Destiny, Fate, Karma, Qadar, Determinism and Freewill- 2.

Recitation of the Holy Scripture.

Glorify the name of your Lord, the Most High,

Who created, then proportioned 

And who destined and then guided

So remind, if the reminder benefits. 

He who fears will pay heed. 

But the wretched one will avoid it 

The one who will burn in the great Fire. 

In which he will neither die nor live. 

Certainly, he is successful who purifies himself, 

And remembers the name of his Lord and prays 

Nay! But you prefer the life of this world, 

While the Hereafter is better and everlasting. 

Indeed, this is in the former scriptures,

Scriptures of Abraham and Moses.

And with Him are the keys of the unseen, none knows them except Him. And He knows what is on the land and in the sea. And not a leaf falls but He knows it. And there is not a grain in the darkness of the earth and not anything moist or dry but is written in a Clear Record.

And it is He who takes you night and knows what you have committed by day. Then He revives you therein that a specified term may be fulfilled. Then to Him will be your return; then He will inform you about what you used to do.

And He is the Omnipotent over His servants, and He sends over you guardians until, when death comes to one of you, Our messengers take him, and they do not fail in their duties.

They than are returned to God, their real lord and master. His indeed is the judgement; and He is swift at reckoning.

End of Recitation of the Holy Scripture.

O mankind you always get confused and all these debates of philosophers that I discussed in part 11 are because you think that as God knows everything and it is already written therefore you have no freewill. Therefore mankind mostly blame their destiny for all the mishaps they get in their lives. O people this universe is a universe of possibilities where anyone can reach to any level. God has made for you choices and options which pop up every second and God’s ability of knowing your future does not in any way restricting you from acting as a free Agent in this universe.

Same thing devil did when Adam and all others were caught red handed after their mistake in the climax of that episode in Eden. Rather than accepting his jealousy, arrogance, and mistake he put the blame on destiny. In Last Scripture God tells in Adams story that Devil said, “My Lord, because You have put me in error, I will surely make disobedience attractive to them on earth, and I will mislead them all. So devil put all his blame on God or destiny while Adams reaction was opposite and he repent and asked forgiveness for his error.

As devil is with us all human beings and Jinns so whenever we blame destiny and God’s act is because of that evil suggestion devil put in our heart. So you blame destiny only when you fails or events things go against you. You never blame destiny when you gets good.

Now because God always says in His scriptures like in the last scripture God said “And you do not will except that God wills  Lord of the worlds”. This should not be confused for Example with the case of a person going to kill someone. Now God has written for him that he would be a killer but that does not mean He made him to kill that person. Its only that God by His will gave us the liberty to decide between our options and choose them. If you want guidance He will guide you. How it happens lets consider another example as in Part 11, I told you that God has made for you choices and options which pop up every second and He has given you free will to choose among these options. Consider you are sitting in a library or at your home with your laptop and surfing on internet. Now as per God’s revelations and scriptures first part of effort you have to put and than God will help you Now if you decide to read or to see some stuff some book some video, who can force you not to read or watch that. And you also have full liberty to see search good things or Bad things available. But after you exercise your option and decide to consume that time in some good work either related to your education or your religion God facilitates you in that and you may come across some very good stuff which later might change your way of thinking and even your life. God facilitates you in whatever direction you want to go. This is the basis of all inventions in human history all people who are struggling in some field got new ideas just like a blink of an eye. This would never happen without putting any effort on your part. So it’s Actually God’s will and human effort that work together in this universe of yours. Same principal is for prophets and righteous. They got God’s help after they put all their effort. Red sea parted when Moses struggled and of 80 years of age. Madina became islamic state after continuous struggle of decades and when Muhammad was 53 years old.

Now consider you are owner of a business and you have 20 employees. One day you announce that you will give a Cash prize to those 10 persons who perform certain tasks and targets more than others. Now as you have those employees with you since few years and you know all of them very well, you write in your notepad the name of those ten in advance who will win that prize. And by the end of task it happens that they are exactly the same as you have already written in your notepad. I ask you a question that by writing this does by any means you have favored them to win or restricted the chances of others. But actually those whose names you have already written as the winners are the employees that do the right things, hard work and sincere effort anyway whether you give the incentive of prize or not. While the others are the ones who actually don’t do anything to deserve that regardless of you write their names or not.

Another example now consider one of your friend gets a time machine he goes in future and look all your life till end then comes back and writes a book on you. Now doest it mean he restricted your free will and forced you to do those actions he has written in the book. 

I know that these analogies have many short comings as God is omniscient and omnipotent and He not only knows your future but also overall dominant on your will as he created you and all the abilities you have got are actually granted by Him. And these are the actual limitations and therefore everyone will be accounted for only that much which he has been bestowed with, not more than that. A person responsible for a small house will not be held accountable for the matters, wrongdoings, injustice and corruption going in the town. Thats why it is a serious matter and big burden if someone has got a position in society as with authority comes the responsibilities.

God’s knowledge is different from the knowledge of his creation as it’s not preceded by ignorance not that God did not know and then he learned nor is it followed by forgetfulness that he now knows but in the future it may slip from His memory.

God created the actions of people. They are attributed to God as He created them put them into existence. It is not that God created Good and evil actions it is that He made their existence possible but the human beings earned the action. Evil is not be attributed to God. Evil is relative as for example poison of snake is an evil for human beings but a good thing for snake, teeth and claws of tiger have evil for other animals but blessing for him, horns of bull have evil for other but good for his defense. So as in the Last scripture God says  “Say, I seek refuge in the Lord of daybreak From the evil of that which He created And from the evil of darkness when it settles”. Here God says to seek refuge from the evil of that (creation) which he created and not saying from the evil of which He created. So creation, events, aspects exist which have evil in them but they are not created as pure evil. Even Devil God created is not pure Evil or created for the purpose of evil. It is like a by product of creation as you get from your factories during manufacturing something good. And its purpose is to make this universe a trial without devil how do we get rewarded as if there is no negative thought and only good exist than there is no  purpose of creating this universe If God had willed that all should be good and pious and obey Him he would not have created you, as those beings which are with Him enough for His praises and glorify him morning and evening.

O people our responsibility is to do struggle to put our effort and than to pray and ask for God’s help. We are just responsible for the effort not for the results, leave results on God, as if succeeds then good. And even if no result and success here you will be successful in hereafter. Specially Whenever you do struggle for God’s cause, for some bigger objective, above yourself for the sake of humanity than remember success is not a criteria. As Jesus is one of the biggest prophets of God but apparently failed in world. While there are some slaves of your Lord who were extremely successful in this world in their missions. It doesn’t matter if 4000 are watching this program or 4000 million. If God Wills then a time will come that He will put effect in it.  As mentioned in the last scripture I want to live my life like that and to proclaim that. “Indeed my prayer, my rites, my rituals, my work, my living and my dying are for God, Lord of the worlds. He has no partner; with this I have been commanded. And I am the first of those who surrender to Him. 

If my Lord Wills I will continue and conclude this topic in next program.

Recitation of the Holy Scripture.

سبح اسم ربك الأعلى 

الذي خلق فسوى  

والذي قدر فهدى  

فذكر إن نفعت الذكرى 

سيذكر من يخشى  

ويتجنبها الأشقى  

الذي يصلى النار الكبرى  

ثم لا يموت فيها ولا يحيى  

قد أفلح من تزكى  

وذكر اسم ربه فصلى 

ل تؤثرون الحياة الدنيا  

والآخرة خير وأبقى  

إن هذا لفي الصحف الأولى  

صحف إبراهيم وموسى 

وعنده مفاتح الغيب لا يعلمها إلا هو ويعلم ما في البر والبحر وما تسقط من ورقة إلا يعلمها ولا حبة في ظلمات الأرض ولا رطب ولا يابس إلا في كتاب مبين

وهو الذي يتوفاكم بالليل ويعلم ما جرحتم بالنهار ثم يبعثكم فيه ليقضى أجل مسمى ثم إليه مرجعكم ثم ينبئكم بما كنتم تعملون 

وهو القاهر فوق عباده ويرسل عليكم حفظة حتى إذا جاء أحدكم الموت توفته رسلنا وهم لا يفرطون 

ثم ردوا إلى اللـه مولاهم الحق ألا له الحكم وهو أسرع الحاسبين

End of Recitation of the Holy Scripture.

يا أيّها البشر، أنتم دائمون الحيرة وكل جدال الفلاسقة الذي ناقشتة من قبل في الجزء الحادي عشر هو بسبب إعتقادكم أن الله عزّ وجلّ يعلم كل شئ وأن كل شئ مكتوب قبل خلقكم لذا فليس لديكُم الحريّة أو الإرادة، مما يجعل البشر يلومون أقدارهم في كل مصيبة تحدث لهم. يا أيّها البشر هذا الكون هو عالم من الإحتمالات حيث يمكن لأيّ أحد أن يصل لأيّ مستوى. فقد أتاح الله لكم الخيارات ممّا يُظهر دائمًا أن معرفة الله لمستقبلكم لا يتعارض بأيّ شكل مع حريّة تصرّفكم في هذا الكون.

نفس الشئ الذي فعله الشيطان مع سيّدنا آدم ومع الآخرون الذين قُبُضوا متلبّسين بعد خطأهم في تلك الحادثة قي جنات عدن، وبدلًا من قبول غيرته وغروره وخطأه فقد وضع اللوم على القضاء والقدر. في القرآن الكريم، يقول الله عن قصّة سيّدنا آدم أن الشيطان قال: ” قَالَ رَبِّ بِمَا أَغْوَيْتَنِي لَأُزَيِّنَنَّ لَهُمْ فِي الْأَرْضِ وَلَأُغْوِيَنَّهُمْ أَجْمَعِينَ “. فقد ألقى الشيطان اللوم على الله او القدر بينما كان رد فعل سيّدنا آدم مختلف فقد طلب من الله عزّ وجلّ أن يغفر له خطأه.

كما يفعل الشيطان مع الإنس والجنّ، فإلقاء اللوم على القدر وصُنع الله عزّ وجلّ هو نتيجة الشرّ الذي وضعة الشيطان في قلوبنا، لذلك فأنتم تلومون القدر فقط حين تفشلون او حينما تكون الأحداث ضدّك، لكنّكم لا تلومون القدر حينما تكونون في حالٍ جيّد.

لأنّ الله دائمًا ما يقول في كتابه المقدّس: ” وَمَا تَشَاءُونَ إِلَّا أَن يَشَاءَ اللَّهُ رَبُّ الْعَالَمِينَ”. فهذا لا يجب أن يُطبّق  في حالة رغبة أحدهم أن يقتل شحص ما! هذا 

يعني  أن الله كتب له أن يكون “قاتل” ولكن لا يعني أنه جعله يقتل ذلك الشخص.

هذا فقط لأنّ الله –عزّ وجلّ- أعطى لنا الحريّة المطلقة لنقر بين الخيارات المتاحة، وإذا أردت الهُدى سيهديك ويرشدك الله عزّ وجلّ.

كيف يحدث هذا؟ دعنا نتخذ مثالاً آخر كما هو مذكور في الجزء الحادي عشر، أخبرتكم أن الله عزّ وجلّ أتاح لنا الإختيارات التي تظهر في كل ثانية، وجعل لنا حريّة الإختيار بين هذة الإختيارات.

اعتبر أنّك جالس في المكتبه أو في منزلك على حاسوبك الشخصي تتجوّل على الإنترنت، الآن وفقًا للوحي وكتاب الله المقدّس، فالخطوة الأولى من المجهود الأول يجب أن تضعها أنت ثم سوف يُعينك الله عزّ وجلّ.

الآن، إذا أردت رؤية بعض الأغراض او الكتب او الأفلام، من يمكنه أن يمنعك عن القراءة أو المشاهدة؟ وأنت لديك كامل الحريّة لروية الأشياء الجيّدة أو السيّئة المتاحة. ولكن بعد أخذ القرار أن تستهلك الوقت في بعض الأعمال الجيّدة كالتعليم أو الدين، ستجد أن الله عزّ وجلّ ييسّر لك هذا وقد تجد عبر هذة الأشياء الجيّدة ما قد يغيّر حياتك وطريقة تفكيرك. فالله عزّ وجلّ ييسّر لك الإتجاة التي تريد أن تذهب إليه. هذا هو أساس كل الإختراعات في التّاريخ البشري، فجميع من يناضلون في مجال معيّن يتوصّلون إلى أفكار جديدة في طرفة عين، وهذا لن يحدث أبدًا دون أيّ جهد مبذول من جانبكُم. لذا فإرادة الله والجهد البشري يعملون سويًّا في هذا الكون. نفس المبدأ بالنسبة للأنبياء والصّالحين، فقد نالوا عون الله بعد أن بذلوا جهودهم كلّها. إنقسم البحر الأحمر إلى شقّين عندما كافح موسىٍ وفي الثمانين من العُمر، وأصبح أهل المدينة مسلمين بعد نضال مستمرّ وعندما أصبح عُمره 53 عامًا.

الآن تخيّل أنّك صاحب أعمال ولديك 20 موظّف، وفي يوم أعلنت أنّك ستمنح جوائز مادّيّة إلى 10 موظّفين الّذين يحقّقون مهام وأهداف معيّنة أكثر من غيرهم. الآن وفقًا لمعرفتك الجيّدة بالموظّفين الّذين يعملون معك منذ سنوات قليلة، أكتب في مفكّرتك أسماء من تتوقّع أنّهم سيحصلون على الجائزة، وفي نهاية المهمّة، ستجد أن من حصلوا على الجائزة هم الموظّفين الذي كتبت أسمائهم في مفكّرتك! سأسألك سؤالًا؛ بكتابة تلك الأسماء، هل كنت تُفضّل فوزهم أو تقيّد فرصة فور الآخرين؟ ولكن في الواقع اولئك الّذي كتبت أسمائهم هم الموظّفين الّذين يفعلون الأشياء الصحيحة ويعملون جيّدًا ويبذلون الكثير من المجهود بإخلاص في جميع الأحوال سواء كنت تعطي حافز الجائزة أو لا، بينما الآخرون لا يفعلون أيّ شئ يستحقّ ذلك، بغضّ النظر عن أنّك كتبت أسمائهم أم لا.

مثال آخر، الآن أعتبر أن صديقك حصل على “آلة الزمن” وذهب إلى مستقبلك ورأى حياتك حتّى النهاية ثم عاد وكتب كتابًا عنك. الآن، هل هذا يعني أنّه قيّد حريّتك وأجبرك على فعل الأفعال التي كتبها في الكتاب؟

أعلم أن هذة المقارنات لديها نقائص عديدة، لأن الله هو العليم القدير ولا يعلم مستقبلك فقط، ولكنّ أيضًا هو المهيمن على إرادتك لأنه هو الذي خلقك وكل قدراتك هي في الواقع هبة من الله عزّ وجلّ وهذه هي القيود الحقيقيّة وبالتالي فإن الجميع سيحاسب على ما اُعطي له، ليس أكثر من هذا.

الشخص المسئول عن منزل صغير لن يكون مسؤولًا عن القضايا والمخالفات والظلم والفساد الموجود في المدينة بأكملها، لذلك فهي مسألة خطيرة وعبء ثقيل إذا حصل أحدهم على منصب في المجتمع، فالسلطة تجلب المسئوليّات.

إن معرفة الله عزّ وجلّ تختلف عن معرفة الخَلق، لأنّ معرفة الله لم يسبقها الجهل، فلم يكن لا يعلم ثم تعلّم، ولا يتبعهُ النسيان مما يجعله الآن يعرف ولكن في المستقبل قد تتعثّر ذاكرته.

 يا أيّها النّاس؛ مسئوليّتنا هي أن نناضل ونبذل قصارى مجهودنا  ثم نصلّي ونسأل الله العون. نحن فقط مسئولون عن المجهود  لا عن النتائج، اترك النتائج على الله، إذا نجحت فهذا جيّد وحتّى لو لم يكن هناك نجاح في الدنيا، فسيكون النجاح في الآخره. خاصًّة كلّما كان النضال من أجل الله، من أجل قضيّة أكبر، من أجل الإنسانيّة، فتذكّر دائمًا أن النجاح ليس معيارًا. مثل يسوع فهو واحد من أنبياء الله ولكنه لم ينجح في العالم، بينما يوجد بعض من عباد الله ناجحين للغاية في هذا العالم في مهامهم.

لا يهمّ إذا ما كان يشاهد هذا البرنامج 4000 شخص او 4000 مليون، إذا أراد الله سيأت الوقت الذي يحدث فيه هذا. كما ذُكر في القرآن الكريم، أودّ أن أحيا بهذة الطريقة ولتأكيد هذا: ” قُلْ إِنَّ صَلَاتِي وَنُسُكِي وَمَحْيَايَ وَمَمَاتِي لِلَّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ، لَا شَرِيكَ لَهُ ۖ وَبِذَٰلِكَ أُمِرْتُ وَأَنَا أَوَّلُ الْمُسْلِمِينَ”.

فإذا أراد الله، سوف أستمرّ. ختام هذا الموضوع في الحلقة القادمة.

Recitation of the Holy Scripture.

Glorifique o nome do seu Senhor, o Altíssimo,
Quem criou, então proporcionou
E quem destinou e depois guiou
Então, lembre-se, se o lembrete se beneficiar.
Aquele que teme vai prestar atenção.
Mas o desgraçado irá evitá-lo
Aquele que vai queimar no grande fogo.
Em qual ele não morrerá nem viverá.
Certamente, ele é bem sucedido que se purifica,
E lembra o nome do seu Senhor e reza
Não! Mas você prefere a vida deste mundo,
Enquanto a outra vida é melhor e eterna.
De fato, isso está nas antigas escrituras,
Escrituras de Abraão e Moisés.
E com Ele estão as chaves do invisível, ninguém os conhece, exceto Ele. E ele sabe o que está na terra e no mar. E nem uma folha cai, mas Ele sabe disso. E não há um grão na escuridão da terra e nem algo úmido ou seco, mas está escrito em um registro claro.
E é Ele quem te leva a noite e sabe o que você tem cometido durante o dia. Então Ele te revive que um termo especificado pode ser cumprido. Então a ele será o seu retorno; então Ele irá informá-lo sobre o que você costumava fazer.
E Ele é o Onipotente sobre Seus servos, e Ele envia sobre você guardiões até que, quando a morte chega a um de vocês, Nossos mensageiros o levam, e eles não falham em seus deveres.
Eles são devolvidos a Deus, seu verdadeiro senhor e mestre. Seu realmente é o julgamento; e ele é rápido no ajuste de contas.

End of Recitation of the Holy Scripture.

Ó homem, você sempre fica confuso e todos esses debates de filósofos que eu discuti na parte 11 são porque você pensa que, como Deus sabe tudo e já está escrito, você não tem livre arbítrio. Portanto, a maioria das pessoas culpa seu destino por todos os percalços que enfrentam em suas vidas. Ó povo esse universo é um universo de possibilidades onde qualquer um pode chegar a qualquer nível. Deus fez para você escolhas e opções que surgem a cada segundo e a capacidade de Deus de conhecer o seu futuro não o limita de forma alguma a agir como um agente livre neste universo.

A mesma coisa que o diabo fez quando Adão e todos os outros foram apanhados em flagrante após seu erro no clímax daquele episódio no Éden. Em vez de aceitar seu ciúme, arrogância e erro, ele colocou a culpa no destino. Na Última Escritura, Deus conta na história de Adão que o diabo disse: “Meu Senhor, porque você me colocou em erro, eu certamente tornarei a desobediência atraente para eles na terra, e eu irei enganar a todos eles. Então o diabo colocou toda a sua culpa em Deus ou o destino enquanto a reação de Adams era oposta e ele se arrependeu e pediu perdão por seu erro.

Como o diabo está conosco todos os seres humanos e Jinns, então sempre que culpamos o destino e o ato de Deus é por causa dessa sugestão maligna que o diabo colocou em nosso coração. Então você culpa o destino somente quando você falha ou os eventos vão contra você. Você nunca culpa o destino quando fica bom.

Agora, porque Deus sempre diz em suas escrituras, como na última escritura, Deus disse: “E você não quer, exceto que Deus quer o Senhor dos mundos”. Isso não deve ser confundido por exemplo com o caso de uma pessoa matar alguém. Agora Deus escreveu para ele que ele seria um assassino, mas isso não significa que Ele o fez matar essa pessoa. É só que Deus, por Sua vontade, nos deu a liberdade de decidir entre as nossas opções e escolhê-las. Se você quer orientação, Ele o guiará. Como isso acontece, vamos considerar outro exemplo, como na Parte 11, eu lhe disse que Deus fez para você escolhas e opções que surgem a cada segundo e Ele lhe deu livre arbítrio para escolher entre essas opções. Considere que você está sentado em uma biblioteca ou em sua casa com seu laptop e navegando na internet. Agora, de acordo com as revelações e escrituras de Deus, a primeira parte do esforço que você tem que colocar e que Deus irá ajudá-lo Agora, se você decidir ler ou ver algumas coisas, reserve alguns vídeos, que podem forçá-lo a não ler ou assistir a isso. E você também tem total liberdade para ver coisas boas ou coisas ruins disponíveis. Mas depois de exercitar sua opção e decidir consumir esse tempo em algum bom trabalho relacionado à sua educação ou à sua religião, Deus o facilita nisso e você pode se deparar com coisas muito boas que mais tarde possam mudar sua maneira de pensar e até mesmo sua vida. . Deus facilita você em qualquer direção que você queira ir. Esta é a base de todas as invenções na história da humanidade, todas as pessoas que estão lutando em algum campo tem novas idéias apenas como um piscar de olhos. Isso nunca aconteceria sem colocar nenhum esforço de sua parte. Então é realmente a vontade de Deus e o esforço humano que trabalham juntos neste seu universo. O mesmo princípio é para os profetas e justos. Eles conseguiram a ajuda de Deus depois que eles fizeram todo o esforço. Mar Vermelho se separou quando Moisés lutou e tinha 80 anos de idade. Madina tornou-se estado islâmico após a luta contínua de décadas e quando Maomé tinha 53 anos de idade.

Agora, considere que você é proprietário de uma empresa e tem 20 funcionários. Um dia você anuncia que dará um prêmio em dinheiro àquelas 10 pessoas que realizam determinadas tarefas e metas mais do que outras. Agora que você tem esses funcionários com você há alguns anos e conhece todos eles muito bem, você escreve em seu bloco de anotações o nome dos dez que ganharão esse prêmio. E no final da tarefa acontece que eles são exatamente os mesmos que você já escreveu no seu bloco de notas. Eu lhe faço uma pergunta que, ao escrever isso, de alguma forma você os favoreceu a ganhar ou restringir as chances de outros. Mas, na verdade, aqueles cujos nomes você já escreveu como vencedores são os empregados que fazem as coisas certas, o trabalho duro e o esforço sincero de qualquer forma, se você der o incentivo do prêmio ou não. Enquanto os outros são aqueles que realmente não fazem nada para merecer que, independentemente de você escrever seus nomes ou não.

Outro exemplo agora considera que um dos seus amigos recebe uma máquina do tempo, ele vai no futuro e olha toda a sua vida até o final, em seguida, volta e escreve um livro sobre você. Agora, isso significa que ele restringiu seu livre-arbítrio e o forçou a fazer as ações que ele escreveu no livro.

Eu sei que essas analogias têm muitas deficiências, pois Deus é onisciente e onipotente e Ele não apenas conhece o seu futuro, mas também domina a sua vontade como ele criou e todas as habilidades que você tem são realmente concedidas por Ele. E estas são as limitações reais e, portanto, todos serão contabilizados apenas o tanto que lhe foi concedido, não mais do que isso. Uma pessoa responsável por uma pequena casa não será responsabilizada pelos assuntos, erros, injustiça e corrupção ocorridos na cidade. É por isso que é um assunto sério e um grande fardo se alguém tem uma posição na sociedade, com autoridade, e vem as responsabilidades.

O conhecimento de Deus é diferente do conhecimento de sua criação, pois não é precedido pela ignorância, não que Deus não soubesse e, em seguida, ele aprendeu, nem é seguido por esquecimento que ele agora sabe, mas no futuro pode escapar de sua memória.

Deus criou as ações das pessoas. Eles são atribuídos a Deus como Ele os criou e os colocam em existência. Não é que Deus criou boas e más ações é que Ele fez a sua existência possível, mas os seres humanos ganharam a ação. O mal não é atribuído a Deus. O mal é relativo, por exemplo, veneno de cobra é um mal para os seres humanos, mas uma coisa boa para cobra, dentes e garras de tigre tem mal para outros animais, mas bênção para ele, chifres de touro têm mal para outro, mas bom para sua defesa. Assim como na Última Escritura, Deus diz: “Diga, eu busco refúgio no Senhor do alvorecer Do mal do que Ele criou E do mal das trevas quando se instala”. Aqui Deus diz procurar refúgio do mal daquela (criação) que ele criou e não dizendo do mal do qual Ele criou. Então criação, eventos, aspectos existem que têm mal neles mas eles não são criados como puro mal. Mesmo o Diabo que Deus criou não é puro Mal ou criado para o propósito do mal. É como um subproduto da criação que você obtém de suas fábricas durante a fabricação de algo bom. E o seu propósito é fazer deste universo uma provação sem o diabo como seremos recompensados ​​como se não houvesse pensamento negativo e só existisse o bem do que não há propósito de criar este universo Se Deus quisesse que tudo fosse bom e piedoso e obedecesse Ele não teria criado você, como aqueles seres que estão com Ele o suficiente para louvá-lo e glorificá-lo de manhã e à noite.

Ó povo, nossa responsabilidade é lutar para nos esforçar e orar e pedir a ajuda de Deus. Somos apenas responsáveis ​​pelo esforço não pelos resultados, deixamos resultados em Deus, como se conseguissem bons resultados. E mesmo se nenhum resultado e sucesso aqui você será bem sucedido no futuro. Especialmente Sempre que você luta pela causa de Deus, por algum objetivo maior, acima de si para o bem da humanidade, lembre-se que o sucesso não é um critério. Como Jesus é um dos maiores profetas de Deus, mas aparentemente falhou no mundo. Enquanto existem alguns escravos do seu Senhor que foram extremamente bem sucedidos neste mundo em suas missões. Não importa se 4000 estão assistindo este programa ou 4000 milhões. Se Deus Quer, então chegará o tempo em que Ele entrará em efeito. Como mencionado na última escritura, quero viver minha vida assim e proclamar isso. “Realmente minha oração, meus ritos, meus rituais, meu trabalho, minha vida e minha morte são para Deus, Senhor dos mundos. Ele não tem parceiro; com isto eu fui comandado. E eu sou o primeiro daqueles que se renderam a ele.

Se meu Senhor quiser, continuarei e terminarei esse assunto no próximo programa.

Recitation of the Holy Scripture.

Glorifica el nombre de tu Señor, el Altísimo,
Quién creó, luego proporcionó
Y quién destinó y luego guió
Así que recuérdalo, si el recordatorio se beneficia.
El que teme prestará atención.
Pero el miserable lo evitará
El que quemará en el gran Fuego.
En el que no morirá ni vivirá.
Ciertamente, tiene éxito y se purifica a sí mismo,
Y recuerda el nombre de su Señor y reza
¡No! Pero prefieres la vida de este mundo,
Mientras que el Más Allá es mejor y eterno.
De hecho, esto está en las antiguas escrituras,
Escrituras de Abraham y Moisés
Y con Él están las llaves de lo oculto, nadie las conoce excepto Él. Y Él sabe lo que hay en la tierra y en el mar. Y ni una hoja cae, pero Él lo sabe. Y no hay un grano en la oscuridad de la tierra ni nada húmedo o seco, sino que está escrito en un Registro Claro.
Y es Él quien te lleva la noche y sabe lo que has cometido durante el día. Entonces Él te revive allí para que se cumpla un término específico. Entonces a Él será su regreso; entonces Él te informará sobre lo que solías hacer.
Y Él es el Omnipotente sobre Sus siervos, y Él envía sobre ustedes a los guardianes hasta que, cuando la muerte llegue a uno de ustedes, Nuestros mensajeros lo lleven, y ellos no fallen en sus deberes.
Ellos que son devueltos a Dios, su verdadero señor y maestro. De hecho, es el juicio; y Él es rápido en la cuenta.

End of Recitation of the Holy Scripture.

Oh humanidad, siempre te confundes y todos estos debates de filósofos que discutí en la parte 11 son porque piensas que como Dios sabe todo y que ya está escrito, entonces no tienes libre albedrío. Por lo tanto, la humanidad en su mayoría culpa a su destino de todos los contratiempos que tienen en sus vidas. Oh gente este universo es un universo de posibilidades donde cualquiera puede alcanzar cualquier nivel. Dios ha creado para ti opciones y opciones que aparecen cada segundo y la capacidad de Dios de conocer tu futuro no te impide de ningún modo actuar como un agente libre en este universo.

Lo mismo hizo el diablo cuando Adán y todos los demás fueron atrapados con las manos en la masa después de su error en el clímax de ese episodio en el Edén. En lugar de aceptar sus celos, arrogancia y error, culpó al destino. En la Última Escritura, Dios cuenta en la historia de Adams que el Diablo dijo: “Mi Señor, porque me has confundido, ciertamente haré que la desobediencia les resulte atractiva en la tierra, y los confundiré a todos. Así que el diablo le echó toda la culpa a Dios o el destino mientras la reacción de Adams era opuesta y él se arrepintió y pidió perdón por su error.

Como el diablo está con nosotros todos los seres humanos y los genios, cada vez que culpamos al destino y al acto de Dios es debido a esa sugerencia malvada que el diablo pone en nuestro corazón. Entonces culpas al destino solo cuando fallas o los eventos van en contra de ti. Nunca culpas al destino cuando te sientes bien.

Ahora, porque Dios siempre dice en Sus escrituras como en la última escritura, Dios dijo “Y no lo harás, excepto que Dios quiera Señor de los mundos”. Esto no debe confundirse con Ejemplo con el caso de una persona que va a matar a alguien. Ahora Dios le ha escrito que sería un asesino, pero eso no significa que lo hizo matar a esa persona. Es solo que Dios por su voluntad nos dio la libertad de decidir entre nuestras opciones y elegirlas. Si quieres guía, Él te guiará. Cómo sucede, consideremos otro ejemplo, como en la Parte 11, les dije que Dios ha creado opciones y opciones que aparecen cada segundo y les ha dado libre albedrío para elegir entre estas opciones. Considere que está sentado en una biblioteca o en su casa con su computadora portátil y navegando por Internet. Ahora, según las revelaciones de Dios y las Escrituras, debes hacer la primera parte del esfuerzo y Dios te ayudará. Ahora, si decides leer o ver algunas cosas, reserva un video, que puede obligarte a no leer ni mirar eso. Y también tienes plena libertad para ver buscar cosas buenas o cosas malas disponibles. Pero después de ejercitar su opción y decidir consumir ese tiempo en un buen trabajo relacionado con su educación o su religión, Dios lo facilita en eso y puede encontrar algunas cosas muy buenas que luego podrían cambiar su forma de pensar e incluso su vida. . Dios te facilita en cualquier dirección que quieras ir. Esta es la base de todos los inventos en la historia humana. Todas las personas que luchan en algún campo obtienen nuevas ideas en un abrir y cerrar de ojos. Esto nunca sucederá sin poner ningún esfuerzo de su parte. Entonces, realmente es la voluntad de Dios y el esfuerzo humano que trabajan juntos en este universo tuyo. El mismo principio es para profetas y justos. Obtuvieron la ayuda de Dios después de que pusieron todo su esfuerzo. El mar rojo se separó cuando Moisés luchó y tenía 80 años de edad. Madina se convirtió en estado islámico después de la lucha continua de décadas y cuando Muhammad tenía 53 años.

Ahora considere que es dueño de un negocio y tiene 20 empleados. Un día anuncias que darás un premio en efectivo a esas 10 personas que realizan ciertas tareas y objetivos más que otros. Ahora que tienes a esos empleados contigo desde hace unos años y los conoces muy bien a todos, escribes en tu libreta el nombre de los diez que ganarán ese premio. Y al final de la tarea sucede que son exactamente los mismos que ya ha escrito en su bloc de notas. Le hago una pregunta: si escribe esto, significa que los ha favorecido para ganar o ha restringido las posibilidades de otros. Pero en realidad aquellos cuyos nombres usted ya ha escrito como ganadores son los empleados que hacen las cosas correctas, el trabajo duro y el esfuerzo sincero de todos modos, ya sea que otorgue el incentivo de premio o no. Mientras que los otros son los que realmente no hacen nada para merecerlo, independientemente de que escriban sus nombres o no.

Otro ejemplo ahora considere que uno de sus amigos obtiene una máquina del tiempo que usa en el futuro y mira toda su vida hasta el final, luego regresa y escribe un libro sobre usted. Ahora significa que restringió su libre albedrío y lo obligó a hacer las acciones que escribió en el libro.

Sé que estas analogías tienen muchas fallas ya que Dios es omnisciente y omnipotente, y Él no solo conoce tu futuro sino que también domina tu voluntad al igual que él te creó y todas las habilidades que tienes son otorgadas por él. Y estas son las limitaciones reales y, por lo tanto, a todos se les atribuirá solo lo que se les ha otorgado, no más que eso. Una persona responsable de una casa pequeña no será responsable por los asuntos, malas acciones, injusticias y corrupción que se presenten en la ciudad. Es por eso que es un asunto serio y una gran carga si alguien tiene un puesto en la sociedad, ya que con la autoridad viene la responsabilidad.

El conocimiento de Dios es diferente del conocimiento de su creación, ya que no está precedido por la ignorancia, no es que Dios no sabía y luego aprendió ni le sigue el olvido que ahora sabe, pero que en el futuro puede pasar de su memoria.

Dios creó las acciones de las personas. Se los atribuye a Dios cuando los creó para ponerlos en existencia. No es que Dios haya creado acciones buenas y malas, sino que hizo posible su existencia, pero los seres humanos se ganaron la acción. El mal no se debe atribuir a Dios. El mal es relativo como por ejemplo el veneno de serpiente es un mal para los seres humanos pero una cosa buena para serpiente, dientes y garras de tigre tiene maldad para otros animales pero bendición para él, cuernos de toro tienen maldad para otros pero buenos para su defensa. Así que, como en la última escritura Dios dice: “Di, busco refugio en el Señor del amanecer, del mal de lo que creó y del mal de las tinieblas cuando se asienta”. Aquí Dios dice buscar refugio del mal de esa (creación) que creó y no decir del mal que creó. De modo que existen creación, eventos, aspectos que tienen maldad en ellos pero no son creados como maldad pura. Incluso el Dios del Diablo creado no es puro Mal ni creado para el mal. Es como un subproducto de la creación a medida que se obtiene de sus fábricas durante la fabricación de algo bueno. Y su propósito es hacer de este universo una prueba sin demonios, ¿cómo seremos recompensados ​​como si no hubiera pensamiento negativo y solo existiera el bien que no hay ningún propósito de crear este universo si Dios hubiera querido que todos fueran buenos y piadosos y obedecieran? Él no te habría creado, como aquellos seres que están con Él lo suficiente para Sus alabanzas y lo glorificará mañana y tarde.

Oh gente, nuestra responsabilidad es esforzarnos para poner nuestro esfuerzo y luego orar y pedir la ayuda de Dios. Solo somos responsables por el esfuerzo, no por los resultados, dejamos resultados en Dios, como si tuvieran éxito entonces bueno. E incluso si no hay resultados y éxitos aquí tendrá éxito en el más allá. Especialmente cuando luches por la causa de Dios, por un objetivo mayor, por encima de ti mismo por el bien de la humanidad, recuerda que el éxito no es un criterio. Como Jesús es uno de los mayores profetas de Dios, pero aparentemente falló en el mundo. Si bien hay algunos esclavos de su Señor que fueron extremadamente exitosos en este mundo en sus misiones. No importa si 4000 están viendo este programa o 4000 millones. Si Dios quiere, llegará un momento en el que pondrá efecto en él. Como mencioné en la última escritura, quiero vivir mi vida así y proclamar eso. “De hecho, mi oración, mis ritos, mis rituales, mi trabajo, mi vida y mi muerte son para Dios, Señor de los mundos. Él no tiene pareja; con esto me han ordenado. Y yo soy el primero de los que se rinden a él.

Si mi Señor Wills, continuaré y concluiré este tema en el próximo programa.

Recitation of the Holy Scripture.

اپنے رب کے نام کی تسبیح کیا کر جو سب سے اعلیٰ ہے

وہ جس نے پیدا کیا پھر ٹھیک بنایا

اور جس نے اندازہ ٹھہرایا پھر راہ دکھائی

پس آپ نصیحت کیجیئے اگر نصیحت فائدہ دے

جو الله سے ڈرتا ہے وہ جلدی سمجھ جائے گا

اور اس سے بڑا بدنصیب الگ رہے گا

جو سخت آگ میں داخل ہوگا

پھر اس میں نہ تو مرے گا اور نہ جیئے گا

بے شک وہ کامیاب ہوا جو پاک ہو گیا

اور اپنے رب کا نام یاد کیا پھر نماز پڑھی

بلکہ تم تودنیا کی زندگی کو ترجیح دیتے ہو

حالانکہ آخرت بہتر اور زیادہ پائدار ہے

بے شک یہی پہلے صحیفوں میں ہے

(یعنی) ابراھیم اور موسیٰ کے صحیفوں میں

اور اسی کے پاس غیب کی کنجیاں ہیں جنہیں اس کےسوا کوئی نہیں جانتا جو کچھ جنگل اور دریا میں ہے وہ سب جانتا ہے اور کوئی پتہ نہیں گرتا مگر وہ اسے بھی جانتاہے اور کوئی دانہ زمین کے تاریک حصوں میں نہیں پڑتا اور نہ کوئی تر اور خشک چیز ہے مگر یہ سب کچھ کتاب روشن میں ہیں

اور وہ وہی ہے جو تمہیں رات کو اپنے قبضے میں لے لیتا ہے اور جو کچھ تم دن میں کر چکے ہو وہ جانتا ہے پھر تمہیں دن میں اٹھا دیتا ہے تاکہ وہ وعدہ پورا ہو جو مقرر ہو چکا ہے پھر اسی کی طرف تم لوٹائے جاؤ گے پھر تمہیں خبر دے گا اس کی جو کچھ تم کرتے تھے

اور وہی اپنے بندوں پر غالب ہے اور تم پر نگہبان بھیجتا ہے یہاں تک کہ جب تم میں سے کسی کو موت آ پہنچتی ہے تو ہمارے بھیجے ہوئے فرشتے اسے قبضہ میں لے لیتے اور وہ ذرا کوتاہی نہیں کرتے

پھر خدا کی طرف پہنچائیں جائیں گے جو ا نکا سچا مالک ہے خوب سن لو کہ فیصلہ خدا ہی کا ہوگا اور بہت جلدی حساب لینے والا ہے

End of Recitation of the Holy Scripture.

اے بنی نوع انسان تم ہمیشہ الجھن میں رہتے ہو اور فلاسفروں کی وہ تمام احباث جن پر میں نے 11ویں حصے میں بات کی ان کی وجہ یہ ہے کہ تم سوچتے ہو کہ خدا سب جانتا ہے اور یہ سب پہلے سے ہی لکھا ہوا ہے اس لئے تمہارے پاس آذاد مرضی نہیں ہے۔ اس لئے انسان  اپنی زند گیوں میں مصیبتوں کے لئے ذیادہ تر اپنی قسمت کو قصوروار ٹھہراتے ہیں۔ اے لوگو یہ کائنات ممکنات کی کائنات ہے جہاں کوئی بھی کسی بھی درجے تک پہنچ سکتا ہے ۔ خدا نے آپ کو چناؤ اور انتخابات دیے ہیں جو ہر لمحہ ابھرتے ہیں اور آپ کے مستقبل کو جاننے کی خدا کی قابلیت اس کائنات میں آپ کو کسی بھی طرح سے ایک آذاد ایجنٹ کی طرح کام کرنے سے نہیں روکتی ۔

یہی چیز شیطان نے بھی کی جب آدم اور دوسرے لوگ عدن کے واقع کے پس منظر میں اپنی غلطی پر رنگے ہاتھ پکڑے گئے ۔  اپنی غلطی، تکبر اور حسد تسلیم کرنے کی بجائے اس نے قسمت کو قصور وار ٹھہرایا۔ آخری صحیفے میں خدا آدم کی کہا نی میں بتاتا ہے کہ شیطان نے کہا ” میرے خداوند، کیونکہ تو نے مجھے اس غلطی  میں ڈالا ہے اس لئے میں یقیناً زمین پر ان کو نافرمانی کی طرف کھینچوں گا اور انہیں گمراہ کروں گا۔ لہٰذا اس نے تمام الزام خدا یا قسمت پر ڈالا جبکہ آدم کا رد عمل اس کے برعکس تھا اس نے توبہ کی اور اپنی غلطی کی مافی مانگی۔ 

جیسے شیطان ہم تمام انسانوں اور جنات کے ساتھ ہے جب بھی ہم قسمت اور خدا کوقصواوار ٹھہراتے ہیں تو ہم ایسا اس بُرے مشورے کی وجہ سے کرتے ہیں جو شیطان نے ہمارے دل میں ڈالا ہے۔ لہٰذا آپ قسمت کو تبھی الزا م دیتے ہیں جب آپ ناکام ہوتے ہیں یا واقعات آپ کے حق میں نہیں جاتے ۔ جب آپ کو اچھی چیزیں ملیں تب آپ قسمت کو کبھی الزام نہیں دیتے۔ 

اب چونکہ خدا اپنے صحیفوں میں ہمیشہ کہتا ہے جیسے خدا نے اپنے آخری صحیفے میں کہا “اور تم کچھ بھی نہیں چاہ سکتے مگر وہی جو خدائے رب العالمین چاہے”۔ اسے اور باتوں کے ساتھ مت الجھائیے۔ مثلاً اگر کوئی شخص کسی کو قتل کرنے جا رہا ہو۔ اب خدا نے اس کے  لئےلکھا ہوا ہے کہ وہ ایک قاتل ہو گا لیکن اس کا یہ مطلب نہیں ہے کہ  اس شخص کو قتل کرنے لئے بنایا گیا ہے۔ یہ بس اتنا ہے کہ خدا نے اپنی مرضی سے ہمیں ہمارے چناؤ کرنے کی آذادی دی ہے۔ اگر آپ کو راہنمائی چاہئے تو وہ آپ کی راہنمائی کرے گا ۔ یہ کیسے ہو گا ۔ اسے سمجھنے کے لئے ایک اور مثال لیجئےجیسا کہ ہم نے 11ویں حصے میں بات کی تھی ۔ میں نے آپ کو بتایا تھا کہ خدا نے آپ کے لئے چناؤ رکھے ہیں جو ہر لمحے آپ کے سامنے ابھرتے ہیں اور اس نے ان کا چناؤ کرنے کی آپ کو مکمل آذادی دی ہے ۔ سوچیئے کہ آپ ایک لائبریری میں بیٹھے ہوئے ہیں یا اپنے گھر میں اور انٹر نیٹ پر بیٹھے سرفنگ کر رہے ہیں ۔ اب خدا کی وحی اور صحیفوں کے مطابق پہلا قدم پہلی کوشش آپنے خود کرنی ہے اور اسکے بعد خدا آپکی مدد کریگا۔ اب اگر آپ یہ فیصلہ کرتے ہیں کہ کچھ  پڑھیں یا دیکھیں ، کوئی کتاب پڑھیں یا کوئی ویڈیو دیکھیں تو کون آپ کو مجبور کر سکتا ہے کہ اسے نہ پڑھیں یا نہ دیکھیں ۔  اور آپ کو اس بات کی بھی مکمل آزادی حاصل ہے کہ آپ دستیاب شدہ اچھی چیزیں دیکھیں یا بُری ۔ لیکن اگر آپ اپنے چناؤ کے اختیار کو استعمال کریں اور اپنے وقت کو اچھے کام میں صَرف کرنے کا فیصلہ کریں چاہے وہ آپ کی تعلیم سے متعلق ہویا آپ کے مذہب سے متعلق۔ خدا اس میں آپ کو سہولت دیتا ہےاور آپ کو کوئی بہت اچھی چیزیں مل سکتی ہیں جو بعد میں ممکنہ طور پر آپکی سوچ میں تبدیلی کا باعث بن جائیں یا آپ کی زندگی کی تبدیلی کا باعث ۔ آپ جس بھی سمت میں جانا چاہیں خدا اس میں آپ کو سہولت دیتا ہے ۔ یہ ان تمام ایجادوں کی بنیاد ہے جو انسانوں نے تاریخ میں کیں۔ وہ تمام لوگ جو کسی شعبے میں کسی کوشش کر رہے تھے اور جدوجہد کر رہے تھے  تو انہیں پلک جھپکنے پر نئے خیالات نے مدد کیا۔ ایسا کبھی آپ کے ہاتھ پر ہاتھ رکھ کر بیٹھے رہنے سے نہیں ہو گا۔ تو یہ درحقیقت خدا کی منشا اور انسان کی کوشش ہے جو  آپ کی اس کائنات میں مل کر کام کرتے ہیں ۔ یہی اصول انبیاء اور صادقوں کے لئے بھی ہے ۔ انہیں خدا کی مدد ملی جب انہوں نے اپنی کوشش کی ۔ بحرہ قلزم دو حصے ہو گیا تب جب موسی ایک عرصے کی کوشش کرتے کرتے ۸۰سال کا ہو گیا ۔  مدینہ ایک اسلامی مملکت بنا برسوں کی مسلسل جدوجہد کے بعد اور جب محمد 53 سال کے تھے۔ 

اب ذرا تصور کیجئے کہ آپ کسی کاروبار کے مالک ہیں اور آپ کے پاس  تنخواہ پر 20 لوگ کام کر رہے ہیں ۔ ایک دن آپ یہ اعلان کرتے ہیں کہ ان 10 اشخاص کو کیش انعام دیا جائے گا جو دوسروں کے مقابلے میں ذیادہ کچھ مخصوص کام اور ٹارگٹ سر انجام دیں گے ۔ اب جب چونکہ وہ کام کرنے والے تمام لوگ کچھ سالوں سے آپ کے ساتھ ہیں اور  آپ ان  کو بہت اچھی طرح سے جانتے ہیں ، آپ اپنے نوٹ پیڈ میں ان 10 اشخاص کے نام پہلے سے لکھ لیں گے جو یہ انعام جیتیں گے۔ اور اس کام کے آخر میں اگر ایسا ہو کہ جن لوگوں کے آپ نے نام لکھے ہوں وہی انعام جیتیں ۔ میں آپ سے ایک سوال پوچھتا ہوں کہ نوٹ  پیڈپر لکھنے سے کیا آپ نے ان لوگوں کو کسی طرح کی مدد کی یا دوسروں کے موقع کو کم کیا۔  بلکہ جن کام کرنے والوں کے نام آپ نے لکھے تھے وہ ایسے لوگ ہیں جو صحیح کام کرتے ہیں۔ محنت کرتے ہیں اور چاہے آپ انعام دیں یا نہ دیں تو بھی وہ  ایک مخلص کوشش کرتے ہیں ۔ جبکہ دوسرے وہ ہیں جواس کے حقدار ہونے کے لئے درحقیقت کچھ نہیں کرتے چاہے آپ ان کے نام لکھیں یا نہیں ۔ 

ایک اور مثال ۔ تصور کیجئے کہ آپ کا ایک دوست ایک ٹا ئم مشین لیتا ہے اور مستقبل میں جاتا ہے اور آخر تک آپ کی تمام زندگی کو دیکھتا ہے اور واپس آ کر آپ پر ایک کتاب لکھتا ہے ۔ اب کیا اس کا یہ مطلب ہے کہ اس نے آپ کی مرضی پر پابندی لگا دی ہے اور جو افعال اس نے کتاب میں لکھے ہیں کیا ان کو کرنے پر اس نے آپ کو مجبور کیا۔ 

میں جانتا ہوں کہ ان تمثیلوں میں بہت سی کمیاں ہیں کیونکہ خدا قادر مطلق اور سب  جاننے والا ہے ۔ وہ نہ صرف آپ کا مستقبل جانتا ہے بلکہ آپ کی مرضی پر بھی حاوی ہے کیونکہ اس نے آپ کو تخلیق کیا ہے اور آپ کے پاس جو بھی قابلیت ہے وہ اس کی طرف سے عطا کردہ ہے۔ اور یہ حقیقی حدیں ہیں  اور ہر کوئی اپنے دیے گئے کے مطابق جواب دہ ہو گا ۔ اس سے ذیادہ کے لیے نہیں ۔ ایک شخص جسکے پاس ایک چھوٹے گھر کی ذمہ داری ہے اس سے شہر میں ہونے والے معاملات، برائیوں ، ناانصافی اور دھوکہ دہی کے بارے میں حساب  نہیں لیا جائے گا۔ اسی سبب سے یہ اُن کے لئے ایک سنجیدہ مسئلہ ہے اور ایک بڑا بوجھ ہے جو معاشرے میں ایک مقام رکھتے ہیں کیونکہ اختیار ذمے داری کے بغیر نہیں ہوتا۔ 

خدا کا علم اس کی مخلوق کے علم سے مختلف ہے کیونکہ یہ جہالت سے پیدا نہیں ہوا ہے ۔ ایسا نہیں ہے کہ خدا کو علم نہیں تھا اور اسے بعد میں معلوم ہوا ، نہ ہی اس میں بھولے جانے کا کوئی امکان ہے کہ اسے ابھی علم ہے لیکن مستقبل میں وہ اس کے ذہن سے نکل سکتا ہے۔ 

خدا نے انسانوں کے افعال تخلیق کیے ہیں ۔ وہ خدا سے منسلک ہیں کیونکہ وہ ان کا خالق ہے اور انہیں وجود میں لایا ہے ۔ ایسا نہیں ہے کہ خدا نے اچھے اور بُرے افعال تخلیق کیے ہیں بلکہ اس نے ان کے وجود کو ممکن بنایا ہے لیکن افعال یا اعمال انسانوں کی کما ئی ہیں ۔ بُرائی کو خدا کے منسلک نہیں کرنا چاہیے۔ برائی متعلقہ ہے ۔ مثلاً سانپ کا زہر انسان کے لئے بُرا ہے لیکن سانپوں کے لئے وہ اچھا ہے۔ شیر کے پنجے اور دانت دوسرے جانوروں کے لئے بُرے لیکن شیر کے لئے نعمت ہیں ۔ بیل کے سینگ دوسروں کے لئے بُرے مگر اس کے خود کے لئے اس کا دفاع ہیں ۔ لہٰذا جیسے آخری صحیفے میں خدا کہتا ہے ” کہو، میں فلق کے رب کی پناہ مانگتا ہوں  ہر چیز کی بدی سے جو اس نے پیدا کی اور اندھیرے کی برائی سے جب وہ چھا جائے”۔ یہاں خدا اس برائی(مخلوق کی برائی) سے بچنے کو کہتا ہے جسے اس نے پیدا کیا ۔ یہ نہیں کہتا کہ اس برائی سے   جواس نے پیدا کی ۔ اس لئے مخلوق ، حالات اور واقعات اپنا وجود رکھتے ہیں جن میں برائی ہو سکتی ہے لیکن وہ مکمل برائی کے طور پر پیدا نہیں کئے گئے۔  یہانتکہ کہ شیطان جو خدا نے بنایا مکمل برائی نہیں بنایا یا برائی کے مقصد سے نہیں بنایا گیا ۔ یہ تخلیق کی ضمنی پیداوار ہے جیسے کہ آپکو آپ کی فیکٹریوں کی مصنوعات پیدا کرتے ہوئے ملتا ہے ۔  اور اس کا مقصد اس دنیا کو ایک آزمائش گاہ بنانا ہے ۔شیطان کے بغیر  ہمیں اجر کیسے ملے گا اگر کوئی منفی سوچ کا وجود نہ ہواور صرف اچھائی ہی بسے۔ پھر اس کائنات کو تخلیق کرنے کا کوئی مقصد نہیں ہے ۔ اگر خدا کی یہ مرضی ہوتی کہ سب اچھا ، پاک اور اس کا تابعدار ہو تو اس نے آپ کو تخلیق نہ کیا ہوتا کیونکہ وہ مخلوقات جو اس کے ساتھ ہیں اس کی بڑائی کے لئے اور اسے صبح شام جلال دینے کے لئے کافی ہیں ۔ 

اے لوگو، تمہاری ذمے داری اپنی کوشش کرنا ہے اور پھر خدا سے اس کے لئے مدد مانگنا ہے۔ ہم صرف کوشش کے لئے ذمے دار ہیں نتائج کے لئے نہیں ۔ نتائج کو خدا پر چھوڑ دیں کیونکہ اگر کامیابی ملے تو اچھا ہو گا۔ اور چاہے اگر کو ئی کامیابی یا نتیجہ یہاں نہیں ملتا توآپ آخرت میں کامیاب ہونگے۔ خاصکر اگر آپ کسی بڑے مقصد کے حصو ل کے لئے خدا کی راہ میں کوئی کوشش کرتے ہیں جو آپ سے بڑھ کر انسانیت کے لئے ہے تو یاد رکھئے کامیا بی اس کا معیار نہیں ہے۔ کیونکہ یسوع مسیح خدا کے بڑے  ترین نبیوں میں تھےلیکن ظاہراً دنیا میں ناکام ہوئے۔ جبکہ آپ کے خداوند کی اس دنیا میں کچھ بندے ایسے ہو ئے ہیں جو اپنے مقصد میں بہت کامیاب ہو ئے ۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ 400 لوگ اس پروگرام کو دیکھ رہے ہیں یا 4000 ملین ۔ اگر خدا کی مرضی ہوئی تو وہ وقت آئے گا جب وہ اس میں اثر پیدا کرے گا۔ جیسے کہ آخری صحیفے میں بیان کیا گیا ہے تو میں اپنی زندگی ایسے گزارنا چاہتا ہوں اور یہ اعلان کرتا ہوں کہ۔ ” درحقیقت میری عبادت میری کاوشیں، میری رسومات، میرا کام، میرا جینا  اور مرنا خدا کے لئے ہے جو تمام جہانوں کا رب ہے۔ اس کا کوئی شریک نہیں ؛ اسی چیز کا مجھے حکم دیا گیا ہے۔ اور میں ان میں سے پہلا ہوں جو خود کو اس کے تابع کرتا ہوں ۔ 

اگر میرے خداوند کی مرضی ہوئی میں اس مضمون کو اگلے پروگرام میں جاری رکھتے ہوئے اسے مکمل کرونگا۔