The concept of Wrongdoing and injustice. Non belief is not so dangerous as belief in a wrong deity. Arguments on the existence of God.

Recitation of the Holy Scripture.

All praise is due to God, to whom belongs whatever is in the heavens and whatever is in the earth, and to Him belongs all praise in the Hereafter. And He is the Wise, the All Aware.

He knows what penetrates into the earth and what emerges from it and what descends from the heaven and what ascends therein. And He is the Merciful, the Forgiving.

But those who disbelieve say, “The Hour will not come to us.” Say, “Yes, by my Lord, it will surely come to you. God is the Knower of the unseen.” Not absent from Him is an atom’s weight within the heavens or within the earth or what is smaller than that or greater, except that it is in a clear register 

That He may reward those who believe and do righteous deeds. Those will have forgiveness and noble provision.

But those who strive against Our Signs seeking to cause failure for them will be a painful punishment of foul nature.

But those who disbelieve say, “Shall we direct you to a man who will inform you that when you have disintegrated in complete disintegration, you will then be recreated in a new creation?

“Has he fabricated a lie against God, or is he insane?” Rather those who disbelieve in the Hereafter are in the punishment and extreme error.

Then, do they not look at what is before them and what is behind them of the heaven and earth? If We should will, We could cause the earth to swallow them or could let fall upon them fragments from the sky. Indeed in that is a sign for every servant repentant.

And they say, “When is this promise due, if you are truthful?”

Say, “For you is the appointment of a Day when you will not remain thereafter an hour, nor will you precede it.”

And We did not send into a city any warner except that its wealthy people said, “Indeed we, in that with which you were sent, are disbelievers.”

And they said, “We are more in wealth and children, and we will not be punished.”

Say, “Indeed, my Lord extends provision for whom He wills and restricts it, but most of the people do not know.”

End of Recitation of the Holy Scripture.

O people I am telling you that trust on God and stop doing injustice, He will help you from where you are not expecting. But first understand the concept of Wrongdoing and injustice. Injustice and wrongdoing is treating a thing in a way which it is not meant to be treated. An act that inflicts undeserved hurt. It applies to any act that involves unfairness to another or violation of one’s rights. Injustice can be with anything animate or inanimate. I tell you how, consider you live in an apartment and in the center of your living room there is a table. Now if you only change its place and put it outside your apartment in the corridor it will become an injustice not only to the table but also with the corridor and all residents of that building. So using a thing in a way which it is not supposed to use is injustice. Now consider a knife it is meant to be used as an instrument to cut various stuff like fruits vegetables but if you use it to injure someone then you are doing injustice not only to that person but also with the knife. Same is the matter with all your organs God has made your hands, foot, tongue and lips to perform your day to day tasks and not to hurt someone. Your sex organs are meant to be used for lawful interactions with spouses you lawfully possess and not for illicit relationships. 

Let me also respond here on the homosexuality issue about which many prominent minds among you say that its not a sin but it is all natural and present everywhere in nature. They say if there is any God than He has made it like this as this trait of homosexuality is present in many animal species. Almost 20% of monkeys are homosexual. Now the logical reply is that there are number of other things which animals do but for you as human beings are wrong like killing, stealing and making sex unlawfully with others wife and daughters etc. But for these things you never argued that because animals do this all so its all natural and no sin in doing that.

O mankind I am telling you again that trust on God and stop doing injustice, He will help you from where you were not expecting. Your Lord has created everything in justice. Full Praise is to God, who raised the heavens and laid the earth and put justice in them. Just understand the concept of injustice and stop doing it on the smallest level. specially take care of those dependent on you. Treat women the same way as you expect them to treat you. You are same species and equal in the eyes of your Lord. In some scriptures it is said that men are superior but people totally misunderstood that. If my Lord wills I will surely clear that confusion for you.

Whoever has oppressed another person concerning his reputation or anything else, he should beg him to forgive him before the Day of Resurrection when there will be no money to compensate for wrong deeds, but if he has good deeds, those good deeds will be taken from him according to his oppression which he has done, and if he has no good deeds, the sins of the oppressed person will be loaded on him

He who justifies the wicked and he who condemns the righteous are both alike an abomination to the Lord. Your Lord has told you, O man, what is good; and what does the Lord require of you but to do justice, and to love kindness, and to walk humbly with your God.

O people all religious scriptures speak about not to associate partners with God. These partners are not only idols as perceived by majority of people. Idols are one among them. A true revelation of God is always universal and valid for any age. So it changes its sense with the changing time as now it has many more meanings in it. As compared to a simple society, today’s society is much more complex, and associating partners with God means considering anyone else as a being giving you your provisions, health, life, security and anything you can imagine. Religion and scriptures came to you to give you liberty from many gods, idols or humans, to break the chains, to give you liberty from superstition so that all your fears come to an end. So that you need not to go to different places, different doors for your problems, provisions and for your needs. 

Therefore all religious scriptures say that associating partners with God is much more an evil than not believing in any god. As not believing is not so dangerous as believing in wrong deity. I give you an example, consider you arrive in a country or a city and you are unaware of the ruler of that region and about its policies than chances are you can make a few mistakes but soon you would become aware of the law and the ruler. But in case you get trapped by some wrong people and if they manage to tell you a total different version of rules, laws and policies, chances are you would make quite serious mistakes or even some unlawful activity in that country which may end up to some serious crime some severe punishment.

There are many social and moral issues in associating partners with God. You go to different places to different doors for your problems, provisions and for your needs. It makes you superstitious and irrational. It makes you like a beggar knocking every other door and asking everyone for their needs. This is not the case with God the only One the All Mighty as He invites your common sense to think that, is this universe a creation or not, does it has a beginning, and we now know for sure that it had a beginning, it will surely end and will cease to exist. He invites you to think about the creator that is He Himself. He doesn’t invites you to superstition but actually inviting your conscious, your mind your logic to think rationally about him. Most atheist and skeptics think that religious people are superstitious. I tell you that they are right. All this is actually because of accepting religions by birth and not by accepting it through mind through logic or not even by heart. They only say that we are believers but fact is that faith has not passed even from their throat, its just on their lips and tongues. So whoever is superstitious is actually not a believer but more chances are that he must have associated partners with God. Trust me check your inner self you will find the answer.

Now come to the Big Question “Is there a God”. In the words of one of the greatest minds “The problem involved is too vast for our limited minds. May I not reply with a parable? The human mind, no matter how highly trained, cannot grasp the universe. We are in the position of a little child, entering a huge library whose walls are covered to the ceiling with books in many different tongues. The child knows that someone must have written those books. It does not know who or how. It does not understand the languages in which they are written. The child notes a definite plan in the arrangement of the books, a mysterious order, which it does not comprehend, but only dimly suspects. That, it seems to me, is the attitude of the human mind, even the greatest and most cultured, towards God. We see a universe marvelously arranged, obeying certain laws, but we understand the laws only dimly. Our limited minds cannot grasp the mysterious force that sways the constellations”

There is a long history of debate on the non existence and existence of God. I am presenting you all this case in simplest words so that an average mind can also understand. This prelude for understanding God and His kingdom is much lengthy and will come again and again in between my coming programs. A brief summary of arguments against the existence of God includes Empirical arguments such as argument from inconsistent revelations which negates the existence of God because of contradictions between different scriptures, within a single scripture, and between scriptures and known facts. The second argument is the problem of evil which negates the existence of a god who is both omnipotent and omni benevolent by arguing that such a god should not permit the existence of evil or suffering. The third empirical argument is about the destiny of the nonbelievers, by which persons who have never even heard or got a chance to read a particular revelation might be harshly punished for not following its commands.Than comes the argument from poor design which contests the idea that God created life on the basis that lifeforms, including humans, seem to exhibit poor design as is the case of 99% of life extinctions on earth during ice ages and the destruction and time taken to produce a planet like earth.The fifth empirical argument is argument from non belief which negates the existence of an omnipotent God who wants humans to believe in him by arguing that such a god could do a better job of converting collecting and gathering believers. Than comes the arguments that the burden of proof for the existence of God lies with the theist rather than the atheist. Russell’s teapot and Occam’s Razor based analogies are used to explain this argument.

Than there are many deductive arguments one of which is a counter-argument to the argument from design which states that a complex or ordered structure must be designed. This counter arguments states that if God is the creator of this universe He should be more or equally complicated as the universe that it creates. Therefore, He too must require a creator or designer which would require another designer also uptil infinity. Thus the argument for the existence of God is a logical fallacy with or without the use of special pleading. Than there is omnipotence paradox (Omnipotence mean all powerful) which states that If an omnipotent being is able to perform any action, then it should be able to create a task that it is unable to perform. Hence, this being cannot perform all actions. There are different versions of this like can God create a rock so big that He cannot move it? Or can God create a being more powerful than Himself?” Or Can God create a prison so secure that he cannot escape from it?” If yes for all of the above questions: than God’s power is limited, because it cannot lift the stone or escape from the prison or another being is more powerful than him. If no: than again that being’s power is limited, because it cannot create the stone. the prison or a powerful being than Him.

All these above philosophical debates and arguments have their origin back in history some 500 years before Christ that is more than 2500 years in past. You can clearly see how sharp were the minds of those people those big brains of human history. And you who call yourselves believers you look towards those people with hatred because you think them non believers and as someone who will be the subject of God’s wrath on the Judgement Day. While the fact is that those were the minds who laid foundation of human knowledge, Philosophy and sciences.

If my Lord Wills I will continue this topic in next programs. If some high scientific or philosophical term come in between my dialogue just bear with me. If my Lord Wills you will soon understand it as you listen more and more of this dialogue.

Recitation of the Holy Scripture.

الحمد للـه الذي له ما في السماوات وما في الأرض وله الحمد في الآخرة وهو الحكيم الخبير 

يعلم ما يلج في الأرض وما يخرج منها وما ينزل من السماء وما يعرج فيها وهو الرحيم الغفور 

وقال الذين كفروا لا تأتينا الساعة قل بلى وربي لتأتينكم عالم الغيب لا يعزب عنه مثقال ذرة في السماوات ولا في الأرض ولا أصغر من ذلك ولا أكبر إلا في كتاب مبين 

ليجزي الذين آمنوا وعملوا الصالحات أولئك لهم مغفرة ورزق كريم 

والذين سعوا في آياتنا معاجزين أولئك لهم عذاب من رجز أليم 

وقال الذين كفروا هل ندلكم على رجل ينبئكم إذا مزقتم كل ممزق إنكم لفي خلق جديد 

أفترى على اللـه كذبا أم به جنة بل الذين لا يؤمنون بالآخرة في العذاب والضلال البعيد 

أفلم يروا إلى ما بين أيديهم وما خلفهم من السماء والأرض إن نشأ نخسف بهم الأرض أو نسقط عليهم كسفا من السماء إن في ذلك لآية لكل عبد منيب 

ويقولون متى هذا الوعد إن كنتم صادقين 

قل لكم ميعاد يوم لا تستأخرون عنه ساعة ولا تستقدمون 

وما أرسلنا في قرية من نذير إلا قال مترفوها إنا بما أرسلتم به كافرون 

وقالوا نحن أكثر أموالا وأولادا وما نحن بمعذبين 

قل إن ربي يبسط الرزق لمن يشاء ويقدر ولكن أكثر الناس لا يعلمون 

End of Recitation of the Holy Scripture.

أيّها الناس إنّما أدعوكم إلى الثقة في الله، والتوقف عن ارتكاب الظلم؛ وسوف يُساعدكم الله من حيث لا تحتسبون. ولكن يجب عليكم أولًا فهم مُصطلح الظلم وارتكاب المعاصي؛ إن الظلم وارتكاب المعاصي يعني مُعالجة شيءٍ ما بطريقةٍ ما لا تصلح لهذا الأمر. وفعل ذلك يُؤدي إلى حدوث ضررٍ غير مُستحق. وذلك ينطبق على أي فعلٍ يتضمن عدم العدل بين الأخرين، أو الاعتداء على حقوق الأخرين. يُمكن أن يقع الظلم على أيّ كائنٍ حيّ أو جماد. وسأخبركم كيف يُمكن ذلك، تخيّل أنّك تعيش في شقة، وتوجد طاولة في وسط غرفة المعيشة. ولكنّك إذا قمت بنقلها خارج شقتك ووضعها في الممر؛ فسوف يُعتبر ذلك ظلمًا، ليس للطاولة فقط، بل لجميع المارة وسكان المبني بالكامل. ولذا فإن استخدام أيّ شيء بطريقةٍ غيرمُخصصة لهذا الشيء يُعتبر ظلمًا. الأن تخيّل سكينًا، الهدف منها أن تُستخدم كأداة في قطع الأشياء كالفاكهة والخضروات، ولكن إذا استخدمتها لتجرح بها شخصًا ما، فإنّم بذلك تُمارس ظلمًا؛ ليس فقط على الشخص الذي قمت بإيذائه، بل على السكين أيضًا. ونفس الشيء مع جميع أعضائك؛ فالله قد خلق لك الأيدي، الأقدام، اللسان، والشفاه لكي تُؤدي مهامك اليوميّة، وليس من أجل إيذاء الأشخاص. وأعضاؤك التناسلية خُلقت لكي تُستخدم في العلاقات الشرعية مع زوجتك، وليس في العلاقات المُحرّمة.

وبالمناسبة، دعونا نجيب أيضًا على قضية “المثليّة الجنسيّة”، والتي دار حولها لغطٌ كبيرٌ طوال عقود، حيث يقولون أنّها ليست إثمًا، بل إنّها شيءٌ طبيعيّ وموجود في كل مكانٍ في الطبيعة. فهم يقولون لو كان هناك “إله” لابد أنّه خلق “المثلية الجنسيّة” مثلما خلق الأشياء الأخرى، لأنّها توجد في العديد من فصائل الحيوانات. ف 20% من القرود تقريًا يمارسون المثليّة الجنسيّة. ولكن حينئذ يكون الرد المنطقيّ، هناك عدد من الأشياء الأخري التي تقوم بها الحيوانات، ولكنّنا نراها كبشر أفعالًا خاطئة مثل :القتل، السرقة، ومُمارسة الجنس بشكلٍ غير شرعي من الزوجات والبنات، إلى آخر تلك الأمور. ولكنّك لم تقل أنّ تلك الأشياء مُباحة؛ فقط لأن الحيوانات تُمارسها بشكلٍ طبيعيّ وبدون شعورٍ بالذنب.

يا أيها الناس، إنّني أدعوكم إلى الثقة في الله، وترك الظلم. وسوف يُساعدكم الله من حيث لا تحتسبون. فلقد خلق الله كل شيءٍ بالعدل، سبحان الله، وتعالى علوًا كبيرًا، الذي رفع السماء، وبسط الأرض، ووضع العدل بينهم.

فقط عليكم أن تفهموا مفهوم الظلم، وتتوقفوا عن ارتكابه على المستوى الأصغر، خاصةً الاهتمام بمن يعتمدون عليكم. وعاملوا النساء بنفس الطريقة التي تريدون منهنّ أن يُعاملوكنّ بها. أنتم نفس الجنس، ومتساوون أمام الله. ولقد قيل في بعض الكتب المُقدسة، أنّ الرجال أعلى درجةً من النساء، ولكن لقد أساء الناسُ فهم ذلك بشكلٍ كبير. إن شاء الله، سوف أوضح لكم هذا الأمر تمامًا.

ويجب على كل من آذى شخصًا أخر في سُمعته أو أي شيءٍ أخر، أن يتوسل إليه طالبًا منه المغفرة قبل يوم القيامة، حيث لا يوجد مالٌ للتعويض عن الأفعال الخاطئة، ولكن إذا كانت لديه أعمال صالحةٌ، فسوف تُؤخذ منه تلك الأعمال الصالحة، على قدر الظلم الذي ارتكبه، وإذا لم تكن لديه أعمالٌ صالحة؛ فسوف تُوضع ذنوب الشخص المُظلوم عليّه.

والذي يُبرر الظلم والذي يرتكبه متساويان أمام الله في الاثم. فلقد أخبركم الله ما هو الخير، وما الذي يطلبه منكم، من تطبيق العدل، وحُب الطيبة، والسير بتواضعٍ أمام الله.

أيها الناس، إن جميع النصوص المُقدسة تتحدث عن عدم الإشراك بالله. هؤلاء الشركاء ليسوا “الأصنام” فقط كما يتصور معظم الناس، ولكن الأصنام هى صورةٌ واحدةٌ من ضمنها. والوحي الحقيقي القادم من الله دائمًا ما يكون صالحًا وعامًا لأي عصرٍ وزمان. لذا فإنّ معانيه تتغير بتغيّر الزمان، ولهذا فإنّ به الأن الكثير من المعاني. وبالمقارنة بالمجتمع البسيط، فإنّ مجتمع اليوم أكثر تعقيدًا، والشركاء الذي يُعبدون مع الله، تعني أي شيء أخر قد ترى أنّه يمنحك القواعد، الصحة، الحياة، الأمان وأي شيء تتخيلّه. لقد أتى الدين، وأتت النصوص والكُتب المُقدسة لكي تُمنحك حريتك من الآلهة المُتعددة، الأصنام البشرية، ولكي تكسر الأغلال، ولكي تُعطيك الحرية من الخرافات؛ مما يجعل جميع مخاوفك تتلاشى. ولذا، فأنت لست بحاجةٍ إلى الذهاب إلى أماكن مُختلفة، أو أبواب مختلفة بحثًا عن حل لمشاكلك، أو بحثًا عن قواعد تُسيّر حياتك أو طلبًا لتلبيّة رغباتك.

ولهذا فإنّ جميع الكُتب المُقدسة تقول أن إشراك أحد في العبودية مع الله أشدُ شرًا من عدم الاعتقاد بوجود “الله” من الأساس. لأن عدم الإيمان ليس خطيرًا بقدر خطورة الاعتقاد الخاطيء. سوف أعطيكم مثالًا، تخيّل أنّك وصلت إلى دولةٍ أو مدينةٍ لا تعرف حاكمها، ولا تعرف قواعده، فحينها يُمكنك ارتكاب بعض الأخطاء، ولكنك سرعان ما تصبح على دراية بقواعد الحاكم. ولكن في حالة ما إذا تم احتجازك من قبل بعض الأشخاص، وأخبروك قواعد، قوانين، وسياسيات خاطئة تمامًا؛ فحينها تزداد احتمالية أن تقوم بالعديد من الأنشطة الخطرة غير القانونية، الأمر الي قد ينتهي بارتكاب جريمة خطيرة، تستوجب عقابًا عنيفًا.

هناك العديد من الجوانب الأخلاقية والاجتماعية بخصوص الشرك بالله. فأنت تطرق أبوابًا مُختلفة، وتذهب إلى أماكن مختلفة من أجل تلبية حاجاتك، وإيجاد حلولٍ لمشاكلك، الأمر الذي يجعلك غير منطقي، ومؤمنًا بالخرافات. سوف يجعلك ذلك تبدو كالمتسول الذي يطرق كل بابٍ، تطلب من كل شخصٍ أن يُساعدك في تلبية رغباتك. وهذا ليس هو الحال مع الله الواحد الأحد سبحانه وتعالى؛ إذ أنّه يدعوك ويدعو حواسك إلى التفكير في ذلك: هل هذا الكون خلقٌ من خلقه أم لا، هل له بداية، ونحن نعلم بالتأكيد أنّ له بداية، ونحن نعلم أيضًا أنّه سوف ينتهي ويتلاشى من الوجود. إنّه يدعوك إلى التفكير في الخالق، الذي هو الله ذاته. إنّه لا يدعوك إلى الإيمان بالخرافات، بل يدعوك وأنت في كامل وعيّك، ويدعو عقلك ومنطقك إلى التفكير بشكلٍ جديٍ ومنطقيٍ فيه. يعتقد معظم المُلحدون والمُشككون أنّ المُتديّنين يُؤمنون بالخرافات. ولكنّي سوف أخبركم أنّهم على صواب. وذلك بسبب قبول الأديان فقط لأنّك وُلدت على هذا الدين، وليس بناءًا على العقل والمنطق، أو حتى القلب. إنّهم يقولون أنّهم مؤمنون فقط، ولكن الحقيقة أنّ الإيمان لم يجاوز حلوقهم، إنّه موجود على شفاههم وألسنتهم فقط. لذا؛ فأي شخص مُؤمن تراه وتجد أنّه مؤمن بالخرافات، فهو في واقع الأمر ليس مُؤمنًا حقيقًا، بل أغلب الظن أنّه يشرك مع الله ألهة أخرى. ثق فيّ، وانظر بداخل نفسك وسوف تعرف الإجابة.

والأن نأتي إلى السؤال الكبير ” هل هناك إله”. وعلى حد قول واحدٍ من أعظم العقول ” القضية المطروحة أكبر من أن تستوعبها عقولنا القاصرة”. أيُمكنني الرد بالمثل؟ فالعقل البشري، مهما كان مستوى تدريبه، لا يُمكنه أن يحتوى الكون. كأنّنا طفل صغير، يدخل مكتبةُ ضخمةً تمتلأ جدارنُها بالكتب حتى تكاد تبلغ السقف، كتب بمختلف اللغات. الطفل يعلم أنّه لابد أن أحدًا قد كتب تلك الكتب. ولكنه لا يعرف من الذي كتبها أو كيف. وهو أيضًا لايفهم اللغات التي كُتبت بها تلك الكُتب. ويُلاحظ الطفل أنّه هناك خطةٌ مُحددة تم ترتيب الكتب على أساسها، ترتيب غامض، لا يستطيع عقل الطفل أن يستوعبه، ولكنه يتشكك فيه على استحياء. وهذا –بالنسبة لي- هو نفس سلوك العقل البشري تجاه الله، حتى أفضل وأعظم العقول وأكثرها ثقافةً. نحن نرى أن العالم مُرتبُ ومُنظمٌ بطريقة سحريّة، وإنّه يخضع لقوانين مُحددة، ولكننا لا نفهم تلك القوانين جيدًا. فعقولنا المحدودة لا يُمكنها استيعاب القوة الغامضة التي تُطلق تلك الأبراج.”

هناك تاريخُ طويلٌ من النقاش حول وجود الإله من عدمه. أنا أقدم لكم جميعًا تلك القضية بأبسط الكلمات حتى يتسنى للعقول المتوسطة أن تفهمها. هذه مُقدمة لكي نفهم الله ومملكته، وهى طويلةُ جدًا وسوف يتم ذكرها مرارًا وتكرارًا في برامجي التالية. مُلخصٌ قصيرٌ للحجج المُثارة حول عدم وجود الله تشمل الحُجج “التجريبيّة”، مثل الجدال الناشيء بسبب الخلافات الموجودة بين النصوص المُقدسة في الدين الواحد، وبسبب الخلافات الموجودة بين النصوص المُقدسة والحقائق المعروفة. والحجة الثانية هي مشكلة “الشر” والتي تنفي وجود إله، حيث لو كان الإله موجودًا فلابد أن يكون إلهًا قاهرًا وقادرًا؛ فيكف يسمح للشر  أو للمعاناة بالوجود. والحجة التجريبيّة الثالثة هى الجدال حول مصير غير المُؤمنين،  والذين يُقصد بهم الأشخاص الذين لم يسمعوا أبدًا بوجود الأديان، أو لم تُتح لهم فرصة قراءة أي وحيٍ، كيف سوف يُعاقب هؤلاء عقابًا شديدًا على اتباعهم للقواعد. ومن ثم تأتي حجة ضعف التصميم، والتي تقول أنّ الله خلق الحياة على أشكالٍ مُحددة منها البشر، وأشكال الحياة الأخرى التي وُجدت على الأرض من قبل، ولكن تلك الأشكال قد انقرض 99% منهم منذ العصر الجليديّ، والدمار والزمن المُستغرق من أجل خلق كوكب يُشبه الأرض. والحجة التجريبية الخامسة: هو حجة غير المُؤمن الذي يرفض وجود إله قادر يريد من البشر أن يؤمنوا به عن طريق الجدال والنقاش، فلو شاء لجعلهم جميعًا مؤمنين. وثم تأتي النقاشات والخلافات التي تُثبت وجود الله، والتي تقع على المُؤمن وليس المُلحد. وتٌستخدم تحليلات إبريق شاي رسل، و موسي حلاقة أوكام  لشرح هذه الحُجة.

وهناك العديد من الحُجج المبنيّة على الاستنتاج، والتي من ضمنها حجةٌ عكس حجة التصميم الضعيف، والتي تنص على أنّ هذا الكون معقدٌ جدًا وبحاجة لمن يقوم بتصميمه. هذه الحجة المُعاكسة تقول أنه إذا كان الله هو خالق هذا الكون، فإنّه يكون على نفس قدر الكون الذي خلقه من التعقيد . ولهذا، فإنّه هو الأخر بحاجة إلى خالقٍ، والأخير بحاجةٍ إلى خالقٍ وهكذا إلى ما لانهاية. ولهذا فإن حجة وجود الله هي مغالطةٌ منطقيةٌ سواء استخدمنا المرافعة المنطقية أم لم نستخدمها. ثم هناك مفارقة قوية ( قوية هنا تعني قوية للغاية) والتي تقول إذا كان المخلوق القويّ قادر على أن يقوم بأي فعل، فإنّه سوف يكون قادرًا على خلق مُهمة لا يُمكن القيام بها. وهنا، يكون هذا الكائن غير قادر على القيام بجميع الأفعال. هناك نسخٌ عديدة من تلك الحجة، مثل أن الله قد خلق صخرةً كبيرةً جدًا لدرجة أنّه لا يستطيع تحريكها؟ أو هل يُمكن لله أن يخلق مخلوقًا أكثر قوةً منه سبحانه؟ أو هل يُمكن لله أن يخلق سجنًا آمنًا لدرجة أنّه لا يستطيع الفرار منه؟. إذا قلت نعم لجميع الأسئلة المذكورة بالأعلى: فإذا قوة الله محدودة. وإذا قلت لا: فأيضًا ستكون قوة الله محدودة، لأنّه ليس بقادرٍ على خلق الصخرة، السجن أو الشخص الأقوى منه.

جميع المناظرات الفلسفيّة والنقاشات والحجج تمتد أصولهم في التاريخ إلى حوالي 500 عام قبل الميلاد، والذي يعني أكثر من 2500 عام مضوّا. يُمكنك أن ترى بوضوح كيف كانت حدة عقول هؤلاء الأشخاص، تلك العقول القوية والكبيرة التي مرت على التاريخ البشري. وأنتم يا من تسمون أنفسكم مُؤمنين، تنظرون إلى هؤلاء الأشخاص بحقدٍ وكراهية؛ وذلك لأنّكم تعتقدون أنهم من غير المُؤمنين، وأنّ الله سيغضب عليهم يوم القيامة. بينما الحقيقة أنّ هؤلاء الأشخاص كانوا هم اللذين قادوا شعلة الحضارة البشرية، وأسسوا الفلسفة والعلوم. 

إن شاء الله، فسوف أستكمل هذا الموضوع في البرامج التالية. إذا كان هناك مصطلحٌ شديد التعقيد أو الفلسفيّة بين الكلام، فمن فضلك تحمل معي. وإن شاء الله سوف تفهمه قريبًا، أثناء سماعك لهذا الحوار أكثر وأكثر.

Recitation of the Holy Scripture.

. 一切赞颂,全归神!天地万物,都是他的。后世的赞颂,只归于他。他是至睿的,是彻知的。

他知道潜入地下的,从地下发出的,从天上降下的,升到天上的。他是至慈的,是至赦的。

不信道的人们说:复活时不会来临我们。你说:不然。指我的主发誓,它必来临你们。我的主是全知幽玄的,天地间微尘重的重物,不能远离他;比那更小的,和更大的,无一件不记录在一本明白的经典中。

以便他在复活时报酬信道而行善的人们。这等人,将获赦宥和优厚的给养。

竭力反对我的迹象以为已经成功的人,将受痛苦的刑罚。

不信道的人们说:我们指示你们一个人好吗?他会告诉你们,当你们被粉碎之后,你们必定要被再造。

他假借神的名义而捏造呢?还是他有疯病?不然!不信后世的人们是在刑罚和深深的迷误中。

难道他们没有观察在他们上面和下面的天地吗?如果我意欲,我必使他们沦陷在地面下,或使天一块一块地落在他们的头上。对于每一个归依的仆人,此中确有一种迹象。

他们说:如果你是说实话的,这个警告什么时候实现呢?

你说:你们的约期是有时日的,你们不得稍稍迟到,也不得稍稍早到。

每逢我派遣警告者到一个城市去,其中豪华的人们总是说:我们的确不信你的使命。

他们说:我人财产更富,儿子更多,我人将来绝不针受惩罚。

你说:我的主欲使谁的给养宽裕,就使他宽裕;欲使谁的给养窘迫,就使他窘迫。但众人大半不知道。

End of Recitation of the Holy Scripture.

Recitation of the Holy Scripture.

Слава Богу, которому принадлежит то, что на небесах, и то, что на земле. Слава Ему и в будущем веке: он мудрый, ведающий,

Он знает и то, что входит в землю, и то, что выходит из нее, что нисходит с неба и что восходит на него: Он милосерд, прощающий.

Неверные говорят: “Час не придет к нам”. Скажи: “Напротив; клянусь Господом моим: он непременно придет к вам от Знающего тайное ни на небесах, ни на земле не сокрыт и вес какой либо пылинки: ни меньшего ни большего такой вещи нет, чего не было бы в ясной книге,

Чтобы Ему наградить тех, которые уверовали и делали доброе: им прощение и щедрый надел”.

А тем, которые усиливаются ослабить наши знамения, – тем мука в томительных страданиях.

Неверующие говорят: “Указать ли вам человека, который пророчествует, что вы, после того, как истлеете совершенно дотла, – вы будете новым творением?

Он ли выдумал ложь о Боге, или в нем умопомешательство бесовское”. Напротив, неверующие в будущую жизнь в страдании и крайнем заблуждении.

Или они никогда не обращали внимание на то, что пред ними, и что за ними, на небе и на земле? Если Мы захотим, то велим земле поглотить их, или велим небу низвергнуть на них какой либо обломок. В этом есть знамение для всякого сокрушающегося в душе раба Божия.

И говорят: “Когда же сбудется это обещание, если вы правдивы?”

Скажи: “Для вас уже предназначен день: его вам и на один час ни отсрочить, ни ускорить”.

В какой город ни посылали Мы какого либо проповедника, испорченные счастливою жизнью жители его говорили: “Не верим мы тому, с чем вы посланы!”

И они говорили: “У нас много имущества и детей! Мы не из числа достойных наказания”.

Скажи: “Действительно, Господь мой подает жизненные потребности то в изобилии, то в умеренном количестве, кому хочет; но очень многие из людей не знают этого”

End of Recitation of the Holy Scripture.

Recitation of the Holy Scripture.

Todo louvor é devido a Deus, a quem pertence tudo o que está nos céus e o que quer que esteja na terra, e a Ele pertencem todos os louvores da Outra Vida. E ele é o sábio, o todo consciente.
Ele sabe o que penetra na terra e o que emerge dela e o que desce do céu e o que nela ascende. E Ele é o Misericordioso, o Perdoador.
Mas aqueles que não acreditam dizem: “A Hora não chegará até nós”. Diga: “Sim, pelo meu Senhor, certamente virá até você. Deus é o Conhecedor do invisível”. Não ausente Dele é o peso de um átomo dentro dos céus ou dentro da terra ou o que é menor que isso ou maior, exceto que está em um registro claro
Que Ele possa recompensar aqueles que crêem e praticam atos justos. Aqueles terão perdão e disposição nobre.
Mas aqueles que se esforçam contra os Nossos Sinais, procurando causar fracasso para eles, serão um castigo doloroso de natureza obscena.
Mas aqueles que não acreditam dizem: “Dirigiremos você a um homem que lhe informará que, quando você se desintegrar em completa desintegração, será recriado em uma nova criação?
“Ele inventou uma mentira contra Deus, ou ele é insano?” Na verdade, aqueles que não acreditam na Vida Futura estão na punição e no erro extremo.
Então, eles não olham para o que está diante deles e o que está por trás deles do céu e da terra? Se deveríamos, poderíamos fazer com que a terra os engolisse ou pudéssemos deixar cair sobre eles fragmentos do céu. De fato, nisso está um sinal para todo servo arrependido.
E eles dizem: “Quando esta promessa é devida, se você é verdadeiro?”
Diga: “Para você é a nomeação de um dia em que você não permanecerá depois de uma hora, nem o precederá”.
E nós não mandamos para uma cidade qualquer guerreiro, exceto que seu povo rico disse: “Na verdade nós, naquilo com que fomos enviados, somos incrédulos”.
E eles disseram: “Somos mais ricos e crianças e não seremos punidos”.
Diga: “De fato, meu Senhor estende a provisão para quem Ele quer e restringe, mas a maioria das pessoas não sabe”.

End of Recitation of the Holy Scripture.

Ó povo estou lhes dizendo que confiam em Deus e deixem de fazer injustiça, Ele os ajudará de onde não estão esperando. Mas primeiro entenda o conceito de Erradicação e injustiça. Injustiça e transgressão é tratar uma coisa de uma maneira que não é para ser tratada. Um ato que inflige ferido imerecido. Aplica-se a qualquer ato que envolva injustiça para com outra pessoa ou violação de seus direitos. Injustiça pode ser com qualquer coisa animada ou inanimada. Eu lhe digo como, considere você mora em um apartamento e no centro da sua sala de estar há uma mesa. Agora, se você só mudar de lugar e colocá-lo fora do seu apartamento no corredor, isso se tornará uma injustiça não apenas para a mesa, mas também para o corredor e todos os moradores daquele prédio. Então, usar uma coisa de uma maneira que não deveria usar é injustiça. Agora, considere uma faca que serve para ser usada como um instrumento para cortar várias coisas, como frutas, legumes, mas se você usá-lo para ferir alguém, então você está fazendo injustiça não só para essa pessoa, mas também com a faca. O mesmo acontece com todos os seus órgãos Deus fez suas mãos, pés, língua e lábios para realizar suas tarefas do dia a dia e não para ferir alguém. Seus órgãos sexuais devem ser usados ​​para interações legais com cônjuges que você possui legalmente e não para relacionamentos ilícitos.

Deixe-me também responder aqui sobre a questão da homossexualidade sobre a qual muitas mentes proeminentes entre vocês dizem que não é um pecado, mas é tudo natural e presente em toda parte na natureza. Eles dizem que se existe algum Deus do que Ele fez assim, este traço de homossexualidade está presente em muitas espécies animais. Quase 20% dos macacos são homossexuais. Agora, a resposta lógica é que há várias outras coisas que os animais fazem, mas para você os seres humanos estão errados como matar, roubar e fazer sexo ilegalmente com outras mulheres e filhas etc. Mas, para essas coisas, você nunca argumentou isso porque os animais fazem isso. tudo isso é tudo natural e não há pecado em fazer isso.

Ó humanidade Eu estou dizendo novamente que confie em Deus e pare de fazer injustiça, Ele irá ajudá-lo de onde você não estava esperando. Seu Senhor criou tudo na justiça. Louvor total é para Deus, que levantou os céus e colocou a terra e colocou a justiça neles. Basta entender o conceito de injustiça e parar de fazê-lo no menor nível. especialmente cuidar daqueles que dependem de você. Trate as mulheres da mesma forma que você espera que elas tratem você. Você é da mesma espécie e igual aos olhos do seu Senhor. Em algumas escrituras, diz-se que os homens são superiores, mas as pessoas não entenderam isso totalmente. Se meu Senhor quiser, eu certamente vou esclarecer essa confusão para você.

Quem quer que tenha oprimido outra pessoa com respeito à sua reputação ou qualquer outra coisa, deve pedir-lhe perdão antes do Dia da Ressurreição, quando não haverá dinheiro para compensar as ações erradas, mas se ele tiver boas ações, essas boas ações serão tiradas ele de acordo com a sua opressão que ele fez, e se ele não tem boas ações, os pecados do oprimido serão carregados sobre ele

Aquele que justifica o ímpio e aquele que condena os justos são ambos uma abominação ao Senhor. Vosso Senhor te disse, ó homem, o que é bom; e o que o Senhor requer de você, mas faça justiça, ame a bondade e caminhe humildemente com seu Deus.

Ó povo, todas as escrituras religiosas falam sobre não associar parceiros a Deus. Esses parceiros não são apenas ídolos percebidos pela maioria das pessoas. Os ídolos são um deles. Uma verdadeira revelação de Deus é sempre universal e válida para qualquer idade. Então, muda seu sentido com a mudança de tempo, já que agora tem muitos outros significados. Em comparação a uma sociedade simples, a sociedade de hoje é muito mais complexa, e associar parceiros a Deus significa considerar qualquer outra pessoa como um ser que lhe dá suas provisões, saúde, vida, segurança e qualquer coisa que você possa imaginar. Religião e escrituras vieram até você para lhe dar liberdade de muitos deuses, ídolos ou humanos, para quebrar as correntes, para lhe dar liberdade da superstição para que todos os seus medos chegassem ao fim. Para que você não precise ir a lugares diferentes, portas diferentes para seus problemas, provisões e para suas necessidades.

Portanto, todas as escrituras religiosas dizem que associar parceiros a Deus é muito mais um mal do que não acreditar em nenhum deus. Como não acreditar não é tão perigoso quanto acreditar em divindade errada. Eu te dou um exemplo, considere que você chega em um país ou uma cidade e você não tem conhecimento do governante daquela região e sobre suas políticas do que as chances de você cometer alguns erros, mas logo você se tornaria ciente da lei e da regra. . Mas no caso de você ficar preso por algumas pessoas erradas e se eles conseguem dizer-lhe uma versão totalmente diferente de regras, leis e políticas, as chances são que você cometer erros muito graves ou até mesmo algumas atividades ilegais naquele país que podem acabar em algum crime grave alguma punição severa.

Há muitas questões sociais e morais em associar parceiros a Deus. Você vai a lugares diferentes para diferentes portas para seus problemas, provisões e para suas necessidades. Isso faz você supersticioso e irracional. Isso faz com que você goste de um mendigo batendo em todas as outras portas e perguntando a todos por suas necessidades. Este não é o caso de Deus, o Único, Todo Poderoso, ao convidar seu senso comum a pensar que este universo é uma criação ou não, tem um começo, e agora sabemos com certeza que ele teve um começo. certamente terminará e deixará de existir. Ele convida você a pensar sobre o criador que é Ele mesmo. Ele não te convida à superstição, mas na verdade convida a sua mente consciente, sua lógica a pensar racionalmente sobre ele. A maioria dos ateus e os céticos pensam que as pessoas religiosas são supersticiosas. Eu te digo que eles estão certos. Tudo isso é, na verdade, por aceitar religiões de nascimento e não por aceitá-las através da mente através da lógica ou nem mesmo de coração. Eles só dizem que somos crentes, mas o fato é que a fé não passou nem de sua garganta, é apenas em seus lábios e línguas. Portanto, quem quer que seja supersticioso não é realmente um crente, mas há mais chances de ele ter parceiros associados a Deus. Confie em mim verificar seu eu interior, você encontrará a resposta.

Agora vem a grande questão “Existe um Deus”. Nas palavras de uma das maiores mentes “O problema envolvido é muito vasto para nossas mentes limitadas. Posso não responder com uma parábola? A mente humana, não importa quão altamente treinada, não consegue entender o universo. Estamos na posição de uma criancinha, entrando em uma enorme biblioteca cujas paredes estão cobertas até o teto com livros em muitas línguas diferentes. A criança sabe que alguém deve ter escrito esses livros. Não sabe quem ou como. Não entende as línguas em que estão escritas. A criança observa um plano definido no arranjo dos livros, uma ordem misteriosa, que não compreende, mas suspeita vagamente. Essa, parece-me, é a atitude da mente humana, mesmo a maior e mais culta, em relação a Deus. Vemos um universo maravilhosamente organizado, obedecendo a certas leis, mas entendemos as leis vagamente. Nossas mentes limitadas não podem compreender a força misteriosa que balança as constelações ”

Há uma longa história de debate sobre a não existência e existência de Deus. Eu estou apresentando a você todo este caso em palavras mais simples, para que uma mente comum também possa entender. Este prelúdio para entender a Deus e Seu reino é muito longo e virá novamente entre meus próximos programas. Um breve resumo dos argumentos contra a existência de Deus inclui argumentos empíricos como argumentos de revelações inconsistentes que negam a existência de Deus por causa de contradições entre escrituras diferentes, dentro de uma única escritura e entre escrituras e fatos conhecidos. O segundo argumento é o problema do mal que nega a existência de um deus que é ao mesmo tempo onipotente e omni benevolente ao argumentar que tal deus não deveria permitir a existência do mal ou do sofrimento. O terceiro argumento empírico é sobre o destino dos não-crentes, pelo qual pessoas que nunca ouviram falar ou tiveram uma chance de ler uma revelação em particular podem ser duramente punidas por não seguirem seus mandamentos. Mas vem o argumento do design pobre que contesta a ideia. que Deus criou a vida com base no fato de que formas de vida, incluindo humanos, parecem apresentar um design pobre, como é o caso de 99% das extinções da vida na Terra durante a Idade do Gelo e a destruição e tempo para produzir um planeta como a Terra. É argumento de não-crença que nega a existência de um Deus onipotente que quer que os humanos acreditem nele argumentando que tal deus poderia fazer um trabalho melhor de converter colecionadores e reunir crentes. Do que vem os argumentos de que o ônus da prova para a existência de Deus está com o teísta e não com o ateu. O bule de Russell e as analogias baseadas na Navalha de Occam são usadas para explicar esse argumento.

Do que há muitos argumentos dedutivos, um dos quais é um contra-argumento para o argumento do design que afirma que uma estrutura complexa ou ordenada deve ser projetada. Esses contra-argumentos afirmam que, se Deus é o criador deste universo, Ele deveria ser mais ou igualmente complicado como o universo que cria. Portanto, Ele também deve exigir um criador ou designer que exija outro designer também até o infinito. Assim, o argumento para a existência de Deus é uma falácia lógica com ou sem o uso de argumentos especiais. Do que existe o paradoxo da onipotência (Onipotência significa todo poderoso) que afirma que Se um ser onipotente é capaz de realizar qualquer ação, então deveria ser capaz de criar uma tarefa que ele é incapaz de realizar. Portanto, esse ser não pode realizar todas as ações. Existem versões diferentes disso, como Deus pode criar uma rocha tão grande que Ele não pode movê-la? Ou pode Deus criar um ser mais poderoso que Ele mesmo? “Ou Deus pode criar uma prisão tão segura que ele não pode escapar dela?” Se sim para todas as perguntas acima: o poder de Deus é limitado, porque não pode levantar a pedra ou escapar da prisão ou outro ser é mais poderoso que ele. Se não: de novo o poder desse ser é limitado, porque não pode criar a pedra. a prisão ou um ser poderoso do que ele.

Todos esses debates e argumentos filosóficos acima têm sua origem na história cerca de 500 anos antes de Cristo, que tem mais de 2500 anos no passado. Você pode ver claramente quão afiadas eram as mentes dessas pessoas aqueles grandes cérebros da história humana. E vocês que chamam a si mesmos de crentes, olham para aquelas pessoas com ódio porque pensam que são não crentes e como alguém que será o alvo da ira de Deus no Dia do Julgamento. Enquanto o fato é que essas foram as mentes que lançaram os fundamentos do conhecimento humano, Filosofia e ciências.

Se meu Senhor quiser, continuarei este tópico nos próximos programas. Se algum termo filosófico ou científico alto estiver entre o meu diálogo, tenha paciência comigo. Se meu Senhor deseja, você logo entenderá, enquanto escuta cada vez mais esse diálogo.

Recitation of the Holy Scripture.

Alabado sea Aquel a quien pertenece lo que hay en los cielos y en la Tierra. A Él pertenece la alabanza en la otra vida y Él es el Sabio, el Bien informado.

Él conoce lo que entra en la tierra y lo que sale de ella y lo que desciende del cielo y lo que asciende a él y Él es el Misericordiosísimo, el Perdonador.

Los que no son creyentes dicen: «La Hora no llegará a nosotros.» Di: «No es así. Juro por mi Señor que os llegará con seguridad. Él es el conocedor de lo que está oculto a los sentidos. No escapa de Él ni el peso de un átomo en los cielos y la Tierra, ni hay nada más pequeño que eso ni más grande que no esté en una Escritura clara,

para recompensar a quienes creen y obran rectamente. Ellos obtendrán un perdón y una provisión generosa.»

Pero quienes se esfuerzan en desvirtuar Nuestras señales tendrán un castigo doloroso por su pecado.

Y quienes no creen dicen: «¿Queréis que os indiquemos un hombre que os anuncie que, cuando estéis desmembrados y descompuestos, seréis creados nuevamente?»

Él ha inventado una mentira sobre Dios o está poseído.» Pero, quienes no creen en la otra vida, estarán en el castigo y en un extravío profundo.

¿Acaso no ven los cielos y la tierra que tienen delante y detrás de ellos? Si Nosotros quisiéramos, haríamos que la tierra se los tragase o que cayese sobre ellos una parte del cielo. En verdad, en ello hay una señal para todo siervo que se vuelve a su Señor.

y dicen: «¿Cuándo tendrá lugar vuestra promesa, si es que sois sinceros?»

Di: «Tenéis cita un día que no se os retrasará ni adelantará ni una hora.»

Y no hemos enviado a ningún pueblo un amonestador sin que quienes vivían en la opulencia dijeran: «No creeremos en aquello con lo que habéis sido enviados.»

Y dijeran: «Nosotros poseemos más riqueza e hijos. No seremos castigados»

Di: «En verdad, mi Señor incrementa o restringe la provisión a quien Él quiere, pero la mayoría de las personas no saben»

End of Recitation of the Holy Scripture.

Oh gente que les digo que confíen en Dios y dejen de hacer injusticia, Él los ayudará desde donde no están esperando. Pero antes comprende el concepto de maldad e injusticia. La injusticia y el mal es tratar una cosa de una manera que no debe ser tratada. Un acto que inflige daño inmerecido. Se aplica a cualquier acto que implique injusticia a otro o violación de los derechos de uno. La injusticia puede ser con cualquier cosa animada o inanimada. Te digo cómo, considera que vives en un departamento y en el centro de tu sala de estar hay una mesa. Ahora bien, si solo cambia su lugar y lo coloca fuera de su apartamento en el corredor, se convertirá en una injusticia no solo para la mesa sino también para el corredor y todos los residentes de ese edificio. Entonces, usar una cosa de una manera que no se supone que debe usar es una injusticia. Ahora considere un cuchillo que está destinado a ser usado como un instrumento para cortar diversas cosas, como frutas, vegetales, pero si lo usa para lastimar a alguien, entonces está haciendo una injusticia no solo con esa persona, sino también con el cuchillo. Lo mismo ocurre con todos sus órganos Dios ha hecho sus manos, pies, lengua y labios para realizar sus tareas cotidianas y no lastimar a nadie. Sus órganos sexuales están destinados a ser utilizados para interacciones legales con cónyuges que legítimamente posee y no para relaciones ilícitas.

Permítanme también responder aquí sobre el tema de la homosexualidad sobre el cual muchas mentes prominentes entre ustedes dicen que no es un pecado, sino que es completamente natural y está presente en todas partes en la naturaleza. Dicen que hay Dios de lo que lo ha hecho así, ya que este rasgo de la homosexualidad está presente en muchas especies animales. Casi el 20% de los monos son homosexuales. Ahora la respuesta lógica es que hay muchas otras cosas que hacen los animales, pero para ti, como seres humanos están equivocados, como matar, robar y hacer sexo ilegalmente con otras esposas e hijas, etc. Pero por estas cosas nunca discutiste eso porque los animales hacen esto todo así que es todo natural y no hay pecado al hacer eso.

Oh, humanidad, te estoy diciendo una vez más que confíes en Dios y dejes de hacer injusticia, Él te ayudará desde donde no estabas esperando. Tu Señor ha creado todo en justicia. La alabanza completa es para Dios, quien levantó los cielos y puso la tierra y puso la justicia en ellos. Solo comprende el concepto de injusticia y deja de hacerlo en el nivel más bajo. especialmente cuida a aquellos que dependen de ti. Trate a las mujeres de la misma manera que espera que lo traten a usted. Eres la misma especie e igual a los ojos de tu Señor. En algunas escrituras se dice que los hombres son superiores, pero la gente lo malinterpretó por completo. Si mi Señor lo quiere, seguramente borraré esa confusión por ti.

Quienquiera que haya oprimido a otra persona con respecto a su reputación o cualquier otra cosa, debe suplicarle que lo perdone antes del Día de la Resurrección cuando no habrá dinero para compensar las malas acciones, pero si tiene buenas obras, esas buenas obras se tomarán de él según su opresión que ha hecho, y si no tiene buenas obras, los pecados de la persona oprimida serán cargados en él

El que justifica al malvado y el que condena al justo son ambos una abominación al Señor. Tu Señor te ha dicho, oh hombre, qué es bueno; y lo que el Señor requiere de ti, sino hacer justicia, amar la bondad y caminar humildemente con tu Dios.

Oh gente, todas las escrituras religiosas hablan de no asociar socios con Dios. Estos socios no son solo ídolos como los percibe la mayoría de las personas. Los ídolos son uno de ellos. Una verdadera revelación de Dios es siempre universal y válida para cualquier edad. Entonces cambia su sentido con el tiempo cambiante ya que ahora tiene muchos más significados. En comparación con una sociedad simple, la sociedad actual es mucho más compleja, y asociar socios con Dios significa considerar a cualquier otra persona como un ser que le brinda sus provisiones, salud, vida, seguridad y todo lo que pueda imaginar. La religión y las escrituras vinieron a ti para darte la libertad de muchos dioses, ídolos o humanos, para romper las cadenas, para darte la libertad de la superstición para que todos tus miedos lleguen a su fin. Para que no tenga que ir a diferentes lugares, puertas diferentes para sus problemas, provisiones y para sus necesidades.

Por lo tanto, todas las escrituras religiosas dicen que asociar socios con Dios es mucho más un mal que no creer en ningún dios. Como no creer no es tan peligroso como creer en la deidad equivocada. Les doy un ejemplo, consideren que llegan a un país o una ciudad y no conocen al gobernante de esa región ni a sus políticas, es probable que cometan algunos errores, pero pronto se darán cuenta de la ley y la regla. . Pero en caso de quedar atrapado por algunas personas equivocadas y si logran decirle una versión totalmente diferente de las reglas, leyes y políticas, es probable que cometa errores muy graves o incluso alguna actividad ilegal en ese país que puede terminar en algunos delito grave algún castigo severo.

Hay muchos problemas sociales y morales al asociar socios con Dios. Vas a diferentes lugares a diferentes puertas para tus problemas, provisiones y para tus necesidades. Te hace supersticioso e irracional. Te hace como un mendigo golpeando las otras puertas y preguntando a todos por sus necesidades. Este no es el caso con Dios, el único Todopoderoso, ya que invita a su sentido común a pensar que, si este universo es una creación o no, tiene un comienzo, y ahora sabemos con certeza que tuvo un comienzo, seguramente terminará y dejará de existir. Él te invita a pensar en el creador que es Él mismo. Él no te invita a la superstición sino que realmente invita a tu mente consciente, a tu mente a pensar racionalmente sobre él. La mayoría de los ateos y los escépticos piensan que las personas religiosas son supersticiosas. Te digo que tienen razón. Todo esto es realmente debido a aceptar religiones por nacimiento y no a aceptarlas mediante la mente a través de la lógica o ni siquiera de memoria. Solo dicen que somos creyentes, pero el hecho es que la fe no ha pasado ni siquiera desde su garganta, solo en sus labios y en sus lenguas. Entonces, quienquiera que sea supersticioso, en realidad no es un creyente, pero hay más posibilidades de que tenga socios asociados con Dios. Confía en mí, revisa tu yo interior y encontrarás la respuesta.

Ahora ven a la gran pregunta “¿Hay un Dios?” En palabras de una de las mejores mentes “El problema involucrado es demasiado vasto para nuestras mentes limitadas. ¿Puedo no responder con una parábola? La mente humana, no importa cuán altamente entrenada sea, no puede captar el universo. Estamos en la posición de un niño pequeño, ingresando a una enorme biblioteca cuyas paredes están cubiertas hasta el techo con libros en diferentes idiomas. El niño sabe que alguien debe haber escrito esos libros. No sabe quién o cómo. No comprende los idiomas en los que están escritos. El niño nota un plan definido en la disposición de los libros, una orden misteriosa, que no comprende, pero apenas sospecha. Esa, me parece, es la actitud de la mente humana, incluso la más grande y culta, hacia Dios. Vemos un universo maravillosamente arreglado, obedeciendo ciertas leyes, pero entendemos las leyes solo vagamente. Nuestras mentes limitadas no pueden captar la fuerza misteriosa que balancea las constelaciones ”

Existe una larga historia de debate sobre la no existencia y existencia de Dios. Les presento todo este caso en palabras simples para que una mente promedio también pueda entender. Este preludio para entender a Dios y su reino es muy largo y vendrá una y otra vez entre mis próximos programas. Un breve resumen de los argumentos en contra de la existencia de Dios incluye argumentos empíricos como el argumento de revelaciones inconsistentes que niega la existencia de Dios debido a las contradicciones entre las diferentes escrituras, dentro de una sola escritura, y entre las escrituras y los hechos conocidos. El segundo argumento es el problema del mal que niega la existencia de un dios que es a la vez omnipotente y omni benevolente al argumentar que tal dios no debería permitir la existencia del mal o el sufrimiento. El tercer argumento empírico es sobre el destino de los no creyentes, por el cual las personas que nunca han escuchado o tenido la oportunidad de leer una revelación en particular pueden ser duramente castigadas por no seguir sus órdenes. Luego viene el argumento del diseño pobre que impugna la idea que Dios creó la vida sobre la base de que las formas de vida, incluidos los humanos, parecen exhibir un diseño deficiente como es el caso del 99% de las extinciones de la vida en la Tierra durante las glaciaciones y la destrucción y el tiempo necesarios para producir un planeta como la tierra.El quinto argumento empírico es un argumento de la no creencia que niega la existencia de un Dios omnipotente que quiere que los humanos crean en él argumentando que tal dios podría hacer un mejor trabajo de conversión recolectando y reuniendo creyentes. Luego viene el argumento de que la carga de la prueba para la existencia de Dios yace en el teísta más que en el ateo. La tetera de Russell y las analogías basadas en la Navaja de Occam se usan para explicar este argumento.

Que hay muchos argumentos deductivos, uno de los cuales es un argumento en contra del argumento del diseño que establece que debe diseñarse una estructura compleja u ordenada. Este contra argumento dice que si Dios es el creador de este universo, debería ser más o más complicado que el universo que crea. Por lo tanto, Él también debe requerir un creador o diseñador que requiera otro diseñador también hasta el infinito. Por lo tanto, el argumento para la existencia de Dios es una falacia lógica con o sin el uso de súplicas especiales. Que hay una paradoja de omnipotencia (la omnipotencia significa todopoderoso) que establece que si un ser omnipotente es capaz de realizar cualquier acción, entonces debería ser capaz de crear una tarea que no puede realizar. Por lo tanto, este ser no puede realizar todas las acciones. Hay diferentes versiones de esto como ¿puede Dios crear una roca tan grande que no pueda moverla? ¿O puede Dios crear un ser más poderoso que Él mismo? “¿O puede Dios crear una prisión tan segura que no pueda escapar de ella?” Si es así para todas las preguntas anteriores: que el poder de Dios es limitado, porque no puede levantar la piedra o escapar de la prisión u otro ser es más poderoso que él. Si no: otra vez el poder de ese ser es limitado, porque no puede crear la piedra. la prisión o un ser poderoso que él.

Todos estos debates y argumentos filosóficos anteriores tienen su origen en la historia unos 500 años antes de Cristo, que datan de hace más de 2500 años. Puedes ver claramente cuán nítidas eran las mentes de esas personas esos grandes cerebros de la historia humana. Y ustedes que se llaman creyentes miran hacia esas personas con odio porque piensan que no son creyentes y que serán el sujeto de la ira de Dios en el Día del Juicio Final. Mientras que el hecho es que esas fueron las mentes que sentaron las bases del conocimiento humano, la Filosofía y las ciencias.

Si mi Señor quiere, continuaré este tema en los próximos programas. Si algún término científico o filosófico alto se interpone entre mi diálogo, tráiganme. Si mi Señor quiere, pronto lo entenderás a medida que escuchas más y más de este diálogo.

Recitation of the Holy Scripture.

سب تعریف خدا ہی کو ہے جو سب چیزوں کا مالک ہے یعنی وہ کہ جو کچھ آسمانوں میں ہے اور جو کچھ زمین میں ہے سب اسی کا ہے اور آخرت میں بھی اسی کی تعریف ہے۔ اور وہ حکمت والا خبردار ہے

جو کچھ زمین میں داخل ہوتا ہے اور جو اس میں سے نکلتا ہے اور جو آسمان سے اُترتا ہے اور جو اس پر چڑھتا ہے سب اس کو معلوم ہے۔ اور وہ مہربان  بخشنے والا ہے

اور کافر کہتے ہیں کہ قیامت کی گھڑی ہم پر نہیں آئے گی۔ کہہ دو کیوں نہیں میرے پروردگار کی قسم وہ تم پر ضرور آکر رہے گی (وہ پروردگار) غیب کا جاننے والا ذرہ بھر چیز بھی اس سے پوشیدہ نہیں (نہ) آسمانوں میں اور نہ زمین میں اور کوئی چیز ذرے سے چھوٹی یا بڑی ایسی نہیں مگر کتاب روشن میں لکھی ہوئی ہے

اس لئے کہ جو لوگ ایمان لائے اور عمل نیک کرتے رہے ان کو بدلہ دے۔ یہی ہیں جن کے لئے بخشش اور عزت کی روزی ہے

اور جنہوں نے ہماری آیتوں میں کوشش کی کہ ہمیں ہرا دیں گے۔ ان کے لئے سخت درد دینے والے عذاب کی سزا ہے

اور کافر کہتے ہیں کہ بھلا ہم تمہیں ایسا آدمی بتائیں جو تمہیں خبر دیتا ہے کہ جب تم مر کر بالکل پارہ پارہ ہو جاؤ گے تو نئے سرے سے پیدا ہوگے

یا تو اس نے خدا پر جھوٹ باندھ لیا ہے۔ یا اسے جنون ہے۔ بات یہ ہے کہ جو لوگ آخرت پر ایمان نہیں رکھتے وہ آفت اور پرلے درجے کی گمراہی میں (مبتلا) ہیں

کیا انہوں نے اس کو نہیں دیکھا جو ان کے آگے اور پیچھے ہے یعنی آسمان اور زمین۔ اگر ہم چاہیں تو ان کو زمین میں دھنسا دیں یا ان پر آسمان کے ٹکڑے گرا دیں۔ اس میں ہر بندے کے لئے جو رجوع کرنے والا ہے ایک نشانی ہے

اور کہتے ہیں اگر تم سچ کہتے ہو تو یہ وعدہ کب وقوع میں آئے گا

کہہ دو کہ تم سے ایک دن کا وعدہ ہے جس سے نہ ایک گھڑی پیچھے رہوگے اور نہ آگے بڑھو گے

اور ہم نے کسی بستی میں کوئی ڈرانے والا نہیں بھیجا مگر وہاں کے خوش حال لوگوں نے کہا کہ جو چیز تم دے کر بھیجے گئے ہو ہم اس کے قائل نہیں

اور کہنے لگے کہ ہم بہت سا مال اور اولاد رکھتے ہیں اور ہم کو عذاب نہیں ہوگا

کہہ دو کہ میرا رب جس کے لئے چاہتا ہے روزی فراخ کردیتا ہے اور جس کے لئے چاہتا ہے تنگ کردیتا ہے لیکن اکثر لوگ نہیں جانتے

End of Recitation of the Holy Scripture.

اے لوگومیں تم سے کہہ رہا ہوں کہ خُدا پر بھروسہ کرو اور  نا انصافی کرنا چھوڑ دو۔ وہ تمہاری وہاں سے مدد کرے گا جہاں سے تم سوچ بھی نہیں سکتے۔  لیکن پہلے غلط کاموں اور ناانصافی کے تصور کو سمجھو۔ نا انصافی اور غلط کام کا مطلب ہے کسی چیز کے ساتھ یا اس کی طرف وہ رویہ رکھنا جو نہیں رکھنا چاہئے۔ وہ کام جس سے کسی کو بےجا دُکھ پہنچے۔  اس میں  وہ ہر عمل شامل ہے جو دوسروں کے ساتھ ناجائز طور پر کیا جائے یا جس سے کسی کی حق تلفی ہو۔  ناانصافی کسی کے ساتھ بھی   ہو سکتی ہے  چاہے وہ جاندار ہو یا بےجان۔ میں تمہیں بتاتا ہوں کیسے۔ سوچئے کے آپ ایک اپارٹمنٹ میں ررھتے ھیں  اور اس کے ڈرائنگ روم کے مرکز میں ایک میز ہے۔ اب اگر آپ محض اس کی جگہ تبدیل کر دیں اور اسے  اپنے اپارٹمنٹ  کی راہداری میں رکھ دیں تو یہ نہ صرف اس میز اور راہداری کےساتھ ناانصافی ہو گی بلکہ ان سب  لوگوں کے ساتھ بھی جو اس عمارت میں رہتے ہیں ۔  اب چُھری کو لے لیں  جو مختلف چیزوں کو کاٹنے لئے ایک اوزار کے طور پر بنائی گئی ہے جیسے کہ پھل اور سبزی لیکن اگر آپ اسے کسی کو زخمی کرنے کے لئے استعمال کریں تو یہ نہ صرف اس شخص کے ساتھ ناانصافی ہوگی بلکہ چھُری کے ساتھ بھی۔ یہی بات آپ کے تمام اعضاء پر لاگو ہوتی ہے۔ خُدا نے آپ کے ہاتھ ، پیر، زبان اور ہونٹ بنائے ہیں  تاکہ آپ روزمرہ کے کام سر انجام دے سکیں  نا کہ ان سے دوسروں کو زخمی کریں۔ آپ کے   جنسی ا عضاء  کا صحیح استعمال میاں 

بیوی کے بیچ جائز تعلقات میں ہےنا کہ ناجائز رشتے اور زنا کے لئے۔ 

مجھے یہاں ہم جنسیت پر بھی بولنے کا موقع دیں ۔ آپ کے بیچ بہت سے جانے مانے دماغ یہ کہتے ہیں  کہ یہ گناہ نہیں ہے بلکہ قدرتی ہے اور قدرت میں ہر

 جگہ موجود ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ اگر کوئی خُدا ہے تو اس نے ایسے ہی بنایا ہے کیونکہ  ہم جنسیت کا  جز کئی جانوروں کی اقسام میں پایا جاتا ہے۔ تقریباً 20 فیصد بندر ہم جنس ہوتے ہیں ۔ اب معقول جواب یہ ہے کہ  بہت سی ایسی چیزیں ہیں جو  جانور کرتے ہیں لیکن انسانوں کے لئے وہ غلط ہیں جیسے کہ   قتل، چوری، کسی دوسرے کی بیوی یا بیٹیوں سے ناجائز جنسی تعلقات رکھنا وغیرہ غیرہ۔  لیکن ان باتوں پر تم نے کبھی یہ بحث نہیں کی  کہ کیونکہ جانور یہ سب کرتے

    ہیں تو یہ قدرتی ہے اور اسے کرنے میں کوئی گناہ نہیں۔

اے بنی نوع انسان  میں تم سے دوبارہ کہ رہا ہوں کہ خُدا پر بھروسہ کرو اور ناانصافی کرنا  چھوڑ دو، اور وہ وہاں سے تمہاری مدد کرے گا جہاں سے تم سوچ بھی نہیں سکتے۔  تمہارے رب نے ہر چیز انصاف سے بنائی ہے۔ ساری تعریف خُدا کو ملے جس نے آسمان اور زمین بنائے اور ان میں انصاف رکھا۔ صرف ناانصافی کے تصور کو سمجھو اور  اسے چھوٹی سے چھوٹی سطح پر کرنا بند کر دو۔ خاص کر ان لوگوں کا خیال رکھو جو تم پر  منحصر ہیں ۔ خواتین کے ساتھ وہ رویہ رکھو جو تم چاہتے ہو کہ وہ تمہارے ساتھ رکھیں۔  تم سب ایک نسل ہو اور اپنے خداوند کی نظر میں ایک سے ہو۔ کچھ صحیفوں میں ایسا کہا گیا ہے کے آدمیوں کا درجہ اعلیٰ ہے لیکن لوگوں نے اسے بہت غلط انداز میں لیا ہے۔ اگر خداوند کی مرضی ہوئی تو میں تمہاری یہ الجھن ضرور دور کروں گا۔ 

جس کسی نے دوسرے شخص کو  اس کے کردار کو یا کسی اور چیز کو لیکر ستایا ہے  اسے روزِ محشر سے پہلے اس سے معافی مانگنی چاہئے  ، اس دن جب کسی کے پاس غلط کاموں کے معاوضے میں کوئی پیسہ نہیں ہو گا۔ لیکن اگر اس کے پاس اچھے اعمال ہوں گے وہ اچھے اعمال اس برائی کے بدلے جو اس نے کی ہے لے لئے جائیں گے اوراگر اس کے کوئی اچھے اعمال نہیں ہوں گے تو ستائے ہوئے شخص کے گناہ اس پر لاد دئے جائیں گے۔

وہ جو  برائی کو سراہتا اور وہ جو نیکوکار کو ملامت کرتا ہے وہ دونوں ہی خُداوند کی نظر میں گھنونے ہیں ۔ تمہارے خُداوند نے تمہیں بتایا ہے، اے انسان، اچھا کیا ہے؛ اور خداوند تم سے کیا چاہتا ہے سوائے اس کے تم انصاف کرو، رحمدلی سے محبت رکھو اور اپنے خدا کے ساتھ عاجزی سے چلو۔ 

اے لوگو، تمام صحیفے یہ کہتے ہیں کہ خُدا کے ساتھ اور معبودوں کو نہ جوڑو۔  یہ شریک محض بت ہی نہیں ہیں جیسے کہ بہت سے لوگ سمجھتے ہیں ۔ بت ان میں شامل ہیں ۔ خُدا کا سچا کلام اور وحی ہمیشہ عالمگیر ہوتا ہے اور ہر زمانے کے مطابق بیٹھتا ہے۔ اس لئے یہ بدلتے وقت کے ساتھ  اپنے معنی تبدیل کرتا ہے جیسا کہآج اس میں اس کے اور بہت سے معنی ہیں ۔ ایک سادہ سوسائٹی کی نسبت آج کی سوسائٹی ذیادہ پچیدہ ہے  اور خدا کے ساتھ شریک جوڑنے کا مطلب ہے کہ خدا کے علاوہ کسی اور کو ایسی ذات سمجھا جائے جو،  آپ کو صحت، زندگی، تحفظ اور جو کچھ بھی آپ سوچ سکتے ہیں آپ کو دے رہا ہے۔ مذہب اور صحیفے آپ کو بہت سے خُداؤں سے چھٹکارا دینے کے لئے آئے، بت یا انسان، زنجیروں کو توڑنے کے لئے، آپ کو توہم پرستیوں سے آذادی دینے کے لئے ، تاکہ آ پ کے تمام خوف ختم ہو جائیں ۔ تاکہ آپ  کواپنے مسائل اور ضرورتوں کے لئے  مختلف جگہوں پر جانا نہ پڑے۔ 

اس لئے تمام مذہبی صحیفے یہ کہتے ہیں کہ خدا کے ساتھ کسی کو شریک کرنا اس سے کہیں ذیادہ بُرا ہے کہ  خُدا میں یقین نہ کیا جائے۔  کیونکہ نہ ماننا اتنا برا نہیں ہے جتنا غلط معبود میں یقین رکھنا۔ میں آپ کو ایک مثال دیتا ہوں ۔ سوچیں کہ آپ کسی ایسے ملک یا شہر میں آئے ہیں  جہاں کے حاکم کو اوراصولوں کو  آپ نہیں جانتے۔ تو ممکن ہے آپ کچھ غلطیاں کریں لیکن جلد ہی آپ حاکم اور اس کے قانون سے واقف ہو جائیں گے ۔ لیکن ا گر آپ کچھ غلط لوگوں کے جال میں پھنس جائیں  اور اگر وہ آپ کو بالکل برعکس اور فرق قانون بیان کریں  تو ممکن ہے کہ آپ کچھ سنگین غلطیاں کریں  یا ہو سکتا ہے کہ اس ملک میں  کوئی غیر قانونی حرکت  جسکا نتیجہ کوئی سنگین جرم  اور سنگین سزا ہو سکتا ہے۔ 

خدا کے ساتھ معبود کو جوڑنے کے بہت سے سماجی اور اخلاقی مسائل ہیں ۔ آپ اپنے مسئلوں اور ضرورتوں کے لئے مختلف جگہوں اور دروازوں پر جاتے ہیں۔ یہ آپ کو نامعقول اور توہم پرست بنا دیتا ہے ۔ یہ آپ کو ایک بھکاری کی طرح بنا دیتا ہے جو ہر دروازہ کھٹکھٹائے جو ہر ایک  سے اپنی  ضرورتوں کے بارے میں کہے۔ یہ خُداِ واحد قادر مطلق کے معاملے میں نہیں ہوتاکیونکہ  وہ  آپ کی عقل کو سوچنے کی دعوت دیتا ہے کہ  یہ کائنات ایک تخلیق ہے یا نہیں ، کیا اس کو کوئی آغاز ہے اور اب ہم یہ یقیناً جانتے ہیں کی اس کا آغاز ہے ، اسکا یقیناً اختتام ہو گا اور اس کا وجود ختم ہو جائے گا۔ وہ آپ کو خالق کے بارے میں سوچنے کی دعوت دیتا ہے جو وہ خود ہے۔  وہ آپ کو توہم پرستیوں کی دعوت نہیں دیتا بلکہ آپ کے ضمیر، ذہن اور منطق کو بلاتا ہے کہ آپ اس کے متعلق منطقی طور پر سوچیں ۔  بہت سے لوگ جو خدا کو نہیں مانتے یا اس پر  یقین نہیں رکھتے سوچتے ہیں کہ مذہبی لوگ توہم پرست ہیں ۔ میں آپکو بتاتا ہوں وہ درست ہیں ۔ یہ سب درحقیقت مذہب کو ذہن، منطق اور دل سے ماننے کی بجائے پیدائشی طور پر ماننے کی وجہ سے ہے۔ وہ محض یہ کہتے ہیں کہ وہ مومن ہیں لیکن حقیقت میں ایمان ان کے حلق سے بھی نہیں گزرا ہے ۔ وہ بس ان کے ہونٹوں اور زبان پر ہی ہے ۔ اس لئے جو کوئی بھی توہم پرست ہے وہ مومن نہیں ہے لیکن یہ بہت حد تک ممکن ہے کہ اس نے خدا کے ساتھ کسی کو شریک ٹھہرایا ہوا ہو۔  میرا یقین کیجئے اپنے اندر جھانکئے اور آپ کو جواب مل جائے گا۔ 

اب ایک بڑے سوال کی طرف آئیے  ” کیا خُدا ہے” ۔  عظیم عالموں میں سےایک کے الفاظ میں “ہمارے محدود دماغوں کے لئے یہ مسئلہ بہت بڑا ہے ۔ کیا میں ایک تمثیل کے ذریعے جواب نہ دوں؟ انسانی دماغ چاہے کتنا ہی تربیت شدہ کیوں نہ ہو، کائنات کو گرفت میں نہیں لےسکتا۔ ہم ایک بچے کی طرح ہیں جو بہت وسیع لائبریری میں داخل ہوتا ہے جس کی دیواریں چھت تک   مختلف زبانوں کی کتابوں سے بھری ہوئی ہیں ۔  بچے کو یہ علم ہے کہ کوئی ان کتابوں کا مصنف ہے۔ اسے یہ نہیں پتا کہ کون اور کیسے۔ وہ ان زبانوں کو نہیں سمجھتا جن میں وہ لکھی گئیں ہیں ۔ بچے کو ان کتابوں کی ترتیب میں ایک منصوبہ نظر آتا ہے ، ایک پراسرار ترتیب جو اسے سمجھ میں نہیں آتی لیکن کچھ دھندلا سا دکھائی دیتا ہے ۔ میرے نزدیک ایک انسانی دماغ کا یہی رویہ ہے ، یہانتکہ ان کا بھی جو خدا کے بارے میں بہت عظیم اور تہذیب یافتہ ہیں ۔ ہم کائنات کو حیران کن طور پر ایک ترتیب میں دیکھتے ہیں جو مخصوص قانون کے تابع ہے لیکن ہم اس قانون کو دھندلا سا سمجھ پاتے ہیں ۔ ہماری محدود عقل اس پُراسرار طاقت کو نہیں سمجھ پاتی جو ستاروں کے جھُرمٹ کو چلاتی ہے ” ۔ 

خدا کے وجود اور عدم موجودگی کے مباحثوں کی ایک لمبی تاریخ ہے ۔ میں آپ کو یہ معاملہ آسان تر الفاظ میں بیان کر رہا ہوں تاکہ ایک عام ذہن کا مالک بھی اسے سمجھ پائے ۔ خدا اور اس کی بادشاہت کو سمجھنے کے یہ تعارف اور دیباچہ بہت لمبا ہے اور آنے والے پروگراموں میں آتا رہے گا۔  خدا کے وجود کے متعلق مختصر  خلاصے  میں عملی  دلائل   شامل ہے جیسے کہ سب سے پہلے خدا کے وجود کے بارے میں وحی اور کتابوں میں تضاد  کی دلیل  جو اس کے وجود کی نفی کرتی ہے کیونکہ مختلف صحائف کے درمیان، ایک ہی صحیفے میں بھی اور صحیفوں اور معلوم حقائق کے بیچ تضاد پایا جاتا ہے۔ دوسری دلیل برائی کا مسئلہ ہے جو خدا کے وجود کو جھٹلاتا ہے  اس دلیل کے ساتھ کہ  وہ قادرِمطلق اور کریم ہے  تو پھر اسے برائی اور دکھ کو نہیں آنے دینا چاہئے تھا۔  تیسری عملی دلیل ان کی تقدیر کے بارے میں ہے جو مومن یا ایمان والے نہیں ہیں ۔ اس کے مطابق جن لوگوں نے کوئی مخصوص وحی نہیں سنی  ، یا انہیں اسے پڑھنے کا موقع نہیں ملا تو انہیں حکموں پر نہ چلنے کی کڑی سزا مل سکتی ہے۔ پھر ایک دلیل اس خیال  کےخراب ڈیزائن کے بارے میں  ہے کہ خدا نےزندگی کو حیاتیات کی بنیاد پر بنایا جس میں انسان بھی شامل ہے ۔ یہ زمین پر برفانی دور کے دوران 99 فیصد زندگیوں کے خاتمے پر  ایک خراب ڈیزائن لگتا ہے اور جتنا وقت اور تباہی اس معمولی ایک سیارے زمین کو بنانے میں لگا۔ پانچویں دلیل ان نا ایمان رکھنے والوں کی جانب سے ہے جو اس خدا کے وجود کا انکار کرتی ہے جو لوگوں کو اس میں یقین رکھنے کے لئے کہتا ہے۔ یہ دلیل کہتی ہے ایسا خدا یہ بہتر طور پر کر سکتا ہے کہ ایمانداروں/مومنوں کو تبدیل کرے اور اکٹھا کرے۔ پھر ایک اور دلیل آتی ہے جو یہ کہتی ہے کہ خدا کے وجود کو ثابت کرنے کی ذمےداری خدا کو نہ ماننے والوں سے ذیادہ خدا کے ماننے والوں کی ہے۔  رسل  کی ٹی پا ٹ اور اوکمز کی ریزر  پر مبنی تمثیلیں اس دلیل کو بیان کرنے کے لئے استعمال کی جاتی ہیں۔ 

بہت سی قیاس پر مبنی دلیلیں موجود ہیں  جن میں سے ایک ڈیزائن والی دلیل کے جواب میں یہ کہتی ہے کہ ایک پچیدہ اور  منظم، ڈیزائن لازم ھے کہ کسی نے بنایا ھو۔ جوابی دلیل یہ کہتی ہے اگر خدا اس کائنات کا بانی ہے تو وہ اس کائنات جیسا ہی یا اس سے کہیں ذیادہ  پیچیدہ ہو گا۔ اس لئے اس کو بھی تخلیق یا ڈیزائن کرنے والا  چاہئے اور پھر اس کو بھی اور پھر اس سے اگلے کو بھی یہانتکہ یہ سلسلہ لامتناہی  چلتا رہے گا۔ اس لئے خدا کے وجود کے بارے میں یہ ایک منطقی دھوکہ بازی ہے چاہے اس میں کوئی عذر پیش کیا جائے یا نہیں۔  پھر ایک قادرِ مطلق (اس کا مطلب ہے سب سے ذیادہ طاقتور) کی تمثیل ہےجو یہ کہتی ہے کہ اگر قادرِ مطلق سب کچھ کر سکتا ہے  تو وہ  ایک ایسا ناممکن کام بھی تخلیق کئے جانے کے قابل ہے جو وہ سر انجام نہ دے سکے۔  نتیجہ تر، یہ ہستی  تمام کام انجام نہیں دے سکتی۔ اس کی بہت سی صورتیں ہیں  جیسے کہ کیا   خدا  ایک اتنی بڑی چٹان بناسکتا ہے جسے وہ خود نہ ہلا سکے ؟  “یا کیا خدا اپنے سے ذیادہ طاقتور تخلیق کر سکتا ہے؟ یا کیا خدا ایسی قید بنا سکتا ہے کہ اس سے وہ نہ بھاگ سکے؟” اگر ان تمام سوالوں کا جواب ہاں میں ہے: تو خدا کی طاقت محدود ہے کیونکہ وہ پتھر نہیں اٹھا سکتا  یا  قید سے فرار نہیں ہو سکتا یا  اس سے طاقتور کوئی ہستی ہے۔  اگر نہیں: تو پھر اس سے اس کی طاقت محدود ہے کیونکہ وہ  چٹان ، قید یا اپنے سے ذیادہ طاقتور ہستی نہیں بنا سکتا۔ 

اوپر دی گئی تمام فلسفیانہ دلیلوں  اور مباحثوں کی بنیاد قریباً 500 سال قبل ِ مسیح ہے- یہ ماضی میں 2500 سالوں سے ذیادہ ہے۔ آپ واضح طور پر دیکھ سکتے ہیں کہ اس زمانے کے لوگوں کے ذہن کتنے تیز تھے  – انسانی تاریخ کے عظیم دماغ۔ اور تم خود کو مومن/ایمان والے کہتے ہو- تم ان لوگوں کی طرف نفرت کی نگاہ سے دیکھتے ہو – کیونکہ تم سوچتے ہو کہ وہ ایمان والے نہیں ہیں اور وہ ہیں جو روزِ محشر خدا کے غضب کا نشانہ بنیں گے۔ جبکہ حقیقت یہ ہے کہ یہ وہ ذہن تھے جنہوں نے انسانی علم، فلسفے اور سائنس کی بنیاد ڈالی۔ 

اگر میرے رب کی مرضی ہوئی تو میں اس موضوع کو جاری رکھوں گا۔ اگر میری بات چیت کے دوران کوئی انتہائی فلسفیانہ  یا سائنسی الفاظ اآجائیں تو مجھے برداشت کیجئے گا۔ اگر میرے خدا کی مرضی ہوئی تو آپ اسے ضرور سمجھیں گے جیسے جیسے آپ مزید اس بات چیت کو سنتے جائیں گے۔