Destiny, Fate, Karma, Qadar, Determinism and Freewill-3.

Recitation of the Holy Scripture.

That is their sum of knowledge. Indeed, your Lord knows best he who strays from His Path, and He knows best he who is guided. 

And to God belongs whatever is in the heavens and whatever is in the earth that He may recompense those who do evil with (the punishment of) what they have done and recompense those who do good with the best [reward]

Those who avoid the major sins and immoralities, only [committing] slight ones. Indeed, your Lord is vast in forgiveness. He was most knowing of you when He produced you from the earth and when you were fetuses in the wombs of your mothers. So do not claim yourselves to be pure; He is most knowing of who fears Him.

And there is no creature on earth but upon God is its provision. And He knows its dwelling place and its place of storage. All is in a clear Record.

Indeed, I put my trust in God my Lord and your Lord. There is no moving creature but that He has grasp of its forelock. Indeed, my Lord is on a straight path.

And whatever misfortune befalls you, it is because of what your hands have earned. But He pardons much.

Have they not been informed of what was in the scriptures of Moses

And of Abraham, who fulfilled (his covenant)

And that man will have nothing except what he strives for 

And that his effort is going to be seen 

Then he will be recompensed for it with the fullest recompense

And that to your Lord is the finality

End of Recitation of the Holy Scripture.

O mankind your Lord does not punish people on their first sins. He gives them chance to repent. It is not actually the sin, wrongdoing or injustice that is bad in the eyes of your Lord but it is its repetition. Repeating a wrong act again and again, not repenting and not feeling it wrong is what is bad. O people it is a world, a universe of possibilities where anyone can reach to any level. God has made for you choices and options which pop up every second and He has given you free will to choose among these options. There is no limit. If you are a poor person or even a slave, you can become a king a ruler. O people if you are feeling miserable and feel yourself in a vicious cycle from where there is no way out just start doing one thing only. Start choosing every moment those options which are best in terms of morality. Don’t consider even for a second at those options which you think are good to achieve your purpose but have something morally wrong in them. Your Lord has made this Universe like that. If you choose morally wrong options He will only punish you when you keep on doing its repetition and if you choose right options He will soon take you out of misery and vicious cycle and will send His blessings from where you would have not imagined. 

To understand it more I give you an example consider that you are sitting with your wife and as you have free will and options all the time. You utilize the option of moving your hand and it happens that it touches your wife’s eye and hurt her. Now as soon as it happens another set of options and choices open up for you that either admit your mistake and ask her sorry or another option to say that it was her fault why she brought her face near your hand, or to become more irrational and react in anger, so on and so forth. If you choose the first option that matter closes as such with good impression of yours in her mind and some other matter starts simultaneously. But if you select second or third option the next outcome most probably will be that she will react and may be start arguing with you saying that you are an ill mannered person and you end up in abusing her. Keeping it short and just for understanding the concept and this example, you may ask her to leave your home. She starts weeping and crying. Now a set of other options and choices open up for you either you now realize your mistake and say sorry or remain stubborn and keep on repeating the wrong thing. If you choose the first option than that matter closes as such and some other matter starts simultaneously. But if you select the second option that is again a morally wrong option a new scenarios will pop up out of it. She leaves the house and may be that matter ends up on divorce. Again many options for you but if you keep on choosing the wrong one it will end up on divorce. Then see you have a totally different world in front of your eyes in which you are in deep pain and lonely and have a feel of guilt in your heart. So you would have a punishment here and as well as in hereafter. You can clearly see that you have not been punished on the wrong act but on its repetition. This example can be taken both ways with wife as an aggressor. As these days women also do much wrong.

To make it simple for you I named it  “Options Theory”. And its not a theory it is a law governing this universe of yours and later in next programs I will give you proofs and versus from the Holy scriptures which actually you totally misunderstood.

This universe He made is so mysterious that you cannot grasp the whole wisdom behind its creation. God has made for you choices and options which pop up every second and He has given you free will to choose among these options. It is a world, a universe of possibilities. So don’t blame your destiny only. A slave can become a ruler, a weak can become the strongest person, an ignorant can become the most wise. A world of possibilities where anyone can reach to any level. Its just a matter of how big a person thinks and how accurately he acts upon that. And above that a huge mercy of your Lord is the promise of hereafter so that those who have not successfully utilized their options here and are not wrongdoers they will have peace and pleasure. They will have there whatever they ask and whatever their soul desire. What no eye has seen, no ear has heard, nor the heart of any man imagined. 

The affairs of a believer is strange that there is no divine decree about him but eventually it will be to his benefit.” If he gets some blessing then he thanks God and thus there is good for him, and if he is harmed, then he shows patience and thus there is good for him.

O people you are not here in this universe helpless before a cruel determined unchanging fate. Most of the things are in your hand and with effort and struggle you can even change your capacities, capabilities and even your destiny. O people our responsibility is to do struggle to put our effort and than to pray and ask for God’s help. We are just responsible for the effort not for the results, leave results on God. O people you are actually a free agent in this universe having your own choice to draw, sow, propagate and grow whatever you like to draw and grow in this canvas in this soil of universal opportunities. Divine vicegerency, eternal life of peace and pleasure or Eternal despair whatever outcome you like, it is in your hands. As I told you about the gift of options from your Lord popping for you every moment and the way to utilize these thus everything is actually possible for you provided you have will and you take an initiative. O mankind there is scope for many possibilities, many paths, many destinies and many worlds for you. What matters is only what options you pick every second when they pop up with the changing moments. The options you pick will lead to that kind of destiny. If you are feeling miserable and feel yourself in a vicious cycle from where there is no way out then do just two things first pray your Lord for another destiny as there is no limit of destinies with your Lord its already woven in the fabric of this cosmos this universe of yours so after pray start doing one thing only I.e every moment choose morally right options whenever they pop up. If you do this and change yourself your destiny stands changed.

Recitation of the Holy Scripture.

ذلك مبلغهم من العلم إن ربك هو أعلم بمن ضل عن سبيله وهو أعلم بمن اهتدى 

وللـه ما في السماوات وما في الأرض ليجزي الذين أساءوا بما عملوا ويجزي الذين أحسنوا بالحسنى  

الذين يجتنبون كبائر الإثم والفواحش إلا اللمم إن ربك واسع المغفرة هو أعلم بكم إذ أنشأكم من الأرض وإذ أنتم أجنة في بطون أمهاتكم فلا تزكوا أنفسكم هو أعلم بمن اتقى 

وما من دابة في الأرض إلا على اللـه رزقها ويعلم مستقرها ومستودعها كل في كتاب مبين

إني توكلت على اللـه ربي وربكم ما من دابة إلا هو آخذ بناصيتها إن ربي على صراط مستقيم

وما أصابكم من مصيبة فبما كسبت أيديكم ويعفو عن كثير 

أم لم ينبأ بما في صحف موسى 

وإبراهيم الذي وفى

وأن ليس للإنسان إلا ما سعى

وأن سعيه سوف يرى 

ثم يجزاه الجزاء الأوفى 

وأن إلى ربك المنتهى

End of Recitation of the Holy Scripture.

يا أيّها النّاس؛ إن الله لا يعاقبكم على ذنوبكم الأولى بل يعطيكم فرصة للتوبة. في الواقع ليس الذنب او الظلم هو الفساد في عين ربّكم، بل تكرار هذة الأخطاء مرّة أخرى، فعدم التوبة وعدم الإحساس بالأخطاء هو الفساد.

إنّ العالم مليئٌ بالإحتمالات حيث يمكن لأيّ شخص أن يصل لأيّ مستوى. فقد أتاح الله لنا الإختيارات التي تظهر في كل ثانية وترك لنا حريّة الإختيار بين تلك الخيارات، فلا يوجد حدود. إذا كنت رجل فقير او حتّى عبد فقد يمكنك أن تصبح ملكٌ وحاكم.

إذا شعرتُم بالبؤس وشعرتُم أنّكم في حلقة مغلقة حيث لا طريق للخروج، افعلوا شئ واحد فقط؛ ابدأوا بإختيار أفضل الخيارات أخلاقيًّا ولا تنظروا ولو لثانية للخيارات التي تعتبرونها جيّدة لمجرّد أنّها تحقّق أهدافكم ولكنّها غير سويّة أخلاقيًّا. فقد جعل الله-عزّ وجلّ- الكون مثل ذلك؛ إذا إخترتم إختيار غير أخلاقيّ سوف يعاقبكم حينما تستمرّون على فعله، وإذا إخترتم إختيار أخلاقيّ سيأخذكم بعيدًا عن البؤس والدائرة المغلقه وسيمدُّكم بالسرور والبركة التي لا يمكنكم تخيّلها.

لفهم هذا أكثر سأعطي لكم مثال: تخيّل أنّك تجلس مع زوجتك وبما أنّك تملك الحرّيّة والإرادة والإختيارات طوال الوقت، قمت بإستغلال هذا في تحريك يديك ثم اصطدمت بعين زوجتك وتسببت في وجعها. الآن وبمجرّد حدوث هذا يوجد مجموعة من الخيارات المتاحة أمامك؛ إمّا تتقبّل خطأك وتعتذر لها أو أن تخبرها أنه خطأها فلماذا وضعت وجهها قريبًا من يديك؟ أو أن تصبح غير منطقي أكثر وتتصرّف بغضب من الآن وصاعدًا. إذا أخترت الخيار الأوّل؛ فسيعطي هذا إنطباعًا جيّدًا عنك في عقل زوجتك، ولكن إذا إخترت الخيار الثاني أو الثالث ففي الغالب ستنفعل زوجتك وتبدأ في الجدال معك وقد تخبرك أنّك شخص فظّ وينتهي بك الأمر في الإساءة لها. بغضّ النظر عن هذا ومجرّد فهم المبدأ او هذا المثال، قد تطلب منها مغادرة المنزل، فتبدأ في البكاء. الآن المزيد من الخيارات تظهر أمامك، إمّا أن تتفهّم خطأك وتعتذر أو أن تبقى عنيدًا مصرًّا على تكرار خطأك. إذا إخترت الخيار الأوّل سينتهي الخلاف على هذا النحو، وإذا إخترت الخيار الثاني الغير أخلاقي مرّة أخرى قد تظهر لك خلافات جديدة. ستغادر الزوجة المنزل وقد ينتهي هذا بالطلاق. مرّة أخرى هناك المزيد من الخيارات ولكن إذا أصررت على الخيار الخاطئ سينتهي الأمر بالطلاق.

الآن لديك عالم مختلف تمامًا أمام عينيك تكون فيه وحيدًا في ألم شديد وتشعر بالذنب من داخلك. إذن سيكون هذا العقاب، وكذلك في الآخرة. يمكن أن ترى بوضوح أنّك لم تُعاقب على الخطأ ولكنّك عوقبت على تكراره.

هذا المثال يُمكن أن يؤخذ في كلا الحالتين، فقد تكون المرأة هي المُعتدي. ففي هذة الأيّام ترتكب النساء الكثير من الأخطاء.

لجعل الأمر بسيطًا بالنسبة لكم‘ فقد أطلقت عليها: “نظريّة الخيارات”. وهي ليست نظريّة بل هي قانون يحكم هذا الكون، ولاحقًا في البرامج القادمة؛ سأعطيكم الأدلّة والبراهين من القرآن الكريم التي كان يساء فهمها تمامًا.

إنّ هذا الكون الذي خلقه الله –عزّ وجلّ- مليئٌ بالغموض حيث لا يمكنك معرفة الحكمة وراء خَلْقَهُ. قد أتاح الله الإختيارات التي تظهر في كل ثانية وأعطاك حريّة الإختيار بينهما.

إنّه عالمٌ من الإحتمالات، لذلك لا تلوم قدرك فقط، فالعبد قد يصبح حاكم والضعيف قد يصبح الأقوى، والجاهل قد يصبح الأكثر حكمةً وعلمًا. عالمٌ من الإحتمالات حيثُ يمكن لأيّ شخص أن يصل إلى أيّ مستوى. فهذا يعتمد فقط على مدى تفكير الشخص ومدى تصرّفه حيال هذا. وفوق ذلك؛ رحمة واسعة من ربّك هي وعد الآخرة فالذين لم يستغلوا خياراتهم بنجاح في الدنيا ليسوا مخطئين وسيكون لهم السّعادة والسّلام، وسيكون لهم كل ما يطلبونة وما ترغب بهم أرواحهم. (مَا لَا عَيْنٌ رَأَتْ وَلَا أُذُنٌ سَمِعَتْ وَلَا خَطَرَ عَلَى قَلْبِ بَشَرٍ).

عَجَبًا لِأَمْرِ الْمُؤْمِنِ إِنَّ أَمْرَهُ كُلَّهُ خَيْرٌ وَلَيْسَ ذَاكَ لِأَحَدٍ إِلَّا لِلْمُؤْمِنِ إِنْ أَصَابَتْهُ سَرَّاءُ شَكَرَ فَكَانَ خَيْرًا لَهُ وَإِنْ أَصَابَتْهُ ضَرَّاءُ صَبَرَ فَكَانَ خَيْرًا لَهُ”..

يا أيّها النّاس؛ أنتم لستم في هذا العالم عاجزين تجاه مصير قاس لا يتغيّر. معظم الأشياء بين أيديكم وبالمزيد من الجهد والنضال يمكنكم تغيير قدراتكم وحتّى أقداركُم.

إنّ مهمّتنا هي أن نفعل ما بوسعنا ونجتهد ثم نصلي ونسأل الله العون، فنحن فقط مسئولون عن الكفاح لا عن النتائج، دَع النتائج إلى الله.

إنّكم أحرار في هذا العالم، لديكم الحريّة لرسم وزرع ونشر وتنمية ما تريدوا أن ترسموه وتزرعوه في هذة اللوحة وهذة التربة من خيارات العالم.

خلافة الله، حياه أبديّة من السّلام والسّعادة أم البؤس الخالد مهما كانت النتيجة التي تريدونها، إن كل شئ بين أيديكم.

كما أخبرتكم أن هديّة الإختيارات من الله تظهر لكم في كل لحظة والطريقة لإستغلال هذة الإختيارات هي أن كل شيئ متاح ومتوفّر لك وعليك أن تبدأ فقط.

يا أيّها النّاس؛ هناك مجال للكثير من الإحتمالات والكثير من المسارات والكثير من الأقدار والكثير من العوالم بالنسبة لك، ولكن المهم هو الخيارات التي تختارها في كل ثانية حينما تظهر لك في لحظات مختلفه. الخيارات التي تختارها ستقودك إلى هذا النوع من الأقدار. إذا كنت تشعر بالبؤس وبأنك داخل دائرة مغلقه حيث لا طريق للخروج، فقط قم بخطوتين؛ أوّلًا: أدع ربّك أن يرزقك بقضاء آخر حيث لا نهاية لأقدار الله فهي ممزوجة بالفعل في نسيج هذا الكون، وبعد الدّعاء قم بشئ واحد، في كل مرّة لحظة إختر الخيارات السويّة أخلاقيًّا، إذا فعلت هذا وبدأت بتغيير نفسك، ستجد أن مصيرك بدأ يتغيّر.

Recitation of the Holy Scripture.

Essa é a soma deles de conhecimento. De fato, seu Senhor sabe melhor quem se desvia de Seu caminho, e Ele sabe melhor quem é guiado.
E a Deus pertence tudo o que está nos céus e tudo o que está na terra para que Ele possa recompensar aqueles que praticam o mal com (o castigo de) o que eles fizeram e recompensar aqueles que fazem o bem com o melhor [recompensa] Aqueles que evitam os grandes pecados e imoralidades, apenas [cometendo] pequenos. De fato, seu Senhor é vasto em perdão. Ele sabia muito de você quando Ele te produziu da terra e quando você era feto no útero de suas mães. Portanto, não se assuma ser puro; Ele é o que mais sabe quem o teme.
E não há criatura na terra, mas em Deus está sua provisão. E Ele conhece sua morada e seu local de armazenamento. Tudo está em um registro claro.
De fato, confio em Deus meu Senhor e seu Senhor. Não há criatura que se mova, mas que Ele tenha a compreensão de seu topete. De fato, meu Senhor está em um caminho reto.
E qualquer desgraça que aconteça com você, é por causa do que suas mãos ganharam. Mas ele perdoa muito.
Eles não foram informados do que estava nas escrituras de Moisés
E de Abraão, que cumpriu (seu pacto)
E esse homem não terá nada, exceto o que ele se esforça para
E que seu esforço será visto
Então ele será recompensado com a recompensa total
E que para o seu Senhor é a finalidade.

End of Recitation of the Holy Scripture.

Ó humanidade, seu Senhor não pune as pessoas pelos seus primeiros pecados. Ele lhes dá chance de se arrepender. Não é realmente o pecado, a injustiça ou injustiça que é ruim aos olhos do seu Senhor, mas é a sua repetição. Repetir um ato errado de novo e de novo, não se arrepender e não sentir errado é o que é ruim. Ó povo é um mundo, um universo de possibilidades onde qualquer um pode chegar a qualquer nível. Deus fez para você escolhas e opções que surgem a cada segundo e Ele lhe deu livre arbítrio para escolher entre essas opções. Não há limite. Se você é uma pessoa pobre ou até mesmo um escravo, você pode se tornar um rei um governante. Ó pessoas, se você está se sentindo infeliz e se sente em um ciclo vicioso de onde não há saída, apenas comece a fazer uma coisa só. Comece a escolher a cada momento as opções que são melhores em termos de moralidade. Não pense nem por um segundo naquelas opções que você acha que são boas para alcançar seu objetivo, mas que tem algo moralmente errado nelas. Seu Senhor fez este Universo assim. Se você escolher opções moralmente erradas, Ele só irá puni-lo quando você continuar fazendo sua repetição e se você escolher as opções certas. Ele logo o tirará da miséria e do ciclo vicioso e enviará Suas bênçãos de onde você não teria imaginado.

Para entender mais, dou-lhe um exemplo, considere que você está sentado com sua esposa e como você tem livre arbítrio e opções o tempo todo. Você utiliza a opção de mover a mão e acontece que ela toca o olho da sua esposa e a magoa. Agora, assim que acontecer, outro conjunto de opções e escolhas se abrirá para você, ou admitirá seu erro e lhe pedirá desculpas ou outra opção para dizer que foi culpa dela por que ela aproximou seu rosto ou se tornou mais irracional e reaja com raiva, e assim por diante. Se você escolher a primeira opção, a questão se encerra como tal, com uma boa impressão sua em sua mente e outra questão começa simultaneamente. Mas se você selecionar a segunda ou terceira opção, o próximo resultado provavelmente será que ela vai reagir e pode começar a discutir com você dizendo que você é uma pessoa mal-educada e acaba abusando dela. Mantendo-o curto e apenas para entender o conceito e este exemplo, você pode pedir a ela que deixe sua casa. Ela começa a chorar e a chorar. Agora, um conjunto de outras opções e escolhas se abre para você, agora você percebe seu erro e pede desculpas ou permanece teimoso e continua repetindo a coisa errada. Se você escolher a primeira opção, o assunto é encerrado e outras questões começam simultaneamente. Mas se você selecionar a segunda opção que é novamente uma opção moralmente errada, um novo cenário surgirá dela. Ela sai de casa e pode ser que o assunto acabe em divórcio. Mais uma vez muitas opções para você, mas se você continuar escolhendo o errado vai acabar em divórcio. Então veja que você tem um mundo totalmente diferente na frente dos seus olhos, no qual você está com uma dor profunda e solitária e tem uma sensação de culpa em seu coração. Então você teria um castigo aqui e assim como no futuro. Você pode ver claramente que você não foi punido pelo ato errado, mas por sua repetição. Este exemplo pode ser tomado em ambos os sentidos com a esposa como agressora. Hoje em dia as mulheres também fazem muito mal.

Para simplificar, chamei de “Teoria das Opções”. E não é uma teoria, é uma lei que rege este seu universo e, mais tarde, nos próximos programas, eu lhe darei provas e contra as escrituras sagradas que, na verdade, você entendeu mal.

Este universo que Ele criou é tão misterioso que você não pode compreender toda a sabedoria por trás de sua criação. Deus fez para você escolhas e opções que surgem a cada segundo e Ele lhe deu livre arbítrio para escolher entre essas opções. É um mundo, um universo de possibilidades. Então não culpe seu destino apenas. Um escravo pode se tornar um governante, um fraco pode se tornar a pessoa mais forte, um ignorante pode se tornar o mais sábio. Um mundo de possibilidades onde qualquer um pode alcançar qualquer nível. É apenas uma questão de quão grande uma pessoa pensa e com que precisão age sobre isso. E acima disso, uma imensa misericórdia do seu Senhor é a promessa do futuro, para que aqueles que não utilizaram com sucesso suas opções aqui e não sejam malfeitores, tenham paz e prazer. Eles terão lá o que eles pedirem e o que sua alma desejar. O que nenhum olho viu, nenhum ouvido ouviu, nem o coração de qualquer homem imaginado.

Os assuntos de um crente são estranhos que não há decreto divino sobre ele, mas eventualmente será para o seu benefício. ”Se ele recebe alguma bênção, ele agradece a Deus e, portanto, há bem para ele, e se ele for prejudicado, então ele mostra paciência e, portanto, é bom para ele.

Ó povo, você não está aqui neste universo desamparado diante de um destino imutável, cruel e determinado. A maioria das coisas está em sua mão e com esforço e luta você pode até mesmo mudar suas capacidades, capacidades e até mesmo seu destino. Ó povo, nossa responsabilidade é lutar para nos esforçar e orar e pedir a ajuda de Deus. Somos apenas responsáveis ​​pelo esforço não pelos resultados, deixamos resultados em Deus. Ó povo você é na verdade um agente livre neste universo tendo a sua própria escolha para desenhar, semear, propagar e cultivar o que você gosta de desenhar e crescer nesta tela neste solo de oportunidades universais. A vice-regência divina, a vida eterna de paz e prazer ou o desespero eterno, qualquer que seja o resultado que você goste, está em suas mãos. Como eu lhe falei sobre o dom de opções de seu Senhor surgindo para você a cada momento e a maneira de utilizá-las, assim tudo é realmente possível para você, desde que você tenha vontade e tome uma iniciativa. Ó humanidade há espaço para muitas possibilidades, muitos caminhos, muitos destinos e muitos mundos para você. O que importa é apenas as opções que você escolhe a cada segundo quando aparecem com os momentos de mudança. As opções que você escolher levarão a esse tipo de destino. Se você está se sentindo miserável e se sente em um ciclo vicioso de onde não há saída, então faça apenas duas coisas primeiro, ore a seu Senhor por outro destino, pois não há limite de destino com seu Senhor já tecido no tecido deste cosmo. Esse seu universo então, depois de orar, começar a fazer uma coisa só, a cada momento, escolha opções moralmente corretas sempre que surgirem. Se você fizer isso e mudar a si mesmo, o seu destino mudará.

Recitation of the Holy Scripture.

Esa es su suma de conocimiento. De hecho, tu Señor conoce mejor a aquel que se aparta de Su Sendero, y Él conoce mejor a aquel que es guiado.
Y a Dios pertenece todo lo que está en los cielos y todo lo que hay en la tierra para recompensar a los que hacen mal con (el castigo de) lo que han hecho y recompensar a los que hacen el bien con la mejor [recompensa] Aquellos que evitan los pecados mayores y las inmoralidades, solo [cometiendo] los leves. De hecho, tu Señor es vasto en el perdón. Él sabía mucho de ti cuando te sacó de la tierra y cuando eras fetos en el vientre de tus madres. Así que no reclames ser puro; Él es el que más sabe de quién le teme.
Y no hay criatura en la tierra sino sobre Dios su provisión. Y Él conoce su morada y su lugar de almacenamiento. Todo está en un registro claro.
De hecho, confío en Dios, mi Señor y su Señor. No hay criatura en movimiento, pero él tiene la capucha de su mechón. De hecho, mi Señor está en un camino recto.
Y cualquier desgracia que te sobrevenga, es por lo que tus manos se han ganado. Pero Él perdona mucho.
¿No han sido informados de lo que estaba en las escrituras de Moisés?
Y de Abraham, que cumplió (su pacto)
Y ese hombre no tendrá nada excepto lo que se esfuerza por
Y que su esfuerzo será visto
Entonces será recompensado por ello con la recompensa más completa
Y eso para tu Señor es la finalidad.

End of Recitation of the Holy Scripture.

Oh, humanidad, tu Señor no castiga a las personas por sus primeros pecados. Él les da la oportunidad de arrepentirse. En realidad, no es el pecado, el mal o la injusticia lo que es malo a los ojos de su Señor, sino su repetición. Repetir un acto equivocado una y otra vez, no arrepentirse y no sentirlo mal es lo malo. Oh, gente, es un mundo, un universo de posibilidades donde cualquiera puede alcanzar cualquier nivel. Dios ha creado para usted opciones y opciones que aparecen cada segundo y le ha dado libre albedrío para elegir entre estas opciones. No hay límite. Si eres una persona pobre o incluso esclava, puedes convertirte en un rey gobernante. Oh gente si te sientes miserable y te sientes en un círculo vicioso desde donde no hay salida, solo comienza a hacer una sola cosa. Comience a elegir en todo momento las opciones que sean mejores en términos de moralidad. No considere ni siquiera por un segundo las opciones que cree que son buenas para lograr su propósito, pero que tienen algo moralmente incorrecto en ellas. Tu Señor ha hecho este Universo así. Si eliges opciones moralmente incorrectas, Él solo te castigará cuando sigas haciendo su repetición y si eliges las opciones correctas, Él pronto te sacará de la miseria y del círculo vicioso y enviará Sus bendiciones desde donde no hubieras imaginado.

Para entenderlo más te doy un ejemplo, considera que estás sentado con tu esposa y que tienes libre albedrío y opciones todo el tiempo. Utiliza la opción de mover la mano y sucede que toca el ojo de su esposa y la lastima. Ahora, tan pronto como sucede, se abren para ti otras opciones y opciones que admiten tu error y le piden disculpas u otra opción para decir que fue su culpa por qué acercó su rostro a tu mano, o para volverse más irracional y reacciona con enojo, etcétera. Si eliges la primera opción, la materia se cierra como tal, con una buena impresión tuya en su mente y otra cuestión que se inicia simultáneamente. Pero si selecciona la segunda o tercera opción, lo más probable es que ella reaccione y comience a discutir con usted diciéndole que es una persona maleducada y termina abusando de ella. Manteniéndolo corto y solo para comprender el concepto y este ejemplo, puede pedirle que se vaya de su casa. Ella comienza a llorar y llorar. Ahora se abren para ti otras opciones y opciones; o bien te das cuenta de tu error y le pides disculpas o te muestras obstinado y sigues repitiendo algo equivocado. Si eliges la primera opción, ese asunto se cierra como tal y otro asunto se inicia simultáneamente. Pero si selecciona la segunda opción que nuevamente es una opción moralmente incorrecta, surgirán nuevos escenarios. Ella se va de la casa y es posible que la cuestión termine con el divorcio. Una vez más, muchas opciones para usted, pero si sigue eligiendo la incorrecta, terminará en divorcio. Luego, observa que tienes un mundo totalmente diferente frente a tus ojos en el que estás sumido en un dolor profundo y solitario, y tienes un sentimiento de culpabilidad en tu corazón. Entonces tendrías un castigo aquí y también en el más allá. Puedes ver claramente que no has sido castigado por el acto incorrecto, sino por su repetición. Este ejemplo se puede tomar en ambos sentidos con la esposa como agresor. Como en estos días las mujeres también hacen mucho mal.

Para simplificarlo, lo llamé “Teoría de opciones”. Y no es una teoría, es una ley que rige este universo tuyo y más adelante en los próximos programas te daré pruebas y en contra de las Sagradas Escrituras que en realidad has malinterpretado por completo.

Este universo que hizo es tan misterioso que no puedes comprender toda la sabiduría detrás de su creación. Dios ha creado para usted opciones y opciones que aparecen cada segundo y le ha dado libre albedrío para elegir entre estas opciones. Es un mundo, un universo de posibilidades. Así que no culpes solo a tu destino. Un esclavo puede convertirse en un gobernante, un débil puede convertirse en la persona más fuerte, un ignorante puede convertirse en el más sabio. Un mundo de posibilidades donde cualquiera puede alcanzar cualquier nivel. Es solo cuestión de qué tan grande piensa una persona y con qué precisión actúa sobre eso. Y encima de eso una gran misericordia de su Señor es la promesa del más allá para que aquellos que no hayan utilizado con éxito sus opciones aquí y no sean malhechores tengan paz y placer. Tendrán allí lo que pregunten y lo que deseen sus almas. Lo que ningún ojo ha visto, ningún oído ha escuchado, ni el corazón de ningún hombre imaginado.

Los asuntos de un creyente son extraños de que no hay un decreto divino sobre él, pero eventualmente será para su beneficio. “Si obtiene alguna bendición, entonces él le agradece a Dios y por lo tanto, hay algo bueno para él, y si se ve perjudicado, entonces él muestra paciencia y, por lo tanto, hay algo bueno para él.

Oh gente que no estás aquí en este universo indefenso ante un destino cruel e inmutable. La mayoría de las cosas están en tu mano y con esfuerzo y lucha puedes incluso cambiar tus capacidades, capacidades e incluso tu destino. Oh gente, nuestra responsabilidad es esforzarnos para poner nuestro esfuerzo y luego orar y pedir la ayuda de Dios. Solo somos responsables por el esfuerzo, no por los resultados, dejamos resultados en Dios. Oh gente, en realidad eres un agente libre en este universo que tiene tu propia opción para dibujar, sembrar, propagar y cultivar lo que quieras dibujar y crecer en este lienzo en este suelo de oportunidades universales. La vicegerencia divina, la vida eterna de paz y placer o la desesperación eterna sea cual sea el resultado que desee, está en sus manos. Como ya te dije sobre el regalo de las opciones de tu Señor apareciendo para ti en cada momento y la forma de utilizarlas, todo es posible para ti siempre que tengas voluntad y tomes una iniciativa. Oh humanidad hay posibilidades para muchas posibilidades, muchos caminos, muchos destinos y muchos mundos para ti. Lo que importa son solo las opciones que eliges cada segundo cuando aparecen los momentos cambiantes. Las opciones que elija llevarán a ese tipo de destino. Si te sientes miserable y te sientes en un círculo vicioso de donde no hay salida, haz dos cosas primero, ora a tu Señor por otro destino, ya que no hay límite de destinos con tu Señor, ya está tejido en la tela de este cosmos este universo tuyo entonces, después de orar, comienzas a hacer una cosa, es decir, cada momento eliges opciones moralmente correctas cada vez que aparecen. Si haces esto y te cambias, tu destino cambia.

Recitation of the Holy Scripture.

ان کے علم کی انتہا یہی ہے۔ تمہارا پروردگار اس کو بھی خوب جانتا ہے جو اس کے رستے سے بھٹک گیا اور اس سے بھی خوب واقف ہے جو رستے پر چلا

اور جو کچھ آسمانوں میں ہے اور جو کچھ زمین میں ہے سب خدا ہی کا ہے (اور اس نے خلقت کو) اس لئے (پیدا کیا ہے) کہ جن لوگوں نے برے کام کئے ان کو ان کے اعمال کا (برا) بدلا دے اور جنہوں نے نیکیاں کیں ان کو نیک بدلہ دے

جو صغیرہ گناہوں کے سوا بڑے بڑے گناہوں اور بےحیائی کی باتوں سے اجتناب کرتے ہیں۔ بےشک تمہارا پروردگار بڑی بخشش والا ہے۔ وہ تم کو خوب جانتا ہے۔ جب اس نے تم کو مٹی سے پیدا کیا اور جب تم اپنی ماؤں کے پیٹ میں بچّے تھے۔ تو اپنے آپ کو پاک صاف نہ جتاؤ۔ جو پرہیزگار ہے وہ اس سے خوب واقف ہے

اور زمین پر کوئی چلنے پھرنے والا نہیں مگر اس کا رزق خدا کے ذمے ہے وہ جہاں رہتا ہے، اسے بھی جانتا ہے اور جہاں سونپا جاتا ہے اسے بھی۔ یہ سب کچھ کتاب روشن میں (لکھا ہوا) ہے

میں خدا پر جو میرا اور تمہارا (سب کا) پروردگار ہے، بھروسہ رکھتا ہوں (زمین پر) جو چلنے پھرنے والا ہے وہ اس کو چوٹی سے پکڑے ہوئے ہے۔ بےشک میرا پروردگار سیدھے رستے پر ہے

اور جو مصیبت تم پر واقع ہوتی ہے سو تمہارے اپنے فعلوں سے اور وہ بہت سے گناہ تو معاف ہی کردیتا ہے

کیا جو باتیں موسیٰ کے صحیفوں میں ہیں ان کی اس کو خبر نہیں پہنچی

اور ابراہیمؑ کی جنہوں نے پورا کیا

اور یہ کہ انسان کو وہی ملتا ہے جس کی وہ کوشش کرتا ہے

اور یہ کہ اس کی کوشش دیکھی جائے گی

پھر اس کو اس کا پورا پورا بدلا دیا جائے گا

اور یہ کہ تمہارے پروردگار ہی کے پاس پہنچنا ہے

End of Recitation of the Holy Scripture.

اے لوگو ، تمہارا رب لوگوں کو ان کے پہلے گناہوں پر سزا نہیں دیتا۔ وہ انہیں توبہ کرنے کا موقع دیتا ہے۔  درحقیقت تمہارے رب کی نگاہ میں غلط افعال یا بے انصافی  اصل گناہ نہیں  ہیں بلکہ ان کو دہرانا گناہ ہے۔ بار بار کسی غلط کام کو کرنا، توبہ نہ کرنا،   اور اس پر پچھتاوا محسوس نہ کرنا  دراصل بُرا ہے۔   اے لوگو،   یہ ایک ممکنات کی دُنیا ہے ، ممکنات کی کائنات ، جہاں کوئی بھی کسی بھی درجے تک پہنچ سکتا ہے۔ خدا  نے تمہیں چناؤ اور انتخابات دیے ہیں جو ہر لمحہ تمہارے سامنے ابھرتے ہیں  اور    اس نے تمہیں  ان کے چناؤ کی مکمل آذادی دی ہے ۔  یہاں کوئی حد نہیں ہے۔ اگر آپ ایک غریب  شخص ہو ں یا چاہے ایک غلام ہوں ، آپ ایک حاکم یا بادشاہ بن سکتے ہیں ۔  اے لوگوں اگر آپ خود کو مصیبت میں محسوس کر رہے ہیں اور سو چتے ہیں کہ آپ ایک  بھیانک چکر میں پھنسے ہوئے ہیں  جس سے باہر نکلنے کا کوئی راستہ نہیں ہے تو صرف ایک کام کرنا شروع کریں ۔ ہر لمحے ان انتخابات کا چناؤ کریں جو اخلاقی طور پر درست ہیں ۔   ایک لمحے کے لئے بھی  ان انتخابات کے بارے میں نہ سوچیں جو آپ کے مقصد کے حصول میں آپ کی مدد کر سکتے ہیں  لیکن وہ اخلاقی طور پر درست نہیں ہیں ۔  آپ کے رب نے اسی طرح سے کائنات کو بنایا ہے۔  اگر آپ غیر اخلاقی انتخابات  کا چناؤ کریں گے تو وہ آپ کو صرف تبھی سزا دے گا جب آپ انہیں دہراتے رہیں گے۔  اور اگر آپ صحیح انتخابات کا چناؤ کریں گے تو وہ آپ کو جلد ہی مصیبت  اور بھیانک چکر سے نکال لے گا اور آپ پر اتنی رحمتیں برسائے گا کہ آپ نے سوچا بھی نہیں ہوگا۔ 

اس کو مزید سمجھنے کے لئے میں آپ کو ایک مثال دیتا ہوں۔  تصور کیجئے کہ آپ اپنی اہلیہ کے ساتھ بیٹھے ہیں اور چونکہ آپ کے پاس انتخابات اور آذاد مرضی  ہمیشہ رہتی ہے  تو آپ اپنا ہاتھ ہلانے کا اختیار استعمال کرتے ہیں اور وہ غلطی سے آپ کی اہلیہ کی آنکھ میں لگ جاتا اور اسے زخمی کر دیتا ہے۔ تو اس کے وقوع پذیر ہوتے ہی  آپ کے سامنے چناؤ اور انتخابات کا ایک نیا مجموعہ آ جاتا ہے کہ یا تو آپ اپنی غلطی مان کر اس سے معافی مانگ لیں  یا پھر اسے کہیں کہ یہ اس کی غلطی ہے اور وہ کیوں اپنا چہرہ  آپ کے ہاتھ کے قریب لائی یا اس سے بھی ذیادہ  غیر معقول  ہو جائیں اور اس پر ناراض ہوں  وغیرہ وغیرہ۔  اگر آپ پہلا انتخاب چنتے ہیں اس پر   اس کے ذہن میں آپ کے اچھے تاثر کے ساتھ معاملہ  وہاں ہی ختم ہو جائے گا اور ساتھ ہی کوئی اور معاملہ شروع ہو جائے گا۔  لیکن اگر آپ دوسرے یا تیسرے انتخاب کا چناؤ کریں گے تو اگلا نتیجہ زیادہ ممکنہ طور پریہ ہو سکتا ہے کہ  اسکا بھی ردعمل آئے  اور وہ  آپ کے ساتھ بحث کرنا شروع کر دے  کہ آپ کو تمیز نہیں ہے اور آخر کار آپ اسے گالیاں دینی شروع کر دیں۔  اس با ت  اور مثال کو سمجھانے کے غرض سے اسے مختصر رکھتے ہوئے  آپ اسے گھر چھوڑ نے کا کہہ سکتے ہیں اور وہ رونا اور چلانا شروع کر دے۔  اب آپ کے سامنے ایک اور  چناؤ اور انتخابات کا نیا مجموعہ آ جاتا ہے  کہ یا تو آپ کو اپنی غلطی کا احساس ہو اور  اس سے معافی مانگ لیں یا پھر اپنی ضد پر اڑے رہیں  اور غلط باتیں کہتے رہیں ۔  پہلے چناؤ کی صورت میں معاملہ وہیں ختم ہو جائے گااور ساتھ ہی کسی  دوسرے معاملے کا آغاز ہو جاے گا  ۔ لیکن اگر آپ دوسرا چناؤ کرتے ہیں جو کہ دوبارہ  ایک غیر اخلاقی چناؤ  ہے تو اس سے ایک نئی صورتحال پیدا ہو جائیگی۔  وہ گھر چھوڑ دے گی اور شاید یہ معاملہ طلاق تک جا پہنچے۔  تب آپ کو اپنی آنکھوں کے آگے بالکل ایک مختلف دنیا دکھائی دے گی جہاں آپ گہرے دکھ میں ہوں اور اکیلے ہوں  اور اپنے دل میں پچھتاوا محسوس کریں ۔  لہٰذا آپ کے لئے یہاں سزا ہوگی اور آخرت میں بھی ۔  آپ صاف طور پر دیکھ سکتے ہیں  کہ آپ کو غلط فعل پر سزا نہیں ملی لیکن اس کے دہرائے جانے پر ملی ہے۔ یہ مثال دونوں طرف لی جا سکتی ہے اگر اہلیہ جارحیت پسند ہے تو یہ مثال اس پر بھی لاگو ہو سکتی ہے کیونکہ آجکل خواتین بھی کچھ کم غلط نہیں ہیں ۔

آپ کے لئے آسان بنا نے کے غرض سے میں نے اسے  “انتخاب کی تھیوری” کا نام دیا ہے۔  اور یہ  محض تھیوری نہیں ہے بلکہ یہ  ایک قانون ہے جو آپ کی اس کائنات کو چلا رہا ہے ۔ اور اگلے پروگراموں میں میں آپ کو  پاک صحیفوں میں سے شواہد دونگا جنہیں آپ صحیح سے سمجھ نہیں پائے۔ 

جو کائنات اس نے بنائی ہے وہ اتنی  پراسرار ہے  کہ آپ  اس کے پیچھے کی مکمل حکمت حاصل نہیں کر سکتے۔ خدا  نے آپ کو  چناؤ اور انتخابات دیے ہیں جو ہر لمحہ آپ کے  سامنے ابھرتے ہیں  اور    اس نے آپ کو  ان کے چناؤ کی مکمل آذادی دی ہے ۔ یہ دُنیا ، ممکنات کی کائنات ہے۔  اس لئے محض اپنی قسمت کو الزام نہ دیں ۔  ایک غلام حاکم بن سکتا ہے ،ایک کمزور دنیا کا سب سے طاقتور شخص اور ایک جاہل شخص  سب سے ذیادہ عقلمند بن سکتا ہے۔ ممکنات کی دُنیا جہاں کوئی بھی کسی بھی درجے تک پہنچ سکتا ہے۔  یہ صرف اس پر منحصر ہے کہ کوئی کتنا بڑا سوچتا ہے   اور اس پر کتنے صحیح طور سے عمل کرتا ہے۔  اور سب سے بڑھ کر تمہارے رب کی عظیم رحمت آخرت کا وعدہ ہے اس لئے   تاکہ وہ جنہوں نے اس دنیا میں کامیابی سے اپنے انتخابات کا چناؤ نہیں کیا تھا اور وہ برائی کرنے والے بھی نہیں تھے  ان کو سکون اور خوشی ملے۔  وہاں ان کےپاس وہ سب ہو گا جس کی وہ خواہش کریں گے اور جو بھی مانگیں گے۔  جو نہ کسی آنکھ نے دیکھا ، نہ کسی کان نے سنا اور نہ ہی کسی کے دل میں آیا۔

ایک ایمان والے کے معاملات بھی عجیب ہیں  کہ اس کے متعلق کوئی الٰہی  حکم نہیں ہے  لیکن آخرکار وہ اس کے حق میں مفید ہو تا ہے”۔ اگر اسے کوئی برکت ملتی ہے تو وہ خدا کا شکر کرے گا اور اس میں اس کے لئے بھلائی ہے اور اسے  اگر کوئی    نقصان پہنچتا ہے تو وی صبر دکھائے گا اور  لہٰذا اس کے لئے بھلائی ہے۔

اے لوگو تم اس کائنات میں پہلے سے ٹھہرائی گئی ظالم  اور نہ بدلنے والی تقدیر  کے سامنے بے بس نہیں ہو۔ بہت سی چیزیں تمہارے اپنے ہاتھ میں ہیں اور کوشش اور جدوجہد سے تم اپنی قابلیت  اور صلاحیت یہانتکہ اپنی تقدیر بھی بدل سکتے ہو۔  اے لوگو ہماری ذمےداری ہے کہ ہم جدوجہد کریں اور اپنی کوشش کریں اور پھر خدا سے دعا کریں اور اس سے مدد مانگیں ۔ ہم صرف کوشش کرنے کے لئے ذمے دار ہیں نتائج کے لئے نہیں۔ نتائج کو خدا پر چھوڑ دیں  ۔ اے لوگو تم اس کائنات  میں درحقیقت ایک فری ایجنٹ ہو  جس کے پاس  بنانے اور پھیلانے ، بونے اور کاٹنے کے  لئے  اپنے چناؤ ہیں  جو  بھی تم اس کینوس  اور اس کائنات کی مٹی میں بناؤ یا اگاؤ۔  الٰہی جانشینی ، امن  اور خوشی کی  ابدی زندگی  یا ہمیشہ کی ناامیدی۔ جو بھی نتائج آپ چاہیں وہ آپ کے ہاتھ میں ہے۔  جیسے کہ میں نے آپ کے رب کے چناؤ اور انتخابات کے  تحفے  کے بارے میں آپ کو بتایا ہے جو ہر لمحے  آپ کے لئے ابھرتا ہے اور اسے استعمال کرنے کا طریقہ  لہٰذا آپ کے لئے ہر چیز ممکن ہے اگر آپ کی چاہت ہے اور آپ اس کے لئے قدم بڑھاتے ہیں ۔   اے بنی نوع انسان ، تمہارے لئے  بہت سی ممکنات، بہت سے راستوں ، بہت سی تقدیروں اوربہت سی دُنیاؤں کے امکانات ہیں ۔  اہم بات یہ ہے کہ آپ   ہر بدلتے لمحے کے ساتھ ہر ابھرتے ہوئے  کونسے چناؤ  کا انتخاب کرتے ہیں  ۔ جو انتخاب آپ چنیں گے وہ آپ کو اس قسم کی تقدیر کی جانب لے کر جائے گا۔ اگر آپ مصیبت ذدہ محسوس کر رہے ہیں  اور خود کو ایسے بھیانک چکر میں پھنسا محسوس کر رہے ہیں جہاں سے نکلنے کاکوئی راستہ نہیں تو صرف دو کام کیجئے۔ پہلا  دوسری تقدیر کے لئے اپنے خداوند سے دُعا کیونکہ  آپ کے خداوند کے پاس تقدیروں کی کوئی کمی نہیں ہے  یہ  آپ کی اس کائنات کے تانے بانے میں پہلے سے ہی بنی ہوئ ہیں۔ پھر دعا کے بعد صرف  ایک کام کرنا شروع کریں ۔ یعنی ہر لمحے  ابھرتے ہوئے انتخابات  میں سے اخلاقی لحاذ سے اچھے انتخابات کا چناؤ کریں ۔ اگر آپ ایسا کریں گے اور خود کو تبدیل کریں گے تو آپ کی تقدیر بھی بدل جائے گی۔