free from cause and effect. They reply that there are conceptual problems with this idea. Most thought must follow cause and effect in order to be coherent. Thinking randomly is no more free will than having your thoughts controlled by neurons. So, our minds must still run along lines of logical cause and effect, or, in other words, in a cycle of thought and after thought. To break this chain of causality is to break the very flow of consciousness. If thoughts are not random, there must be factors which influence what thoughts are thought, and what choices are made. We know that most of those factors are purely physical  sex drives, hunger, hormone driven emotions and the like. They make little sense without a physical foundation. Is there really any room for a nonphysical mind?

Free Will And Time Travel Paradox

One philosopher explains all this in another way by taking into account time travel and creating a paradox that If when traveling back in time we changed the facts of history  however minor  then in the future when we go back, we will not be able to make those changes because they will not have occurred. As we can’t make those changes, it means they will always occur as they did originally. He imagined as follows:

The Nature of Free Will. The Doctrine of Determinism

Disappointed in love, I wish myself dead. More than that, I wish that I had never lived. Given that I have a time machine, I am in a position to bring this about. So I travel back to some suitably distant moment before my conception, find a relevant relative e.g my grandparent and strike them dead. I thus bring it about that I was never conceived. If my action is successful, who is it who prevents my conception? It cannot be me, for it is now apparently true that I was never conceived, and so never grew up to step into a time machine to prevent my conception. I cannot, then, prevent my conception. This itself may seem to have further worrying implications. For if I cannot prevent my own conception, despite being present at the right time. Does this not suggest that I am not, as a traveller into the past, a free agent? If this is an implication, then it extends to our ordinary, non time traveling situation. For I am not free to change the future, either.

Free Will And Determinism In Religion

The Freedom Of Man In Setting His Destination

Is Free Will or Determinism Correct?So you can see that throughout history there are long debates on determinism and freewill. Some follow one school of thought others follow the second one. Now the answer is that reality is in between. That means man has a free will in the matter of his actions. Although his free will is by divine decree. Because God is the ultimate and independent cause of all causes it is correct to relate all that exists to God. Similarly, because God has granted man free will in his actions, it is also correct to relate the actions of man to his own choice.

Free Will and Moral ResponsibilityWhen a chosen slave of God was asked this question by a man” What is Fate ?”he said,” Lift your one foot in the air.” the man did so. he than said,” Now lift the other one.” (while being in the same position) the man replied,”I cannot” he said,” This is answer to your question. Half of it God has given to you in your hand, and the rest He has kept to Himself.” So in other words Man is free to will what he wills but he cannot will what he wills. That is man is free to do a task a job in whatever manner he likes but to choose/reach and come across to that job is beyond his control.

When another chosen slave of God asked this question he replied “Whatever that you could blame man for it, is his action and whatever you could not blame him for it, is the act of God. God blames man for stealing, committing adultery etc. Thus, these are the acts of man. However, God does not blame man why he is not born rich or why his skin color is black or fair. Thus, these are the acts of God.”

Do Not Blame Your Destiny

O people therefore do not blame your destiny. It is actually only a few things that are determined which are mainly related to your birth, parents and all that atmosphere related to your parents including the social economic environment of your home and country. Most of the things are in your hand and with effort and struggle you can even change your capacities, capabilities and lastly your destiny.  Also keep in mind that your Lord is so just that in any case in the hereafter He will judge you after considering all the factors around you and will not reward or punish you only on your accounts. And above all as I discussed in detail in part 2 the life of this world is like a blink of an eye so this small time of affliction is nothing as compared to the life which is waiting for you ahead.

A Universe Of Possibilities

This universe He made is so mysterious that you cannot grasp the whole wisdom behind its creation. God has made for you choices and options which pop up every second and He has given you free will to choose among these options. It is a world, a universe of possibilities. So don’t blame your destiny only. A slave can become a ruler, a weak can become the strongest person, an ignorant can become the most wise.

Free Will: The Philosophical View
A world of possibilities where anyone can reach to any level. Its just a matter of how big a person thinks and how accurately he acts upon that. And above that a huge mercy of your Lord is the promise of hereafter so that those who could have not successfully utilized their options here and are not wrongdoers they will have peace and pleasure. They will have there whatever they ask and whatever their soul desire. What no eye has seen, no ear has heard, nor the heart of any man imagined.

If my Lord Wills I will continue this topic in next program.

Do We Have Free Will? The Nature of Divine Providence

Determinism vs. Free WillO mankind you always get confused and all these debates of philosophers that I discussed in part 11 are because you think that as God knows everything and it is already written therefore you have no freewill. Therefore mankind mostly blame their destiny for all the mishaps they get in their lives. O people this universe is a universe of possibilities where anyone can reach to any level. God has made for you choices and options which pop up every second and God’s ability of knowing your future does not in any way restricting you from acting as a free Agent in this universe.

Adam & Devil: Different Reaction Different Outcome

Same thing devil did when Adam and all others were caught red handed after their mistake in the climax of that episode in Eden. Rather than accepting his jealousy, arrogance, and mistake he put the blame on destiny. In Last Scripture God tells in Adams story that Devil said, “My Lord, because You have put me in error, I will surely make disobedience attractive to them on earth, and I will mislead them all. So devil put all his blame on God or destiny while Adams reaction was opposite and he repent and asked forgiveness for his error.

As devil is with us all human beings and Jinns so whenever we blame destiny and God’s act is because of that evil suggestion devil put in our heart. So you blame destiny only when you fails or events things go against you. You never blame destiny when you gets good.

Free Will in Religion

Is it that a criminal is a criminal because God has already written for him?

Now because God always says in His scriptures like in the last scripture God said “And you do not will except that God wills  Lord of the worlds”. This should not be confused for Example with the case of a person going to kill someone. Now God has written for him that he would be a killer but that does not mean He made him to kill that person. Its only that God by His will gave us the liberty to decide between our options and choose them. If you want guidance He will guide you.

God Facilitates You In Whatever Direction You Want To Go.

How it happens lets consider another example as in Part 11, I told you that God has made for you choices and options which pop up every second and He has given you free will to choose among these options. Consider you are sitting in a library or at your home with your laptop and surfing on internet. Now as per God’s revelations and scriptures first part of effort you have to put and than God will help you Now if you decide to read or to see some stuff some book some video, who can force you not to read or watch that. And you also have full liberty to see search good things or Bad things available. But after you exercise your option and decide to consume that time in some good work either related to your education or your religion God facilitates you in that and you may come across some very good stuff which later might change your way of thinking and even your life. God facilitates you in whatever direction you want to go. This is the basis of all inventions in human history all people who are struggling in some field got new ideas just like a blink of an eye. This would never happen without putting any effort on your part. So it’s Actually God’s will and human effort that work together in this universe of yours. Same principal is for prophets and righteous. They got God’s help after they put all their effort. Red sea parted when Moses struggled and of 80 years of age. Madina became islamic state after continuous struggle of decades and when Muhammad was 53 years old.

Free Will in Islam

Consider an Example

Now consider you are owner of a business and you have 20 employees. One day you announce that you will give a Cash prize to those 10 persons who perform certain tasks and targets more than others. Now as you have those employees with you since few years and you know all of them very well, you write in your notepad the name of those ten in advance who will win that prize. And by the end of task it happens that they are exactly the same as you have already written in your notepad. I ask you a question that by writing this does by any means you have favored them to win or restricted the chances of others. But actually those whose names you have already written as the winners are the employees that do the right things, hard work and sincere effort anyway whether you give the incentive of prize or not. While the others are the ones who actually don’t do anything to deserve that regardless of you write their names or not.

Another example now consider one of your friend gets a time machine he goes in future and look all your life till end then comes back and writes a book on you. Now doest it mean he restricted your free will and forced you to do those actions he has written in the book.

With Authority Comes The Responsibility

I know that these analogies have many short comings as God is omniscient and omnipotent and He not only knows your future but also overall dominant on your will as he created you and all the abilities you have got are actually granted by Him. And these are the actual limitations and therefore everyone will be accounted for only that much which he has been bestowed with, not more than that. A person responsible for a small house will not be held accountable for the matters, wrongdoings, injustice and corruption going in the town. Thats why it is a serious matter and big burden if someone has got a position in society as with authority comes the responsibilities.

Destiny And Free Will

Free Will and Moral Responsibility.

God’s knowledge is different from the knowledge of his creation as it’s not preceded by ignorance not that God did not know and then he learned nor is it followed by forgetfulness that he now knows but in the future it may slip from His memory.

Determinism in religion

Evil Is Not Be Attributed To God

God created the actions of people. They are attributed to God as He created them put them into existence. It is not that God created Good and evil actions it is that He made their existence possible but the human beings earned the action. Evil is not be attributed to God. Evil is relative as for example poison of snake is an evil for human beings but a good thing for snake, teeth and claws of tiger have evil for other animals but blessing for him, horns of bull have evil for other but good for his defense. So as in the Last scripture God says  “Say, I seek refuge in the Lord of daybreak From the evil of that which He created And from the evil of darkness when it settles”. Destiny and FateHere God says to seek refuge from the evil of that (creation) which he created and not saying from the evil of which He created. So creation, events, aspects exist which have evil in them but they are not created as pure evil. Even Devil God created is not pure Evil or created for the purpose of evil. It is like a by product of creation as you get from your factories during manufacturing something good. And its purpose is to make this universe a trial without devil how do we get rewarded as if there is no negative thought and only good exist than there is no  purpose of creating this universe If God had willed that all should be good and pious and obey Him he would not have created you, as those beings which are with Him enough for His praises and glorify him morning and evening.

We are responsible for the effort not for the results

O people our responsibility is to do struggle to put our effort and than to pray and ask for God’s help. We are just responsible for the effort not for the results, leave results on God, as if succeeds then good. And even if no result and success here you will be successful in hereafter. Specially Whenever you do struggle for God’s cause, for some bigger objective, above yourself for the sake of humanity than remember success is not a criteria. As Jesus is one of the biggest prophets of God but apparently failed in world. While there are some slaves of your Lord who were extremely successful in this world in their missions. It doesn’t matter if 4000 are watching this program or 4000 million. If God Wills then a time will come that He will put effect in it.  As mentioned in the last scripture I want to live my life like that and to proclaim that. “Indeed my prayer, my rites, my rituals, my work, my living and my dying are for God, Lord of the worlds. He has no partner; with this I have been commanded. And I am the first of those who surrender to Him.

Human freedom and denial of determinism
If my Lord Wills I will continue and conclude this topic in next program.

God has made for you choices and options which pop up every second

O mankind your Lord does not punish people on their first sins. He gives them chance to repent. It is not actually the sin, wrongdoing or injustice that is bad in the eyes of your Lord but it is its repetition. Repeating a wrong act again and again, not repenting and not feeling it wrong is what is bad. O people it is a world, a universe of possibilities where anyone can reach to any level.

The Freedom To Do Otherwise

God has made for you choices and options which pop up every second and He has given you free will to choose among these options. There is no limit. If you are a poor person or even a slave, you can become a king a ruler. O people if you are feeling miserable and feel yourself in a vicious cycle from where there is no way out just start doing one thing only. Start choosing every moment those options which are best in terms of morality. Don’t consider even for a second at those options which you think are good to achieve your purpose but have something morally wrong in them. Your Lord has made this Universe like that. If you choose morally wrong options He will only punish you when you keep on doing its repetition and if you choose right options He will soon take you out of misery and vicious cycle and will send His blessings from where you would have not imagined.

Do We Have Free Will? The Nature of Divine Providence

Consider an Example: Options Theory

To understand it more I give you an example consider that you are sitting with your wife and as you have free will and options all the time. You utilize the option of moving your hand and it happens that it touches your wife’s eye and hurt her. Now as soon as it happens another set of options and choices open up for you that either admit your mistake and ask her sorry or another option to say that it was her fault why she brought her face near your hand, or to become more irrational and react in anger, so on and so forth. If you choose the first option that matter closes as such with good impression of yours in her mind and some other matter starts simultaneously. But if you select second or third option the next outcome most probably will be that she will react and may be start arguing with you saying that you are an ill mannered person and you end up in abusing her. Keeping it short and just for understanding the concept and this example, you may ask her to leave your home. She starts weeping and crying. Now a set of other options and choices open up for you either you now realize your mistake and say sorry or remain stubborn and keep on repeating the wrong thing. If you choose the first option than that matter closes as such and some other matter starts simultaneously.

Every Choice Of Yours Creates A New Universe

But if you select the second option that is again a morally wrong option a new scenarios will pop up out of it. She leaves the house and may be that matter ends up on divorce. Again many options for you but if you keep on choosing the wrong one it will end up on divorce. Then see you have a totally different world in front of your eyes in which you are in deep pain and lonely and have a feel of guilt in your heart. So you would have a punishment here and as well as in hereafter. You can clearly see that you have not been punished on the wrong act but on its repetition. This example can be taken both ways with wife as an aggressor. As these days women also do much wrong.

Predestination Or Free Will?

Predestination in the Quran

Human Freedom And Denial Of Determinism

To make it simple for you I named it  “Options Theory”. And its not a theory it is a law governing this universe of yours and later in next programs I will give you proofs and versus from the Holy scriptures which actually you totally misunderstood.

Think Bigger

A Universe Of Possibilities

This universe He made is so mysterious that you cannot grasp the whole wisdom behind its creation. God has made for you choices and options which pop up every second and He has given you free will to choose among these options. It is a world, a universe of possibilities. So don’t blame your destiny only. A slave can become a ruler, a weak can become the strongest person, an ignorant can become the most wise. A world of possibilities where anyone can reach to any level. Its just a matter of how big a person thinks and how accurately he acts upon that. And above that a huge mercy of your Lord is the promise of hereafter so that those who have not successfully utilized their options here and are not wrongdoers they will have peace and pleasure. They will have there whatever they ask and whatever their soul desire. What no eye has seen, no ear has heard, nor the heart of any man imagined.

The freedom of man in setting his destination

The affairs of a believer is strange that there is no divine decree about him but eventually it will be to his benefit.” If he gets some blessing then he thanks God and thus there is good for him, and if he is harmed, then he shows patience and thus there is good for him.

Arguments in favor of Free Will. Ethical Arguments for Free Will

The Key To Success

Most Of The Things Are In Your Hands

O people you are not here in this universe helpless before a cruel determined unchanging fate. Most of the things are in your hand and with effort and struggle you can even change your capacities, capabilities and even your destiny. O people our responsibility is to do struggle to put our effort and than to pray and ask for God’s help. We are just responsible for the effort not for the results, leave results on God. O people you are actually a free agent in this universe having your own choice to draw, sow, propagate and grow whatever you like to draw and grow in this canvas in this soil of universal opportunities. Divine vicegerency, eternal life of peace and pleasure or Eternal despair whatever outcome you like, it is in your hands. Arguments Against Free WillAs I told you about the gift of options from your Lord popping for you every moment and the way to utilize these thus everything is actually possible for you provided you have will and you take an initiative.

Many Paths, Many Destinies And Many Universes

O mankind there is scope for many possibilities, many paths, many destinies and many worlds for you. What matters is only what options you pick every second when they pop up with the changing moments. The options you pick will lead to that kind of destiny. If you are feeling miserable and feel yourself in a vicious cycle from where there is no way out then do just two things first pray your Lord for another destiny as there is no limit of destinies with your Lord its already woven in the fabric of this cosmos this universe of yours so after pray start doing one thing only I.e every moment choose morally right options whenever they pop up. If you do this and change yourself your destiny stands changed.

يتسائل الناس هل هناك ما يُسمى بالإرادة الحُرة أم أنّ كل شيء مُحددُ بالفعل. تلك مناظرةٌ قديمةٌ في العلم والفلسفة. لقد جعل الفلاسفة ذلك الأمر يتسع ليشمل الله، أن الله لا يمتلك إرادةً حرةً؛ فالإله الخيّر دائمًا ما يختار الطريق الذي سيؤدى إلى الخير، فلذا لايوجد هناك أي اختيار حقيقيّ. وأيضًا لأنّ الله الواسع العلم، العليم بكل شيء، والذي يعلم كل المستقبل، ولا يُمكن أن تكون معرفته خاطئة، ولذا فلا توجد هناك إرادة حرة لنختار منها. ومع ذلك، فإنّ الإله الذي لا يملك إرادةً حرةً لا يُمكن أن يكون أخلاقيًا، فيجب أن تكون طبيعته أخلاقية. وأيضًا، إذا كان الله العليم القويّ موجود عبر سلسلةٍ طويلةٍ من الأسباب والتأثيرات، فسوف يُنكر أي إرادة حرة لأي مخلوق حيّ. مشاعرُنا تأتي من شخصياتنا، وخياراتنا تتأثر بالأشياء التي تعلمناها في حياتنا: والله لديه القوة لتغيير أي ظروفٍ من شخصياتنا، والأشياء التي تعلمناها في الحياة هى محض عناية من الله، أو بسبب سلسلةٍ طويلةٍ من التأثير والسبب والذي يكون مع الله ولا أحد أخر. إنّهم يقولون أيضًا أنّ إرادة الله الحرة مهمة لحل مسألة الشر. إذا كان الله يمتلك الإرادة الحرة، ولكنّه لم يختر الشر أبدًا، إذن فإنّ الله كان بإمكانه أنّ يخلق الحياة بنفس الطريقة ولكن بدون أن يختار الشر. وإذا لم يكن لله إرادة حرة ولكنّه مازال جيدًا، فإنّه لامعنى لخلق الشر لضمان إرادة البشر الحرة حيث أنّه من الممكن أن تكون جيدًا بدون الإرادة الحرة. إذا كان الله، الملائكة، والمخلوقات الاخرى في الجنة، كانت لديهم الإرادة الحرة؛ فلن يكون هناك شرٌ أو معاناة. ثم لايمكن أن يكون صحيحًا أن الله سمح للشر بالوجود، لأن هذا هو أثر جانبيّ للإرادة الحرة”

بعد الاكتشافات الحديثة في الفيزياء والكيماء الحيويّة إنهم يقولون أنّ الإرادة الحرة وهم. وأن عقولنا الخياليّة، الوهميّة تتآلف من مجموعة من الأنظمة التي تدور وتتوائم فيما بينها وتولد أفكارنا، وعينا، واختيارتنا وسلوكنا. تلك الأنظمة وتأثيراتهم تنتج من قوانين الفيزياء أو القوانين الطبيعيّة، والتي لا نملك أي سيطرةٍ عليها. الوعي يُقدّم إلينا في وعينا عبر الخلايا العصبية، عقولنا، حواسنا. وعندما نفقد هؤلاء، نفقد الوعيّ. تلك الأنظمة محكومة ويتم التحكم فيها عبر المواد الكيمائيّة، الهرمونات، التاين، النبضات، باختصار: عبر الكيماء الحيويّة. الكيمياء الحيويّة هى نوع من الكيمياء، وعندما ننظر إلى الجزئيات والذرات التي كونت الكيمياء، فإنّهم يتبعون قوانين الفيزياء.

عندما يقولُ المدافع عن الإرادة الحُرة أن “عقولنا” منفصلةٌ عن أجسادنا فإذًا، فإن عقولنا حرةٌ من قوانين السبب والنتيجة. ويجيبون أن هناك مشاكل مفاهيمية مع هذه الفكرة. يجبُ على مُعظم الأفكار أن تتبع قوانين السبب والنتيجة لكي تبدو مُتسقةً. التفكير بشكل عشوائي ليس نابعًا من الإرادة الحُرة أكثر من أفكارك التي تُسيطر عليها الخلايا العصبية. لذلك، فإن عقولنا لا تزال تعمل وفقًا لمنطق السبب والنتيجة، أو، بعبارةٍ أخرى، في دائرةٍ من التفكير ومابعد التفكير. ولكسر هذه السلسلة من السببية يجب كسر تدفق الوعي. إذا كانت الأفكارُ ليست عشوائيةً، فيجب أن تكون هناك عواملُ تؤثر على ما هي الأفكار، وعلى الخيارات التي يتم اتخاذها. ونحن نعلم أن مُعظم هذه العوامل هي عوامل فيزيائيّة محضة – مُثيرات الجنس، الجوع، العواطف التي تُحركها الهرمونات، إلى آخره. فهي لا معنى لها دون أساسٍ مادي. هل هناك حقا أي مساحةٍ للعقل غير المادي؟

يُفسر أحدُ الفلاسفةِ كلَ هذا بطريقةٍ أخرى، إذا جعلنا السفر عبر الزمن مثالًا، وخلقنا مفارقةً أنه إذا كان السفرُ إلى الماضي في الوقت المناسب يُساعدنا على تغير حقائق التاريخ – مهما كانت طفيفةً – فإننا عندما نعود إلى المستقبل ،فإننا لن تكون قادرين على إجراء تلك التغييرات لأنها لن تحدث. وبما أننا لا نستطيع إجراء هذه التغييرات، فهذا يعني أنها ستحدث دائما كما حدثت في السابق. وتَخيّل الآتي: لقد فشلتُ في الحب، أتمنى أن أموتَ، وأكثر من ذلك، أتمنى لو لم أولد أصلًا. وبما أنّي أمتلك آلة الزمن، وبما أنّي أمتلك القدرة على تحقيق هذا، لذلك أسافر إلى الماضي في اللحظة المُناسبة قبل حملي، أعثر على قريبٍ لي مثل جدتي، ثم أقوم بضربها حتى الموت. أنا بذلك لن أجعل نفسي موجودًا أبدًا. إذا نجح عملي، فمن هو هذا الذي يمنع ولادتي؟ لا يمكن أن يكون أنا، لأنه من الواضح أنيّ لم أكن لأكون موجودًا الأن، وبالتالي لم أكن لأكبر وأنمو وأخطو داخل آلة الزمن لمنع ولادتي. لا يُمكن أن يكون أنا. يبدو أن هذا الأمر ينطوي على أشياء أكثر إثارة للقلق. لأنه إذا لم أستطع منع ولادتي، على الرغم من كوني موجودٌ في الوقت المناسب. وهل هذا لا يُوحي بأنني لست مسافرًا في الماضي، عميلًا حرً؟ إذا كان هذا ضمنًا، فإنه يمتد إلى وضعنا العادي، وإلى حالة عدم السفر الزمنيّ. لأنني لست حرًا في تغيير المستقبل

لذا بإمكانك أن ترى أنّه على مر التاريخ هناك مُجادلاتٌ طويلة حول الحتمية والإرادة الحرة. البعضُ يتبع مدرسةُ واحدةُ، و والأخرون يتبعون المدرسة الثانية. الأن الجواب هو أن الواقع يقع بين الإثنين. وهذا يعني أن الإنسان لديه إرادةٌ حرةٌ في كُنه أفعاله. على الرغم من أن إرادته الحرة تسير وفق القدرة الإلهي. لأن الله هو المُسبب النهائي والمُستقل لجميع الأسباب فمن الصحيح أن يتصل كلُ ما هو موجود بالله. وعلى نحوٍ مُشابه، فلأن الله قد منح الإنسانَ الإرادةَ الحرةَ في أفعاله، فمن الصحيح أيضًا ربطُ أعمال الإنسان باختياره.

فعندما سأل رجلٌ أحدَ عباد الله الصالحين قائلًا “ما هو المصير”، قال العبدُ الصالح: “ارفع أحد قدميّك في الهواء”. ففعل الرجل ذلك. وقال: “الأن قم برفع الأخرى”. (بينما كان لا يزال رافعًا الاولي) فأجاب الرجل، “لا أستطيع”. قال “هذا هو الجواب على سؤالك، نصفُه أعطاه لك في يدك، واحتفظ بالنصف الأخر عنده”. وبكلماتٍ أخرى فإنّ الإنسانَ حرٌ في أن يفعل ما يشاء لكنه لا يستطيع أن يفعل ما يشاء، وهذا الإنسان حرٌ في القيام بأي مُهمةٍ يُحبها، ولكن الاختيار/ الوصول وإنجاز هذه المهمة هو أمرٌ خارج سيطرته .

عندما سُئلَ عبدٌ أخر من عباد الله الصالحين هذا السؤال أجاب “ما يُمكنك أن تلوم الإنسان عليه، هو أفعاله ، وما لا يُمكنك إلقاء اللوم عليه فيه ، فهى أفعال الله. الله يلوم الإنسان على السرقة، ارتكاب الزنا إلى أخره. ولهذا فتلك هي أعمال الإنسان. ولكنّ، الله لا يلوم الإنسانَ على ولادته غنيًا، أو لماذا وُلد ولون بشرتِه أسودُ أو قمحيّة. وهكذا، هذه هي أعمال الله. “

يا أيّها الناسُ لا تُلقوا باللوم على قدرِكم. فليس هناك سوى القليل من الأشياء التي قٌدّرت عليكم، والتي ترتبط أساسًا بولادتك، والديّك، والمناخ المُحيط بك بما في ذلك البيئة الاجتماعية والاقتصادية بخصوص منزلك ووطنك.
مُعظم الأشياء في يدك وبإرادتك، وبقليلٍ من الجُهد والنضال يمكنك حتى تغيير قدراتك و مصيرك. ضع في اعتبارك أيضًا أن ربك جين يُحاسبك يوم القيامة سوف يحكم عليك بالنظر في جميع العوامل والظروف المُحيطة بك، ولن يُحاسبك على حساباتك فقط. وقبل كل شيء كما ناقشته بالتفصيل في الجزءالثاني أنّ حياة هذا العالم هو مثل غمضة عين؛ لذا فتلك الفترة الصغيرة من الوجود لا شيء مُقارنةً بالحياة التي تنتظرك في المستقبل.

هذا الكون الذي خلقه الله غامضٌ لدرجة أنّه لا يمكنك فهم الحكمة وراء إنشائه. لقد أتاح اللهُ لك الخيارات والاختيارات التي تطفو على السطح في كل ثانيةٍ، وقد أعطى لك الإرادة الحرة للاختيار من بين هذه الخيارات. إنه عالمٌ، عالمٌ من الاحتمالات. لذلك لا تلم قدرك فقط. العبد يمكن أن يُصبح حاكمًا، والضعيفُ يُمكن أن يُصبح أقوى شخص، والشخص الجاهل يُمكن أن يُصبح أكثر الأشخاص حكمةً. عالمٌ من الاحتمالات حيث يمكن لأي شخصٍ الوصولُ إلى أي مستوى. المسألةُ تتعلق بكم يود الشخص أن يكبر، وكيف يَعمل بدقةٍ على ذلك. فوقَ ذلك رحمةُ ربك الكبيرة، حين وعد الذين لم ينجحوا في الاستفادة من خياراتهم في الدنيا ، وليسوا مُخطئين سيكون لديهم السلام والمتعة والأمن. سيكون لديهم كل ما يرغبونه مهما كانت رغبتهم. ما لا عينٌ رأت، ولا أذنٌ سمعت، ولا خطر على قلب بشر.

إن شاء الله، سوف أكمل هذا الموضوع في البرنامج القادم.

يا أيّها البشر، أنتم دائمون الحيرة وكل جدال الفلاسقة الذي ناقشتة من قبل في الجزء الحادي عشر هو بسبب إعتقادكم أن الله عزّ وجلّ يعلم كل شئ وأن كل شئ مكتوب قبل خلقكم لذا فليس لديكُم الحريّة أو الإرادة، مما يجعل البشر يلومون أقدارهم في كل مصيبة تحدث لهم. يا أيّها البشر هذا الكون هو عالم من الإحتمالات حيث يمكن لأيّ أحد أن يصل لأيّ مستوى. فقد أتاح الله لكم الخيارات ممّا يُظهر دائمًا أن معرفة الله لمستقبلكم لا يتعارض بأيّ شكل مع حريّة تصرّفكم في هذا الكون.

نفس الشئ الذي فعله الشيطان مع سيّدنا آدم ومع الآخرون الذين قُبُضوا متلبّسين بعد خطأهم في تلك الحادثة قي جنات عدن، وبدلًا من قبول غيرته وغروره وخطأه فقد وضع اللوم على القضاء والقدر. في القرآن الكريم، يقول الله عن قصّة سيّدنا آدم أن الشيطان قال: ” قَالَ رَبِّ بِمَا أَغْوَيْتَنِي لَأُزَيِّنَنَّ لَهُمْ فِي الْأَرْضِ وَلَأُغْوِيَنَّهُمْ أَجْمَعِينَ “. فقد ألقى الشيطان اللوم على الله او القدر بينما كان رد فعل سيّدنا آدم مختلف فقد طلب من الله عزّ وجلّ أن يغفر له خطأه.

كما يفعل الشيطان مع الإنس والجنّ، فإلقاء اللوم على القدر وصُنع الله عزّ وجلّ هو نتيجة الشرّ الذي وضعة الشيطان في قلوبنا، لذلك فأنتم تلومون القدر فقط حين تفشلون او حينما تكون الأحداث ضدّك، لكنّكم لا تلومون القدر حينما تكونون في حالٍ جيّد.

لأنّ الله دائمًا ما يقول في كتابه المقدّس: ” وَمَا تَشَاءُونَ إِلَّا أَن يَشَاءَ اللَّهُ رَبُّ الْعَالَمِينَ”. فهذا لا يجب أن يُطبّق في حالة رغبة أحدهم أن يقتل شحص ما! هذا يعني أن الله كتب له أن يكون “قاتل” ولكن لا يعني أنه جعله يقتل ذلك الشخص. هذا فقط لأنّ الله –عزّ وجلّ- أعطى لنا الحريّة المطلقة لنقر بين الخيارات المتاحة، وإذا أردت الهُدى سيهديك ويرشدك الله عزّ وجلّ. كيف يحدث هذا؟ دعنا نتخذ مثالاً آخر كما هو مذكور في الجزء الحادي عشر، أخبرتكم أن الله عزّ وجلّ أتاح لنا الإختيارات التي تظهر في كل ثانية، وجعل لنا حريّة الإختيار بين هذة الإختيارات. اعتبر أنّك جالس في المكتبه أو في منزلك على حاسوبك الشخصي تتجوّل على الإنترنت، الآن وفقًا للوحي وكتاب الله المقدّس، فالخطوة الأولى من المجهود الأول يجب أن تضعها أنت ثم سوف يُعينك الله عزّ وجلّ. الآن، إذا أردت رؤية بعض الأغراض او الكتب او الأفلام، من يمكنه أن يمنعك عن القراءة أو المشاهدة؟ وأنت لديك كامل الحريّة لروية الأشياء الجيّدة أو السيّئة المتاحة. ولكن بعد أخذ القرار أن تستهلك الوقت في بعض الأعمال الجيّدة كالتعليم أو الدين، ستجد أن الله عزّ وجلّ ييسّر لك هذا وقد تجد عبر هذة الأشياء الجيّدة ما قد يغيّر حياتك وطريقة تفكيرك. فالله عزّ وجلّ ييسّر لك الإتجاة التي تريد أن تذهب إليه. هذا هو أساس كل الإختراعات في التّاريخ البشري، فجميع من يناضلون في مجال معيّن يتوصّلون إلى أفكار جديدة في طرفة عين، وهذا لن يحدث أبدًا دون أيّ جهد مبذول من جانبكُم. لذا فإرادة الله والجهد البشري يعملون سويًّا في هذا الكون. نفس المبدأ بالنسبة للأنبياء والصّالحين، فقد نالوا عون الله بعد أن بذلوا جهودهم كلّها. إنقسم البحر الأحمر إلى شقّين عندما كافح موسىٍ وفي الثمانين من العُمر، وأصبح أهل المدينة مسلمين بعد نضال مستمرّ وعندما أصبح عُمره 53 عامًا.

الآن تخيّل أنّك صاحب أعمال ولديك 20 موظّف، وفي يوم أعلنت أنّك ستمنح جوائز مادّيّة إلى 10 موظّفين الّذين يحقّقون مهام وأهداف معيّنة أكثر من غيرهم. الآن وفقًا لمعرفتك الجيّدة بالموظّفين الّذين يعملون معك منذ سنوات قليلة، أكتب في مفكّرتك أسماء من تتوقّع أنّهم سيحصلون على الجائزة، وفي نهاية المهمّة، ستجد أن من حصلوا على الجائزة هم الموظّفين الذي كتبت أسمائهم في مفكّرتك! سأسألك سؤالًا؛ بكتابة تلك الأسماء، هل كنت تُفضّل فوزهم أو تقيّد فرصة فور الآخرين؟ ولكن في الواقع اولئك الّذي كتبت أسمائهم هم الموظّفين الّذين يفعلون الأشياء الصحيحة ويعملون جيّدًا ويبذلون الكثير من المجهود بإخلاص في جميع الأحوال سواء كنت تعطي حافز الجائزة أو لا، بينما الآخرون لا يفعلون أيّ شئ يستحقّ ذلك، بغضّ النظر عن أنّك كتبت أسمائهم أم لا.

مثال آخر، الآن أعتبر أن صديقك حصل على “آلة الزمن” وذهب إلى مستقبلك ورأى حياتك حتّى النهاية ثم عاد وكتب كتابًا عنك. الآن، هل هذا يعني أنّه قيّد حريّتك وأجبرك على فعل الأفعال التي كتبها في الكتاب؟

أعلم أن هذة المقارنات لديها نقائص عديدة، لأن الله هو العليم القدير ولا يعلم مستقبلك فقط، ولكنّ أيضًا هو المهيمن على إرادتك لأنه هو الذي خلقك وكل قدراتك هي في الواقع هبة من الله عزّ وجلّ وهذه هي القيود الحقيقيّة وبالتالي فإن الجميع سيحاسب على ما اُعطي له، ليس أكثر من هذا. الشخص المسئول عن منزل صغير لن يكون مسؤولًا عن القضايا والمخالفات والظلم والفساد الموجود في المدينة بأكملها، لذلك فهي مسألة خطيرة وعبء ثقيل إذا حصل أحدهم على منصب في المجتمع، فالسلطة تجلب المسئوليّات.

إن معرفة الله عزّ وجلّ تختلف عن معرفة الخَلق، لأنّ معرفة الله لم يسبقها الجهل، فلم يكن لا يعلم ثم تعلّم، ولا يتبعهُ النسيان مما يجعله الآن يعرف ولكن في المستقبل قد تتعثّر ذاكرته.

خلق الله تصرفات الناس. هم ينسبون إلى الله كما خلقهم وضعهم في الوجود. ليس أن الله خلق أعمال الخير والشر هو أنه جعل وجودها ممكنًا ولكن البشر كسبوا العمل. لا ينسب الشر إلى الله. الشر نسبيّ ، على سبيل المثال ، سم الثعبان هو شرّ للبشر ، لكن شيئًا جيدًا بالنسبة إلى الثعابين والأسنان ومخالب النمر ، لديه شرٌّ لحيواناتٍ أخرى ، ولكنه يباركه ، ولقرن الثور شريرٌ للآخر ، لكنه جيد للدفاع عنه. وكما في الكتاب الأخير ، يقول الله: “قل ، أعوذ بالرب من الفجر الذي خلقه ومن شر الظلم عندما يستقر”. هنا يقول الله أن يلجأ إلى شر ذلك الخلق (الخلق) الذي خلقه ولا يقوله عن الشر الذي خلقه. لذا فإن الخلق ، والأحداث ، والجوانب ، موجودة لديهم شر فيهم ، لكنهم لا يخلقون شرًا خالصًا. حتى الشيطان الذي خلقه الله ليس شرًا خالصًا أو مخلوقًا لغرض الشر. هو مثل منتج من ابتكار كما تحصل من المصانع الخاصة بك أثناء تصنيع شيء جيد. والغرض منه هو جعل هذا الكون تجربة بدون شيطان كيف نحصل على المكافأة كما لو لم يكن هناك فكر سلبي ووجود جيد فقط من عدم وجود أي غرض لخلق هذا الكون إذا كان الله قد نصح بأن الجميع يجب أن يكونوا جيدين وتقيدين ويطيعون لم يكن ليخلقك ، مثل تلك الكائنات التي معه ما يكفي لمدحه وتمجيده الصباح والمساء.

يا أيّها النّاس؛ مسئوليّتنا هي أن نناضل ونبذل قصارى مجهودنا ثم نصلّي ونسأل الله العون. نحن فقط مسئولون عن المجهود لا عن النتائج، اترك النتائج على الله، إذا نجحت فهذا جيّد وحتّى لو لم يكن هناك نجاح في الدنيا، فسيكون النجاح في الآخره. خاصًّة كلّما كان النضال من أجل الله، من أجل قضيّة أكبر، من أجل الإنسانيّة، فتذكّر دائمًا أن النجاح ليس معيارًا. مثل يسوع فهو واحد من أنبياء الله ولكنه لم ينجح في العالم، بينما يوجد بعض من عباد الله ناجحين للغاية في هذا العالم في مهامهم. لا يهمّ إذا ما كان يشاهد هذا البرنامج 4000 شخص او 4000 مليون، إذا أراد الله سيأت الوقت الذي يحدث فيه هذا. كما ذُكر في القرآن الكريم، أودّ أن أحيا بهذة الطريقة ولتأكيد هذا: ” قُلْ إِنَّ صَلَاتِي وَنُسُكِي وَمَحْيَايَ وَمَمَاتِي لِلَّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ، لَا شَرِيكَ لَهُ ۖ وَبِذَٰلِكَ أُمِرْتُ وَأَنَا أَوَّلُ الْمُسْلِمِينَ”.

فإذا أراد الله، سوف أستمرّ. ختام هذا الموضوع في الحلقة القادمة.

يا أيّها النّاس؛ إن الله لا يعاقبكم على ذنوبكم الأولى بل يعطيكم فرصة للتوبة. في الواقع ليس الذنب او الظلم هو الفساد في عين ربّكم، بل تكرار هذة الأخطاء مرّة أخرى، فعدم التوبة وعدم الإحساس بالأخطاء هو الفساد.
إنّ العالم مليئٌ بالإحتمالات حيث يمكن لأيّ شخص أن يصل لأيّ مستوى. فقد أتاح الله لنا الإختيارات التي تظهر في كل ثانية وترك لنا حريّة الإختيار بين تلك الخيارات، فلا يوجد حدود. إذا كنت رجل فقير او حتّى عبد فقد يمكنك أن تصبح ملكٌ وحاكم. إذا شعرتُم بالبؤس وشعرتُم أنّكم في حلقة مغلقة حيث لا طريق للخروج، افعلوا شئ واحد فقط؛ ابدأوا بإختيار أفضل الخيارات أخلاقيًّا ولا تنظروا ولو لثانية للخيارات التي تعتبرونها جيّدة لمجرّد أنّها تحقّق أهدافكم ولكنّها غير سويّة أخلاقيًّا. فقد جعل الله-عزّ وجلّ- الكون مثل ذلك؛ إذا إخترتم إختيار غير أخلاقيّ سوف يعاقبكم حينما تستمرّون على فعله، وإذا إخترتم إختيار أخلاقيّ سيأخذكم بعيدًا عن البؤس والدائرة المغلقه وسيمدُّكم بالسرور والبركة التي لا يمكنكم تخيّلها.

لفهم هذا أكثر سأعطي لكم مثال: تخيّل أنّك تجلس مع زوجتك وبما أنّك تملك الحرّيّة والإرادة والإختيارات طوال الوقت، قمت بإستغلال هذا في تحريك يديك ثم اصطدمت بعين زوجتك وتسببت في وجعها. الآن وبمجرّد حدوث هذا يوجد مجموعة من الخيارات المتاحة أمامك؛ إمّا تتقبّل خطأك وتعتذر لها أو أن تخبرها أنه خطأها فلماذا وضعت وجهها قريبًا من يديك؟ أو أن تصبح غير منطقي أكثر وتتصرّف بغضب من الآن وصاعدًا. إذا أخترت الخيار الأوّل؛ فسيعطي هذا إنطباعًا جيّدًا عنك في عقل زوجتك، ولكن إذا إخترت الخيار الثاني أو الثالث ففي الغالب ستنفعل زوجتك وتبدأ في الجدال معك وقد تخبرك أنّك شخص فظّ وينتهي بك الأمر في الإساءة لها. بغضّ النظر عن هذا ومجرّد فهم المبدأ او هذا المثال، قد تطلب منها مغادرة المنزل، فتبدأ في البكاء. الآن المزيد من الخيارات تظهر أمامك، إمّا أن تتفهّم خطأك وتعتذر أو أن تبقى عنيدًا مصرًّا على تكرار خطأك. إذا إخترت الخيار الأوّل سينتهي الخلاف على هذا النحو، وإذا إخترت الخيار الثاني الغير أخلاقي مرّة أخرى قد تظهر لك خلافات جديدة. ستغادر الزوجة المنزل وقد ينتهي هذا بالطلاق. مرّة أخرى هناك المزيد من الخيارات ولكن إذا أصررت على الخيار الخاطئ سينتهي الأمر بالطلاق. الآن لديك عالم مختلف تمامًا أمام عينيك تكون فيه وحيدًا في ألم شديد وتشعر بالذنب من داخلك. إذن سيكون هذا العقاب، وكذلك في الآخرة. يمكن أن ترى بوضوح أنّك لم تُعاقب على الخطأ ولكنّك عوقبت على تكراره. هذا المثال يُمكن أن يؤخذ في كلا الحالتين، فقد تكون المرأة هي المُعتدي. ففي هذة الأيّام ترتكب النساء الكثير من الأخطاء.

لجعل الأمر بسيطًا بالنسبة لكم‘ فقد أطلقت عليها: “نظريّة الخيارات”. وهي ليست نظريّة بل هي قانون يحكم هذا الكون، ولاحقًا في البرامج القادمة؛ سأعطيكم الأدلّة والبراهين من القرآن الكريم التي كان يساء فهمها تمامًا.

إنّ هذا الكون الذي خلقه الله –عزّ وجلّ- مليئٌ بالغموض حيث لا يمكنك معرفة الحكمة وراء خَلْقَهُ. قد أتاح الله الإختيارات التي تظهر في كل ثانية وأعطاك حريّة الإختيار بينهما. إنّه عالمٌ من الإحتمالات، لذلك لا تلوم قدرك فقط، فالعبد قد يصبح حاكم والضعيف قد يصبح الأقوى، والجاهل قد يصبح الأكثر حكمةً وعلمًا. عالمٌ من الإحتمالات حيثُ يمكن لأيّ شخص أن يصل إلى أيّ مستوى. فهذا يعتمد فقط على مدى تفكير الشخص ومدى تصرّفه حيال هذا. وفوق ذلك؛ رحمة واسعة من ربّك هي وعد الآخرة فالذين لم يستغلوا خياراتهم بنجاح في الدنيا ليسوا مخطئين وسيكون لهم السّعادة والسّلام، وسيكون لهم كل ما يطلبونة وما ترغب بهم أرواحهم. (مَا لَا عَيْنٌ رَأَتْ وَلَا أُذُنٌ سَمِعَتْ وَلَا خَطَرَ عَلَى قَلْبِ بَشَرٍ).

عَجَبًا لِأَمْرِ الْمُؤْمِنِ إِنَّ أَمْرَهُ كُلَّهُ خَيْرٌ وَلَيْسَ ذَاكَ لِأَحَدٍ إِلَّا لِلْمُؤْمِنِ إِنْ أَصَابَتْهُ سَرَّاءُ شَكَرَ فَكَانَ خَيْرًا لَهُ وَإِنْ أَصَابَتْهُ ضَرَّاءُ صَبَرَ فَكَانَ خَيْرًا لَهُ”..

يا أيّها النّاس؛ أنتم لستم في هذا العالم عاجزين تجاه مصير قاس لا يتغيّر. معظم الأشياء بين أيديكم وبالمزيد من الجهد والنضال يمكنكم تغيير قدراتكم وحتّى أقداركُم. إنّ مهمّتنا هي أن نفعل ما بوسعنا ونجتهد ثم نصلي ونسأل الله العون، فنحن فقط مسئولون عن الكفاح لا عن النتائج، دَع النتائج إلى الله. إنّكم أحرار في هذا العالم، لديكم الحريّة لرسم وزرع ونشر وتنمية ما تريدوا أن ترسموه وتزرعوه في هذة اللوحة وهذة التربة من خيارات العالم. خلافة الله، حياه أبديّة من السّلام والسّعادة أم البؤس الخالد مهما كانت النتيجة التي تريدونها، إن كل شئ بين أيديكم. كما أخبرتكم أن هديّة الإختيارات من الله تظهر لكم في كل لحظة والطريقة لإستغلال هذة الإختيارات هي أن كل شيئ متاح ومتوفّر لك وعليك أن تبدأ فقط. يا أيّها النّاس؛ هناك مجال للكثير من الإحتمالات والكثير من المسارات والكثير من الأقدار والكثير من العوالم بالنسبة لك، ولكن المهم هو الخيارات التي تختارها في كل ثانية حينما تظهر لك في لحظات مختلفه. الخيارات التي تختارها ستقودك إلى هذا النوع من الأقدار. إذا كنت تشعر بالبؤس وبأنك داخل دائرة مغلقه حيث لا طريق للخروج، فقط قم بخطوتين؛ أوّلًا: أدع ربّك أن يرزقك بقضاء آخر حيث لا نهاية لأقدار الله فهي ممزوجة بالفعل في نسيج هذا الكون، وبعد الدّعاء قم بشئ واحد، في كل مرّة لحظة إختر الخيارات السويّة أخلاقيًّا، إذا فعلت هذا وبدأت بتغيير نفسك، ستجد أن مصيرك بدأ يتغيّر.

As pessoas perguntam se existe um livre arbítrio para nós ou se tudo já está determinado. Este é um antigo debate em ciência e filosofia. Filósofos estendem esta questão até Deus, que Deus não pode ter livre arbítrio. Um deus benevolente sempre escolhe o caminho que causa mais bem, portanto, não tem escolha real. Também porque um Deus que tudo conhece instantaneamente conhece todas as suas ações futuras e seu conhecimento não pode estar errado, portanto, não tem livre arbítrio para escolher o contrário. No entanto, um deus sem livre arbítrio não pode ser um ser moral; deve ser moralmente neutro. Além disso, se um Deus todo poderoso e todo conhecedor existe, então isto por uma longa cadeia de causa e efeito nega qualquer livre arbítrio de qualquer ser vivo. Nossos sentimentos derivam de nossa personalidade e caráter, e nossas escolhas são influenciadas pelas coisas que aprendemos na vida: Deus tem o poder de mudar qualquer uma das circunstâncias que formam nossa personalidade e caráter, e as coisas que aprendemos na vida são puramente para baixo. para a providência de Deus, ou para uma longa cadeia de causa e efeito que começou com Deus e nenhum outro. Eles ainda dizem que o livre arbítrio de Deus é importante para resolver o problema do mal. Se Deus tem livre-arbítrio, mas nunca escolhe o mal, então poderia ter criado a vida da mesma maneira: com livre-arbítrio, mas nunca escolhendo o mal. Se Deus não tem livre-arbítrio, mas ainda é bom, então não há sentido em criar o mal para conceder aos humanos o livre-arbítrio, pois é possível ser bom sem o livre-arbítrio. Se Deus, anjos e outros seres no céu têm livre arbítrio onde não há mal ou sofrimento, então não pode ser verdade que Deus permite que o mal exista porque é um efeito colateral requerido do livre arbítrio. ”

Após as descobertas modernas em física e bioquímica, eles dizem que o livre arbítrio é uma ilusão. Nossos cérebros incrivelmente maravilhosos e complexos são compostos de vários sistemas cognitivos que circulam entre si e geram nossos pensamentos, consciência, escolhas e comportamento. Todos esses sistemas e seus efeitos resultam das leis mecânicas e inorgânicas da física, sobre as quais não temos controle. A consciência nos é apresentada como resultado de nossos neurônios, nossos cérebros, nossos sentidos. Quando perdemos isso, perdemos a consciência. Esses sistemas são governados e controlados por substâncias químicas neurais, hormônios, ionização, impulsos: em suma, por bioquímica. A bioquímica, por sua vez, é apenas um tipo de química, e quando olhamos para as moléculas e átomos que compõem nossa química, eles obedecem às leis da física.

Quando o defensor do livre arbítrio diz que nossas “mentes” estão separadas de nossos corpos por causa disso, nossas mentes estão, portanto, livres de causa e efeito. Eles respondem que existem problemas conceituais com essa ideia. A maior parte do pensamento deve seguir causa e efeito para ser coerente. Pensar aleatoriamente não é mais livre-arbítrio do que ter seus pensamentos controlados por neurônios. Assim, nossas mentes ainda devem seguir linhas de causa e efeito lógicos, ou, em outras palavras, em um ciclo de pensamento e depois de pensamento. Quebrar essa cadeia de causalidade é quebrar o próprio fluxo da consciência. Se os pensamentos não são aleatórios, deve haver fatores que influenciam o que os pensamentos são pensados ​​e quais escolhas são feitas. Sabemos que a maioria desses fatores são impulsos sexuais puramente físicos, fome, emoções induzidas por hormônios e coisas do tipo. Eles fazem pouco sentido sem uma base física. Existe realmente algum espaço para uma mente não-física?

Um filósofo explica tudo isso de outra maneira, levando em conta as viagens no tempo e criando um paradoxo que, quando viajando de volta no tempo, mudamos os fatos da história, por menores que sejam no futuro, quando voltarmos, não conseguiremos fazer isso. muda porque eles não terão ocorrido. Como não podemos fazer essas mudanças, isso significa que elas sempre ocorrerão como originalmente. Ele imaginou o seguinte:
“Desapontado no amor, eu me desejo morto. Mais do que isso, gostaria que nunca tivesse vivido. Dado que tenho uma máquina do tempo, estou em condições de fazer isso. Então eu viajo de volta para um momento distantemente adequado antes da minha concepção, encontro um parente relevante, por exemplo meu avô, e os atordoo. Assim, faço com que eu nunca tenha sido concebido. Se minha ação é bem sucedida, quem é que impede minha concepção? Não pode ser eu, pois agora é aparentemente verdade que eu nunca fui concebido e, portanto, nunca cresci para entrar em uma máquina do tempo para impedir minha concepção. Não posso, então, impedir minha concepção. Isso por si só pode parecer ter implicações mais preocupantes. Pois se não posso evitar minha própria concepção, apesar de estar presente no momento certo. Isso não sugere que eu não seja, como um viajante no passado, um agente livre? Se isso é uma implicação, então ele se estende à nossa situação normal de não viajar no tempo. Porque também não estou livre para mudar o futuro.

Então você pode ver que ao longo da história há longos debates sobre determinismo e livre arbítrio. Alguns seguem uma escola de pensamento outros seguem a segunda. Agora a resposta é que a realidade está no meio. Isso significa que o homem tem livre arbítrio em relação às suas ações. Embora seu livre arbítrio seja por decreto divino. Porque Deus é a causa última e independente de todas as causas, é correto relacionar tudo o que existe a Deus. Da mesma forma, porque Deus concedeu ao homem livre arbítrio em suas ações, também é correto relacionar as ações do homem com a sua própria escolha.

Quando um escravo escolhido de Deus foi perguntado por um homem “O que é o destino?”, Ele disse: “Levante o seu pé no ar”. o homem fez isso. ele do que disse: “Agora levante o outro”. (enquanto estava na mesma posição) o homem respondeu: “Eu não posso” ele disse, “Esta é a resposta à sua pergunta. Metade dela Deus deu a você em sua mão, e o resto Ele guardou para Si mesmo.” em outras palavras, o homem é livre para querer o que quer, mas não pode querer o que quer, ou seja, o homem é livre para fazer uma tarefa de qualquer maneira que quiser, mas escolher / alcançar e encontrar esse emprego está além de seu controle. .

Quando outro escravo escolhido de Deus fez esta pergunta, ele respondeu: “Seja o que for que você possa culpar o homem por isso, é sua ação e tudo o que você não pode culpá-lo por isso, é o ato de Deus. Deus culpa o homem por roubar, cometer adultério, etc. Assim, esses são os atos do homem. No entanto, Deus não culpa o homem porque ele não nasceu rico ou porque sua cor de pele é negra ou justa. Assim, estes são os atos de Deus ”.

Ó povo, portanto, não culpe seu destino. Na verdade, são apenas algumas das coisas que são determinadas, principalmente relacionadas ao seu nascimento, pais e toda aquela atmosfera relacionada aos seus pais, incluindo o ambiente econômico-social de sua casa e país. A maioria das coisas está em suas mãos e com esforço e esforço você pode até mesmo mudar suas capacidades, capacidades e finalmente seu destino. Também tenha em mente que o seu Senhor é tão justo que, em qualquer caso, no futuro, Ele irá julgá-lo depois de considerar todos os fatores ao seu redor e não irá recompensá-lo ou puni-lo apenas em suas contas. E acima de tudo, como discuti em detalhes na parte 2, a vida deste mundo é como um piscar de olhos, então esse pequeno período de aflição não é nada comparado à vida que está esperando por você à frente.

Este universo que Ele criou é tão misterioso que você não pode compreender toda a sabedoria por trás de sua criação. Deus fez para você escolhas e opções que surgem a cada segundo e Ele lhe deu livre arbítrio para escolher entre essas opções. É um mundo, um universo de possibilidades. Então não culpe seu destino apenas. Um escravo pode se tornar um governante, um fraco pode se tornar a pessoa mais forte, um ignorante pode se tornar o mais sábio. Um mundo de possibilidades onde qualquer um pode alcançar qualquer nível. É apenas uma questão de quão grande uma pessoa pensa e com que precisão age sobre isso. E acima disso, uma imensa misericórdia de seu Senhor é a promessa do futuro, para que aqueles que não conseguiram utilizar com sucesso suas opções aqui e não sejam malfeitores, tenham paz e prazer. Eles terão lá o que eles pedirem e o que sua alma desejar. O que nenhum olho viu, nenhum ouvido ouviu, nem o coração de qualquer homem imaginado.

Se meu Senhor quiser, continuarei este tópico no próximo programa.

Ó homem, você sempre fica confuso e todos esses debates de filósofos que eu discuti na parte 11 são porque você pensa que, como Deus sabe tudo e já está escrito, você não tem livre arbítrio. Portanto, a maioria das pessoas culpa seu destino por todos os percalços que enfrentam em suas vidas. Ó povo esse universo é um universo de possibilidades onde qualquer um pode chegar a qualquer nível. Deus fez para você escolhas e opções que surgem a cada segundo e a capacidade de Deus de conhecer o seu futuro não o limita de forma alguma a agir como um agente livre neste universo.

A mesma coisa que o diabo fez quando Adão e todos os outros foram apanhados em flagrante após seu erro no clímax daquele episódio no Éden. Em vez de aceitar seu ciúme, arrogância e erro, ele colocou a culpa no destino. Na Última Escritura, Deus conta na história de Adão que o diabo disse: “Meu Senhor, porque você me colocou em erro, eu certamente tornarei a desobediência atraente para eles na terra, e eu irei enganar a todos eles. Então o diabo colocou toda a sua culpa em Deus ou o destino enquanto a reação de Adams era oposta e ele se arrependeu e pediu perdão por seu erro.

Como o diabo está conosco todos os seres humanos e Jinns, então sempre que culpamos o destino e o ato de Deus é por causa dessa sugestão maligna que o diabo colocou em nosso coração. Então você culpa o destino somente quando você falha ou os eventos vão contra você. Você nunca culpa o destino quando fica bom.

Agora, porque Deus sempre diz em suas escrituras, como na última escritura, Deus disse: “E você não quer, exceto que Deus quer o Senhor dos mundos”. Isso não deve ser confundido por exemplo com o caso de uma pessoa matar alguém. Agora Deus escreveu para ele que ele seria um assassino, mas isso não significa que Ele o fez matar essa pessoa. É só que Deus, por Sua vontade, nos deu a liberdade de decidir entre as nossas opções e escolhê-las. Se você quer orientação, Ele o guiará. Como isso acontece, vamos considerar outro exemplo, como na Parte 11, eu lhe disse que Deus fez para você escolhas e opções que surgem a cada segundo e Ele lhe deu livre arbítrio para escolher entre essas opções. Considere que você está sentado em uma biblioteca ou em sua casa com seu laptop e navegando na internet. Agora, de acordo com as revelações e escrituras de Deus, a primeira parte do esforço que você tem que colocar e que Deus irá ajudá-lo Agora, se você decidir ler ou ver algumas coisas, reserve alguns vídeos, que podem forçá-lo a não ler ou assistir a isso. E você também tem total liberdade para ver coisas boas ou coisas ruins disponíveis. Mas depois de exercitar sua opção e decidir consumir esse tempo em algum bom trabalho relacionado à sua educação ou à sua religião, Deus o facilita nisso e você pode se deparar com coisas muito boas que mais tarde possam mudar sua maneira de pensar e até mesmo sua vida. . Deus facilita você em qualquer direção que você queira ir. Esta é a base de todas as invenções na história da humanidade, todas as pessoas que estão lutando em algum campo tem novas idéias apenas como um piscar de olhos. Isso nunca aconteceria sem colocar nenhum esforço de sua parte. Então é realmente a vontade de Deus e o esforço humano que trabalham juntos neste seu universo. O mesmo princípio é para os profetas e justos. Eles conseguiram a ajuda de Deus depois que eles fizeram todo o esforço. Mar Vermelho se separou quando Moisés lutou e tinha 80 anos de idade. Madina tornou-se estado islâmico após a luta contínua de décadas e quando Maomé tinha 53 anos de idade.

Agora, considere que você é proprietário de uma empresa e tem 20 funcionários. Um dia você anuncia que dará um prêmio em dinheiro àquelas 10 pessoas que realizam determinadas tarefas e metas mais do que outras. Agora que você tem esses funcionários com você há alguns anos e conhece todos eles muito bem, você escreve em seu bloco de anotações o nome dos dez que ganharão esse prêmio. E no final da tarefa acontece que eles são exatamente os mesmos que você já escreveu no seu bloco de notas. Eu lhe faço uma pergunta que, ao escrever isso, de alguma forma você os favoreceu a ganhar ou restringir as chances de outros. Mas, na verdade, aqueles cujos nomes você já escreveu como vencedores são os empregados que fazem as coisas certas, o trabalho duro e o esforço sincero de qualquer forma, se você der o incentivo do prêmio ou não. Enquanto os outros são aqueles que realmente não fazem nada para merecer que, independentemente de você escrever seus nomes ou não.

Outro exemplo agora considera que um dos seus amigos recebe uma máquina do tempo, ele vai no futuro e olha toda a sua vida até o final, em seguida, volta e escreve um livro sobre você. Agora, isso significa que ele restringiu seu livre-arbítrio e o forçou a fazer as ações que ele escreveu no livro.

Eu sei que essas analogias têm muitas deficiências, pois Deus é onisciente e onipotente e Ele não apenas conhece o seu futuro, mas também domina a sua vontade como ele criou e todas as habilidades que você tem são realmente concedidas por Ele. E estas são as limitações reais e, portanto, todos serão contabilizados apenas o tanto que lhe foi concedido, não mais do que isso. Uma pessoa responsável por uma pequena casa não será responsabilizada pelos assuntos, erros, injustiça e corrupção ocorridos na cidade. É por isso que é um assunto sério e um grande fardo se alguém tem uma posição na sociedade, com autoridade, e vem as responsabilidades.

O conhecimento de Deus é diferente do conhecimento de sua criação, pois não é precedido pela ignorância, não que Deus não soubesse e, em seguida, ele aprendeu, nem é seguido por esquecimento que ele agora sabe, mas no futuro pode escapar de sua memória.

Deus criou as ações das pessoas. Eles são atribuídos a Deus como Ele os criou e os colocam em existência. Não é que Deus criou boas e más ações é que Ele fez a sua existência possível, mas os seres humanos ganharam a ação. O mal não é atribuído a Deus. O mal é relativo, por exemplo, veneno de cobra é um mal para os seres humanos, mas uma coisa boa para cobra, dentes e garras de tigre tem mal para outros animais, mas bênção para ele, chifres de touro têm mal para outro, mas bom para sua defesa. Assim como na Última Escritura, Deus diz: “Diga, eu busco refúgio no Senhor do alvorecer Do mal do que Ele criou E do mal das trevas quando se instala”. Aqui Deus diz procurar refúgio do mal daquela (criação) que ele criou e não dizendo do mal do qual Ele criou. Então criação, eventos, aspectos existem que têm mal neles mas eles não são criados como puro mal. Mesmo o Diabo que Deus criou não é puro Mal ou criado para o propósito do mal. É como um subproduto da criação que você obtém de suas fábricas durante a fabricação de algo bom. E o seu propósito é fazer deste universo uma provação sem o diabo como seremos recompensados ​​como se não houvesse pensamento negativo e só existisse o bem do que não há propósito de criar este universo Se Deus quisesse que tudo fosse bom e piedoso e obedecesse Ele não teria criado você, como aqueles seres que estão com Ele o suficiente para louvá-lo e glorificá-lo de manhã e à noite.

Ó povo, nossa responsabilidade é lutar para nos esforçar e orar e pedir a ajuda de Deus. Somos apenas responsáveis ​​pelo esforço não pelos resultados, deixamos resultados em Deus, como se conseguissem bons resultados. E mesmo se nenhum resultado e sucesso aqui você será bem sucedido no futuro. Especialmente Sempre que você luta pela causa de Deus, por algum objetivo maior, acima de si para o bem da humanidade, lembre-se que o sucesso não é um critério. Como Jesus é um dos maiores profetas de Deus, mas aparentemente falhou no mundo. Enquanto existem alguns escravos do seu Senhor que foram extremamente bem sucedidos neste mundo em suas missões. Não importa se 4000 estão assistindo este programa ou 4000 milhões. Se Deus Quer, então chegará o tempo em que Ele entrará em efeito. Como mencionado na última escritura, quero viver minha vida assim e proclamar isso. “Realmente minha oração, meus ritos, meus rituais, meu trabalho, minha vida e minha morte são para Deus, Senhor dos mundos. Ele não tem parceiro; com isto eu fui comandado. E eu sou o primeiro daqueles que se renderam a ele.

Se meu Senhor quiser, continuarei e terminarei esse assunto no próximo programa.

Ó humanidade, seu Senhor não pune as pessoas pelos seus primeiros pecados. Ele lhes dá chance de se arrepender. Não é realmente o pecado, a injustiça ou injustiça que é ruim aos olhos do seu Senhor, mas é a sua repetição. Repetir um ato errado de novo e de novo, não se arrepender e não sentir errado é o que é ruim. Ó povo é um mundo, um universo de possibilidades onde qualquer um pode chegar a qualquer nível. Deus fez para você escolhas e opções que surgem a cada segundo e Ele lhe deu livre arbítrio para escolher entre essas opções. Não há limite. Se você é uma pessoa pobre ou até mesmo um escravo, você pode se tornar um rei um governante. Ó pessoas, se você está se sentindo infeliz e se sente em um ciclo vicioso de onde não há saída, apenas comece a fazer uma coisa só. Comece a escolher a cada momento as opções que são melhores em termos de moralidade. Não pense nem por um segundo naquelas opções que você acha que são boas para alcançar seu objetivo, mas que tem algo moralmente errado nelas. Seu Senhor fez este Universo assim. Se você escolher opções moralmente erradas, Ele só irá puni-lo quando você continuar fazendo sua repetição e se você escolher as opções certas. Ele logo o tirará da miséria e do ciclo vicioso e enviará Suas bênçãos de onde você não teria imaginado.

Para entender mais, dou-lhe um exemplo, considere que você está sentado com sua esposa e como você tem livre arbítrio e opções o tempo todo. Você utiliza a opção de mover a mão e acontece que ela toca o olho da sua esposa e a magoa. Agora, assim que acontecer, outro conjunto de opções e escolhas se abrirá para você, ou admitirá seu erro e lhe pedirá desculpas ou outra opção para dizer que foi culpa dela por que ela aproximou seu rosto ou se tornou mais irracional e reaja com raiva, e assim por diante. Se você escolher a primeira opção, a questão se encerra como tal, com uma boa impressão sua em sua mente e outra questão começa simultaneamente. Mas se você selecionar a segunda ou terceira opção, o próximo resultado provavelmente será que ela vai reagir e pode começar a discutir com você dizendo que você é uma pessoa mal-educada e acaba abusando dela. Mantendo-o curto e apenas para entender o conceito e este exemplo, você pode pedir a ela que deixe sua casa. Ela começa a chorar e a chorar. Agora, um conjunto de outras opções e escolhas se abre para você, agora você percebe seu erro e pede desculpas ou permanece teimoso e continua repetindo a coisa errada. Se você escolher a primeira opção, o assunto é encerrado e outras questões começam simultaneamente. Mas se você selecionar a segunda opção que é novamente uma opção moralmente errada, um novo cenário surgirá dela. Ela sai de casa e pode ser que o assunto acabe em divórcio. Mais uma vez muitas opções para você, mas se você continuar escolhendo o errado vai acabar em divórcio. Então veja que você tem um mundo totalmente diferente na frente dos seus olhos, no qual você está com uma dor profunda e solitária e tem uma sensação de culpa em seu coração. Então você teria um castigo aqui e assim como no futuro. Você pode ver claramente que você não foi punido pelo ato errado, mas por sua repetição. Este exemplo pode ser tomado em ambos os sentidos com a esposa como agressora. Hoje em dia as mulheres também fazem muito mal.

Para simplificar, chamei de “Teoria das Opções”. E não é uma teoria, é uma lei que rege este seu universo e, mais tarde, nos próximos programas, eu lhe darei provas e contra as escrituras sagradas que, na verdade, você entendeu mal.

Este universo que Ele criou é tão misterioso que você não pode compreender toda a sabedoria por trás de sua criação. Deus fez para você escolhas e opções que surgem a cada segundo e Ele lhe deu livre arbítrio para escolher entre essas opções. É um mundo, um universo de possibilidades. Então não culpe seu destino apenas. Um escravo pode se tornar um governante, um fraco pode se tornar a pessoa mais forte, um ignorante pode se tornar o mais sábio. Um mundo de possibilidades onde qualquer um pode alcançar qualquer nível. É apenas uma questão de quão grande uma pessoa pensa e com que precisão age sobre isso. E acima disso, uma imensa misericórdia do seu Senhor é a promessa do futuro, para que aqueles que não utilizaram com sucesso suas opções aqui e não sejam malfeitores, tenham paz e prazer. Eles terão lá o que eles pedirem e o que sua alma desejar. O que nenhum olho viu, nenhum ouvido ouviu, nem o coração de qualquer homem imaginado.

Os assuntos de um crente são estranhos que não há decreto divino sobre ele, mas eventualmente será para o seu benefício. ”Se ele recebe alguma bênção, ele agradece a Deus e, portanto, há bem para ele, e se ele for prejudicado, então ele mostra paciência e, portanto, é bom para ele.

Ó povo, você não está aqui neste universo desamparado diante de um destino imutável, cruel e determinado. A maioria das coisas está em sua mão e com esforço e luta você pode até mesmo mudar suas capacidades, capacidades e até mesmo seu destino. Ó povo, nossa responsabilidade é lutar para nos esforçar e orar e pedir a ajuda de Deus. Somos apenas responsáveis ​​pelo esforço não pelos resultados, deixamos resultados em Deus. Ó povo você é na verdade um agente livre neste universo tendo a sua própria escolha para desenhar, semear, propagar e cultivar o que você gosta de desenhar e crescer nesta tela neste solo de oportunidades universais. A vice-regência divina, a vida eterna de paz e prazer ou o desespero eterno, qualquer que seja o resultado que você goste, está em suas mãos. Como eu lhe falei sobre o dom de opções de seu Senhor surgindo para você a cada momento e a maneira de utilizá-las, assim tudo é realmente possível para você, desde que você tenha vontade e tome uma iniciativa. Ó humanidade há espaço para muitas possibilidades, muitos caminhos, muitos destinos e muitos mundos para você. O que importa é apenas as opções que você escolhe a cada segundo quando aparecem com os momentos de mudança. As opções que você escolher levarão a esse tipo de destino. Se você está se sentindo miserável e se sente em um ciclo vicioso de onde não há saída, então faça apenas duas coisas primeiro, ore a seu Senhor por outro destino, pois não há limite de destino com seu Senhor já tecido no tecido deste cosmo. Esse seu universo então, depois de orar, começar a fazer uma coisa só, a cada momento, escolha opções moralmente corretas sempre que surgirem. Se você fizer isso e mudar a si mesmo, o seu destino mudará.

La gente pregunta si hay libertad para nosotros o si todo está determinado. Este es un viejo debate en ciencia y filosofía. Los filósofos extienden esta cuestión hasta Dios que Dios no puede tener libre albedrío. Un dios benévolo siempre elige el camino que causa más bien, por lo tanto, no tiene una opción real. También porque un Dios que todo lo sabe conoce al instante todas sus acciones futuras y su conocimiento no puede estar equivocado, por lo tanto, no tiene libre albedrío para elegir lo contrario. Sin embargo, un dios sin libre albedrío no puede ser un ser moral; debe ser moralmente neutral. Además, si existe un todopoderoso y omnisciente Dios, esto por una larga cadena de causa y efecto niega la libre voluntad de cualquier ser viviente. Nuestros sentimientos derivan de nuestra personalidad y carácter, y nuestras elecciones están influenciadas por las cosas que hemos aprendido en la vida: Dios tiene el poder de cambiar cualquiera de las circunstancias que forman nuestra personalidad y carácter, y las cosas que aprendemos en la vida son puramente a la providencia de Dios, o, a una larga cadena de causa y efecto que comenzó con Dios y no con otros. Dicen además que el libre albedrío de Dios es importante para resolver el problema del mal. Si Dios tiene libre albedrío, pero nunca elige el mal, entonces podría haber creado la vida de la misma manera: con libre voluntad, pero nunca eligiendo el mal. Si Dios no tiene libre albedrío, pero sigue siendo bueno, entonces no tenía sentido crear el mal para otorgar libre albedrío a los humanos, ya que es posible ser bueno sin libre albedrío. Si Dios, los ángeles y otros seres en el cielo tienen libre albedrío donde no existe el mal o el sufrimiento, entonces no puede ser cierto que Dios deja que el mal exista porque es un efecto secundario requerido del libre albedrío “.

Después de los descubrimientos modernos en física y bioquímica, dicen que el libre albedrío es una ilusión. Nuestros cerebros sorprendentemente, maravillosamente complejos se componen de varios sistemas cognitivos que circulan entre ellos y generan nuestros pensamientos, conciencia, opciones y comportamiento. Estos sistemas y sus efectos son el resultado de las leyes mecánicas e inorgánicas de la física, sobre las cuales no tenemos control. La conciencia se nos presenta como resultado de nuestras neuronas, nuestros cerebros, nuestros sentidos. Cuando perdemos esto, perdemos la conciencia. Estos sistemas están gobernados y controlados por neuroquímicos, hormonas, ionización, impulsos: en resumen, por bioquímica. La bioquímica es a su vez simplemente un tipo de química, y cuando miramos las moléculas y átomos que componen nuestra química, obedecen las leyes de la física.

Cuando el defensor del libre albedrío dice que nuestras “mentes” están separadas de nuestros cuerpos debido a esto, nuestras mentes están libres de causa y efecto. Responden que hay problemas conceptuales con esta idea. La mayoría del pensamiento debe seguir la causa y el efecto para ser coherente. Pensar al azar no es más libre albedrío que tener tus pensamientos controlados por neuronas. Entonces, nuestras mentes todavía deben seguir líneas de causa y efecto lógico, o, en otras palabras, en un ciclo de pensamiento y pensamiento posterior. Romper esta cadena de causalidad es romper el flujo mismo de la conciencia. Si los pensamientos no son aleatorios, debe haber factores que influyen en qué pensamientos se piensan y qué opciones se toman. Sabemos que la mayoría de esos factores son impulsos sexuales puramente físicos, hambre, emociones impulsadas por hormonas y similares. Tienen poco sentido sin una base física. ¿Hay realmente lugar para una mente no física?

Un filósofo explica todo esto de otra manera, teniendo en cuenta los viajes en el tiempo y creando una paradoja: si al viajar atrás en el tiempo cambiamos los hechos de la historia, pero menores en el futuro cuando regresemos, no podremos hacerlos cambios porque no habrán ocurrido. Como no podemos hacer esos cambios, significa que siempre ocurrirán como lo hicieron originalmente. Él imaginó lo siguiente:
“Decepcionado en amor, me deseo muerto. Más que eso, desearía no haber vivido nunca. Dado que tengo una máquina del tiempo, estoy en condiciones de lograrlo. Así que vuelvo a un momento adecuadamente distante antes de mi concepción, encuentro a un pariente relevante, por ejemplo, mi abuelo, y los mato. Por lo tanto, logro que nunca fui concebido. Si mi acción es exitosa, ¿quién es el que impide mi concepción? No puedo ser yo, porque ahora parece ser cierto que nunca fui concebido, por lo que nunca crecí para entrar en una máquina del tiempo para evitar mi concepción. No puedo, entonces, prevenir mi concepción. Esto en sí mismo puede parecer tener implicaciones más preocupantes. Porque si no puedo evitar mi propia concepción, a pesar de estar presente en el momento correcto. ¿Esto no sugiere que no soy, como viajero en el pasado, un agente libre? Si esto es una implicación, entonces se extiende a nuestra situación ordinaria, que no viaja en el tiempo. Porque tampoco soy libre de cambiar el futuro “.

Entonces, pueden ver que a lo largo de la historia hay largos debates sobre el determinismo y el libre albedrío. Algunos siguen una escuela de pensamiento, otros siguen la segunda. Ahora la respuesta es que la realidad está en el medio. Eso significa que el hombre tiene un libre albedrío en el asunto de sus acciones. Aunque su libre albedrío es por decreto divino. Debido a que Dios es la causa última e independiente de todas las causas, es correcto relacionar todo lo que existe con Dios. De manera similar, debido a que Dios le ha otorgado al hombre el libre albedrío en sus acciones, también es correcto relacionar las acciones del hombre con su propia elección.

Cuando a un esclavo elegido de Dios se le hizo esta pregunta por un hombre: “¿Qué es el destino?”, Él dijo: “Levanta un pie en el aire”. el hombre lo hizo él dijo, “Ahora levanta al otro”. (Mientras estaba en la misma posición) el hombre respondió: “No puedo”, dijo, “Esta es la respuesta a tu pregunta. La mitad de ella te ha dado Dios en tu mano, y el resto lo ha guardado para Sí”. en otras palabras, el hombre es libre de querer lo que quiere, pero no puede querer lo que quiere. Es decir, el hombre es libre de hacer una tarea de la manera que le gusta, pero elegir / alcanzar y llegar a ese trabajo está fuera de su control .

Cuando otro esclavo elegido de Dios hizo esta pregunta, él respondió: “Lo que sea que puedas culpar al hombre por ello, es su acción y lo que sea que no puedas culparlo por ello, es el acto de Dios. Dios culpa al hombre por robar, cometer adulterio, etc. Por lo tanto, estos son los actos del hombre. Sin embargo, Dios no culpa al hombre por qué no nació rico o por qué el color de su piel es negro o rubio. Por lo tanto, estos son los actos de Dios “.

Oh gente, por lo tanto, no culpes a tu destino. En realidad, solo se determinan algunas cosas relacionadas principalmente con su nacimiento, sus padres y todo el ambiente relacionado con sus padres, incluido el entorno socioeconómico de su hogar y país. La mayoría de las cosas están en tu mano y con esfuerzo y lucha puedes incluso cambiar tus capacidades, capacidades y finalmente tu destino. También tenga en cuenta que su Señor es tan justo que, en cualquier caso, en el más allá lo juzgará después de considerar todos los factores a su alrededor y no lo recompensará ni lo castigará solo en sus cuentas. Y, sobre todo, como expliqué en detalle en la parte 2, la vida de este mundo es como un abrir y cerrar de ojos, por lo que este pequeño momento de aflicción no es nada en comparación con la vida que te espera en el futuro.

Este universo que hizo es tan misterioso que no puedes comprender toda la sabiduría detrás de su creación. Dios ha creado para usted opciones y opciones que aparecen cada segundo y le ha dado libre albedrío para elegir entre estas opciones. Es un mundo, un universo de posibilidades. Así que no culpes solo a tu destino. Un esclavo puede convertirse en un gobernante, un débil puede convertirse en la persona más fuerte, un ignorante puede convertirse en el más sabio. Un mundo de posibilidades donde cualquiera puede alcanzar cualquier nivel. Es solo cuestión de qué tan grande piensa una persona y con qué precisión actúa sobre eso. Y por encima de eso, una gran misericordia de su Señor es la promesa del más allá, de modo que aquellos que no podrían haber utilizado con éxito sus opciones aquí y que no son malhechores tendrán paz y placer. Tendrán allí lo que pregunten y lo que deseen sus almas. Lo que ningún ojo ha visto, ningún oído ha escuchado, ni el corazón de ningún hombre imaginado.

Si mi Señor quiere, continuaré este tema en el próximo programa.

Oh humanidad, siempre te confundes y todos estos debates de filósofos que discutí en la parte 11 son porque piensas que como Dios sabe todo y que ya está escrito, entonces no tienes libre albedrío. Por lo tanto, la humanidad en su mayoría culpa a su destino de todos los contratiempos que tienen en sus vidas. Oh gente este universo es un universo de posibilidades donde cualquiera puede alcanzar cualquier nivel. Dios ha creado para ti opciones y opciones que aparecen cada segundo y la capacidad de Dios de conocer tu futuro no te impide de ningún modo actuar como un agente libre en este universo.

Lo mismo hizo el diablo cuando Adán y todos los demás fueron atrapados con las manos en la masa después de su error en el clímax de ese episodio en el Edén. En lugar de aceptar sus celos, arrogancia y error, culpó al destino. En la Última Escritura, Dios cuenta en la historia de Adams que el Diablo dijo: “Mi Señor, porque me has confundido, ciertamente haré que la desobediencia les resulte atractiva en la tierra, y los confundiré a todos. Así que el diablo le echó toda la culpa a Dios o el destino mientras la reacción de Adams era opuesta y él se arrepintió y pidió perdón por su error.

Como el diablo está con nosotros todos los seres humanos y los genios, cada vez que culpamos al destino y al acto de Dios es debido a esa sugerencia malvada que el diablo pone en nuestro corazón. Entonces culpas al destino solo cuando fallas o los eventos van en contra de ti. Nunca culpas al destino cuando te sientes bien.

Ahora, porque Dios siempre dice en Sus escrituras como en la última escritura, Dios dijo “Y no lo harás, excepto que Dios quiera Señor de los mundos”. Esto no debe confundirse con Ejemplo con el caso de una persona que va a matar a alguien. Ahora Dios le ha escrito que sería un asesino, pero eso no significa que lo hizo matar a esa persona. Es solo que Dios por su voluntad nos dio la libertad de decidir entre nuestras opciones y elegirlas. Si quieres guía, Él te guiará. Cómo sucede, consideremos otro ejemplo, como en la Parte 11, les dije que Dios ha creado opciones y opciones que aparecen cada segundo y les ha dado libre albedrío para elegir entre estas opciones. Considere que está sentado en una biblioteca o en su casa con su computadora portátil y navegando por Internet. Ahora, según las revelaciones de Dios y las Escrituras, debes hacer la primera parte del esfuerzo y Dios te ayudará. Ahora, si decides leer o ver algunas cosas, reserva un video, que puede obligarte a no leer ni mirar eso. Y también tienes plena libertad para ver buscar cosas buenas o cosas malas disponibles. Pero después de ejercitar su opción y decidir consumir ese tiempo en un buen trabajo relacionado con su educación o su religión, Dios lo facilita en eso y puede encontrar algunas cosas muy buenas que luego podrían cambiar su forma de pensar e incluso su vida. . Dios te facilita en cualquier dirección que quieras ir. Esta es la base de todos los inventos en la historia humana. Todas las personas que luchan en algún campo obtienen nuevas ideas en un abrir y cerrar de ojos. Esto nunca sucederá sin poner ningún esfuerzo de su parte. Entonces, realmente es la voluntad de Dios y el esfuerzo humano que trabajan juntos en este universo tuyo. El mismo principio es para profetas y justos. Obtuvieron la ayuda de Dios después de que pusieron todo su esfuerzo. El mar rojo se separó cuando Moisés luchó y tenía 80 años de edad. Madina se convirtió en estado islámico después de la lucha continua de décadas y cuando Muhammad tenía 53 años.

Ahora considere que es dueño de un negocio y tiene 20 empleados. Un día anuncias que darás un premio en efectivo a esas 10 personas que realizan ciertas tareas y objetivos más que otros. Ahora que tienes a esos empleados contigo desde hace unos años y los conoces muy bien a todos, escribes en tu libreta el nombre de los diez que ganarán ese premio. Y al final de la tarea sucede que son exactamente los mismos que ya ha escrito en su bloc de notas. Le hago una pregunta: si escribe esto, significa que los ha favorecido para ganar o ha restringido las posibilidades de otros. Pero en realidad aquellos cuyos nombres usted ya ha escrito como ganadores son los empleados que hacen las cosas correctas, el trabajo duro y el esfuerzo sincero de todos modos, ya sea que otorgue el incentivo de premio o no. Mientras que los otros son los que realmente no hacen nada para merecerlo, independientemente de que escriban sus nombres o no.

Otro ejemplo ahora considere que uno de sus amigos obtiene una máquina del tiempo que usa en el futuro y mira toda su vida hasta el final, luego regresa y escribe un libro sobre usted. Ahora significa que restringió su libre albedrío y lo obligó a hacer las acciones que escribió en el libro.

Sé que estas analogías tienen muchas fallas ya que Dios es omnisciente y omnipotente, y Él no solo conoce tu futuro sino que también domina tu voluntad al igual que él te creó y todas las habilidades que tienes son otorgadas por él. Y estas son las limitaciones reales y, por lo tanto, a todos se les atribuirá solo lo que se les ha otorgado, no más que eso. Una persona responsable de una casa pequeña no será responsable por los asuntos, malas acciones, injusticias y corrupción que se presenten en la ciudad. Es por eso que es un asunto serio y una gran carga si alguien tiene un puesto en la sociedad, ya que con la autoridad viene la responsabilidad.

El conocimiento de Dios es diferente del conocimiento de su creación, ya que no está precedido por la ignorancia, no es que Dios no sabía y luego aprendió ni le sigue el olvido que ahora sabe, pero que en el futuro puede pasar de su memoria.

Dios creó las acciones de las personas. Se los atribuye a Dios cuando los creó para ponerlos en existencia. No es que Dios haya creado acciones buenas y malas, sino que hizo posible su existencia, pero los seres humanos se ganaron la acción. El mal no se debe atribuir a Dios. El mal es relativo como por ejemplo el veneno de serpiente es un mal para los seres humanos pero una cosa buena para serpiente, dientes y garras de tigre tiene maldad para otros animales pero bendición para él, cuernos de toro tienen maldad para otros pero buenos para su defensa. Así que, como en la última escritura Dios dice: “Di, busco refugio en el Señor del amanecer, del mal de lo que creó y del mal de las tinieblas cuando se asienta”. Aquí Dios dice buscar refugio del mal de esa (creación) que creó y no decir del mal que creó. De modo que existen creación, eventos, aspectos que tienen maldad en ellos pero no son creados como maldad pura. Incluso el Dios del Diablo creado no es puro Mal ni creado para el mal. Es como un subproducto de la creación a medida que se obtiene de sus fábricas durante la fabricación de algo bueno. Y su propósito es hacer de este universo una prueba sin demonios, ¿cómo seremos recompensados ​​como si no hubiera pensamiento negativo y solo existiera el bien que no hay ningún propósito de crear este universo si Dios hubiera querido que todos fueran buenos y piadosos y obedecieran? Él no te habría creado, como aquellos seres que están con Él lo suficiente para Sus alabanzas y lo glorificará mañana y tarde.

Oh gente, nuestra responsabilidad es esforzarnos para poner nuestro esfuerzo y luego orar y pedir la ayuda de Dios. Solo somos responsables por el esfuerzo, no por los resultados, dejamos resultados en Dios, como si tuvieran éxito entonces bueno. E incluso si no hay resultados y éxitos aquí tendrá éxito en el más allá. Especialmente cuando luches por la causa de Dios, por un objetivo mayor, por encima de ti mismo por el bien de la humanidad, recuerda que el éxito no es un criterio. Como Jesús es uno de los mayores profetas de Dios, pero aparentemente falló en el mundo. Si bien hay algunos esclavos de su Señor que fueron extremadamente exitosos en este mundo en sus misiones. No importa si 4000 están viendo este programa o 4000 millones. Si Dios quiere, llegará un momento en el que pondrá efecto en él. Como mencioné en la última escritura, quiero vivir mi vida así y proclamar eso. “De hecho, mi oración, mis ritos, mis rituales, mi trabajo, mi vida y mi muerte son para Dios, Señor de los mundos. Él no tiene pareja; con esto me han ordenado. Y yo soy el primero de los que se rinden a él.

Si mi Señor Wills, continuaré y concluiré este tema en el próximo programa.

Oh, humanidad, tu Señor no castiga a las personas por sus primeros pecados. Él les da la oportunidad de arrepentirse. En realidad, no es el pecado, el mal o la injusticia lo que es malo a los ojos de su Señor, sino su repetición. Repetir un acto equivocado una y otra vez, no arrepentirse y no sentirlo mal es lo malo. Oh, gente, es un mundo, un universo de posibilidades donde cualquiera puede alcanzar cualquier nivel. Dios ha creado para usted opciones y opciones que aparecen cada segundo y le ha dado libre albedrío para elegir entre estas opciones. No hay límite. Si eres una persona pobre o incluso esclava, puedes convertirte en un rey gobernante. Oh gente si te sientes miserable y te sientes en un círculo vicioso desde donde no hay salida, solo comienza a hacer una sola cosa. Comience a elegir en todo momento las opciones que sean mejores en términos de moralidad. No considere ni siquiera por un segundo las opciones que cree que son buenas para lograr su propósito, pero que tienen algo moralmente incorrecto en ellas. Tu Señor ha hecho este Universo así. Si eliges opciones moralmente incorrectas, Él solo te castigará cuando sigas haciendo su repetición y si eliges las opciones correctas, Él pronto te sacará de la miseria y del círculo vicioso y enviará Sus bendiciones desde donde no hubieras imaginado.

Para entenderlo más te doy un ejemplo, considera que estás sentado con tu esposa y que tienes libre albedrío y opciones todo el tiempo. Utiliza la opción de mover la mano y sucede que toca el ojo de su esposa y la lastima. Ahora, tan pronto como sucede, se abren para ti otras opciones y opciones que admiten tu error y le piden disculpas u otra opción para decir que fue su culpa por qué acercó su rostro a tu mano, o para volverse más irracional y reacciona con enojo, etcétera. Si eliges la primera opción, la materia se cierra como tal, con una buena impresión tuya en su mente y otra cuestión que se inicia simultáneamente. Pero si selecciona la segunda o tercera opción, lo más probable es que ella reaccione y comience a discutir con usted diciéndole que es una persona maleducada y termina abusando de ella. Manteniéndolo corto y solo para comprender el concepto y este ejemplo, puede pedirle que se vaya de su casa. Ella comienza a llorar y llorar. Ahora se abren para ti otras opciones y opciones; o bien te das cuenta de tu error y le pides disculpas o te muestras obstinado y sigues repitiendo algo equivocado. Si eliges la primera opción, ese asunto se cierra como tal y otro asunto se inicia simultáneamente. Pero si selecciona la segunda opción que nuevamente es una opción moralmente incorrecta, surgirán nuevos escenarios. Ella se va de la casa y es posible que la cuestión termine con el divorcio. Una vez más, muchas opciones para usted, pero si sigue eligiendo la incorrecta, terminará en divorcio. Luego, observa que tienes un mundo totalmente diferente frente a tus ojos en el que estás sumido en un dolor profundo y solitario, y tienes un sentimiento de culpabilidad en tu corazón. Entonces tendrías un castigo aquí y también en el más allá. Puedes ver claramente que no has sido castigado por el acto incorrecto, sino por su repetición. Este ejemplo se puede tomar en ambos sentidos con la esposa como agresor. Como en estos días las mujeres también hacen mucho mal.

Para simplificarlo, lo llamé “Teoría de opciones”. Y no es una teoría, es una ley que rige este universo tuyo y más adelante en los próximos programas te daré pruebas y en contra de las Sagradas Escrituras que en realidad has malinterpretado por completo.

Este universo que hizo es tan misterioso que no puedes comprender toda la sabiduría detrás de su creación. Dios ha creado para usted opciones y opciones que aparecen cada segundo y le ha dado libre albedrío para elegir entre estas opciones. Es un mundo, un universo de posibilidades. Así que no culpes solo a tu destino. Un esclavo puede convertirse en un gobernante, un débil puede convertirse en la persona más fuerte, un ignorante puede convertirse en el más sabio. Un mundo de posibilidades donde cualquiera puede alcanzar cualquier nivel. Es solo cuestión de qué tan grande piensa una persona y con qué precisión actúa sobre eso. Y encima de eso una gran misericordia de su Señor es la promesa del más allá para que aquellos que no hayan utilizado con éxito sus opciones aquí y no sean malhechores tengan paz y placer. Tendrán allí lo que pregunten y lo que deseen sus almas. Lo que ningún ojo ha visto, ningún oído ha escuchado, ni el corazón de ningún hombre imaginado.

Los asuntos de un creyente son extraños de que no hay un decreto divino sobre él, pero eventualmente será para su beneficio. “Si obtiene alguna bendición, entonces él le agradece a Dios y por lo tanto, hay algo bueno para él, y si se ve perjudicado, entonces él muestra paciencia y, por lo tanto, hay algo bueno para él.

Oh gente que no estás aquí en este universo indefenso ante un destino cruel e inmutable. La mayoría de las cosas están en tu mano y con esfuerzo y lucha puedes incluso cambiar tus capacidades, capacidades e incluso tu destino. Oh gente, nuestra responsabilidad es esforzarnos para poner nuestro esfuerzo y luego orar y pedir la ayuda de Dios. Solo somos responsables por el esfuerzo, no por los resultados, dejamos resultados en Dios. Oh gente, en realidad eres un agente libre en este universo que tiene tu propia opción para dibujar, sembrar, propagar y cultivar lo que quieras dibujar y crecer en este lienzo en este suelo de oportunidades universales. La vicegerencia divina, la vida eterna de paz y placer o la desesperación eterna sea cual sea el resultado que desee, está en sus manos. Como ya te dije sobre el regalo de las opciones de tu Señor apareciendo para ti en cada momento y la forma de utilizarlas, todo es posible para ti siempre que tengas voluntad y tomes una iniciativa. Oh humanidad hay posibilidades para muchas posibilidades, muchos caminos, muchos destinos y muchos mundos para ti. Lo que importa son solo las opciones que eliges cada segundo cuando aparecen los momentos cambiantes. Las opciones que elija llevarán a ese tipo de destino. Si te sientes miserable y te sientes en un círculo vicioso de donde no hay salida, haz dos cosas primero, ora a tu Señor por otro destino, ya que no hay límite de destinos con tu Señor, ya está tejido en la tela de este cosmos este universo tuyo entonces, después de orar, comienzas a hacer una cosa, es decir, cada momento eliges opciones moralmente correctas cada vez que aparecen. Si haces esto y te cambias, tu destino cambia.

لوگ پوچھتے ہیں کہ ہمارے لئے کیا کوئی آذاد مر ضی ہے یا ہر چیز پہلے ہی سے طے شدہ ہے۔  یہ سائنس  اور فلسفے  میں ایک پرانی بحث ہے ۔ فلاسفر اس مسئلے کو خدا تک لے جاتے ہیں  – کہ خدا  کی کوئی آزادانہ رائے نہیں ہے۔  ایک رحیم خدا ہمیشہ وہ راستہ چنے گا جو  ذیادہ سے ذیاہ  بھلائی کا سبب بنے اس لئے یہ کوئی اصلی انتخاب نہیں ہے۔   مزید اس لئے کہ سب جاننے والا خدا فوراً سےاپنے  مستقبل کے  بارے میں  سب جان  لیتا ہے اور اس کا  علم غلط نہیں ہو سکتا لہٰذ ا  اس کے پاس اور کچھ انتخاب کا راستہ نہیں ہے۔ تاہم وہ خدا جس کے پاس آذاد مرضی نہ ہو وہ اخلاقی وجود نہیں ہو سکتا؛  بلکہ  اخلاقی طور پر غیر جانبدار ھوگا۔ اس لئے اگر ایک قادر مطلق اور سب کچھ جاننے والے خدا کا وجود ہے تو یہ اسباب اور وجوھات کی ایک طویل زنجیر کے سبب  سے کسی بھی زندہ ہستی  کی آذاد مرضی  کو رد کرتا ہے۔  ہمارے احساسات ہماری شخصیت اور کردار سے اخذ ھوتے ھیں۔ اور ہمارے انتخابات مرھون منت ہیں  ان چیزوں کے جو ہم نے زندگی کے تجربات سے سیکھیں ھیں : خدا کے پاس ہر قسم کے حالات کو بدلنے کی طاقت ہے جو ہماری شخصیت اور کردار کو  مرتب کرتے ہیں ۔ اور  جو چیزیں  ہم زندگی میں سیکھتےہیں وہ وہ سب خدا کے ہاتھ میں ہیں  یا اس  وجوہات اور اسباب کی طویل زنجیر  کے ہاتھ میں ہیں جو خدا کے علاوہ اور کسی سے شروع نہیں ہوئی۔  وہ مزید یہ کہتے ہیں کہ خدا کی آذادانہ مرضی برائی کے مسائل کو سلجھانے کے لئے  ضروری ہے۔ اگر خدا کے پاس آذاد مرضی ہے  اور اس نے  برائی کا کبھی چناؤ نہی کیا تو وہ اسی طرح سے زندگی کو بھی وجود میں لا سکتا تھا: یعنی آذاد مرضی کے ہوتے ہوئے بھی برائی کا انتخاب نہ کرنا ۔ اگر خدا کی کوئی آزاد مرضی نہیں ہے  لیکن پھر بھی وہ بھلا ہے  توپھر برائی کو پیدا کرنے اور انسانوں کو آذاد مرضی بخشنے  کا کوئی  مطلب نہیں ہے کیونکہ بغیر آذاد مرضی کے بھلا رہنا ممکن ہے۔  اگر خدا، فرشتے اور آسمان کی اور مخلوقات کو آذاد مرضی حاصل ہے جہاں کوئی برائی اور دکھ نہیں ہے تو یہ سچ نہیں ہو سکتا کہ خدا برائی کا وجود اس لئے رہنے دے کیونکہ یہ آذاد مرضی کا ایک  ضروری منفی اثر ہے۔

طبعیات اور کیمیا حیاتیات میں جدید دریافتوں کے بعد  وہ کہتے ہیں کہ آذاد مرضی ایک  دھوکہ ہے۔ ہمارے حیران کن طور  پر پیچیدہ ذہن کئی ادراکی نظاموں پر مشتمل ہیں   جو آپس میں گھوم رہے ہیں اور ہماری سوچوں ، خیالوں ، انتخابات اور رویوں کو جنم دے رہے ہیں ۔ یہ نظام اور ان کے اثرات  تمام مکینکی اور طبعیات کے غیر نامیاتی  قوانین  کا نتیجہ ہیں ۔  روح یا ضمیر ہمارے نیورونز، ذہن اور احساسات کی پیشکش ہے ۔   جب ہم انہیں کھو دیتے ہیں ہم اپنے ضمیر یا روح کو کھو دیتےہیں ۔ یہ نظام نیورو کیمیکل ، ہارمونز، آیونائزیشن ، محرکات کے ماتحت ہیں : مختصراً کیمیائی حیاتیات کے ذریعے سے۔  کیمیائی حیاتیات  ، نتیجتاً کیمیا کی محض ایک  قسم ہے  اور جب ہم  ایٹمز اور مالیکیولز کو دیکھتے ہیں  جو ہماری کیمیا بناتے ہیں تو وہ طبعیات کےقوانین کے تحت کام کرتے ہیں ۔

جب آذاد مرضی کے وکیل یہ کہتے ہیں کہ  ہمارے “ذہن ” ہمارے اجسام سے الگ ہیں  اور اس لئے ہمارے دماغ اسباب و وجوہات سے مبرا ہیں ۔  تو دوسرے جواب دیتے ہیں کہ  اس نظریے میں تصوراتی مسائل ہیں ۔  بہت سی سوچوں کو مربوط ہونے کے لئے  اسباب و وجوہات کے مطابق چلنا ضروری ہے۔  بے ربط طور پر سوچنا اس سے ذیادہ آذاد مرضی نہیں رکھتا  جتنا کہ آپ کی سوچوں کو نیورونز کے ذریعے قابو کیا جائے ۔  لہٰذا ہمارے  ذہنوں کو منطقی وجہ و سبب  کے مطابق چلنا چاہئے یا دوسرے الفاظ میں  سوچ در سوچ کے ایک چکر میں ۔  سبب کی اس زنجیر کو توڑنا  شعور کی زنجیر کو توڑنے کے برابر ہے۔  اگر سوچیں بے ترتیب نہیں ہوتیں تو کوئی ایسے اسباب ہونگے جو یہ طے کریں کہ کونسی سوچ سوچ ہے اور اس کو کہ کونسے چناؤ کرنے چاہیئں ۔  ہم جانتے ہیں کہ ان میں سے بہت سے اسباب جسمانی ہیں  – جنسی روشیں ، بھوک، ہارمونز کے سبب سے جذبات اور اس جیسے اور۔ یہ جسمانی  یا ظاہری بنیاد کے بغیر کم سمجھ میں آتے  ہیں ۔ تو کیا ایک غیر جسمانی دماغ کی حقیقت میں کوئی جگہ ہے؟

ایک فلاسفر اسے ایک اور طرح سے وقت کے سفر کو مد نظر رکھتے ہوئے اور ایک  متناقضہ بناتے ہوئے بیان کر تا ہے  کہ اگر وقت میں واپس سفر کرتے ہوئے ہم تاریخ کے حقائق کو بدل دیں  – جتنے بھی  کم سے کم  – پھر جب مستقبل میں ہم واپس جائیں  تو ہم وہ تبدیلیاں نہیں کر سکیں گےکیونکہ وہ  وقو ع پذیر ہی نہیں ہوئیں ہوں گی۔  اگر ہم تبدیلیاں  نہیں کرسکتے تو اس کا مطلب ہے کہ وہ ہمیشہ ہوں  گے جیسے کہ حقیقت میں تھا۔  اس نے اس طرح  تصور کیا:

” محبت میں مایوس، میں چاہتا ہوں کہ مر جاؤں۔  اس سے ذیادہ میں چاہتا ہوں کہ میں پیدا ہی نہ ہوتا۔ اس کے مد نظر میرے پاس ایک  ٹائم مشین ہے تو میں ایسا کر سکتا ہوں ۔ لہٰذا  اپنی پیدائش سے پہلے کے  کچھ مناسب لمحات میں ایک متعلقہ رشتے دار ڈھونڈنے کو واپس گیا جیسے کہ میرے دادا دادی اور انہیں جان سے مار دیا۔ اس سے میں نے یہ کر لیا کہ میرا وجود ہی نہ ہو۔ اگر میرا یہ فعل کامیاب ہے تو وہ کون ہے جو میری پیدائش کو روکے گا؟  وہ میں نہیں ہو سکتا کیونکہ یہ ظاہراً سچ ہے کہ میں  کبھی پیدا ہی نہیں ہوا اور اس لئے اپنی پیدائش روکنے کے لئے مشین میں گیا ہی نہیں ۔  تو پھر میں اپنی پیدائش نہیں روک سکتا۔  اس کے مزید پریشان کن نتائج  ہیں ۔ کیونکہ اگر میں خود صحیح وقت پر موجود ہونے کے باوجود  اپنی پیدائش نہیں روک سکتا ۔ کیا یہ نہیں بیان کرتا کہ میں ماضی میں سفر کرنے والا آذاد ذات نہیں ہوں ؟  اگر یہ ایک نتیجہ ہےتو یہ ہماری عام ، بغیر وقت میں سفر کی صورتحال تک جاتا ہے۔ کیونکہ میں مستقبل کو بھی تبدیل کرنے کی آذادی نہیں رکھتا ۔ “

تو آپ دیکھ سکتے ہیں  کہ تاریخ  میں خود ارادیت اور آذانہ مرضی پر طویل احباث ہیں ۔ کوئی ایک نظریہ پر چلتا ہے کوئی دوسرے پر۔ اب جواب یہ ہے کہ حقیقت اس کے درمیان میں ہے۔  اس کا مطلب ہے کہ ایک انسان کے پاس اس کے اعمال کے معاملے میں آذادانہ مرضی  موجود ہے۔  حالانکہ اس کی یہ آذادانہ مرضی الہٰی حکم سے ہو گی۔  کیونکہ خدا  تمام اسباب  کا حتمی اور آذاد  سبب ہے۔  تمام موجودات کو خدا سے منسوب کرنا صحیح ہے۔  اسی طرح ، کیونکہ خدا نے انسان کو اسکے افعال میں آذاد مرضی عطا کی ہے  تو انسان کو اس کے انتخابات سے منسلک کرنا بھی درست ہے ۔

جب خدا کے چنندہ بندے سے ایک انسان نے یہ سوال پوچھا ” تقدیر کیا ہے”؟ اس نے کہا، اپنا ایک پیر ہوا میں اٹھاؤ۔ ” آدمی نے ایسا ہی کیا، ا پھر س نے  کہا ، ” اب دوسرا اٹھاؤ” (اسی حالت میں رہتے ہوئے) آدمی نے جواب دیا، ” میں نہیں کر سکتا” اس نے کہا، “یہی تمہارے سوال کا جواب ہے۔ آدھا خدا نے تمہیں تمہارے اختیار میں دیا ہوا ہے اور باقی کا اس نے اپنے اختیار میں رکھا ہے۔”  اس لئے دوسرے الفاظ میں انسان کسی کام کو کرنے میں تو مختار ہے مگر اختیار کرنے میں مجبور۔  یعنی کہ ایک انسان کسی کام کو کرنے کے لئے اپنے طریقے سے کرنے کے لئے آذاد ہے لیکن اس  کام کا انتخاب اور اس تک پہنچنا اس کے قابو سے باہر ہے۔

جب خدا کے ایک اور  چنندہ بندے سے یہ سوال پوچھا گیا تو اس نے جواب دیا ” تم انسان پر جس  چیز کے بارے میں الزام لگا سکتے ہو وہ اس کے فعل ہیں اور جس میں تم اس پر الزام نہیں لگا سکتے وہ خدا کے فعل ہیں  ۔ خدا انسان کو  چوری اور  زنا کاری  وغیرہ کے لئے قصور وار ٹھہراتا ہے۔ اس لئے یہ ان کے اعمال ہیں ، تاہم خدا انسان کو اس بارے میں قصوروار نہیں ٹھہراتا کہ وہ کیوں امیر پیدا نہیں ہوا یا کیوں اس کی جلد کا رنگ کالا  یا سفید ہے۔ لہٰذا یہ خدا کے اعمال ہیں ۔ “

اے لوگو اس لئے اپنی قسمت کو قصور وار نہ ٹھہراؤ۔  درحقیقت بہت کم ایسی چیزیں ہیں جو طے شدہ ھیں۔ ان میں سے زیادہ تر  وہ ھیں جو براہ راست آپکی پیدائش سے تعلق رکھتی ہیں ، والدین، آپ کے والدین سے منسلک تمام ماحول  بشمول آپ کے گھر اور ملک کے معاشی و معاشرتی ماحول کے۔ ذیادہ تر  چیزیں آپ کے ہاتھ میں ہیں اور اپنی کوشش اور محنت  سے آپ اپنی  صلاحیت، قابلیت  اور یہاں تک کے اپنی قسمت بھی تبدیل کر سکتے ہیں ۔  یہ ہمیشہ  دھیان میں رکھئے کہ آپ کا خداوند اتنا انصاف پسند ہے  وہ ہر حال میں آخرت میں  آپ کے گرد کے تمام ماحول کو مد نظر رکھے گا اور محض آپ کے حساب پر آپ کو سزا یا جزا نہیں دے گا۔  اور سب سے بڑھ کر جیسے کہ  میں نے دوسرے حصے میں تفصیل سے بحث کی تھی  کہ  اس دنیا کی زندگی پلک جھپکنے جیسی ہے۔ تو مصیبت کا یہ تھوڑا سا دور اس زندگی کے مقابلے میں کچھ نہیں  جو آنے کو ہے۔

اس کی بنائی ہوئی کائنات بہت پراسرار ہے  کہ آپ ساری تخلیق کے پیچھے کی تمام حکمت نہیں سمجھ سکتے۔   خدا نے آپ کے لئے انتخابات اور چناؤ رکھے ہیں جو ہر لمحے ابھرتے ہیں اور اس نے آپ کو ان انتخابات کے چناؤ کے لئے آذاد مرضی دی ہے۔  یہ دنیا اور کائنات ممکنات کا مقام ہے۔ لہٰذا محض اپنی قسمت کو قصوروار نہ  ٹھہرائیں ۔  ایک غلام حاکم بن سکتا ہے، ایک کمزور شخص مضبوط بن سکتا ہے، ایک جاہل  سب سے ذیادہ پُر حکمت بن سکتا ہے۔ ممکنات کی وہ دنیا جہاں کوئی بھی کسی مقام تک پہنچ سکتا ہے۔  صرف بات یہ ہے کہ کوئی شخص کتنا بڑا سوچتا ہے اور وہ کتنے صحیح طور پر اس پر عمل کرتا ہے۔ اور سب سے بالاتر آپ کے خداوند کی انتہائی بڑی مہربانی  آخرت کا وعدہ ہے۔  اس لئے جنہوں نے یہاں کامیاب طریقے سے اپنے چناؤ کا استعمال نہیں کیا ہے اور وہ غلط کام کرنے والے نہیں ہیں ان کو امن اور خوشی نصیب ہو گی۔  انہیں وہاں سب ملے گا جو وہ چاہیں گے اور جو وہ مانگیں گے۔  جو نہ کسی آنکھ نے دیکھا، نہ کسی کان نے سنا ، نہ ہی کسی انسان کے خیال میں آیا۔

اگر میرے خداوند کی مرضی ہوئی تو میں اس مضمون کو اگلے پراگرام میں جاری رکھوں گا۔

 اے بنی نوع انسان تم ہمیشہ الجھن میں رہتے ہو اور فلاسفروں کی وہ تمام احباث جن پر میں نے 11ویں حصے میں بات کی ان کی وجہ یہ ہے کہ تم سوچتے ہو کہ خدا سب جانتا ہے اور یہ سب پہلے سے ہی لکھا ہوا ہے اس لئے تمہارے پاس آذاد مرضی نہیں ہے۔ اس لئے انسان  اپنی زند گیوں میں مصیبتوں کے لئے ذیادہ تر اپنی قسمت کو قصوروار ٹھہراتے ہیں۔ اے لوگو یہ کائنات ممکنات کی کائنات ہے جہاں کوئی بھی کسی بھی درجے تک پہنچ سکتا ہے ۔ خدا نے آپ کو چناؤ اور انتخابات دیے ہیں جو ہر لمحہ ابھرتے ہیں اور آپ کے مستقبل کو جاننے کی خدا کی قابلیت اس کائنات میں آپ کو کسی بھی طرح سے ایک آذاد ایجنٹ کی طرح کام کرنے سے نہیں روکتی ۔

یہی چیز شیطان نے بھی کی جب آدم اور دوسرے لوگ عدن کے واقع کے پس منظر میں اپنی غلطی پر رنگے ہاتھ پکڑے گئے ۔  اپنی غلطی، تکبر اور حسد تسلیم کرنے کی بجائے اس نے قسمت کو قصور وار ٹھہرایا۔ آخری صحیفے میں خدا آدم کی کہا نی میں بتاتا ہے کہ شیطان نے کہا ” میرے خداوند، کیونکہ تو نے مجھے اس غلطی  میں ڈالا ہے اس لئے میں یقیناً زمین پر ان کو نافرمانی کی طرف کھینچوں گا اور انہیں گمراہ کروں گا۔ لہٰذا اس نے تمام الزام خدا یا قسمت پر ڈالا جبکہ آدم کا رد عمل اس کے برعکس تھا اس نے توبہ کی اور اپنی غلطی کی مافی مانگی۔

جیسے شیطان ہم تمام انسانوں اور جنات کے ساتھ ہے جب بھی ہم قسمت اور خدا کوقصواوار ٹھہراتے ہیں تو ہم ایسا اس بُرے مشورے کی وجہ سے کرتے ہیں جو شیطان نے ہمارے دل میں ڈالا ہے۔ لہٰذا آپ قسمت کو تبھی الزا م دیتے ہیں جب آپ ناکام ہوتے ہیں یا واقعات آپ کے حق میں نہیں جاتے ۔ جب آپ کو اچھی چیزیں ملیں تب آپ قسمت کو کبھی الزام نہیں دیتے۔

اب چونکہ خدا اپنے صحیفوں میں ہمیشہ کہتا ہے جیسے خدا نے اپنے آخری صحیفے میں کہا “اور تم کچھ بھی نہیں چاہ سکتے مگر وہی جو خدائے رب العالمین چاہے”۔ اسے اور باتوں کے ساتھ مت الجھائیے۔ مثلاً اگر کوئی شخص کسی کو قتل کرنے جا رہا ہو۔ اب خدا نے اس کے  لئےلکھا ہوا ہے کہ وہ ایک قاتل ہو گا لیکن اس کا یہ مطلب نہیں ہے کہ  اس شخص کو قتل کرنے لئے بنایا گیا ہے۔ یہ بس اتنا ہے کہ خدا نے اپنی مرضی سے ہمیں ہمارے چناؤ کرنے کی آذادی دی ہے۔ اگر آپ کو راہنمائی چاہئے تو وہ آپ کی راہنمائی کرے گا ۔ یہ کیسے ہو گا ۔ اسے سمجھنے کے لئے ایک اور مثال لیجئےجیسا کہ ہم نے 11ویں حصے میں بات کی تھی ۔ میں نے آپ کو بتایا تھا کہ خدا نے آپ کے لئے چناؤ رکھے ہیں جو ہر لمحے آپ کے سامنے ابھرتے ہیں اور اس نے ان کا چناؤ کرنے کی آپ کو مکمل آذادی دی ہے ۔ سوچیئے کہ آپ ایک لائبریری میں بیٹھے ہوئے ہیں یا اپنے گھر میں اور انٹر نیٹ پر بیٹھے سرفنگ کر رہے ہیں ۔ اب خدا کی وحی اور صحیفوں کے مطابق پہلا قدم پہلی کوشش آپنے خود کرنی ہے اور اسکے بعد خدا آپکی مدد کریگا۔ اب اگر آپ یہ فیصلہ کرتے ہیں کہ کچھ  پڑھیں یا دیکھیں ، کوئی کتاب پڑھیں یا کوئی ویڈیو دیکھیں تو کون آپ کو مجبور کر سکتا ہے کہ اسے نہ پڑھیں یا نہ دیکھیں ۔  اور آپ کو اس بات کی بھی مکمل آزادی حاصل ہے کہ آپ دستیاب شدہ اچھی چیزیں دیکھیں یا بُری ۔ لیکن اگر آپ اپنے چناؤ کے اختیار کو استعمال کریں اور اپنے وقت کو اچھے کام میں صَرف کرنے کا فیصلہ کریں چاہے وہ آپ کی تعلیم سے متعلق ہویا آپ کے مذہب سے متعلق۔ خدا اس میں آپ کو سہولت دیتا ہےاور آپ کو کوئی بہت اچھی چیزیں مل سکتی ہیں جو بعد میں ممکنہ طور پر آپکی سوچ میں تبدیلی کا باعث بن جائیں یا آپ کی زندگی کی تبدیلی کا باعث ۔ آپ جس بھی سمت میں جانا چاہیں خدا اس میں آپ کو سہولت دیتا ہے ۔ یہ ان تمام ایجادوں کی بنیاد ہے جو انسانوں نے تاریخ میں کیں۔ وہ تمام لوگ جو کسی شعبے میں کسی کوشش کر رہے تھے اور جدوجہد کر رہے تھے  تو انہیں پلک جھپکنے پر نئے خیالات نے مدد کیا۔ ایسا کبھی آپ کے ہاتھ پر ہاتھ رکھ کر بیٹھے رہنے سے نہیں ہو گا۔ تو یہ درحقیقت خدا کی منشا اور انسان کی کوشش ہے جو  آپ کی اس کائنات میں مل کر کام کرتے ہیں ۔ یہی اصول انبیاء اور صادقوں کے لئے بھی ہے ۔ انہیں خدا کی مدد ملی جب انہوں نے اپنی کوشش کی ۔ بحرہ قلزم دو حصے ہو گیا تب جب موسی ایک عرصے کی کوشش کرتے کرتے ۸۰سال کا ہو گیا ۔  مدینہ ایک اسلامی مملکت بنا برسوں کی مسلسل جدوجہد کے بعد اور جب محمد 53 سال کے تھے۔

اب ذرا تصور کیجئے کہ آپ کسی کاروبار کے مالک ہیں اور آپ کے پاس  تنخواہ پر 20 لوگ کام کر رہے ہیں ۔ ایک دن آپ یہ اعلان کرتے ہیں کہ ان 10 اشخاص کو کیش انعام دیا جائے گا جو دوسروں کے مقابلے میں ذیادہ کچھ مخصوص کام اور ٹارگٹ سر انجام دیں گے ۔ اب جب چونکہ وہ کام کرنے والے تمام لوگ کچھ سالوں سے آپ کے ساتھ ہیں اور  آپ ان  کو بہت اچھی طرح سے جانتے ہیں ، آپ اپنے نوٹ پیڈ میں ان 10 اشخاص کے نام پہلے سے لکھ لیں گے جو یہ انعام جیتیں گے۔ اور اس کام کے آخر میں اگر ایسا ہو کہ جن لوگوں کے آپ نے نام لکھے ہوں وہی انعام جیتیں ۔ میں آپ سے ایک سوال پوچھتا ہوں کہ نوٹ  پیڈپر لکھنے سے کیا آپ نے ان لوگوں کو کسی طرح کی مدد کی یا دوسروں کے موقع کو کم کیا۔  بلکہ جن کام کرنے والوں کے نام آپ نے لکھے تھے وہ ایسے لوگ ہیں جو صحیح کام کرتے ہیں۔ محنت کرتے ہیں اور چاہے آپ انعام دیں یا نہ دیں تو بھی وہ  ایک مخلص کوشش کرتے ہیں ۔ جبکہ دوسرے وہ ہیں جواس کے حقدار ہونے کے لئے درحقیقت کچھ نہیں کرتے چاہے آپ ان کے نام لکھیں یا نہیں ۔

ایک اور مثال ۔ تصور کیجئے کہ آپ کا ایک دوست ایک ٹا ئم مشین لیتا ہے اور مستقبل میں جاتا ہے اور آخر تک آپ کی تمام زندگی کو دیکھتا ہے اور واپس آ کر آپ پر ایک کتاب لکھتا ہے ۔ اب کیا اس کا یہ مطلب ہے کہ اس نے آپ کی مرضی پر پابندی لگا دی ہے اور جو افعال اس نے کتاب میں لکھے ہیں کیا ان کو کرنے پر اس نے آپ کو مجبور کیا۔

میں جانتا ہوں کہ ان تمثیلوں میں بہت سی کمیاں ہیں کیونکہ خدا قادر مطلق اور سب  جاننے والا ہے ۔ وہ نہ صرف آپ کا مستقبل جانتا ہے بلکہ آپ کی مرضی پر بھی حاوی ہے کیونکہ اس نے آپ کو تخلیق کیا ہے اور آپ کے پاس جو بھی قابلیت ہے وہ اس کی طرف سے عطا کردہ ہے۔ اور یہ حقیقی حدیں ہیں  اور ہر کوئی اپنے دیے گئے کے مطابق جواب دہ ہو گا ۔ اس سے ذیادہ کے لیے نہیں ۔ ایک شخص جسکے پاس ایک چھوٹے گھر کی ذمہ داری ہے اس سے شہر میں ہونے والے معاملات، برائیوں ، ناانصافی اور دھوکہ دہی کے بارے میں حساب  نہیں لیا جائے گا۔ اسی سبب سے یہ اُن کے لئے ایک سنجیدہ مسئلہ ہے اور ایک بڑا بوجھ ہے جو معاشرے میں ایک مقام رکھتے ہیں کیونکہ اختیار ذمے داری کے بغیر نہیں ہوتا۔

خدا کا علم اس کی مخلوق کے علم سے مختلف ہے کیونکہ یہ جہالت سے پیدا نہیں ہوا ہے ۔ ایسا نہیں ہے کہ خدا کو علم نہیں تھا اور اسے بعد میں معلوم ہوا ، نہ ہی اس میں بھولے جانے کا کوئی امکان ہے کہ اسے ابھی علم ہے لیکن مستقبل میں وہ اس کے ذہن سے نکل سکتا ہے۔

خدا نے انسانوں کے افعال تخلیق کیے ہیں ۔ وہ خدا سے منسلک ہیں کیونکہ وہ ان کا خالق ہے اور انہیں وجود میں لایا ہے ۔ ایسا نہیں ہے کہ خدا نے اچھے اور بُرے افعال تخلیق کیے ہیں بلکہ اس نے ان کے وجود کو ممکن بنایا ہے لیکن افعال یا اعمال انسانوں کی کما ئی ہیں ۔ بُرائی کو خدا کے منسلک نہیں کرنا چاہیے۔ برائی متعلقہ ہے ۔ مثلاً سانپ کا زہر انسان کے لئے بُرا ہے لیکن سانپوں کے لئے وہ اچھا ہے۔ شیر کے پنجے اور دانت دوسرے جانوروں کے لئے بُرے لیکن شیر کے لئے نعمت ہیں ۔ بیل کے سینگ دوسروں کے لئے بُرے مگر اس کے خود کے لئے اس کا دفاع ہیں ۔ لہٰذا جیسے آخری صحیفے میں خدا کہتا ہے ” کہو، میں فلق کے رب کی پناہ مانگتا ہوں  ہر چیز کی بدی سے جو اس نے پیدا کی اور اندھیرے کی برائی سے جب وہ چھا جائے”۔ یہاں خدا اس برائی(مخلوق کی برائی) سے بچنے کو کہتا ہے جسے اس نے پیدا کیا ۔ یہ نہیں کہتا کہ اس برائی سے   جواس نے پیدا کی ۔ اس لئے مخلوق ، حالات اور واقعات اپنا وجود رکھتے ہیں جن میں برائی ہو سکتی ہے لیکن وہ مکمل برائی کے طور پر پیدا نہیں کئے گئے۔  یہانتکہ کہ شیطان جو خدا نے بنایا مکمل برائی نہیں بنایا یا برائی کے مقصد سے نہیں بنایا گیا ۔ یہ تخلیق کی ضمنی پیداوار ہے جیسے کہ آپکو آپ کی فیکٹریوں کی مصنوعات پیدا کرتے ہوئے ملتا ہے ۔  اور اس کا مقصد اس دنیا کو ایک آزمائش گاہ بنانا ہے ۔شیطان کے بغیر  ہمیں اجر کیسے ملے گا اگر کوئی منفی سوچ کا وجود نہ ہواور صرف اچھائی ہی بسے۔ پھر اس کائنات کو تخلیق کرنے کا کوئی مقصد نہیں ہے ۔ اگر خدا کی یہ مرضی ہوتی کہ سب اچھا ، پاک اور اس کا تابعدار ہو تو اس نے آپ کو تخلیق نہ کیا ہوتا کیونکہ وہ مخلوقات جو اس کے ساتھ ہیں اس کی بڑائی کے لئے اور اسے صبح شام جلال دینے کے لئے کافی ہیں ۔

اے لوگو، تمہاری ذمے داری اپنی کوشش کرنا ہے اور پھر خدا سے اس کے لئے مدد مانگنا ہے۔ ہم صرف کوشش کے لئے ذمے دار ہیں نتائج کے لئے نہیں ۔ نتائج کو خدا پر چھوڑ دیں کیونکہ اگر کامیابی ملے تو اچھا ہو گا۔ اور چاہے اگر کو ئی کامیابی یا نتیجہ یہاں نہیں ملتا توآپ آخرت میں کامیاب ہونگے۔ خاصکر اگر آپ کسی بڑے مقصد کے حصو ل کے لئے خدا کی راہ میں کوئی کوشش کرتے ہیں جو آپ سے بڑھ کر انسانیت کے لئے ہے تو یاد رکھئے کامیا بی اس کا معیار نہیں ہے۔ کیونکہ یسوع مسیح خدا کے بڑے  ترین نبیوں میں تھےلیکن ظاہراً دنیا میں ناکام ہوئے۔ جبکہ آپ کے خداوند کی اس دنیا میں کچھ بندے ایسے ہو ئے ہیں جو اپنے مقصد میں بہت کامیاب ہو ئے ۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ 400 لوگ اس پروگرام کو دیکھ رہے ہیں یا 4000 ملین ۔ اگر خدا کی مرضی ہوئی تو وہ وقت آئے گا جب وہ اس میں اثر پیدا کرے گا۔ جیسے کہ آخری صحیفے میں بیان کیا گیا ہے تو میں اپنی زندگی ایسے گزارنا چاہتا ہوں اور یہ اعلان کرتا ہوں کہ۔ ” درحقیقت میری عبادت میری کاوشیں، میری رسومات، میرا کام، میرا جینا  اور مرنا خدا کے لئے ہے جو تمام جہانوں کا رب ہے۔ اس کا کوئی شریک نہیں ؛ اسی چیز کا مجھے حکم دیا گیا ہے۔ اور میں ان میں سے پہلا ہوں جو خود کو اس کے تابع کرتا ہوں ۔

اگر میرے خداوند کی مرضی ہوئی میں اس مضمون کو اگلے پروگرام میں جاری رکھتے ہوئے اسے مکمل کرونگا۔

اے لوگو ، تمہارا رب لوگوں کو ان کے پہلے گناہوں پر سزا نہیں دیتا۔ وہ انہیں توبہ کرنے کا موقع دیتا ہے۔  درحقیقت تمہارے رب کی نگاہ میں غلط افعال یا بے انصافی  اصل گناہ نہیں  ہیں بلکہ ان کو دہرانا گناہ ہے۔ بار بار کسی غلط کام کو کرنا، توبہ نہ کرنا،   اور اس پر پچھتاوا محسوس نہ کرنا  دراصل بُرا ہے۔   اے لوگو،   یہ ایک ممکنات کی دُنیا ہے ، ممکنات کی کائنات ، جہاں کوئی بھی کسی بھی درجے تک پہنچ سکتا ہے۔ خدا  نے تمہیں چناؤ اور انتخابات دیے ہیں جو ہر لمحہ تمہارے سامنے ابھرتے ہیں  اور    اس نے تمہیں  ان کے چناؤ کی مکمل آذادی دی ہے ۔  یہاں کوئی حد نہیں ہے۔ اگر آپ ایک غریب  شخص ہو ں یا چاہے ایک غلام ہوں ، آپ ایک حاکم یا بادشاہ بن سکتے ہیں ۔  اے لوگوں اگر آپ خود کو مصیبت میں محسوس کر رہے ہیں اور سو چتے ہیں کہ آپ ایک  بھیانک چکر میں پھنسے ہوئے ہیں  جس سے باہر نکلنے کا کوئی راستہ نہیں ہے تو صرف ایک کام کرنا شروع کریں ۔ ہر لمحے ان انتخابات کا چناؤ کریں جو اخلاقی طور پر درست ہیں ۔   ایک لمحے کے لئے بھی  ان انتخابات کے بارے میں نہ سوچیں جو آپ کے مقصد کے حصول میں آپ کی مدد کر سکتے ہیں  لیکن وہ اخلاقی طور پر درست نہیں ہیں ۔  آپ کے رب نے اسی طرح سے کائنات کو بنایا ہے۔  اگر آپ غیر اخلاقی انتخابات  کا چناؤ کریں گے تو وہ آپ کو صرف تبھی سزا دے گا جب آپ انہیں دہراتے رہیں گے۔  اور اگر آپ صحیح انتخابات کا چناؤ کریں گے تو وہ آپ کو جلد ہی مصیبت  اور بھیانک چکر سے نکال لے گا اور آپ پر اتنی رحمتیں برسائے گا کہ آپ نے سوچا بھی نہیں ہوگا۔

اس کو مزید سمجھنے کے لئے میں آپ کو ایک مثال دیتا ہوں۔  تصور کیجئے کہ آپ اپنی اہلیہ کے ساتھ بیٹھے ہیں اور چونکہ آپ کے پاس انتخابات اور آذاد مرضی  ہمیشہ رہتی ہے  تو آپ اپنا ہاتھ ہلانے کا اختیار استعمال کرتے ہیں اور وہ غلطی سے آپ کی اہلیہ کی آنکھ میں لگ جاتا اور اسے زخمی کر دیتا ہے۔ تو اس کے وقوع پذیر ہوتے ہی  آپ کے سامنے چناؤ اور انتخابات کا ایک نیا مجموعہ آ جاتا ہے کہ یا تو آپ اپنی غلطی مان کر اس سے معافی مانگ لیں  یا پھر اسے کہیں کہ یہ اس کی غلطی ہے اور وہ کیوں اپنا چہرہ  آپ کے ہاتھ کے قریب لائی یا اس سے بھی ذیادہ  غیر معقول  ہو جائیں اور اس پر ناراض ہوں  وغیرہ وغیرہ۔  اگر آپ پہلا انتخاب چنتے ہیں اس پر   اس کے ذہن میں آپ کے اچھے تاثر کے ساتھ معاملہ  وہاں ہی ختم ہو جائے گا اور ساتھ ہی کوئی اور معاملہ شروع ہو جائے گا۔  لیکن اگر آپ دوسرے یا تیسرے انتخاب کا چناؤ کریں گے تو اگلا نتیجہ زیادہ ممکنہ طور پریہ ہو سکتا ہے کہ  اسکا بھی ردعمل آئے  اور وہ  آپ کے ساتھ بحث کرنا شروع کر دے  کہ آپ کو تمیز نہیں ہے اور آخر کار آپ اسے گالیاں دینی شروع کر دیں۔  اس با ت  اور مثال کو سمجھانے کے غرض سے اسے مختصر رکھتے ہوئے  آپ اسے گھر چھوڑ نے کا کہہ سکتے ہیں اور وہ رونا اور چلانا شروع کر دے۔  اب آپ کے سامنے ایک اور  چناؤ اور انتخابات کا نیا مجموعہ آ جاتا ہے  کہ یا تو آپ کو اپنی غلطی کا احساس ہو اور  اس سے معافی مانگ لیں یا پھر اپنی ضد پر اڑے رہیں  اور غلط باتیں کہتے رہیں ۔  پہلے چناؤ کی صورت میں معاملہ وہیں ختم ہو جائے گااور ساتھ ہی کسی  دوسرے معاملے کا آغاز ہو جاے گا  ۔ لیکن اگر آپ دوسرا چناؤ کرتے ہیں جو کہ دوبارہ  ایک غیر اخلاقی چناؤ  ہے تو اس سے ایک نئی صورتحال پیدا ہو جائیگی۔  وہ گھر چھوڑ دے گی اور شاید یہ معاملہ طلاق تک جا پہنچے۔  تب آپ کو اپنی آنکھوں کے آگے بالکل ایک مختلف دنیا دکھائی دے گی جہاں آپ گہرے دکھ میں ہوں اور اکیلے ہوں  اور اپنے دل میں پچھتاوا محسوس کریں ۔  لہٰذا آپ کے لئے یہاں سزا ہوگی اور آخرت میں بھی ۔  آپ صاف طور پر دیکھ سکتے ہیں  کہ آپ کو غلط فعل پر سزا نہیں ملی لیکن اس کے دہرائے جانے پر ملی ہے۔ یہ مثال دونوں طرف لی جا سکتی ہے اگر اہلیہ جارحیت پسند ہے تو یہ مثال اس پر بھی لاگو ہو سکتی ہے کیونکہ آجکل خواتین بھی کچھ کم غلط نہیں ہیں ۔

آپ کے لئے آسان بنا نے کے غرض سے میں نے اسے  “انتخاب کی تھیوری” کا نام دیا ہے۔  اور یہ  محض تھیوری نہیں ہے بلکہ یہ  ایک قانون ہے جو آپ کی اس کائنات کو چلا رہا ہے ۔ اور اگلے پروگراموں میں میں آپ کو  پاک صحیفوں میں سے شواہد دونگا جنہیں آپ صحیح سے سمجھ نہیں پائے۔

جو کائنات اس نے بنائی ہے وہ اتنی  پراسرار ہے  کہ آپ  اس کے پیچھے کی مکمل حکمت حاصل نہیں کر سکتے۔ خدا  نے آپ کو  چناؤ اور انتخابات دیے ہیں جو ہر لمحہ آپ کے  سامنے ابھرتے ہیں  اور    اس نے آپ کو  ان کے چناؤ کی مکمل آذادی دی ہے ۔ یہ دُنیا ، ممکنات کی کائنات ہے۔  اس لئے محض اپنی قسمت کو الزام نہ دیں ۔  ایک غلام حاکم بن سکتا ہے ،ایک کمزور دنیا کا سب سے طاقتور شخص اور ایک جاہل شخص  سب سے ذیادہ عقلمند بن سکتا ہے۔ ممکنات کی دُنیا جہاں کوئی بھی کسی بھی درجے تک پہنچ سکتا ہے۔  یہ صرف اس پر منحصر ہے کہ کوئی کتنا بڑا سوچتا ہے   اور اس پر کتنے صحیح طور سے عمل کرتا ہے۔  اور سب سے بڑھ کر تمہارے رب کی عظیم رحمت آخرت کا وعدہ ہے اس لئے   تاکہ وہ جنہوں نے اس دنیا میں کامیابی سے اپنے انتخابات کا چناؤ نہیں کیا تھا اور وہ برائی کرنے والے بھی نہیں تھے  ان کو سکون اور خوشی ملے۔  وہاں ان کےپاس وہ سب ہو گا جس کی وہ خواہش کریں گے اور جو بھی مانگیں گے۔  جو نہ کسی آنکھ نے دیکھا ، نہ کسی کان نے سنا اور نہ ہی کسی کے دل میں آیا۔

ایک ایمان والے کے معاملات بھی عجیب ہیں  کہ اس کے متعلق کوئی الٰہی  حکم نہیں ہے  لیکن آخرکار وہ اس کے حق میں مفید ہو تا ہے”۔ اگر اسے کوئی برکت ملتی ہے تو وہ خدا کا شکر کرے گا اور اس میں اس کے لئے بھلائی ہے اور اسے  اگر کوئی    نقصان پہنچتا ہے تو وی صبر دکھائے گا اور  لہٰذا اس کے لئے بھلائی ہے۔

اے لوگو تم اس کائنات میں پہلے سے ٹھہرائی گئی ظالم  اور نہ بدلنے والی تقدیر  کے سامنے بے بس نہیں ہو۔ بہت سی چیزیں تمہارے اپنے ہاتھ میں ہیں اور کوشش اور جدوجہد سے تم اپنی قابلیت  اور صلاحیت یہانتکہ اپنی تقدیر بھی بدل سکتے ہو۔  اے لوگو ہماری ذمےداری ہے کہ ہم جدوجہد کریں اور اپنی کوشش کریں اور پھر خدا سے دعا کریں اور اس سے مدد مانگیں ۔ ہم صرف کوشش کرنے کے لئے ذمے دار ہیں نتائج کے لئے نہیں۔ نتائج کو خدا پر چھوڑ دیں  ۔ اے لوگو تم اس کائنات  میں درحقیقت ایک فری ایجنٹ ہو  جس کے پاس  بنانے اور پھیلانے ، بونے اور کاٹنے کے  لئے  اپنے چناؤ ہیں  جو  بھی تم اس کینوس  اور اس کائنات کی مٹی میں بناؤ یا اگاؤ۔  الٰہی جانشینی ، امن  اور خوشی کی  ابدی زندگی  یا ہمیشہ کی ناامیدی۔ جو بھی نتائج آپ چاہیں وہ آپ کے ہاتھ میں ہے۔  جیسے کہ میں نے آپ کے رب کے چناؤ اور انتخابات کے  تحفے  کے بارے میں آپ کو بتایا ہے جو ہر لمحے  آپ کے لئے ابھرتا ہے اور اسے استعمال کرنے کا طریقہ  لہٰذا آپ کے لئے ہر چیز ممکن ہے اگر آپ کی چاہت ہے اور آپ اس کے لئے قدم بڑھاتے ہیں ۔   اے بنی نوع انسان ، تمہارے لئے  بہت سی ممکنات، بہت سے راستوں ، بہت سی تقدیروں اوربہت سی دُنیاؤں کے امکانات ہیں ۔  اہم بات یہ ہے کہ آپ   ہر بدلتے لمحے کے ساتھ ہر ابھرتے ہوئے  کونسے چناؤ  کا انتخاب کرتے ہیں  ۔ جو انتخاب آپ چنیں گے وہ آپ کو اس قسم کی تقدیر کی جانب لے کر جائے گا۔ اگر آپ مصیبت ذدہ محسوس کر رہے ہیں  اور خود کو ایسے بھیانک چکر میں پھنسا محسوس کر رہے ہیں جہاں سے نکلنے کاکوئی راستہ نہیں تو صرف دو کام کیجئے۔ پہلا  دوسری تقدیر کے لئے اپنے خداوند سے دُعا کیونکہ  آپ کے خداوند کے پاس تقدیروں کی کوئی کمی نہیں ہے  یہ  آپ کی اس کائنات کے تانے بانے میں پہلے سے ہی بنی ہوئ ہیں۔ پھر دعا کے بعد صرف  ایک کام کرنا شروع کریں ۔ یعنی ہر لمحے  ابھرتے ہوئے انتخابات  میں سے اخلاقی لحاذ سے اچھے انتخابات کا چناؤ کریں ۔ اگر آپ ایسا کریں گے اور خود کو تبدیل کریں گے تو آپ کی تقدیر بھی بدل جائے گی۔