All about Universe: Size, distances, comparisons. All these laws of physics are the laws of your Lord by which He is Running His Kingdom.

O assembly of Jinn and Men did there not come to you messengers from among you, narrating to you your Lord’s revelations and telling you that your Lord is one God, and He created you and all this around you. Do you think that all this is created without any creator? Woe to you for what you assume and woe to you for what you believe. You do not have this opinion for the smallest thing around you which you have created. No one among you even the most duffer and ignorant can claim that even the laces of his shoe are designed by its own but for this magnificent universe, you think that it is created by its own.

Look at the universe around you and then look within yourself. Everything is working under established systems. All this is under precise measurements and calculations from the creation of this huge universe and then billions of stars and planets and then the creation of humans on Earth. Look at the size and vastness of the Kingdom of God around you. Only the observable universe is about 90 billion light years in diameter. There are at least 100-200 billion galaxies, each with one hundred to one thousand billion stars. And, there are probably billions of habitable planets in the universe. Lots of stars and planets, roughly ten thousand stars for every grain of sand on earth and 100 thousand planets for every grain of sand on earth. Is this all designed, created, happening and running by its own. Nay, it is all by the Will and command of your Lord. So which of the favors of your Lord will you deny? 

All these estimates mentioned above regarding the size of the universe calculated after 1995 Hubble observations and that was the working assessment for the next two decades, until 2016. And now according to Astrophysical Journal over 90 percent of the galaxies in the observable Universe have yet to be studied. The following decade will see a host of new observatories come online. The Hubble’s successor, the James Webb Space Telescope, will be launched into orbit in 2018. So expect the number of galaxies to increase to astonishing trillions in number. For those who do not have any idea of how big this figure is? If you start counting 1,2,3 with normal speed, then it will take almost 25 years day and night to reach a billion count and almost 25000 years to count a one trillion figure. Everything in this vast and magnificent universe is in motion and in perfect harmony with each other. Is this all created and continue to exist on its own. Nay, it is all by the Will and command of your Lord. So which of the favors of your Lord will you deny?

The distances in the universe are so big that you cannot measure in your normal terms. It can only be measured in terms of a light year which is the distance light travels in one year while the speed of light is 300,000 km /sec. This speed is so much that nothing can travel faster than light. In just one second lights travels 7.5 times around our earth. In a year it travels 9.5 trillion Km and is called a light year which is a distance of length, not time.  We live in a galaxy which we named as Milky Way with a diameter of 100,000 light years, and a thickness of 1000 light years, with approx. 100-400 billion stars like our sun although the majority of them are bigger than our sun. The nearest galaxy to milky way is Andromeda, a galaxy much like our own Milky Way. It is 2.2 million light years away from us. It means that with a speed of 300,000 km/sec it takes almost 2.2 million years for light or any other object to reach Andromeda the nearest neighborhood. The stars we see in the night sky are very far away from us, so far the star light we see has taken a long time to travel across space to reach our eyes. That means whenever we look out into the night and gaze at stars we are actually experiencing the past. 

Specialized telescopes enable us to look towards very distant objects in the universe. There are some incredible images, one of which is the Hubble Ultra Deep Field. HUDF is an image of a small region of space, containing an estimated 10,000 galaxies. Looking back approximately 13 billion years. In just one picture we are transported 13 billion years into the past, just 400 to 800 million years after the Big Bang,  which is early in terms of the universe’s history. Do you know that the stars you see in the sky may be dead? As they are billions of light years away from us and it will take billions of years for the light to reach earth, which means that the stars light which you see now is billion-year-old lighting. So they may be dead now. Every day almost 275-400 million stars die and nearly 400 million new stars are born only in our observable universe. Is this all happening and running by its own. Nay, it is all by the Will and command of your Lord. So which of the favors of your Lord will you deny? 

As I told you that only the size of the observable universe is 90 billion light years in diameter. Moreover, even this magnitude is not fixed because our universe is expanding continuously and this expansion rate is more than the speed of light. But, nothing can travel greater than the speed of light. I will explain later that how this is happening. However, at the moment just want to let you realize the beyond imagination power of creation of your Lord by which He created this vast universe and simultaneously created such small things like atoms, micro organisms and human cells which have a whole universe inside them with wonderful details and fully functional systems. Now you already have an idea of the vastness of this universe, and I am giving you a comparison of how much tiny and small things your Lord has created.  In physics, the Planck length is thought to represent the theoretical limit of the shortest measurable length. According to the uncertainty principle, no instrument should ever be able to measure anything smaller, because at that range, the universe is probabilistic and indeterminate. 

Perhaps all of the universe’s smallest things are roughly the size of the Planck length. Singularities of black holes and elementary particles of the universe could all turn out to be about the scale of the “Planck length. The known smallest thing in this universe is a quark which makes up hadrons, the most stable of which are protons and neutrons which in turn are the building blocks of an atom. All elementary particles are point particles. This means that they are 0-dimensional; their “size” is zero. So there is no smallest particle among them; all elementary particles are exactly the same size.  A Planck length is 1.6 x 10^-35 meters the number 16 preceded by 34 zeroes and a decimal point. 10 power 25 meters is the size of the observable universe, and 10 power -5 their mean the middle point is the size of human cell or bacteria. So to imagine how small is planck length is to consider a human cell with the universe and then the human cell is as big as the universe to a planck scale. Is this all designed, created, happening and running by its own. Nay, it is all by the Will and command of your Lord. So which of the favors of your Lord will you deny?

Moreover, all this from subatomic particle to our earth, the sun, our galaxy and even our whole universe is not static but continuously in motion. Our Earth rotates around its axis at 1600km/hr, which causes day and night on earth. Then it revolves around the sun at 107,000km/hr which is responsible for our 12 months year and different seasons on earth. The Sun is also not stationary but is in motion with a speed of 800,000 km/hr in the direction of the bright star Vega in the constellation of Lyra along with all the solar system including planet earth and our moon. It takes our Sun approximately 225 million years to make the trip around our Galaxy. This is sometimes called the galactic year. Since the Sun formed, about 20 Galactic years have passed; we have been around the Galaxy 20 times. Our galaxy the Milky Way is also in motion with a speed of  2.1 to 3.6 million km/hr  We are moving roughly in the direction on the sky that is defined by the constellations of Leo and Virgo. The galaxies in our neighborhood are also rushing at the same speed towards a structure called the Great Attractor, a region of space roughly 150 million light-years away from us. This Great Attractor, having a mass 100 quadrillion times greater than our sun and span of 500 million light-years, is made of both the visible matter that we can see along with the so-called dark matter that we cannot see. So all together we are moving almost at a speed of 3 million to 4.5 million km/hr. I have not included in this the expansion rate of our universe.  If we take the universe as 45 billion LY across then the whole universe is expanding with a speed of  966,000 km/s and 3.478 billion km /hr and by 70km/s/mega parsec. This means that our universe size increases almost 3.5 billion km in just 1 hour. The average speed of a bullet is 500m/s, i.e. around 1800 km/h. So you can see that you are traveling in space at almost 2000 times more than the speed of a bullet. Despite this you are peacefully doing all your jobs read the newspaper with a cup of coffee and sleep peacefully at night without having the slightest idea of how fast you are traveling in this unknown dark space. My people just during this conversation of 2 minutes we have traveled almost 120,000 km and left that area where we were just 2 minutes ago. Is this all designed, created, happening and running by its own. Nay, it is all by the Will and command of your Lord. So glorify your Lord the Al Mighty the All Wise.

The universe has unchanging Laws for all living and non-living beings, All these laws of physics are the laws of your Lord by which He is running His Kingdom. The unchanging nature of these laws itself proves the existence of a controller a supreme creator. All these laws of science and physics all emerge just after the Creation, i.e., the Big bang. Science refers to these details as constants of nature. The number of atoms and their sub particles, the ratio between the masses of electrons and protons, the electrical charges of electron and protons, the relationship of gravity with mass of the object and the speed of light all are such constants of nature without anyone of which the condensation of mass and starting of primordial gases to condense into nebula and in stars was not possible. The slightest change in these constants would mean that the order in the universe would not come about and we would not exist. 

Just to let you realize the importance of these laws I give you an example of a daily life phenomenon of friction, you may have always thought friction as an evil as a force that always creates difficulty for you, but the fact is that without friction you cannot imagine this universe of your running properly. The pencil you hold will slip from your fingers. It would slip out when you tried to hold it to write. The graphite pencil lead would not make a mark on the paper without friction. Your stationary your laptop fall from the table. All furniture can slide and crash with each other and with the wall. Screws, and nails fall out, cars cannot run or stop, noise sound waves will never end, You could not walk without the friction between your shoes and the ground. Consider how difficult it is to walk on slippery ice, where there is little friction. Your car would not start moving if it was not for the friction of the tires against the street. With no friction, the tires would just spin. Likewise, you could not stop without the friction of the brakes and the tires. Is this all designed, created, happening and running by its own. Nay, it is all by the Will and command of your Lord. This universe is an act of God and scriptures are His Words, and there is no difference in God’s Words and His Actions. So which of the favors of your Lord will you deny? But, you have denied and disbelieved, and God Keeps on showing you His Signs in the horizons and within yourselves until it becomes clear to you that it is the truth. Is it not sufficient concerning your Lord that He is a Witness/a controller over all things? Indeed, God upholds the heavens and the earth lest they cease. And if they should cease, no one can uphold them after Him. Indeed, He is the Most Forbearing, the Oft- Forgiving. 

يا أيها الجمع من الجن و الإنس, ألم يأتكم رسلاً من بينكم, يروون لكم وحي ربكم و يخبرونكم أن إلهكم إلاه واحد, و هو من خلقكم وخلقك كل ما حولكم. هل تظنون أن كل هذا خلق دون خالق؟ ويل لكم لما تفترضون وويل لكم لما تؤمنون به.أنتم لا تعتقدون بهذا حتى لأصغر شئ صنعتموه حولكم. لا يوجد شخص من بينكم حتى إذا كان الأكثر غروراً وتعجرفاُ أن يدّعي أن حتى أربطة حذائه صصمت من تلقاء نفسها, لكن بالنسبة لهذا الكون الرائع, تظن أنه خُلق من تلقاء نفسه.

أنظر للكون من حولكم ثم أنظروا داخل أنفسكم. كل شئ يعمل في نظام محكوم. كل ذلك بحسابات و قياسات دقيقة بدأ من خلق هذا الكون الشاسع ثم مليارات النجوم و الكواكب ثم خلق الإنسان على الأرض. أنظروا إلى حجم و ووسع مملكة الرب من حولك.الكون الملحوظ فقط يصل قطره إلى حوالي 90 مليار سنة ضوئية. يوجد على الأقل 100-200 مليون مجرة, كل واحدة تحتوي على مئة إلى ألف مليون نجم. وغالباً يوجد ملايين الكواكب المأهولة في الكون. العديد من النجوم و الكواكب, على الأقل عشرة آلاف نجم و مئة ألف كوكب لكل حبة رمل على الارض. هل كل ذلك, صُمم و خُلق, يحدث و يدار من تلقاء نفسه. لا لا, هذا كل بإرادة و أمر ربك. فبأي آلاء ربكم تُكذبون؟

كل هذه التقديرات المذكورة بالأعلى بخصوص حجم الكون قد تم حسابها  بعد ملاحظات هابل عام 1995 وهذا كان العمل لمدة العقدين التاليين إلى عا 2016. و الآن طبقاً لمجلة فزياء الفضاء العلمية فإن 90% من المجرات في الكون الملحوظ جاري دراستها. العقد القادم سيشهد عدد من الإستكشافات. خليفة هابل تليسكوب جاميس ويب سبيس, سيتم إطلاقه في المدار في 2018. لذا توقع أن يزيد عدد المجرات با باتريليونات. للذين لا يستطيعون تخيل ضخامة هذا الرقم؟ إذا بدأت في العد 1 2 3 بسرعة طبيعية ستستغرق حوالي 25 سنة ليلاً و نهاراً لتصل إلى مليار واحد و 25 ألف سنة لتصل إلى ترليون واحد. كل شئ في هذا الكون الشاسع و الرائع في حركة و تناغم مع بعضهم البعض. هل كل هذا خُلق ومستمر من تلقاء نفسه. لا لا, هذا كل بإرادة و أمر ربك. فبأي آلاء ربكم تُكذبون؟

المسافات في الكون كبيرة جدا لدرجة أنه لا يمكنك قياسها بالقياسات العادية. يمكن قياسها فقط بالسنة الضوئية وهي المسافة التي يقطعها الضوء خلال سنة بينما سرعة الضوء هي 300,000 كم/ث. هذه سرعة كبيرة لدرجة أن لا شئ يستطيع السفر أسرع من الضوء. خلال ثانية واحدة يسافر الضوء حول الأرض سبع مرات ونصف. خلال سنة يسافر الضوء 9.5 تريليون كم وتسمى سنة ضوئية لأنها تعبر عن قياس مسافة وليس زمن. نعيش في مجرة تدعى الدرب اللبني بقطر يساوي 100,000 سنة ضوئية, و سمك يساوي 1000 سنة ضوئية. يوجد فيها تقريباً من 100 إلى 400 مليار نجم كشمسنا على الرغم من أن معظمهم أكبر من شمسنا. أقرب مجرة إلى مجرة الدرب اللبني هي أندروميدا, وهي تشبه مجرتنا إلى حد كبير. إنها تبعد عنا 2.2 مليون سنة ضوئية. هذا يعني أنه بسرعة 300,000 كم/ث يستغرق الضوء أو أي شئ آخر حوالي 2.2 مليون سنة ليصل إلى أندروميدا أقرب جيراننا. النجوم التي نراها في السماء ليلاً بعيدة جدا عنا, بعيدة لدرجة أن ضوء النجم إستغرق وقتاً طويلاً ليسافر عبرالفضاء ويصل إلى أعيننا. هذا يعني أننا كلما نظرنا إلى السماء ليلاً ورأينا  النجوم, نحن فعلياً نختبر الماضي.

التلسكوبات المتخصصة تمكننا من النظر تجاه الأشياء البعيدة جداً في الفضاء. هنالك بعض الصور المذهلة, واحد منها هو مجال هابل شديد العمق. صورة HUDF هي صورة لجزء صغير من الفضاء, تحتوي على ما يقدر ب 10,000 مجرة. تعود إلى ما قبل 13 مليار سنة في الماضي. في صورة واحدة ننتقل 13 مليار عام في الماضي, بعد 400 إلى 800 مليون سنة بعد الإنفجار العظيم, والذي يعتبر مبكراً بالنسبة إلى عمر الكون.هل تعلم أن النجوم التي نراها في السماء ربما تكون ميتة؟ لأنهم على بعد ملايين السنين الضوئية منا وسيستغرق الضوء ملايين السنين الضوئية ليصل إلى الأرض, مما يعني أن ضوء النجوم الذي تراه الآن هو ضوء بعمر ملايين السنين لذلك يمكن أن يكونوا ميتيين الآن.  كل يومي موت حوالي 275 – 400 مليون نجم ويلد حوالي 400 مليون نجم جديد في الكون الملحوظ فقط. هل كل هذا خُلق ومستمر من تلقاء نفسه. لا لا, هذا كل بإرادة و أمر ربك. فبأي آلاء ربكم تُكذبون؟

كما قلت لكم, أن حجم الكون الملحوظ 90 مليون سنة ضوئية في القطر. وعلاوة على ذلك, حتى هذا القدر ليس ثابت لأن كوننا يتوسع بإستمرار و معدل هذا التوسع يفوق سرعة الضوء. لكن لاشئ يستطيع تخطي سرعة الضوء, سأوضح كيف يحدث هذا لاحقاً. على الرغم من ذلك, في هذه اللحظة أريدك أن تدرك قوة الله على الخلق التي تفوق الخيال التي خلق بها هذا الكون الشاسع, و في نفس الوقت خلق مثل هذه الأشياء الصغيرة, كالذرات, و الكائنات الميكرسكوبية وخلايا الإنسان التي تحتوي على كون بأكلمه داخلها بتفاصيل مدهشة و أنظمة كاملة. أنت الآن لديك فكرة عن مدى اتساع هذا الكون, و أنا أعطيك مقارنة عن مدى صغر و ضئالة أشياء خلقها ربك. في الفيزياء, يمثل طول بلانك الحد النظري لأصغر طول يمكن قياسه. طبقاً لمبدأ اللايقين, لا يوجد أداة يمكنها أن تقيس أي شئ أصغر, لأن الكون عند هذا النطاق يكون إحتمالي وغير محدد.  

غالباً كل الأشياء الأصغر في الكون تكون بقدر طول بلانك. تفردات الثقوب السوداء والجسيمات الأولية للكون يمكن أن تكون في مقاس طول بلانك. أصغر شئ معروف في الكون هو الكوارك الذي يكون الهادرونات التي تكون المكون للبرتونات و النيوترونات التي بدورها هي العناصر الأولية للذرة. كل الجسيمات الأولية هي جسيمات نقطية. هذا يعني أنهم ليس لهم أبعاد, حجمهم “صفر”. لذلك لايوجد بينهم إختلاف في الحجم فكلهم نفس الحجم بالضبط. طول بلانك هو 1.6 x 10^-35 متر, العدد 16 مسبوق ب 34 صفر و نقطة عشرية. 1025 هو حجم الكون الملحوظ, و 10-5 هو الحجم المتوسط للخلية أو الباكتريا. لذلك لتتخيل كم يكون صغر طول بلانك عليك تخيل حجم الخلية مقارنة بالكون ثم تخيل أن حجم الخلية يكون كالكون بالنسبة إلى معيار بلانك. هل كل هذا خُلق ومستمر من تلقاء نفسه. لا لا, هذا كل بإرادة و أمر ربك. فبأي آلاء ربكم تُكذبون؟

الأكثر من ذلك, كل ذلك من الأجزاء تحت الذرية, إلى أرضنا, الشمس, مجرتنا و حتى كوننا كله ليس ساكناً لكن في حركة دائماً. أرضنا تدور حول محورها بسرعة 1600كم/ث, وهذا ما يسبب الليل و النهار على الأرض. وتدور أيضاَ حول الشس بسرعة 107,000كم/س وهذا هو المسئول عن 12 شهر في العام و المواسم المختلفة عل الأرض. الشمس أيضاً ليست ثابتة ولكن في حركة بسرعة 800,000 كم/س في اتجاه النجم الساطع فيغا في كوكبة ليرا جنبا إلى جنب مع كل النظام الشمسي بما في ذلك كوكب الأرض وقمرنا. تستغرق الشمس حوالي 225 مليون سنة لتتم رحلة حول مجرتنا.

هذا أحياناً يدعى سنة المجرة. منذ تكوين الشمس, مر حوالي 20 سنة مجرية, مررنا حول المجرة 20 مرة. مجرتنا الدربي اللبني أيضاً في حركة بسرعة 2.1 إلى 3.6 مليون كم/س. نحن نتحرك تقريباً بإتجاه في السماء يتم تعريفه من خلال أبراج الأسد و العذراء. المجرات بجوارنا تتحرك بنفس السرعة  نحو هيكل يدعى الساحب العظيم, منطقة في الفضاء تبعد عنا حوالي 150 مليون سنة ضوئية. هذا الساحب العظيم لديه كتلة أكبر من شمسنا 100 كوادريليون مرة و بإتساع 500 مليون سنة ضوئية, يتكون من كل من المادة المرئية التي نستطيع رؤيتها بالإضافة إلى ما تدعى المادة المظلمة التي لا نستطيع رؤيتها. لذلك كل ذلك معا فنحن تتحرك تقريبا بسرعة من 3 ملايين إلى 4.5 مليون كم/س. أنا لم أدرج في هذا معدل توسع كوننا.

إذا قلنا أن الكون بإتساع 45 مليار سنة ضوئية, فإن الكون بأكمله يتوسع بسرعة 966,000كم/ث و 3.478 مليار كم/س و ب 70 كم / ثانية / مليون فرسخ نجمي. معدل سرعة الرصاصة هو 500 متر/ث, أي 1800 كم/س. لذلك يمكنك أن تدرك أنك تسافر في الفضاء أسرع من الرصاصة بحاولي 2000 مرة. وبالرغم من ذلك أنت تفعل كل أعمالك في سلام, تقرأ الجريدة و في يديك كوب قهوتك وتنام ليلاً في سلام دون عناء التفكير في السرعة الفائقة التي نبحر بها في هذا الفضاء المظلم. أصدقائي فقط خلال هذه المحادثة التي امتدت لدقيقتين قطعنا حوالي 120,000 كم و تركنا المنطقة التي كنا بها منذ دقيقتين.

الكون لديه قوانين لا تتغير لكل الكائنات الحية و الغير حية, كل هذه القوانين الفيزيائية هي قوانين ربك التي يدير بها مملكته. الطبيعة الثابتة لهذه القوانين في حد ذاتها تثبت وجود خالق متحكم أعلى. كل هذه القوانين الطبيعية و الفيزيائية ظهرت بعد الخلق, أي الإنفجار العظيم. العلم يشير إلى هذه التفاصيل بثوابت الطبيعة. عدد الذرات و الجسيمات تحت الذرية, النسبة بين كتل الإلكترونات و البروتونات’ الشحنات الكهربائية للإلكترونات و البرتونات, علاقة الجاذبية و كتلة الجسم و سرعة الضوء كل هذه الأشياء هي أمثلة على الثوابت الطبيعية و التي من دونها لم يكن ليحدث تكثف للكتلة و بدأت الغازات البدائية في التكثف إلى السدم ثم إلى النجوم. أبسط تغيير في هذه الثوابت سيعني أن هذا الترتيب في الكون لم يكن ليحدث ولن نكون متواجدين.

فقد لتدرك أهمية هذه القوانين سأعطيك مثال لظاهرة يومية وهي الإحتكاك, من الممكن أنك كنت تظن دائماً أن الإحتكاك في قوة شريرة تخلق لك صعوبة دائماً, لكن الحقيقة بدون الإحتكاك لا يمكنك تخيل الكون يسير بشكل طبيعي. سينزلق القلم الذي تحمله. سينزلق كلما حاولت أن تمسكه لتكتب. القلم الرصاص لن يصنع علامة على الورقة بدون الإحتكاك.

حاسبك المحمول و أدواتك المكتبية ستسقط من الطاولة. كل الأثاث سينزلق و يصطدم ببعضه و بالحائط. ستسقط البراغي و المسامير, لن تستطيع السيارات أن تتحرك أو تتوقف, لن تنتهي موجات الصوت المزعجة, لن تتمكن من السير بدون الإحتكاك بين حذائك و الأرض. فكر في صعوبة السير على الجليد الزلق, حيث القليل من الجاذبية. لم تكن سيارتك لتبدأ في الحركة لولا الجاذبية بين الإطارات و الشارع. بدون الجاذبية, ستدور الإطارات فقط.

 بالمثل, لن تتمكن من التوقف دون الإحتكاك بين الفرامل و الإطارت. هل كل هذا خُلق ومستمر من تلقاء نفسه. لا لا, هذا كل بإرادة و أمر ربك. هذا الكون من صنع الله و النصوص المقدسة هي كلماته, ولايوجد فرق بين كلمات الرب و أفعاله. فبأي آلاء ربك تُكذب؟ لكنك, كذبت و كفرت, والله يستمر في إظهار علاماته في الآفاق وداخل أنفسكم حتى يتضح لك أن هذه هي الحقيقة. أليس كافياً أن ربكم هو الشاهد و المتحكم في كل شئ؟ بالطبع, الله يحفظ السماوات و الأرض من الإنهيار. و إذا إنهاروا فلن يمسكهم أحد بعده. بالتأكيد هو الغفور الرحيم.

Ó assembléia de Jinos e Homens não chegou até vocês mensageiros dentre vocês, narrando para vocês as revelações do seu Senhor e dizendo que o seu Senhor é um Deus, e Ele criou você e tudo isso ao seu redor. Você acha que tudo isso é criado sem nenhum criador? Ai de você pelo que você assume e ai de você pelo que você acredita. Você não tem essa opinião para a menor coisa ao seu redor que você criou. Ninguém entre vocês, nem mesmo os mais duendes e ignorantes, pode alegar que até mesmo os laços de seu sapato são projetados por conta própria, mas para esse universo magnífico, você acha que ele é criado por conta própria.

Olhe para o universo ao seu redor e depois olhe para dentro de você. Tudo está funcionando sob sistemas estabelecidos. Tudo isso está sob medições precisas e cálculos da criação deste imenso universo e então bilhões de estrelas e planetas e então a criação de humanos na Terra. Veja o tamanho e a vastidão do Reino de Deus ao seu redor. Apenas o universo observável tem cerca de 90 bilhões de anos-luz de diâmetro. Há pelo menos 100-200 bilhões de galáxias, cada uma com cem a mil bilhões de estrelas. E há provavelmente bilhões de planetas habitáveis ​​no universo. Muitas estrelas e planetas, aproximadamente dez mil estrelas para cada grão de areia na terra e 100 mil planetas para cada grão de areia na terra. Tudo isso é projetado, criado, acontecendo e funcionando por conta própria. Não, é tudo pela vontade e comando do seu Senhor. Então qual dos favores do seu Senhor você negará?

Todas essas estimativas mencionadas acima sobre o tamanho do universo foram calculadas após observações do Hubble em 1995 e essa foi a avaliação de trabalho para as próximas duas décadas, até 2016. E agora, segundo o Astrophysical Journal, mais de 90% das galáxias no universo observável ainda precisam ser estudado. Na década seguinte, uma série de novos observatórios entrará em operação. O sucessor do Hubble, o Telescópio Espacial James Webb, será lançado em órbita em 2018. Portanto, espere que o número de galáxias aumente para impressionantes trilhões em número. Para quem não tem ideia do tamanho dessa figura? Se você começar a contar 1,2,3 com velocidade normal, levará quase 25 anos dia e noite para chegar a um bilhão de contos e quase 25000 anos para contar um número de um trilhão. Tudo neste vasto e magnífico universo está em movimento e em perfeita harmonia um com o outro. Isso tudo é criado e continua a existir por conta própria. Não, é tudo pela vontade e comando do seu Senhor. Então qual dos favores do seu Senhor você negará?

As distâncias no universo são tão grandes que você não pode medir em seus termos normais. Ele só pode ser medido em termos de um ano-luz, que é a distância que a luz percorre em um ano, enquanto a velocidade da luz é de 300.000 km / s. Essa velocidade é tão grande que nada pode viajar mais rápido que a luz. Em apenas um segundo, as luzes viajam 7,5 vezes ao redor da Terra. Em um ano, ele percorre 9,5 trilhões de quilômetros e é chamado de ano-luz, que é uma distância do comprimento, não do tempo. Vivemos em uma galáxia que chamamos de Via Láctea, com um diâmetro de 100.000 anos-luz e uma espessura de 1.000 anos-luz, com aprox. 100-400 bilhões de estrelas como o nosso sol, embora a maioria seja maior que o nosso sol. A galáxia mais próxima da Via Láctea é a Andrômeda, uma galáxia muito parecida com a nossa Via Láctea. Está a 2,2 milhões de anos-luz de nós. Isso significa que, com uma velocidade de 300.000 km / s, leva quase 2,2 milhões de anos para que a luz ou qualquer outro objeto alcance o bairro mais próximo de Andrômeda. As estrelas que vemos no céu noturno estão muito longe de nós, até agora a luz da estrela que vemos levou muito tempo para viajar através do espaço para alcançar nossos olhos. Isso significa que sempre que olhamos para a noite e contemplamos as estrelas, estamos realmente experienciando o passado.

Telescópios especializados nos permitem olhar para objetos muito distantes no universo. Existem algumas imagens incríveis, uma das quais é o Hubble Ultra Deep Field. HUDF é uma imagem de uma pequena região do espaço, contendo cerca de 10.000 galáxias. Olhando para trás aproximadamente 13 bilhões de anos. Em apenas uma foto somos transportados 13 bilhões de anos para o passado, apenas 400 a 800 milhões de anos após o Big Bang, o que é cedo em termos da história do universo. Você sabe que as estrelas que você vê no céu podem estar mortas? Como estão a bilhões de anos-luz de nós e levará bilhões de anos para que a luz chegue à Terra, o que significa que a luz das estrelas que você vê agora é de bilhões de anos de luz. Então eles podem estar mortos agora. Todos os dias morrem quase 275 a 400 milhões de estrelas e quase 400 milhões de novas estrelas nascem apenas em nosso universo observável. Isso tudo está acontecendo e funcionando sozinho? Não, é tudo pela vontade e comando do seu Senhor. Então qual dos favores do seu Senhor você negará?

Como eu lhe disse, apenas o tamanho do universo observável é de 90 bilhões de anos-luz de diâmetro. Além disso, mesmo essa magnitude não é fixa porque nosso universo está se expandindo continuamente e essa taxa de expansão é maior que a velocidade da luz. Mas nada pode viajar além da velocidade da luz. Eu explicarei mais tarde que isso está acontecendo. No entanto, no momento, apenas quero deixar você perceber o poder além da imaginação da criação do seu Senhor, pelo qual Ele criou esse vasto universo e simultaneamente criou pequenas coisas como átomos, microorganismos e células humanas que têm um universo inteiro dentro delas com maravilhosas detalhes e sistemas totalmente funcionais. Agora você já tem uma idéia da vastidão deste universo, e eu estou lhe dando uma comparação de quanto pequenas e pequenas coisas seu Senhor criou. Na física, pensa-se que o comprimento de Planck representa o limite teórico do menor comprimento mensurável. De acordo com o princípio da incerteza, nenhum instrumento deveria ser capaz de medir algo menor, porque, nessa faixa, o universo é probabilístico e indeterminado.

Talvez todas as menores coisas do universo tenham aproximadamente o tamanho do comprimento de Planck. Singularidades de buracos negros e partículas elementares do universo poderiam ser da escala do “comprimento de Planck. A menor coisa conhecida neste universo é um quark que forma os hádrons, os mais estáveis ​​são os prótons e nêutrons que por sua vez, são os blocos de construção de um átomo Todas as partículas elementares são partículas pontuais, o que significa que elas são 0-dimensionais, seu “tamanho” é zero, portanto não há menor partícula entre elas, todas as partículas elementares são exatamente do mesmo tamanho Um comprimento de Planck é 1,6 x 10 ^ -35 metros o número 16 precedido por 34 zeros e um ponto decimal 10 potência 25 metros é o tamanho do universo observável, e 10 potência -5 significa o ponto médio é o tamanho do Portanto, imaginar o quão pequeno é o comprimento das tábuas é considerar uma célula humana com o universo e então a célula humana é tão grande quanto o universo a uma escala de tábuas. Não, é tudo pelo Wi ll e comando de seu senhor. Então qual dos favores do seu Senhor você negará?

Além disso, tudo isso a partir de partículas subatômicas para a nossa terra, o sol, nossa galáxia e até mesmo todo o nosso universo não é estático, mas continuamente em movimento. Nossa Terra gira em torno de seu eixo a 1600 km / h, o que causa dia e noite na Terra. Em seguida, gira em torno do sol a 107.000 km / h, que é responsável pelo nosso ano de 12 meses e diferentes estações do ano. O Sol também não é estacionário, mas está em movimento com uma velocidade de 800.000 km / h na direção da estrela brilhante Vega na constelação de Lyra, juntamente com todo o sistema solar, incluindo o planeta Terra e a nossa lua. Leva nosso Sol aproximadamente 225 milhões de anos para fazer a viagem ao redor da nossa galáxia. Isso às vezes é chamado de ano galáctico. Desde que o Sol se formou, cerca de 20 anos Galácticos passaram; nós estivemos ao redor do Galaxy 20 vezes. Nossa galáxia a Via Láctea também está em movimento com uma velocidade de 2.1 a 3.6 milhões de km / h Estamos nos movendo rudemente na direção do céu que é definido pelas constelações de Leão e Virgem. As galáxias em nosso bairro também estão correndo na mesma velocidade em direção a uma estrutura chamada Grande Atrator, uma região do espaço a cerca de 150 milhões de anos-luz de distância de nós. Este Grande Atrator, tendo uma massa 100 quatrilhões de vezes maior do que o nosso Sol e um espaço de 500 milhões de anos-luz, é feito da matéria visível que podemos ver junto com a chamada matéria escura que não podemos ver. Então, todos juntos estamos nos movendo quase a uma velocidade de 3 milhões a 4,5 milhões de km / h. Eu não incluí nesta taxa de expansão do nosso universo. Se considerarmos o universo de 45 bilhões de LY, todo o universo está se expandindo com uma velocidade de 966.000 km / se 3,478 bilhões de km / he 70 km / s / mega-parsec. Isso significa que o tamanho do nosso universo aumenta quase 3,5 bilhões de quilômetros em apenas 1 hora. A velocidade média de uma bala é de 500 m / s, isto é, cerca de 1800 km / h. Então você pode ver que você está viajando no espaço quase 2000 vezes mais do que a velocidade de uma bala. Apesar disso, você está pacificamente fazendo todos os seus trabalhos ler o jornal com uma xícara de café e dormir em paz à noite sem ter a menor idéia de quão rápido você está viajando neste desconhecido espaço escuro. Meu povo só durante essa conversa de 2 minutos viajamos quase 120.000 km e saímos daquela área onde estávamos há apenas 2 minutos. Tudo isso é projetado, criado, acontecendo e funcionando por conta própria. Não, é tudo pela vontade e comando do seu Senhor. Então glorifique o seu Senhor, o Todo Poderoso, o Todo Sábio.

O universo tem leis imutáveis ​​para todos os seres vivos e não-vivos. Todas essas leis da física são as leis do seu Senhor pelas quais Ele governa o Seu Reino. A natureza imutável dessas próprias leis prova a existência de um controlador um criador supremo. Todas essas leis da ciência e da física surgem logo após a Criação, ou seja, o Big Bang. A ciência se refere a esses detalhes como constantes da natureza. O número de átomos e suas subpartículas, a razão entre as massas de elétrons e prótons, as cargas elétricas de elétrons e prótons, a relação da gravidade com a massa do objeto e a velocidade da luz são tais constantes da natureza sem que ninguém que a condensação de massa e partida de gases primordiais para condensar em nebulosa e em estrelas não era possível. A menor mudança nessas constantes significaria que a ordem no universo não ocorreria e nós não existiríamos.

Só para que você perceba a importância dessas leis, eu te dou um exemplo de um fenômeno de atrito cotidiano, você pode sempre ter pensado que o atrito é um mal como uma força que sempre cria dificuldades para você, mas o fato é que sem fricção você não pode imaginar esse universo de sua execução corretamente. O lápis que você segura escorregará de seus dedos. Ele escaparia quando você tentasse segurá-lo para escrever. O grafite não faria uma marca no papel sem fricção. Seu laptop estacionário cai da mesa. Todos os móveis podem deslizar e bater uns com os outros e com a parede. Parafusos e pregos caem, carros não podem correr ou parar, ondas sonoras de ruído nunca terminarão, Você não poderia andar sem o atrito entre seus sapatos e o chão. Considere como é difícil andar em gelo escorregadio, onde há pouco atrito. Seu carro não começaria a se mover se não fosse pela fricção dos pneus contra a rua. Sem atrito, os pneus simplesmente giravam. Da mesma forma, você não poderia parar sem o atrito dos freios e dos pneus. Tudo isso é projetado, criado, acontecendo e funcionando por conta própria. Não, é tudo pela vontade e comando do seu Senhor. Este universo é um ato de Deus e as escrituras são Suas Palavras, e não há diferença nas Palavras de Deus e em Suas Ações. Então qual dos favores do seu Senhor você negará? Mas você negou e não acreditou, e Deus continua mostrando-lhe Seus sinais nos horizontes e dentro de si mesmo até que fique claro para você que é a verdade. Não é suficiente a respeito de seu Senhor que Ele é Testemunha / controlador de todas as coisas? De fato, Deus sustém os céus e a terra para que eles não parem. E se eles cessarem, ninguém poderá apoiá-los depois Dele. De fato, Ele é o mais tolerante, o mais perdoador.

Oh asamblea de Genios y Hombres no vino a ustedes mensajeros de entre ustedes, narrándoles las revelaciones de su Señor y diciéndoles que su Señor es un Dios, y Él los creó a ustedes y todo esto a su alrededor. ¿Crees que todo esto se crea sin ningún creador? Ay de ti por lo que asumes y ¡ay de ti por lo que crees! No tiene esta opinión para la cosa más pequeña a su alrededor que ha creado. Nadie entre ustedes, ni siquiera el más duffer e ignorante puede afirmar que incluso los cordones de su zapato están diseñados por sí mismos, pero para este magnífico universo, usted piensa que es creado por sí mismo.

Mira el universo que te rodea y luego mira dentro de ti. Todo funciona bajo sistemas establecidos. Todo esto se basa en mediciones y cálculos precisos desde la creación de este enorme universo y luego miles de millones de estrellas y planetas y luego la creación de humanos en la Tierra. Mire el tamaño y la vastedad del Reino de Dios a su alrededor. Solo el universo observable tiene aproximadamente 90 mil millones de años luz de diámetro. Hay al menos 100-200 mil millones de galaxias, cada una con cien mil millones de estrellas. Y, probablemente haya miles de millones de planetas habitables en el universo. Montones de estrellas y planetas, aproximadamente diez mil estrellas por cada grano de arena en la tierra y 100 mil planetas por cada grano de arena en la tierra. Está todo diseñado, creado, pasando y funcionando por sí mismo. No, todo es por la Voluntad y el mandato de tu Señor. Entonces, ¿cuál de los favores de tu Señor negarás?

Todas estas estimaciones mencionadas anteriormente con respecto al tamaño del universo calculado después de las observaciones del Hubble de 1995 y esa fue la evaluación de trabajo para las próximas dos décadas, hasta 2016. Y ahora, de acuerdo con Astrophysical Journal más del 90 por ciento de las galaxias en el Universo observable aún tienen que ser estudiado La próxima década verá una gran cantidad de nuevos observatorios en línea. El sucesor del Hubble, el Telescopio Espacial James Webb, se lanzará a la órbita en 2018. Por lo tanto, se espera que el número de galaxias aumente a asombrosos billones en número. Para aquellos que no tienen idea de cuán grande es esta cifra? Si comienza a contar 1,2,3 con velocidad normal, le tomará casi 25 años día y noche llegar a mil millones de conteos y casi 25,000 años para contar una cifra de un trillón. Todo en este vasto y magnífico universo está en movimiento y en perfecta armonía el uno con el otro. ¿Esto es todo creado y continúa existiendo por sí mismo? No, todo es por la Voluntad y el mandato de tu Señor. Entonces, ¿cuál de los favores de tu Señor negarás?

Las distancias en el universo son tan grandes que no puedes medirlas en tus términos normales. Solo se puede medir en términos de un año luz, que es la distancia que la luz viaja en un año, mientras que la velocidad de la luz es de 300,000 km / seg. Esta velocidad es tal que nada puede viajar más rápido que la luz. En solo un segundo, las luces viajan 7,5 veces alrededor de nuestra tierra. En un año viaja 9.5 billones de kilómetros y se llama año luz, que es una distancia de longitud, no de tiempo. Vivimos en una galaxia que llamamos Vía Láctea con un diámetro de 100.000 años luz y un espesor de 1000 años luz, con aprox. 100-400 millones de estrellas como nuestro sol, aunque la mayoría de ellas son más grandes que nuestro sol. La galaxia más cercana a la vía láctea es Andrómeda, una galaxia muy parecida a nuestra propia Vía Láctea. Estamos a 2,2 millones de años luz de nosotros. Significa que con una velocidad de 300,000 km / s, la luz o cualquier otro objeto tarda casi 2.2 millones de años en llegar a Andrómeda, el vecindario más cercano. Las estrellas que vemos en el cielo nocturno están muy lejos de nosotros, hasta ahora la luz de las estrellas que vemos ha tardado mucho en viajar a través del espacio para llegar a nuestros ojos. Eso significa que cada vez que miramos hacia la noche y miramos las estrellas, en realidad estamos experimentando el pasado.

Los telescopios especializados nos permiten mirar hacia objetos muy distantes en el universo. Hay algunas imágenes increíbles, una de las cuales es el campo Ultra Deep de Hubble. HUDF es una imagen de una pequeña región del espacio, que contiene un estimado de 10.000 galaxias. Mirando hacia atrás aproximadamente 13 mil millones de años. En una sola imagen, somos transportados 13 mil millones de años en el pasado, solo 400 a 800 millones de años después del Big Bang, que es temprano en términos de la historia del universo. ¿Sabes que las estrellas que ves en el cielo pueden estar muertas? Como están a miles de millones de años luz de nosotros y la luz tardará miles de millones de años en llegar a la Tierra, lo que significa que la luz de las estrellas que ves ahora es una iluminación de mil millones de años. Entonces ellos pueden estar muertos ahora. Todos los días casi 275-400 millones de estrellas mueren y casi 400 millones de nuevas estrellas nacen solo en nuestro universo observable. ¿Está todo esto sucediendo y funcionando por sí mismo? No, todo es por la Voluntad y el mandato de tu Señor. Entonces, ¿cuál de los favores de tu Señor negarás?

Como te dije, solo el tamaño del universo observable es de 90 mil millones de años luz de diámetro. Además, incluso esta magnitud no es fija porque nuestro universo se está expandiendo continuamente y esta tasa de expansión es más que la velocidad de la luz. Pero, nada puede viajar más que la velocidad de la luz. Explicaré más tarde que cómo está sucediendo esto. Sin embargo, en este momento solo quiero permitirte realizar el poder de creación más allá de la imaginación de tu Señor por el cual creó este vasto universo y simultáneamente creó cosas tan pequeñas como átomos, microorganismos y células humanas que tienen todo un universo dentro de ellos con maravillosas detalles y sistemas completamente funcionales. Ahora ya tiene una idea de la inmensidad de este universo, y le estoy dando una comparación de cuántas cosas pequeñas y pequeñas ha creado su Señor. En física, se cree que la longitud de Planck representa el límite teórico de la longitud mensurable más corta. De acuerdo con el principio de incertidumbre, ningún instrumento debería ser capaz de medir algo más pequeño, porque en ese rango, el universo es probabilístico e indeterminado.

Quizás todas las cosas más pequeñas del universo sean aproximadamente del tamaño de la longitud de Planck. Las singularidades de los agujeros negros y las partículas elementales del universo podrían ser aproximadamente de la escala de la “longitud de Planck. La cosa más pequeña conocida en este universo es un quark que compone los hadrones, los más estables son los protones y los neutrones que a su vez son los bloques de construcción de un átomo. Todas las partículas elementales son partículas puntuales, lo que significa que son de 0 dimensiones, su “tamaño” es cero. Por lo tanto, no hay partículas más pequeñas, todas las partículas elementales son exactamente del mismo tamaño. Una longitud de Planck es 1.6 x 10 ^ -35 metros, el número 16 precedido por 34 ceros y un punto decimal. 10 potencia 25 metros es el tamaño del universo observable, y 10 potencia -5 significa que el punto medio es el tamaño de célula humana o bacteria. Entonces, imaginar qué tan pequeña es la longitud de los tablones es considerar una célula humana con el universo y luego la célula humana es tan grande como el universo hasta una escala de tablones. ¿Está todo diseñado, creado, pasando y funcionando por su propio. No, todo es por Wi ll y el comando de tu Señor Entonces, ¿cuál de los favores de tu Señor negarás?

Además, todo esto desde partículas subatómicas hasta nuestra tierra, el sol, nuestra galaxia e incluso todo nuestro universo no es estático sino que está continuamente en movimiento. Nuestra Tierra gira alrededor de su eje a 1600 km / h, lo que causa el día y la noche en la tierra. Luego gira alrededor del sol a 107,000 km / h, que es responsable de nuestro año de 12 meses y de las diferentes estaciones en la tierra. El Sol tampoco está parado, sino que está en movimiento con una velocidad de 800,000 km / h en dirección a la brillante estrella Vega en la constelación de Lyra junto con todo el sistema solar, incluido el planeta tierra y nuestra luna. Nuestro Sol tarda aproximadamente 225 millones de años en hacer el viaje alrededor de nuestra galaxia. Esto a veces se llama el año galáctico. Desde que el Sol se formó, han pasado cerca de 20 años galácticos; hemos estado alrededor del Galaxy 20 veces. Nuestra galaxia, la Vía Láctea, también está en movimiento con una velocidad de 2,1 a 3,6 millones de km / hora. Nos movemos aproximadamente en la dirección del cielo definida por las constelaciones de Leo y Virgo. Las galaxias en nuestro vecindario también están corriendo a la misma velocidad hacia una estructura llamada Gran Atractor, una región del espacio a unos 150 millones de años luz de distancia de nosotros. Este Gran Atractor, que tiene una masa 100 billones de veces mayor que nuestro sol y un lapso de 500 millones de años luz, está hecho de la materia visible que podemos ver junto con la llamada materia oscura que no podemos ver. Así que, todos juntos, nos movemos casi a una velocidad de entre 3 y 4,5 millones de km / h. No he incluido en esto la tasa de expansión de nuestro universo. Si tomamos el universo como 45 billones de LY, entonces todo el universo se está expandiendo con una velocidad de 966,000 km / sy 3,478 billones de km / hy 70 km / s / mega parsec. Esto significa que nuestro tamaño de universo aumenta casi 3,5 mil millones de km en solo 1 hora. La velocidad promedio de una bala es de 500 m / s, es decir, alrededor de 1800 km / h. Entonces puedes ver que estás viajando en el espacio casi 2000 veces más que la velocidad de una bala. A pesar de esto, usted está haciendo pacíficamente todos sus trabajos leyendo el periódico con una taza de café y durmiendo pacíficamente por la noche sin tener la menor idea de qué tan rápido viaja en este desconocido espacio oscuro. Mi gente solo durante esta conversación de 2 minutos hemos viajado casi 120,000 km y salimos de esa área donde estábamos hace solo 2 minutos. Está todo diseñado, creado, pasando y funcionando por sí mismo. No, todo es por la Voluntad y el mandato de tu Señor. Así que glorifica a tu Señor el Todopoderoso el Todo Sabio.

El universo tiene leyes inmutables para todos los seres vivos y no vivientes. Todas estas leyes de la física son las leyes de tu Señor por las cuales dirige su Reino. La naturaleza inmutable de estas leyes en sí misma demuestra la existencia de un controlador como creador supremo. Todas estas leyes de la ciencia y la física surgen justo después de la Creación, es decir, el Big Bang. La ciencia se refiere a estos detalles como constantes de la naturaleza. El número de átomos y sus subpartículas, la relación entre las masas de electrones y protones, las cargas eléctricas de electrones y protones, la relación de gravedad con la masa del objeto y la velocidad de la luz son constantes de la naturaleza sin que nadie que la condensación de masa y el inicio de gases primordiales para condensarse en nebulosas y en estrellas no era posible. El más mínimo cambio en estas constantes significaría que el orden en el universo no se produciría y que no existiríamos.

Solo para que te des cuenta de la importancia de estas leyes, te doy un ejemplo de un fenómeno de fricción de la vida diaria, puedes haber pensado siempre en la fricción como un mal como una fuerza que siempre te crea dificultades, pero el hecho es que sin fricciones No puedo imaginar este universo funcionando correctamente. El lápiz que sostenga se le escapará de los dedos. Se escaparía cuando trataras de sostenerlo para escribir. El lápiz de grafito no marcaría el papel sin fricción. Tu computadora portátil se cae de la mesa. Todos los muebles pueden deslizarse y chocar entre ellos y con la pared. Los tornillos y las uñas se caen, los autos no pueden correr o detenerse, las ondas de sonido de ruido nunca terminarán. No podrías caminar sin la fricción entre tus zapatos y el suelo. Considera lo difícil que es caminar sobre hielo resbaladizo, donde hay poca fricción. Su automóvil no comenzará a moverse si no fuera por la fricción de los neumáticos con la calle. Sin fricción, los neumáticos simplemente girarían. Del mismo modo, no podrías parar sin la fricción de los frenos y los neumáticos. Está todo diseñado, creado, pasando y funcionando por sí mismo. No, todo es por la Voluntad y el mandato de tu Señor. Este universo es un acto de Dios y las Escrituras son Sus Palabras, y no hay diferencia en las Palabras de Dios y Sus Acciones. Entonces, ¿cuál de los favores de tu Señor negarás? Pero has negado y no has creído, y Dios sigue mostrándote Sus signos en los horizontes y en ti mismo hasta que te quede claro que es la verdad. ¿No es suficiente con respecto a su Señor que Él es un testigo / controlador de todas las cosas? De hecho, Dios sostiene los cielos y la tierra para que no cese. Y si cesan, nadie puede defenderlos después de él. De hecho, Él es el más tolerante, el más indulgente.

اے جنات اور انسانوں کی جماعت! کیا تمہارے پاس تم میں سے ہی پیغمبر نہیں آئے تھے، جو تم سے میرے احکام بیان کرتے تھے  اور تمکو بتایا کہ تمہارا رب ایک خدا ہے اور اس نے تمہیں اور تمہارے ارد گرد کی ہر چیز کو پیدا کیا۔ کیا تم سمجھتے ہو کہ یہ سب کسی خالق کے بغیر تخلیق ہو گیا ہے؟  تم پر افسوس جو ایسا خیال کرتے ہو اور تم پر افسوس جس پر تم یقین رکھتے ہو۔ تمہاری یہ رائے تمہارے ارد گرد گرد کی اس چھوٹی سی چیز کے لئے بھی نہیں ہے جسے تم نے تخلیق کیا ہے۔ تم میں سے بے وقوف او ر جاہل ترین  شخص بھی اس بات کا دعویٰ نہیں کر سکتا کہ اس کے جوتے کے تسمے  خو د سے  ڈیزائن ہوئے ہیں لیکمن یہ  شاندار کائنات ، تم سوچتے ہو کہ خود بخود تخلیق میں آ گئی ہے۔ 

اپنے ارد گرد کی کائنات کو دیکھو اور اپنے اندر جھانکو۔ ہر چیز ایک نظام کے تحت کام کر رہی ہے۔  اس وسیع کائنات اور پھر ع اربوں کھربوں ستاروں اور سیاروں  اور پھر اس زمین پر انسان کی تخلیق سے لیکر  یہ سب ایک باقاعدہ حساب و پیمانے کے مطابق چل رہا ہے۔  اپنے ارد گرد خدا کی بادشاہت کی وسعت کو دیکھو۔ محض دکھائی دینے والی کائنات ہی قریباً  90 بلین روشنی کے سال کے ڈایا میٹر   کےبرابر ہے۔  یہاں کم از کم 100 سے 200 ارب کہکشاں ہیں اور ان میں ہر ایک 100 سے 1000 ارب ستاروں پر مشتمل ہے۔  کئی ستارے اور سیارے، قریباً  زمین پر ریت کے ھر ایک ذرے کے لئے 10 ہزار ستارے اور زمین پر ریت کے ھر ایک ذرے کے لئے 100 ہزار سیارے۔  کیا یہ سب کچھ خود سے تراشا ، بنایا، ھوا، ھو رھا ھے اور چل رھا ھے۔ نہیں ، یہ تمام آپ کے رب کی مرضی اور اس کے حکم سے چل رہا ہے۔ تو بس تم اپنے رب کی کون کون سی نعمتوں کو جھٹلاؤ گے۔ 

کائنات کے سائز سے متعلق اوپر بیان کردہ تمام اندازے 1995 ہبل اوبزرویشن کے بعد تیار کئے گئے اور یہ 2016 تک  اگلی دو دہائیوں کی جانچ تھی ۔ اور اب ایسٹرو فیزیکل جرنل کے مطابق دکھائی دی جانے والہ کائنات میں 90 فیصد کہکشاؤں  کا مشاہدہ کیا جانا باقی ہے۔ آنے والی دہائی نئے مشاہدات کے آلات کو آتے ہوئے دیکھے گی۔ ہبل کے بعد آنے والے جیمز ویب سپیس ٹیلیسکوپ  کو 2018 میں مدار میں بھیجا جائے گا۔  تو اس بات کی توقع ہے کہ کہکشاؤں کے شمار میں کھربوں کا اضافہ دیکھنے میں آئے گا۔  انکے لئے جنہیں اس بات کا اندازہ نہیں کہ یہ عدد کتنا بڑا ہے ؟ اگر آپ اوسط رفتار کے ساتھ 1، 2 ، 3  گننا شروع کریں تو رات دن ملا کر قریباً 25 سال لگ جائیں گے کہ آپ ایک ارب  کی گنتی تک پہنچیں اور اندازہً 25000 سال ایک کھرب کے عدد تک پہنچنے کے لئے۔  اس وسیع اور شاندار کائنات میں ہر چیز حرکت میں ہے اور ایک دوسرے کے ساتھ  مکمل ہم آہنگی میں ۔ کیا یہ سب کچھ خود سے تراشا ، بنایا، ھوا، ھو رھا ھے اور چل رھا ھے۔ نہیں ، یہ تمام آپ کے رب کی مرضی اور اس کے حکم سے چل رہا ہے۔ تو بس تم اپنے رب کی کون کون سی نعمتوں کو جھٹلاؤ گے۔ 

کائنات کے بیچ اتنا فاصلہ ہے کہ آپ اسے اپنی عام اصطلاح میں ناپ نہیں سکتے۔ یہ صرف روشنی کے سال کی اصطلاح میں ناپا جا سکتا ہے  یعنی کہ ایک سال کے دورانیے میں روشنی کا طےکردہ سفر جبکہ روشنی کی رفتار 3 لاکھ کلومیٹر فی سیکنڈ ہے۔  یہ رفتار اتنی ذیادہ ہے کہ روشنی سے ذیادہ تیز سفر کوئی چیز نہیں کر سکتی۔  صرف ایک سیکنڈ میں ساڑھے .7.57 مرتبہ روشنی زمین  کے گرد چکر لگا سکتی ہے۔ ایک سال کی مدت میں یہ ساڑھے 9 کھرب کلومیٹر  سفر طے کرتی ہےاور اسے روشنی کے سال کا نام دیا جاتا ہے جو کہ لمبائی کا فاصلہ ہے نہ کہ وقت کا۔  ہم جس کہکشاں   میں رہتے ہیں اسے ہم نے Milky Way کا نام دیا ہےاور اس کا ڈایا میٹر ایک لاکھ نوری سال ہےاورایک ھزار نوری سال کی  دبازت  کے برابر جو کہ قریباً 100 ارب سے 400 ارب ستارو ں کے ساتھ ہے جیسے کہ ہمارا سورج  ، حالانکہ ان میں سے ذیادہ تر ہمارے سورج سے بڑے ہیں ۔ ھماری کہکشاں کے سب سے قریب کی کہکشاں اینڈرومیڈا ہے ۔ یہ وہ کہکشاں ہے جو کافی حد تک ہماری کہکشاں جیسی ہے۔  یہ  ہم سے 2 اعشاریہ 2  ملین نوری سال کی فاصلے پر ہے ۔  اس کا مطلب ہے کہ اینڈرومیڈا  کے قریب ترین علاقے تک روشنی یا کسی اور چیز کو پہنچنے کے لئے 3 لاکھ کلومیٹر فی سیکنڈ کی رفتار سے سفر کرنے پر 22 لاکھ سال لگیں گے۔  آسمان  میں رات کو جو  ستارے ہم دیکھتے ہیں وہ ہم سے بہت دور ہیں ۔  اتنی دور کے انکی روشنی جو ھم دیکھتے ھیں اس  روشنی نے خلاء میں بہت دیر تک  ہماری آنکھوں  تک پہچنے کے لئے سفر کیا ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ جب بھی ہم رات میں ستاروں کو دیکھتے ہیں ہم درحقیقت ماضی کو دیکھ رہے ہوتے ہیں ۔ 

خاص دوربینوں کے ذریعے ہم کائنات میں مختلف چیزوں کو دیکھ سکتے ہیں ۔ وہاں پر کچھ حیرت کن مناظر ہیں جن میں سے ایک کا نام ہبل الٹرا فیلڈ ہے۔ ایچ یو ڈی ایف خلاء کے ایک چھوٹے سے خطے کا منظر ہے  جو تقریباً 10ہزار کہکشاؤں پر مشتمل ہے۔ اندازہً 13 ارب سال پیچھے ماضی میں دیکھنا۔ صرف ایک ہی تصویر میں ہم 13 ارب سال پیچھے ماضی میں چلے جاتے ھیں  جو کہ بِگ بینگ کے بعد کے 400 سے 800 سال کا دور ہے اور یہ کائنات کی تاریخ میں بہت شروعات کا وقت ہے۔ کیا آپ جانتے ہیں کہ اس بات کا امکان ہے کہ  آسمان کے ستارے فنا ہو گئے ہوں  کیونکہ وہ ہم سے اربوں کھربوں نوری سالوں کے فاصلے پر ہیں اور زمین تک روشنی کو پہنچنے کے لئے کئی بلین  یعنی اربوں کھربوں سال لگ جاتے ہیں ۔ اس کا مطلب ہے کہ جو ستاروں کی روشنی ابھی ہم دیکھتے ہیں وہ کئی ارب سال پرانی ہے۔ تو ہو سکتا ہے کہ وہ اب ختم ہو چکے ہوں ۔محض دکھائی دینے والی کائنات میں  ہر روز تقریباً 27 کروڑ سے 40 کروڑ ستارے فنا ہوتے ہیں اور قریباً 40 کروڑ نئے ستارےوجود میں آتے ہیں۔ کیا یہ سب کچھ خود سے تراشا ، بنایا، ھوا، ھو رھا ھے اور چل رھا ھے۔ نہیں ، یہ تمام آپ کے رب کی مرضی اور اس کے حکم سے چل رہا ہے۔ تو بس تم اپنے رب کی کون کون سی نعمتوں کو جھٹلاؤ گے۔ 

جیسا کہ میں نے آپ کو بتایا تھا کہ صرف دکھائی  دینے والی کائنات کا سائز 90 بلین روشنی  کے سال  کے ڈایا میٹر کے برابر ہے۔ مزید یہ کہ یہ سائز منجمد نہیں ہےکیونکہ ہماری کائنات مسلسل پھیلتی جا رہی ہےاور یہ پھیلاؤ روشنی کی رفتار سےذیادہ ہے۔ لیکن کوئی بھی چیز روشنی کی رفتار سے ذیادہ تیز نہیں ہو سکتی ۔ میں اسکی وضاحت بعد میں کرونگا کہ یہ کیسے ہو رہا ہے۔  لیکن اس لمحے میں آپ کی توجہ تصور سے بالاتر آپ کے رب کی اس تخلیق کی قوت کی جانب دلانا چاہتا ہوں  جس سے اس نے یہ کائنات تخلیق کی اور اس کے ساتھ ہی انتہائی چھوٹی چیزیں تخلیق کیں جیسے کہ ایٹم،  جرثومہ اور انسانی خلیے جن کے اندر  تمام تفصیلات اور مکمل  فعال نظام   سے بھرپور ایک پوری کائنات موجود ہے ۔ اب آپ کو اس کائنات کی وسعت کا اندازہ  ہو گیا ہے اور میں آ پکو ان چیزوں کا موازنہ دے رہا ہوں کہ آپکے رب نے کس قدر چھوٹی چیزیں بھی تخلیق کی ہیں ۔ طبعیات میں پلانک لمبائی کم ترین قابل ماپ چیز کی نمائندگی کرتی ہے۔ غیر یقینی کے اصول کے مطابق کوئی بھی آلٰہ اتنی چھوٹی چیزوں کو ناپنے کے قابل نہیں ہو سکتا کیونکہ اس سطح پر کائنات احتمالی اور غیر متعین ہوتی ہے۔ 

شاید کائنات کی تمام تر سب سے چھوٹی اشیاء تقریباً  پلانک لمبائی کے سائز کی ہیں ۔  بلیک ہول کی اکائیت اور کائنات کے بنیادہ ذرات وغیرہ سب پلانک لمبائی کی پیمائش کے قریب قریب ھی ھیں ۔ کائنات میں سب سے چھوٹی چیز ایک کوارک ہے جو ہیڈرون کو جنم دیتی ہے جن میں سب سے مستحکم پروٹون اور نیوٹرون ہیں جو بعد میں مل کر ایٹم بناتے ہیں ۔ تمام بنیادی ذرات نقطہ ذرات ہیں ۔ جس کا مطلب ہے کہ وہ  صفر حدود ابعاد رکھتے ہیں ؛ ان کا سائز صفر ہے۔ لہٰذا ان میں کوئی چھوٹا ترین ذرہ نہیں ہے۔ پلانک لمبائی  1.6×10^-35 میٹر ہے۔ یعنی 16 کا عدد اور اس سے پہلے34 صفر اور ایک نقطہ اعشاریہ ہے۔ 10 پاور 25 میٹر وہ سائز ہے جو دکھائی دینے والی کائنات کا ہے۔ اور 10 پاور منفی 5 یعنی ان کا درمیانی  نقطہ انسانی خلیے یا جرثومہ کا سائز ہے۔  تو پلانک لمبائی کے انتہائ کم سائز  کا  اندازہ لگانے کے لئے اس کائنات اور انسانی خلیے کے سائز کے فرق کو تصور کریں اور پھر انسانی خلیہplanks length  کے مقابلہ میں اتنا بڑا ہے جتنی بڑی یہ کائنات۔  کیا یہ سب کچھ خود سے تراشا ، بنایا، ھوا، ھو رھا ھے اور چل رھا ھے۔ نہیں ، یہ تمام آپ کے رب کی مرضی اور اس کے حکم سے چل رہا ہے۔ تو بس تم اپنے رب کی کون کون سی نعمتوں کو جھٹلاؤ گے۔ 

مزید سب سے چھوٹے ذرے سے لے کرہماری زمین ، سورج اور ہماری کہکشا ں یہانتکہ ہماری تما م کائنات موجد نہیں بلکہ مسلسل حرکت میں ہے۔ ہماری زمین اپنے مدار کے گرد  16سو کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے گھومتی ہے جس سے ہمارے دن رات وجود میں آتے ہیں ۔ پھر یہ سورج کے گرد  ایک لاکھ سات ہزار کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے گھومتی ہے جس کی وجہ سے ہمارے 12 ماہ اور  زمین پر مختلف موسم ھوتے ہیں ۔ سورج بھی ساکن نہیں ہےبلکہ 8 لاکھ کلو میٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے ہمارے چاند، زمین اور سیاروں کو لے کر چمکدار ستارے ویگا  جو  برج لائرہ کے جھرمٹ میں ہے  اس کی سمت میں ہمیشہ  سے حرکت میں رہتا ہے۔ ہمارے سورج کو ہمارے کہکشاں کے گرد ایک چکر مکمل کرنے میں تقریبا225 ملین سال لگتے ہیں ۔ اسے کبھی کبھار گیلگیٹک سال بھی کہتے ہیں ۔ سورج کے بننےسے لیکر اب تک تقریبا 20 گیلگیٹک سال گزر چکے ہیں ؛ ہم اپنی کہکشاں کے گرد تقریباً 20 بار گھوم چکے ہیں ۔ 

ہماری کہکشاں the Milky Way بھی 2.1 سے 3.6 ملین کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے حرکت میں ہے۔ ہم  اندازہً آسمان میں بُرج اسد اور بُرج سُنبلہ کے جھرمٹ کی طے کردہ سمت میں بڑھ رہے ہیں ۔ ہمارے پڑوس کی کہکشاں بھی اس رفتار سے اس ڈھانچے کی جانب بڑھ رہی ہیں جسے گریٹ اٹریکٹر کہتے ہیں ۔ خلا ء کا وہ خطہ جو ہم سے  150  ملین روشنی  سال کی دوری پر ہے۔  یہ گریٹ اٹریکٹر جس کا ماس 100 کواڈرلین بار ہمارے سورج سے ذیادہ ہے اور 500 ملین روشنی سال کی چوڑائ ھے۔ یہ دکھائی دینے والے مادے اور  نہ دکھائی دینے والے مادے جسے ھم dark matter کہتے ھیں دونوں طرح کے مادوں سے بنا ہے۔  تو مجموئ طور پر ہم سب ملکر تقریبا 3 سے ساڑھے 4 ملین کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے آگے بڑھ رہے ہیں ۔ 

میں نے اس میں اپنی کائنات کے پھیلاؤ کی شرح کو شامل نہیں کیا ہے ۔ اگر ہم کائنات کو 45 بلین روشنی کے سال کے سئز کے طور پر لیں  تو پھر تمام کائنات 9 لاکھ 66 ہزار کلومیٹر فی سیکنڈ اور 3 اعشاریہ 478 بلین کلو میٹر فی گھنٹہ اور 70 کلو میٹر فی سیکنڈ فی میگا پرسیک کی رفتار سے پھیل رہی ہے۔  اس کا مطلب ہے کہ ہماری کائنات  ایک گھنٹے میں تقریباً 3 اعشاریہ 5 بلین کلومیٹر پھیلتی ہے ۔  ایک گولی کی اوسط رفتار 500 میٹر فی سیکنڈ ہے۔ یعنی 1800 کلو میٹر فی گھنٹہ ۔ تو آپ دیکھ سکتے ہیں کہ آپ خلاء میں گولی کی رفتار سے 2000 گنا ذیادہ  تیز رفتار سے سفر کر رہے ہیں ۔ اسکے باوجود آپ پُرسکون طور پر اپنے کام کر رہے ہیں ، چائے کے کپ کے ساتھ اخبار پڑھتے ہیں اور بغیر اس بات کے علم کے کہ آپ کتنی تیزی سے تاریک خلاء کی جانب بڑھ رہے ہیں رات کو آرام سے سوتے ہیں ۔ میرے لوگو ، محض اس  2 منٹ کی بات چیت کے دوران ہم نے 1 لاکھ 20 ہزار کلو میٹر کا فاصلہ طے کیا ہے اور وہ علاقہ چھوڑ دیا جہاں ہم 2 منٹ پہلے تھے۔  کیا یہ سب کچھ خود سے تراشا ، بنایا، ھوا، ھو رھا ھے اور چل رھا ھے۔ نہیں ، یہ تمام آپ کے رب کی مرضی اور اس کے حکم سے چل رہا ہے۔ تو اپنے رب کی تمجید کرو جو خدائے قادر ہے۔ 

کائنات  کے قوانین تمام جاندار اور بے جان  چیزوں کے لئے نا بدلنے والے ہیں ۔ طبعیات کے یہ تمام قوانین تمہارے رب کے قوانین ہیں جن کے ذریعے وہ اپنی بادشاہت چلا رہا ہے۔ ان قوانین کی نا بدلنے والی فطرت ہی اس بات کا ثبوت ہے کہ  ایک خالق اس سب کو چلا رہا ہے۔ سائنس اور طبعیات کے  یہ تمام قوانین تخلیق کے بعد رونما ہوئے ہیں ۔ یعنی بگ بینگ کے فارن بعد۔ سائنس ان تفصیلات کو قدرت  کے constants کہتی ہے۔  ایٹم کی تعداد اور ان کے مزید چھوٹے ذرات، الیکٹرون اور پروٹون کے masses کی ایک دوسرے کے ساتھ شرح، الیکٹرون اور پروٹون کے الیکٹریکل چارجز ،  کسی بھی چیز کے جسم کے ساتھ اس کی کشش کا تعلق، اور روشنی کی رفتار قدرت کی ایسی ہی چیزیں ہیں  جن کےبغیر ماس کی کنڈینسیشن اور  ابتدائی گیسوں کا نبیولا اور ستاروں کی شکل میں جمع ہونا  ممکن ہی نہیں تھا۔ ان کانسٹینس میں ہلکی سی تبدیلی  کائنات کا توازن بگا ڑ دیتی اور ہمارا وجود نہ ہو تا۔

آپ کو ان قوانین کی اہمیت بتانے کے لئے میں آپ کو معمول کی زندگی سے رگڑ کی مثال دیتا ہوں ۔ آپ نے ہمیشہ سے رگڑ کو ایک بُری چیز سمجھا ہو گا جو آپ کے لئے مشکلات پیدا کرتی ہے۔ لیکن حقیقت تو یہ ہے کہ اس کے بغیر آپ اپنی کائنات کو صحیح طور پر کام کرتا نہیں دیکھ سکتے۔ جو قلم آپ نے پکڑا ہوا ہے آپ کے ہاتھ سے گر جائے گا۔  جب آپ اسے لکھنے کے لئے پکڑنے کی کوشش کریں تو بھی یہ آپ کے ہاتھ سے پھسل جائے گا۔  پینسل کا سکہ کاغذ پر نشان نہیں دے گا اگر رگڑ نہ ہو تو۔ آپ کی سٹیشنری اور لیپ ٹاپ میز سے گر جائیں گے۔ تمام فرنیچر پھسل جائے گا اور ایک دوسرے کے ساتھ اور دیوار کے ساتھ ٹکرا جائے گا۔  کیل اور پیچ وغیرہ گر جائیں ، گاڑیا ں چل اور رُک نہ سکیں ، شور کی آوازیں کبھی ختم نہ ہوں۔ آپ رگڑ کے بغیر چل  ھی نہ سکیں اگر آپکے اپنے جوتوں اور زمین کے درمیان رگڑ نہ ھو۔ یہ سوچئے کہ پھسلنے والی برف پر چلنا کتنا مشکل ہو تا ہے کیونکہ وہاں رگڑ کم ہوتی ہے۔ رگڑ کے بغیر ٹائر بس گھومتے رہیں ۔ اسی طرح آپ  بریک اور ٹائر  کی رگڑ کے بغیر رک نہ سکیں۔ کیا یہ سب کچھ خود سے تراشا ، بنایا، ھوا، ھو رھا ھے اور چل رھا ھے۔ نہیں ، یہ تمام آپ کے رب کی مرضی اور اس کے حکم سے چل رہا ہے۔ ۔ یہ کائنات خدا کی کاریگری ہے ۔ اور صحائف اس کے کلمات ہیں ۔ اور خدا کے قول و فعل میں کوئی تضاد نہیں ہے۔ تو بس تم اپنے رب کی کون کون سی نعمتوں کو جھٹلاؤ گے۔ لیکن تم نے انکار کیا اور یقین نہ کیا اور خدا  تمہں تمہاری ذات میں اور تمہارے اردگرد میں اپنے نشان دکھاتا رہتا ہے یہاں تک یہ  تم پر عیاں نہ ہو جائے کہ یہ سچ ھے۔ کیا تمہارے رب کے متعلق یہ کافی نہیں ہے کہ وہ ان تما م چیزوں کے اوپر شاھد ہے؟ بے شک ، خدا ہی آسمانوں اور زمین کو تھامے رکھتا ہے کہ ٹل نہ جائیں۔ اگر وہ ٹل جائیں تو خدا کے سوا کوئی ایسا نہیں جو ان کو تھام سکے۔ بےشک وہ بردبار (اور) بخشنے والا ہے.