This is not a perfect universe but there are many others. Whatever problem, affliction, disease you get is also serving some other purpose and not only because of cause and effect.

Recitation of the Holy Scripture.

Whatever is in the heavens and whatever is on the earth glorify God, and He is the All Mighty, the AllWise.

To Him belongs the dominion of the heavens and the earth, He gives life and causes death, and He has power over everything.

He is the First and the Last, the visible and the invisible, the Outer and the Inner, and He is the AllKnower of everything

He is the One Who created the heavens and the earth in six days and then established Himself above the Throne. He knows what penetrates into the earth and what comes forth from it, what descends from the heaven and what ascends therein; and He is with you wherever you are. And God is AllSeer of what you do.

To Him belongs the dominion of the heavens and the earth, and to God return and referred all the matters.

He merges the night into the day and merges the day into the night, and He is AllKnower of what is in the breasts.

To Him is referred the knowledge of the Hour. And fruits do not emerge from its coverings nor does any female conceive or give birth except by His knowledge. And the Day when He will call out to them, “Where are My partners?” They will say, “We announce to You, that none of us bears witness to it.

And those whom they were invoking before will be lost from them, and they will be certain that they have no place of escape

Man does not get tired of asking for good, and if an evil touches him, then he gives up hope and despairs.

And verily, if We let him taste mercy from Us after an adversity has touched him, he will surely say, “This is due to my (merit), I do not think that the Hour will be established; and if I am returned to my Lord, indeed, I will have with Him the best.” But We will surely inform those who disbelieved about what they did and We will surely make them taste a severe punishment.

And when We bestow favor upon man, he turns away and distances himself; but when evil touches him, then he is full of lengthy supplications.

Have you considered: if this is from God and you rejected in it who would be more astray than one who is in extreme dissension?”

Soon We will show them Our Signs in the horizons and within themselves until it becomes clear to them that it is the truth. Is it not sufficient concerning your Lord that He is a Witness over all things?

Surely they are in doubt about the encounter with their Lord. Surely He comprehends everything.

On the Day you will see the believing men and the believing women, their light proceeding before them and on their right, (it will be said to them), “Glad tidings for you today gardens underneath which rivers flow, abiding therein forever. That is the great success.”

On the Day the hypocrite men and the hypocrite women will say to those who believed, “Wait for us so that we may acquire some of your light.” It will be said, “Go back, behind you and seek light. Whereupon a wall will be erected between them, in which is a gate; inside the gate is mercy, and on the outer side is the punishment.

Know that the life of this world is nothing but play and pastime, and pomp and boasting amongst yourselves and the desire to surpass each other in wealth and children, like the rain, the produce of which pleased the farmer, then dried so you see it yellow and then turned into dry trampled hay; and in the Hereafter is a severe punishment, and the forgiveness from God and His pleasure. And the life of this world is nothing but the enjoyment of delusion.

Race toward forgiveness from your Lord and a Garden whose width is like the width of the heavens and earth, prepared for those who believed in God and His messengers. That is the bounty of God which He gives to whom He wills, and God is the Possessor of Immense Grace.

No disaster strikes on the earth or within yourselves, but is in a Book before We bring it into existence. Indeed, that is easy for God.

So that you may not grieve over what has escaped you, nor exult at what He has given you. And God does not love any self deluded boaster.

End of Recitation of the Holy Scripture.

O Mankind no disaster, disease, affliction and calamity strikes on the earth or within yourselves, but is in a book before your Lord bring it into existence. And whatever misfortune affliction befalls you, it is because of what your hands have earned.  And you cannot escape in the earth and you do not have, besides God, any protector or helper. 

O mankind although your Lord has made this world a trial and this universe is not a perfect place even than its not only the material world and its cause and effects that are responsible for all the events, there is also something else. Let me here also respond to the question of skeptics when they say that if there is an intelligent creator, than that must be shown through His creation. They say the universe we see around ourselves is not perfect. As it took almost 15 billion years to arrive at this universe we see around us. Than most places in the universe, more than 99% would kill life instantly. They say star formation is completely inefficient as only 3% of the gas being used for this. Most planet orbits are unstable. They further say that the universe we see around ourselves is not perfect as on Earth 99 % of all life that has ever lived, is now extinct. Than it took almost 3.5 billion years to get an intelligent life on earth through various trials errors and accidents, than there are earthquakes floods diseases and birth defects. 

So from their point of view this is not an efficient plan or design. The answer is that this universe is one among others your Lord has created. Others are not like this. And for its perfectness your Lord already told you in His revelations and scriptures that He made it a trial and this particular universe He created along with the Devil the evil the negative force. Devil is like a waste a by product of creation such as you get from your factories during manufacturing something good. But there are other worlds, universes which are not like this. Which are perfect where there is no disease, no problem, no extreme heat, no extreme cold, no hunger thirst and no cause and effect like we know here. Now in the same tone as skeptics argue I ask you a question, which God is great in your point of view a God who can create a perfect Universe or a God who can create all type of universes perfect imperfect every kind. If your Lord only has created perfect worlds you could have said didn’t he had powers that he could have created something different? 

Coming to my point although your Lord has made this world a trial and this universe is not a perfect place even than whatever problem, affliction, disease you get is also serving some other purpose and not only because of cause and effects, but also in justice fulfilling a parallel command of Your Lord to warn you, to try you or to punish you. 

So other than diseases physical accidents material causes and effects something other than that also happening simultaneously. Your Lord is so just that although in this universe all system is running by natural laws, physics and cause and effect, even than so much justice that these problems, accidents, diseases not befall without any reason. For those who are righteous it is a way to clean them from small sins, or to increase their goods and virtues, by trial and steadfastness, and to put more patience in them. For others they are signs and warnings to refrain them from sin which they are going to do or to make them repent for the sins they have already committed. But some people are exempted from these rules and the best way to check who are those is to see those wrong doers who are top criminals in the towns doing all bad in this world but not getting anything in return, any mishap, any disease, affliction and trouble and are flourishing day by day. I feel sad for those as they are not getting any thing in this world so must be among those creation your Lord has created for Hell.

Believe me there is not a single smallest incident happen to you but has its reasons in addition to the physical cause and effects. Check your memory, it might have happened to you and your conscious deep inside might have stored that feeling, regarding why that recent or a past incident  some injury, obstacle in your task or a small car accident happened to you. Investigate in detail and you will find that other than cause & effect of this world, like negligence in driving or excess traffic on road, there was something else also which would have occurred that day or earlier. Like you were going for some wrong purpose, left your home after insulting your parents or after breaking heart of your spouse or were going for some illicit or extra marital relationship. Check your inner self and you will find the answer.

People ask why is it so that those who are righteous get more afflictions in life, endure troubles, hardships and calamities of every kind. I tell you why, Devil first target is to attack you and turn you away from the path, to turn you towards wrong things, towards sin. For majority this is the route he takes to cause them distress in life here and in the hereafter. But for the righteous and for chosen slaves of God he often failed and than attack to give disturbance through the outside world thru confusion, fear, sleepless nights harm by spreading evil suggestions and conspiracies thru other human beings around you. All history is same. This is the liberty he has got from God that he would mislead His slaves through any mean. All history is evident that the righteous suffered more thru afflictions of all kinds. The prophets the friends of God. But what is the benefit in this is not known to devil. In first case if he attacks them to turn them away from the path, they get sometime pleasure sometime misery in this world and in hereafter a confirm sin in their accounts. In second scenario if they get a disease or another affliction reward is written for them for every second they remain in that. And above all the life of this world is like a blink of an eye. So this small time of affliction is nothing as compared to the life which is waiting for them ahead.

Recitation of the Holy Scripture.

There’s no need to lament with God on your side. The Lord is my light and my salvation. Whom shall I fear?
The Lord is the stronghold of my life—of whom shall I be afraid?

Do not worry about your life, or what you will eat or drink, or about your body, what you will wear. Is not life more than food, and the body more than clothes? Look at the birds of the air; they do not sow or reap or store away in barns and yet your Lord feeds them. Are you not much more valuable than they? Can any one of you by worrying add a single hour to your life?“And why do you worry about clothes? See how the flowers of the field grow. They do not labor or spin. Yet I tell you that not even Solomon in all his splendor was dressed like one of these. If that is how God clothes the grass of the field, which is here today and tomorrow is thrown into the fire will he not much more clothe you, O you of little faith? So do not worry, saying, ‘What shall we eat?’ or ‘What shall we drink?’ or ‘What shall we wear?’ For the non believers run after all these things, and your Lord knows that you need them. But seek first His kingdom and His righteousness, and all these things will be given to you as well. Therefore do not worry about tomorrow, for tomorrow will take care of itself. Every day has enough trouble of its own. 

Recitation of the Holy Scripture.

سبح للـه ما في السماوات والأرض وهو العزيز الحكيم 

له ملك السماوات والأرض يحيي ويميت وهو على كل شيء قدير 

هو الأول والآخر والظاهر والباطن وهو بكل شيء عليم 

هو الذي خلق السماوات والأرض في ستة أيام ثم استوى على العرش يعلم ما يلج في الأرض وما يخرج منها وما ينزل من السماء وما يعرج فيها وهو معكم أين ما كنتم واللـه بما تعملون بصير 

له ملك السماوات والأرض وإلى اللـه ترجع الأمور 

يولج الليل في النهار ويولج النهار في الليل وهو عليم بذات الصدور 

إليه يرد علم الساعة وما تخرج من ثمرات من أكمامها وما تحمل من أنثى ولا تضع إلا بعلمه ويوم يناديهم أين شركائي قالوا آذناك ما منا من شهيد 

وضل عنهم ما كانوا يدعون من قبل وظنوا ما لهم من محيص 

لا يسأم الإنسان من دعاء الخير وإن مسه الشر فيئوس قنوط 

ولئن أذقناه رحمة منا من بعد ضراء مسته ليقولن هذا لي وما أظن الساعة قائمة ولئن رجعت إلى ربي إن لي عنده للحسنى فلننبئن الذين كفروا بما عملوا ولنذيقنهم من عذاب غليظ 

وإذا أنعمنا على الإنسان أعرض ونأى بجانبه وإذا مسه الشر فذو دعاء عريض 

قل أرأيتم إن كان من عند اللـه ثم كفرتم به من أضل ممن هو في شقاق بعيد 

سنريهم آياتنا في الآفاق وفي أنفسهم حتى يتبين لهم أنه الحق أولم يكف بربك أنه على كل شيء شهيد 

ألا إنهم في مرية من لقاء ربهم ألا إنه بكل شيء محيط 

يوم ترى المؤمنين والمؤمنات يسعى نورهم بين أيديهم وبأيمانهم بشراكم اليوم جنات تجري من تحتها الأنهار خالدين فيها ذلك هو الفوز العظيم 

يوم يقول المنافقون والمنافقات للذين آمنوا انظرونا نقتبس من نوركم قيل ارجعوا وراءكم فالتمسوا نورا فضرب بينهم بسور له باب باطنه فيه الرحمة وظاهره من قبله العذاب 

اعلموا أنما الحياة الدنيا لعب ولهو وزينة وتفاخر بينكم وتكاثر في الأموال والأولاد كمثل غيث أعجب الكفار نباته ثم يهيج فتراه مصفرا ثم يكون حطاما وفي الآخرة عذاب شديد ومغفرة من اللـه ورضوان وما الحياة الدنيا إلا متاع الغرور 

سابقوا إلى مغفرة من ربكم وجنة عرضها كعرض السماء والأرض أعدت للذين آمنوا باللـه ورسله ذلك فضل اللـه يؤتيه من يشاء واللـه ذو الفضل العظيم 

ما أصاب من مصيبة في الأرض ولا في أنفسكم إلا في كتاب من قبل أن نبرأها إن ذلك على اللـه يسير 

لكيلا تأسوا على ما فاتكم ولا تفرحوا بما آتاكم واللـه لا يحب كل مختال فخور

End of Recitation of the Holy Scripture.

يا أيّها الناسُ ما أصابكم من مُصيبةٍ، أو مرضٍ، أوعذابٍ، أو كارثةٍ في الأرض أو في أنفسكم، إلا وقد كتبها الله في كتابه قبل أن يخلقكم. ومهما أصابكم من مُصيبة، فإنّها بما كسبت أيديكم. ولا يُمكنكم الفرار في الأرض، وما لكم من دون اللهٍ وليٌ ولا حفيظ. 

يا أيها البشر، على الرغم من أنّ الله قد جعل هذا العالم  اختبارًا ، وهذا الكون ليس مكانًا مثاليًا؛ فإنّه ليس العالم الماديّ وأسبابه وتأثيراته وحدهم المسئولين عن جميع تلك الأحداث، هناك شيءٌ أخر.  واسمحو لي هنا أن أرد على سؤال المُشككين حين قالوا: إذا كان هناك خالقٌ ذكيٌّ فإنّه لابد أن يظهر من خلال مخلوقاته. إنّهم يقولون أن الكون الذي نراه حولنا ليس مثاليًا. حيث استغرق الأمر حوالي 15 بليون سنة لكي يصل الكون إلى الصورة التي نراه عليها اليوم. ثم أنّ معظم الأماكن في الكون، أكثر من 99% سوف يُؤدي إلى قتل الحياة فورًا. إنّهم يقولون أن تكوين النجوم ليس مثاليًا تمامًا، حيث تم استخدام 3% فقط من الغاز من أجل هذا. معظم مدارات الكواكب الأخرى ليس مُستقرةً. إنّهم يقولون أن الكون الذي نراه حولنا ليس مثاليًا، لأنّه قد انقرض حوالي 99% من جميع أنواع الحياة التي كانت تعيش على الأرض في العصور السحيقة. ثم إنّ الأمر قد استغرق حوالي 3.5 بليون سنة لكي تنشأ حياةٌ ذكيةٌ على الأرض، عبر العديد من الحوادث والأخطاء، ثم أنّ هناك الزلازل، الفيضانات، والعيوب الخِلقيّة.

حتى الأن، هناك وجهة نظر وهى أن تلك الخطة وهذا التصميم ليسا مثاليّين.  الإجابة هى أنّ هذا الكون من بين الأكوان الأخرى التي خلقها الله. الأخرى ليست مثل هذا. ومن أجل أن يصير مثاليًا، قد أخبركم الله بالفعل في الوحيّ والنصوص المُقدسة، أنّه قد جعل هذا الكون بمثابة الاختبار، وهذا الكون قد خُلق جنبًا إلى جنب مع الشيطان وقوى الشر. الشيطان مثل النفايات التي تحصل عليها من مصنعٍ يقوم بتصنيع المُنتجات الجيّدة. ولكن هناك العديد من العوالم الأخرى والأكوان التي لا تُشبه عالمنا. والتي هى مثاليةٌ، حيث لايوجد مرضٌ ولا مشاكل، لا حرارة شديدة، ولا برد قارس، ولا جوع أو عطش، وليس خاضعًا لقوانين الفعل والتأثير كما نرى هنا. الأن، وبنفس النغمة التي يُجادل بها المُشككون أنا أسأل سؤالًا، أي “إله” هو أكثر عظمةً في وجهة نظرك، الإله الذي يستطيع أن يخلق كونًا مثاليًا، أو الإله القادر على خلق جميع الأنواع من الأكوان، المثالي وغير المثالي، جميع الأنوان. إذا كان إلهكم قد خلق الأكوان المثالية فقط، فإنّ كنتم لتقولون إنّه لا يمتلك القوى الكافية ليخلق شيئًا مُختلفًا؟ 

ووصولًا إلى نقطتي، على الرغم من أن ربكم قد جعل هذا العالم بمثابة اختبار، وهذا الكون ليس مثاليًا، حتى أن هناك العديد من المشاكل، الصراعات والأمراض التي تصيبكم، فإنّ ذلك يخدم العديد من الأغراض الأخرى، وليس فقط من أجل قانون “السبب والتاثير”، ولكنّه أيضًا من عدالة ربكم لكي يُحذركم، لكي يُخيفكم أو لكي يُعذبكم.

حتى بعيدًا عن الأمراض، والحوادث الجسديّة وقانون “الأسباب والتأثير”، فإنّ شيئًا أخر يحدث أيضًا في نفس الوقت. ربكم عادلٌ جدًا، إلى درجة أنّ جميع الأنظمة في كونه تسير بقوانين طبيعيّة ثابتة، وفيزيائية وقانون السبب والتأثير، وزاد في عدله إلى حد أنّ المشاكل، الحوادث، والأمراض لا تحدث دون سببٍ واضح. فبالنسبة للمُؤمنين، فتلك هى طريقةٌ لتطهيرهم من الخطايا الصغيرة، أو لكي يزيد من حسناتهم وأعمالهم الصالحة، عن طريق الخطأ والثبات، وليضع مزيدًا من الصبر في نفوسهم. وبالنسبة للأخرين، فذلك يُعتبر علامات وتحذيرات للامتناع عن الخطايا التي سيرتكبونها، أو جعلهم يتوبون من الذنب الذي اقترفوه بالفعل. ولكن بعض الناس لا تنطبق عليهم تلك القاعدة، والطريقة الأفضل لكي تراهم هم هؤلاء الذي يرتكبون أفظع الأخطاء في المُدن، والذين يفعلون كل الأشياء السيئة في العالم ولكن لا يحصل لهم شيءٌ في المقابل، أي حادث، أي مرض، أي متاعب ومشاكل، بل ويزدهرون يومًا وراء الأخر. أنا أشعر بالحزن على هؤلاء؛ لأنّهم لا يحصل لهم أي شيء في هذا العالم، لهذا من أجل هؤلاء ومن بينهم خلق ربكم الجحيم لهم.

صدقوني، لا توجد أي حادثة صغيرة تحدث لكم، إلا ولها أسبابُها بالإضافة إلى الأسباب الفيزيائية، وقانون السبب والتأثير. راجع ذاكرتك، ربما حدث لك هذا الأمر، وقام ضميرُك بتخزين ذلك الأمر في أعماق نفسك، أن تلك الإصابة الماضية، أو الحادث الفائت، أو العقبةً في طريق مُهمة ما، أو حادث السيارة الصغير الذي حدث لك. حين تتفحص في تفاصيل هذا؛ سوف تجد أنّه لولا السبب والتأثير في هذا العالم، مثل الإهمال في قيادة السيارة، أو الزحام الشديد على الطريق، وأنّه كان من المُمكن أن يحدث شيءٌ ما أخر في هذا اليوم أو سابقًا. مثل أنّك قد كنت في طريقك لارتكاب بعض الأفعال الخاطئة، أو تركت منزلك بعد أن أهنت والديك، أو بعد أن كسرت قلب زوجتك، أو كنت ستركتب بعض العلاقات غير المشروعة. انظر في أعماق نفسك، وسوف تعرف الإجابة.

يتسائل الناسُ لماذا يحدث ذلك للصالحين، ولماذا يتعرضون إلى مزيدٍ من المشاكل، الأعباء، والمصاعب، والابتلاءات من جميع الأنواع. أنا أقول لكم السبب، الهدف للشيطان هو أن يٌهاجمكم، وأن يُبعدكم عن الطريق المُستقيم؛ لكي يجعلكم تتوجهون نحو فعل الأشياء الخاطئة، نحو المعاصي. بالنسبة للغالبية، فهذا هو الطريق الذي يسلكه من أجل أن يُسبب لهم التعب في الحياة الدنيا والحياة الآخرة. ولكن بالنسبة للصالحين، ولعبيد الله المُختارين، فإنّه كثيرًا ما يفشل، ولهذا يُحاول أن يزعجهم عبر العالم الخارجيّ، عبر الارتباك، الخوف، أرق الليالي، والأذى عبر نشر الاقتراحات الشريّرة، والمؤامرات بواسطة العديد من البشر المُحيطين بهم. كل التاريخ مُتشابه. هذه هى الحرية التي حصل عليها من الله، أنّه سيضلل عبيده بأي وسيلة. كل التاريخ دليل على أنّ الصالحين يُعانون أكثر، ويتعرضون للمتاعب من كل نوع. الرسل هم أصفياء الله. ولكنّ الشيطان لا يرى فائدةً في ذلك، إنّه يُهاجمهم لكي يُبعدهم عن الصراط المُستقيم، إنّهم يحصلون على بعض الوقت من المُتعة في الدنيا بجانب أوقات من العذاب، وفيما بعد يتم تأكيد المعصية في كُتبهم. وفي السيناريو التالي إذا ما عانوا من المرض، أو أي صراع أخر؛ فإن الثواب يُكتب  لهم عن كل ثانيةٍ يمرون فيها بذلك. وفوق كل ذلك، فإنّ حياة هذا العالم باكمله تٌشبه طرفة العين. ولهذا فإنّ ذلك يُعتبر لا شيء مُقارنةً بالحياة التي تنتظرهم في الآخرة.

Recitation of the Holy Scripture.

ليس هناك أي حاجة لتشعروا بالرثاء والله يقف بجواركم. الله هو نوري وهو خلاصي. مما يجب أن أخاف؟ اللهُ هو قوام حياتيّ، ممن يجب أن أخاف؟

 لِذَلِكَ أَقُولُ لَكُمْ: لاَ تَهْتَمُّوا لِحَيَاتِكُمْ بِمَا تَأْكُلُونَ وَبِمَا تَشْرَبُونَ وَلاَ لأَجْسَادِكُمْ بِمَا تَلْبَسُونَ. أَلَيْسَتِ الْحَيَاةُ أَفْضَلَ مِنَ الطَّعَامِ وَالْجَسَدُ أَفْضَلَ مِنَ اللِّبَاسِ؟ اُنْظُرُوا إِلَى طُيُورِ السَّمَاءِ: إِنَّهَا لاَ تَزْرَعُ وَلاَ تَحْصُدُ وَلاَ تَجْمَعُ إِلَى مَخَازِنَ وَأَبُوكُمُ السَّمَاوِيُّ يَقُوتُهَا. أَلَسْتُمْ أَنْتُمْ بِالْحَرِيِّ أَفْضَلَ مِنْهَا؟ وَمَنْ مِنْكُمْ إِذَا اهْتَمَّ يَقْدِرُ أَنْ يَزِيدَ عَلَى قَامَتِهِ ذِرَاعاً وَاحِدَةً؟ وَلِمَاذَا تَهْتَمُّونَ بِاللِّبَاسِ؟ تَأَمَّلُوا زَنَابِقَ الْحَقْلِ كَيْفَ تَنْمُو! لاَ تَتْعَبُ وَلاَ تَغْزِلُ. وَلَكِنْ أَقُولُ لَكُمْ إِنَّهُ وَلاَ سُلَيْمَانُ فِي كُلِّ مَجْدِهِ كَانَ يَلْبَسُ كَوَاحِدَةٍ مِنْهَا. فَإِنْ كَانَ عُشْبُ الْحَقْلِ الَّذِي يُوجَدُ الْيَوْمَ وَيُطْرَحُ غَداً فِي التَّنُّورِ يُلْبِسُهُ اللَّهُ هَكَذَا أَفَلَيْسَ بِالْحَرِيِّ جِدّاً يُلْبِسُكُمْ أَنْتُمْ يَا قَلِيلِي الإِيمَانِ؟ فَلاَ تَهْتَمُّوا قَائِلِينَ: مَاذَا نَأْكُلُ أَوْ مَاذَا نَشْرَبُ أَوْ مَاذَا نَلْبَسُ؟ فَإِنَّ هَذِهِ كُلَّهَا تَطْلُبُهَا الأُمَمُ. لأَنَّ أَبَاكُمُ السَّمَاوِيَّ يَعْلَمُ أَنَّكُمْ تَحْتَاجُونَ إِلَى هَذِهِ كُلِّهَا. لَكِنِ اطْلُبُوا أَوَّلاً مَلَكُوتَ اللَّهِ وَبِرَّهُ وَهَذِهِ كُلُّهَا تُزَادُ لَكُمْ. فَلاَ تَهْتَمُّوا لِلْغَدِ لأَنَّ الْغَدَ يَهْتَمُّ بِمَا لِنَفْسِهِ. يَكْفِي ايَوْمَ شَرُّهُ.

Recitation of the Holy Scripture.

Tudo o que está nos céus e tudo o que está na terra glorifica a Deus, e Ele é o Todo Poderoso, o AllWise.
Para Ele pertence o domínio dos céus e da terra, Ele dá a vida e causa a morte, e Ele tem poder sobre tudo.
Ele é o Primeiro e o Último, o visível e o invisível, o Exterior e o Interior, e Ele é o Todo-Poder de tudo
Ele é Aquele que criou os céus e a terra em seis dias e, em seguida, estabeleceu-se acima do trono. Ele sabe o que penetra na terra e o que sai dela, o que desce do céu e o que nela ascende; e Ele está com você onde quer que você esteja. E Deus é o AllSeer do que você faz.
A Ele pertence o domínio dos céus e da terra, e a Deus retorna e refere todos os assuntos.
Ele funde a noite no dia e funde o dia na noite, e Ele é o AllKnower do que está nos seios.
A Ele é referido o conhecimento da Hora. E as frutas não emergem de suas cobertas nem qualquer fêmea concebe ou dá à luz exceto por Seu conhecimento. E o dia em que ele os chamará, “Onde estão os meus parceiros?” Eles dirão: “Anunciamos a você que nenhum de nós dá testemunho disso.
E aqueles que eles estavam invocando antes serão perdidos deles, e eles estarão certos de que eles não têm nenhum lugar de fuga.
O homem não se cansa de pedir o bem, e se um mal o toca, ele desiste da esperança e se desespera.
E, em verdade, se deixarmos que prove a misericórdia de nós depois que uma adversidade o tenha tocado, ele certamente dirá: “Isto é devido a meu (mérito), não creio que a Hora será estabelecida; e se eu voltar ao meu Senhor, de fato, terei com Ele o melhor ”. Mas certamente informaremos àqueles que não acreditaram no que fizeram e certamente faremos com que provem uma severa punição.
E quando concedemos o favor ao homem, ele se afasta e se distancia; mas quando o mal o toca, então ele está cheio de longas súplicas.
Você já pensou: se isto é de Deus e você rejeitou nele quem estaria mais perdido do que aquele que está em extrema dissensão? ”
Em breve lhes mostraremos nossos sinais nos horizontes e dentro deles, até que se torne claro para eles que é a verdade. Não é suficiente a respeito de seu Senhor que Ele é uma Testemunha de todas as coisas?
Certamente eles estão em dúvida sobre o encontro com o seu Senhor. Com certeza ele compreende tudo.
No dia você verá os homens crentes e as mulheres crentes, sua luz procedendo diante deles e à sua direita, (será dito a eles), “Feliz notícia para vocês hoje jardins debaixo dos quais rios correm, permanecendo neles para sempre. Esse é o grande sucesso. ”
No dia em que os homens hipócritas e as mulheres hipócritas dirão àqueles que acreditaram: “Esperem por nós para que possamos adquirir um pouco da sua luz”. Será dito: “Volte atrás de você e procure a luz. Então, uma parede será erguida entre eles, na qual há um portão; dentro do portão está a misericórdia, e no lado externo está a punição.
Saibam que a vida deste mundo nada mais é que brincadeira e passatempo, e pompa e ostentação entre vocês e o desejo de superar um ao outro em riqueza e filhos, como a chuva, cuja produção agradou ao agricultor, então secou para que você a visse amarelo e depois transformado em feno seco e pisado; e no além é uma severa punição e o perdão de Deus e seu prazer. E a vida deste mundo não é nada além do prazer da ilusão.
Corra em direção ao perdão de seu Senhor e um jardim cuja largura é como a largura dos céus e da terra, preparada para aqueles que acreditaram em Deus e em Seus mensageiros. Essa é a generosidade de Deus que Ele dá a quem Ele quer, e Deus é o Possuidor da Imensa Graça.
Nenhum desastre atinge a Terra ou dentro de si, mas está em um Livro antes de trazê-lo à existência. De fato, isso é fácil para Deus.
Para que você não fique de luto pelo que escapou de você, nem exulte com o que Ele lhe deu. E Deus não ama nenhum fanfarrão iludido

End of Recitation of the Holy Scripture.

Ó Humanidade, nenhum desastre, doença, aflição e calamidade atinge na terra ou dentro de si mesmos, mas está em um livro antes de seu Senhor trazê-lo à existência. E qualquer desgraça que aflige você, é por causa do que suas mãos ganharam. E você não pode escapar na terra e você não tem, além de Deus, qualquer protetor ou ajudante.

Ó humanidade, embora o seu Senhor tenha feito deste mundo uma provação e este universo não seja um lugar perfeito, mesmo que não seja apenas o mundo material e suas causas e efeitos que são responsáveis ​​por todos os eventos, há também algo mais. Deixe-me aqui também responder à questão dos céticos quando eles dizem que, se há um criador inteligente, que deve ser mostrado através de sua criação. Eles dizem que o universo que vemos ao nosso redor não é perfeito. Como demorou quase 15 bilhões de anos para chegar a este universo, vemos ao nosso redor. Do que a maioria dos lugares no universo, mais de 99% matariam a vida instantaneamente. Eles dizem que a formação de estrelas é completamente ineficiente, já que apenas 3% do gás está sendo usado para isso. A maioria das órbitas do planeta é instável. Eles ainda dizem que o universo que vemos ao nosso redor não é perfeito, pois na Terra 99% de toda a vida que já viveu, está extinto agora. Do que levou quase 3,5 bilhões de anos para obter uma vida inteligente na Terra através de vários erros de tentativas e acidentes, do que terremotos, inundações, doenças e defeitos congênitos.

Então, do ponto de vista deles, isso não é um plano ou projeto eficiente. A resposta é que esse universo é um entre outros que o seu Senhor criou. Outros não são assim. E por sua perfeição, seu Senhor já lhe disse em Suas revelações e escrituras que Ele fez disso uma prova e esse universo particular Ele criou junto com o Diabo o mal a força negativa. O diabo é como um desperdício, um subproduto da criação, tal como você obtém de suas fábricas durante a fabricação de algo bom. Mas existem outros mundos, universos que não são assim. Que são perfeitos onde não há doença, sem problemas, sem calor extremo, sem frio extremo, sem sede de fome e sem causa e efeito como conhecemos aqui. Agora, no mesmo tom que os céticos argumentam, eu faço uma pergunta, que Deus é grande no seu ponto de vista, um Deus que pode criar um Universo perfeito ou um Deus que pode criar todos os tipos de universos imperfeitos perfeitos de todo tipo. Se o seu Senhor criou apenas mundos perfeitos, você poderia ter dito que ele não tinha poderes que ele poderia ter criado algo diferente?

Chegando ao meu ponto, embora seu Senhor tenha feito deste mundo uma provação e este universo não seja um lugar perfeito, mesmo que qualquer problema, aflição, doença, você também está servindo a algum outro propósito e não apenas por causa e efeitos, mas também na justiça. cumprindo um comando paralelo de seu Senhor para avisá-lo, para julgá-lo ou para puni-lo.

Assim, além das doenças, os acidentes físicos causam e afetam algo diferente do que também acontece simultaneamente. Seu Senhor é tão justo que embora neste universo todo o sistema esteja funcionando por leis naturais, físicas e causa e efeito, mesmo que com tanta justiça esses problemas, acidentes, doenças não ocorram sem qualquer razão. Para aqueles que são justos, é uma maneira de limpá-los de pequenos pecados, ou aumentar seus bens e virtudes, por meio de provações e firmeza, e para colocar mais paciência neles. Para outros, eles são sinais e advertências para abster-se do pecado que eles vão fazer ou para fazê-los se arrependerem pelos pecados que já cometeram. Mas algumas pessoas estão isentas dessas regras e a melhor maneira de verificar quem são essas pessoas é ver aqueles que cometem erros e são os principais criminosos nas cidades que fazem todo o mal neste mundo, mas não recebem nada em troca, qualquer infortúnio, doença ou aflição. e problemas e estão florescendo dia a dia. Eu me sinto triste por aqueles que não estão recebendo nada neste mundo, então devem estar entre aqueles que o seu Senhor criou para o inferno.

Acredite, não há um único incidente menor acontecendo com você, mas tem suas razões além da causa física e dos efeitos. Verifique a sua memória, pode ter acontecido com você e sua consciência profundamente pode ter guardado esse sentimento, sobre por que aquele incidente recente ou passado alguma lesão, obstáculo em sua tarefa ou um pequeno acidente de carro aconteceu com você. Investigar em detalhes e você vai descobrir que, além da causa e efeito deste mundo, como negligência na condução ou excesso de tráfego na estrada, havia algo mais que teria ocorrido naquele dia ou antes. Como se você estivesse indo para algum propósito errado, saiu de sua casa depois de insultar seus pais ou depois de ter quebrado o coração do seu cônjuge ou estava indo para algum relacionamento ilícito ou extra-conjugal. Verifique seu eu interior e você encontrará a resposta.

As pessoas perguntam porque é que aqueles que são justos têm mais aflições na vida, suportam problemas, dificuldades e calamidades de todo tipo. Eu lhe digo por que, o primeiro alvo do Diabo é te atacar e te afastar do caminho, para te transformar em coisas erradas, em direção ao pecado. Para a maioria, este é o caminho que ele toma para causar-lhes angústia na vida aqui e no além. Mas para os justos e para os escravos escolhidos de Deus, ele muitas vezes falhava e atacava para causar perturbação através do mundo exterior através de confusão, medo, noites mal dormidas espalhando sugestões e conspirações malignas através de outros seres humanos ao seu redor. Toda a história é a mesma. Esta é a liberdade que ele tem de Deus de que ele iria enganar os seus escravos através de qualquer meio. Toda a história é evidente que os justos sofreram mais com aflições de todos os tipos. Os profetas, os amigos de Deus. Mas qual é o benefício nisso não é conhecido pelo diabo. No primeiro caso, se ele os atacar para desviá-los do caminho, eles terão algum prazer em algum momento de miséria neste mundo e, a partir de então, confirmarão o pecado em seus relatos. No segundo cenário, se eles recebem uma doença ou outra recompensa de aflição é escrita para eles por cada segundo que eles permanecem nisso. E acima de tudo a vida deste mundo é como um piscar de olhos. Portanto, esse pequeno tempo de aflição não é nada comparado à vida que está esperando por eles à frente.

Recitation of the Holy Scripture.

Não há necessidade de lamentar com Deus ao seu lado. O Senhor é minha luz e minha salvação. A quem devo temer? O Senhor é a fortaleza da minha vida – de quem devo ter medo?

Não se preocupe com a sua vida, com o que você vai comer ou beber, ou com o seu corpo, o que você vai usar. Não é a vida mais do que comida e o corpo mais do que roupas? Olhe para as aves do ar; eles não semeiam ou colhem ou armazenam em celeiros e ainda assim seu Senhor os alimenta. Você não é muito mais valioso que eles? Algum de vocês pode se preocupar em adicionar uma única hora à sua vida? ”E por que você se preocupa com roupas? Veja como as flores do campo crescem. Eles não trabalham nem giram. No entanto, eu lhes digo que nem mesmo Salomão em todo o seu esplendor estava vestido como um deles. Se é assim que Deus veste a erva do campo, que está aqui hoje e amanhã é jogado no fogo, ele não muito mais te vestirá, ó tu de pouca fé? Portanto, não se preocupem, dizendo: “O que devemos comer?” Ou “O que devemos beber?” Ou “O que devemos vestir?” Para os não crentes correrem atrás de todas essas coisas, e seu Senhor sabe que você precisa deles. Mas busque primeiro Seu reino e Sua justiça, e todas estas coisas serão dadas a você também. Portanto, não se preocupe com o amanhã, pois o amanhã cuidará de si mesmo. Todo dia tem problemas suficientes.

Recitation of the Holy Scripture.

Glorifica a Dios lo que hay en los cielos y la Tierra y Él es el Todopoderoso, el Sabio.

A Él pertenece el reino de los cielos y la Tierra.

Da la vida y da la muerte y Él tiene poder sobre toda cosa. Él es el Primero y el Último y el Manifiesto y el Oculto y Él conoce toda cosa.

Él es Quien creó los cielos y la Tierra en siete días. Luego, se estableció sobre el Trono. Él conoce lo que se introduce en la tierra y lo que sale de ella y lo que desciende del cielo y lo que asciende a él y Él está con vosotros donde quiera que estéis y ve lo que hacéis.

A Él pertenece el reino de los cielos y de la Tierra y a Dios regresan todos los asuntos.

Hace que la noche entre en el día y que el día entre en la noche y Él conoce muy bien lo que hay en el fondo de los pechos.

El conocimiento de la Hora Le pertenece y no sale ningún fruto de su envoltura, ni concibe o da a luz mujer alguna, sin Su conocimiento. El día en que Él les pregunte: «¿Dónde están Mis socios?» dirán: «Te anunciamos que no hay entre nosotros ninguno que lo atestigüe.»

Y se apartarán de ellos aquellos a los que antes invocaban y sabrán que no hay escape para ellos.

El ser humano no se cansa de buscar el bien, pero cuando le alcanza un mal se desanima y desespera.

Y cuando, después de haber sufrido una contrariedad, le hacemos probar una misericordia proveniente de Nosotros, dice: «Esto es mío y no creo que llegue la Hora. Y en caso de que se me hiciese regresar a mi Señor sólo bien obtendría de Él.» En verdad, informaremos a los que no creían de lo que hacían y les haremos probar un castigo contundente.

Cuando favorecemos al ser humano, éste es desagradecido y se aleja de la Verdad con arrogancia, pero cuando sufre un perjuicio no deja de suplicar.

Di: «Decidme. Si viniese de Dios y vosotros no creyeseis en ella ¿Quién estará más extraviado que quien disiente de manera tan evidente?»

Pronto les mostraremos Nuestras señales en el horizonte y en ellos mismos, hasta que sea evidente para ellos que Él es la Verdad. ¿No es suficiente que tu Señor sea testificable en todas las cosas?

Ved cómo dudan del encuentro con su Señor. ¿Acaso no abarca Él todas las cosas?

El día en que veas la luz de los creyentes y las creyentes manifestándose delante de ellos y a su derecha: «Vuestra buena noticia hoy son Jardines de cuyas profundidades brotan los ríos.» En ellos estarán eternamente. ¡Ese es el triunfo inmenso!

El día en el que los hipócritas y las hipócritas digan a quienes son creyentes: «¡Esperad para que podamos obtener algo de vuestra luz!» Se les dirá: «Retroceded y buscad una luz.» Y se pondrá entre ellos una muralla en la que habrá una puerta. En el interior de ella estará la misericordia y frente a ella, en el exterior, el castigo.

Sabed que la vida de este mundo no es más que juego y distracción sin sentido y apariencia y orgullo entre vosotros por el mayor número de bienes e hijos. Es como la lluvia. El agricultor se impresiona de la vegetación que hace surgir, luego, continúa su proceso y ves como amarillea y luego se torna pasto seco. Y en la otra vida hay castigo severo y también perdón y satisfacción de Dios. Y la vida de este mundo no es más que el disfrute temporal de la vanidad.

Competid para ser los primeros en obtener el perdón de vuestro Señor y un Jardín tan vasto como los cielos y la Tierra, preparado para quienes crean en Dios y en Sus Mensajeros. Ese es el favor de Dios, que Él otorga a quien quiere. Y Dios es el Dueño del favor inmenso.

No hay desgracia en la Tierra ni en vosotros mismos que no esté en una escritura desde antes de que la ocasionemos. Esto es algo fácil para Dios.

Para que no os entristezcáis por lo que perdáis y no os alegréis con arrogancia por lo que Él os dé. Dios no ama a quien es presumido, jactancioso.

End of Recitation of the Holy Scripture.

Oh, humanidad, ningún desastre, enfermedad, aflicción y calamidad golpea sobre la tierra o dentro de ustedes mismos, sino que está en un libro antes de que su Señor lo traiga a la existencia. Y cualquiera que sea la desgracia que te aflige, es por lo que tus manos se han ganado. Y no puedes escapar en la tierra y no tienes, además de Dios, ningún protector o ayudante.

Oh humanidad, aunque tu Señor ha hecho de este mundo una prueba y este universo no es un lugar perfecto incluso si no solo es el mundo material y su causa y efectos los responsables de todos los eventos, también hay algo más. Permítanme aquí también responder a la pregunta de los escépticos cuando dicen que si hay un creador inteligente, debe mostrarse a través de su creación. Dicen que el universo que vemos a nuestro alrededor no es perfecto. Como nos llevó casi 15 mil millones de años llegar a este universo, vemos a nuestro alrededor. Que en la mayoría de los lugares del universo, más del 99% matarían la vida al instante. Dicen que la formación estelar es completamente ineficiente, ya que solo el 3% del gas se utiliza para esto. La mayoría de las órbitas de los planetas son inestables. Dicen además que el universo que vemos a nuestro alrededor no es perfecto, ya que en la Tierra el 99% de toda la vida que alguna vez haya existido, ahora se ha extinguido. De lo que se necesitaron casi 3,5 mil millones de años para obtener una vida inteligente en la tierra a través de varios ensayos, errores y accidentes, que hay terremotos que inundan enfermedades y defectos de nacimiento.

Entonces, desde su punto de vista, este no es un plan o diseño eficiente. La respuesta es que este universo es uno entre otros que tu Señor ha creado. Otros no son así. Y por su perfección, su Señor ya le dijo en Sus revelaciones y escrituras que lo hizo una prueba y este universo particular Él creó junto con el Diablo el mal la fuerza negativa. El demonio es como un desperdicio producto secundario de la creación, tal como se obtiene de sus fábricas durante la fabricación de algo bueno. Pero hay otros mundos, universos que no son así. Que son perfectos donde no hay enfermedad, no hay problema, no hay calor extremo, ni frío extremo, ni sed de hambre, ni causa y efecto como los que conocemos aquí. Ahora, en el mismo tono en que los escépticos discuten, les hago una pregunta: Dios es grande en su punto de vista, un Dios que puede crear un Universo perfecto o un Dios que puede crear todo tipo de universos imperfectamente perfectos de cualquier tipo. Si tu Señor solo ha creado mundos perfectos, podrías haber dicho que si no tuviera poderes, ¿podría haber creado algo diferente?

Llegando a mi punto, aunque su Señor ha hecho de este mundo una prueba y este universo no es un lugar perfecto, incluso cualquier problema, aflicción, enfermedad que reciba también está sirviendo para otro propósito y no solo por causa y efectos, sino también en justicia. cumpliendo un mandato paralelo de Tu Señor para advertirte, para probarte o para castigarte.

Entonces, aparte de las enfermedades, los accidentes físicos causan y afectan a los materiales, algo que no sea eso que también sucede simultáneamente. Su Señor es tan justo que, aunque en este universo todo el sistema funciona según las leyes naturales, la física y la causa y el efecto, incluso con tanta justicia que estos problemas, accidentes y enfermedades no ocurren sin ningún motivo. Para aquellos que son justos, es una manera de limpiarlos de pequeños pecados, o para aumentar sus bienes y virtudes, mediante prueba y firmeza, y para ponerles más paciencia. Para otros, son señales y advertencias para abstenerse del pecado que van a hacer o para hacer que se arrepientan por los pecados que ya cometieron. Pero algunas personas están exentas de estas reglas y la mejor manera de comprobar quiénes son esas es ver a esos hacedores incorrectos que son los principales delincuentes en las ciudades haciendo todo mal en este mundo pero sin obtener nada a cambio, cualquier contratiempo, enfermedad o aflicción. y problemas y están floreciendo día a día. Me siento triste por aquellos que no están recibiendo nada en este mundo, así que debe estar entre las creaciones que su Señor ha creado para el Infierno.

Créanme que no hay un incidente más pequeño que le suceda, pero tiene sus razones además de la causa y los efectos físicos. Comprueba tu memoria, podría haberte sucedido a ti y tu conciencia en lo más profundo podría haber almacenado esa sensación, con respecto a por qué ese incidente reciente o pasado le causó alguna lesión, obstáculo en tu tarea o un pequeño accidente automovilístico. Investigue en detalle y encontrará que, aparte de la causa y el efecto de este mundo, como la negligencia en la conducción o el exceso de tráfico en la carretera, había algo más que habría ocurrido ese día o antes. Como si fuera por un propósito equivocado, salió de su casa después de insultar a sus padres o después de romperle el corazón a su cónyuge o de tener una relación matrimonial ilícita o extra. Verifica tu ser interior y encontrarás la respuesta.

La gente pregunta por qué es así para que aquellos que son justos obtengan más aflicciones en la vida, soporten problemas, dificultades y calamidades de todo tipo. Te digo por qué, el primer objetivo del Diablo es atacarte y alejarte del camino, para volverte hacia cosas equivocadas, hacia el pecado. Para la mayoría, esta es la ruta que él toma para causarles angustia en la vida aquí y en el más allá. Pero para los justos y para los elegidos esclavos de Dios, a menudo fracasaba y no atacaba para perturbar el mundo exterior mediante la confusión, el miedo y las noches sin dormir, dañando malas sugestiones y conspiraciones a través de otros seres humanos a su alrededor. Toda la historia es lo mismo. Esta es la libertad que tiene de Dios para engañar a Sus esclavos por cualquier medio. Toda la historia es evidente que los justos sufrieron más a través de aflicciones de todo tipo. Los profetas, los amigos de Dios Pero cuál es el beneficio en esto no es conocido por el diablo. En el primer caso, si los ataca para alejarlos del camino, en algún momento les dan placer en algún momento miseria en este mundo y en el futuro un pecado confirmado en sus cuentas. En el segundo escenario, si tienen una enfermedad u otra aflicción, se les recompensa por cada segundo que permanecen en eso. Y, sobre todo, la vida de este mundo es como un abrir y cerrar de ojos. Así que este pequeño momento de aflicción no es nada en comparación con la vida que les espera en el futuro.

Recitation of the Holy Scripture.

No hay necesidad de lamentarse con Dios de tu lado. El Señor es mi luz y mi salvación. ¿A quien temeré? El Señor es la fortaleza de mi vida, ¿de quién tendré miedo?

No se preocupe por su vida, o lo que va a comer o beber, o por su cuerpo, lo que va a usar. ¿No es la vida más que la comida, y el cuerpo más que la ropa? Mira las aves del aire; ellos no siembran, ni cosechan ni almacenan en graneros y, sin embargo, tu Señor los alimenta. ¿No eres mucho más valioso que ellos? ¿Puede uno de ustedes, al preocuparse, agregar una hora a su vida? “¿Y por qué te preocupas por la ropa? Mira como crecen las flores del campo. No trabajan ni giran. Sin embargo, te digo que ni siquiera Salomón en todo su esplendor vestía como uno de estos. Si así es como Dios viste la hierba del campo, que está aquí hoy y mañana es arrojada al fuego, ¿no te vestirá mucho más, oh tú de poca fe? Así que no te preocupes, diciendo: “¿Qué vamos a comer?” O “¿Qué vamos a beber?” O “¿Qué nos pondremos?” Porque los no creyentes corren tras todas estas cosas, y tu Señor sabe que los necesitas. Pero busca primero su reino y su justicia, y todas estas cosas te serán dadas también. Por lo tanto, no te preocupes por el mañana, ya que mañana se cuidará solo. Todos los días tiene suficientes problemas propios.

Recitation of the Holy Scripture.

جو مخلوق آسمانوں اور زمین میں ہے خدا کی تسبیح کرتی ہے۔ اور وہ غالب (اور) حکمت والا ہے

آسمانوں اور زمین کی بادشاہی اسی کی ہے۔ (وہی) زندہ کرتا اور مارتا ہے۔ اور وہ ہر چیز پر قادر ہے

وہ (سب سے) پہلا اور (سب سے) پچھلا اور (اپنی قدرتوں سے سب پر) ظاہر اور (اپنی ذات سے) پوشیدہ ہے اور وہ تمام چیزوں کو جانتا ہے

وہی ہے جس نے آسمانوں اور زمین کو چھ دن میں پیدا کیا پھر عرش پر جا ٹھہرا۔ جو چیز زمین میں داخل ہوتی اور جو اس سے نکلتی ہے اور جو آسمان سے اُترتی اور جو اس کی طرف چڑھتی ہے سب اس کو معلوم ہے۔ اور تم جہاں کہیں ہو وہ تمہارے ساتھ ہے۔ اور جو کچھ تم کرتے ہو خدا اس کو دیکھ رہا ہے

آسمانوں اور زمین کی بادشاہی اسی کی ہے۔ اور سب امور اسی کی طرف رجوع ہوتے ہیں

رات کو دن میں داخل کرتا اور دن کو رات میں داخل کرتا ہے۔ اور وہ دلوں کے بھیدوں تک سے واقف ہے

قیامت کا علم اسی کو ہے اور نہ تو پھل گا بھوں سے نکلتے ہیں اور نہ کوئی مادہ حاملہ ہوتی اور نہ جنتی ہے مگر اس کے علم سے۔ اور جس دن وہ ان کو پکارے گا (اور کہے گا) کہ میرے شریک کہاں ہیں تو وہ کہیں گے کہ ہم تجھ سے عرض کرتے ہیں کہ ہم میں سے کسی کو (ان کی) خبر ہی نہیں

اور جن کو پہلے وہ (خدا کے سوا) پکارا کرتے تھے (سب) ان سے غائب ہوجائیں گے اور وہ یقین کرلیں گے کہ ان کے لئے مخلصی نہیں

انسان بھلائی کی دعائیں کرتا کرتا تو تھکتا نہیں اور اگر تکلیف پہنچ جاتی ہے تو ناامید ہوجاتا اور آس توڑ بیٹھتا ہے

اور اگر تکلیف پہنچنے کے بعد ہم اس کو اپنی رحمت کا مزہ چکھاتے ہیں تو کہتا ہے کہ یہ تو میرا حق تھا اور میں نہیں خیال کرتا کہ قیامت برپا ہو۔ اور اگر (قیامت سچ مچ بھی ہو اور) میں اپنے پروردگار کی طرف لوٹایا بھی جاؤں تو میرے لئے اس کے ہاں بھی خوشحالی ہے۔ پس کافر جو عمل کیا کرتے وہ ہم ان کو ضرور جتائیں گے اور ان کو سخت عذاب کا مزہ چکھائیں گے

اور جب ہم انسان پر کرم کرتے ہیں تو منہ موڑ لیتا ہے اور پہلو پھیر کر چل دیتا ہے۔ اور جب اس کو تکلیف پہنچتی ہے تو لمبی لمبی دعائیں کرنے لگتا ہے

کہو کہ بھلا دیکھو اگر یہ خدا کی طرف سے ہو پھر تم اس سے انکار کرو تو اس سے بڑھ کر کون گمراہ ہے جو پرلے درجے کی مخالفت میں ہو

ہم عنقریب ان کو اطراف (عالم) میں بھی اور خود ان کی ذات میں بھی اپنی نشانیاں دکھائیں گے یہاں تک کہ ان پر ظاہر ہوجائے گا کہ () حق ہے۔ کیا تم کو یہ کافی نہیں کہ تمہارا پروردگار ہر چیز سے خبردار ہے

دیکھو یہ اپنے پروردگار کے روبرو حاضر ہونے سے شک میں ہیں۔ سن رکھو کہ وہ ہر چیز پر احاطہ کئے ہوئے ہے

جس دن تم مومن مردوں اور مومن عورتوں کو دیکھو گے کہ ان (کے ایمان) کا نور ان کے آگے آگے اور داہنی طرف چل رہا ہے (تو ان سے کہا جائے گا کہ) تم کو بشارت ہو (کہ آج تمہارے لئے) باغ ہیں جن کے تلے نہریں بہہ رہی ہیں ان میں ہمیشہ رہو گے۔ یہی بڑی کامیابی ہے

اُس دن منافق مرد اور منافق عورتیں مومنوں سے کہیں گے کہ ہماری طرف سے (شفقت) کیجیئے کہ ہم بھی تمہارے نور سے روشنی حاصل کریں۔ تو ان سے کہا جائے گا کہ پیچھے کو لوٹ جاؤ اور (وہاں) نور تلاش کرو۔ پھر ان کے بیچ میں ایک دیوار کھڑی کر دی جائے گی۔ جس میں ایک دروازہ ہوگا جو اس کی جانب اندرونی ہے اس میں تو رحمت ہے اور جو جانب بیرونی ہے اس طرف عذاب (واذیت)

جان رکھو کہ دنیا کی زندگی محض کھیل اور تماشا اور زینت (وآرائش) اور تمہارے آپس میں فخر (وستائش) اور مال واولاد کی ایک دوسرے سے زیادہ طلب (وخواہش) ہے (اس کی مثال ایسی ہے) جیسے بارش کہ (اس سے کھیتی اُگتی اور) کسانوں کو کھیتی بھلی لگتی ہے پھر وہ خوب زور پر آتی ہے پھر (اے دیکھنے والے) تو اس کو دیکھتا ہے کہ (پک کر) زرد پڑ جاتی ہے پھر چورا چورا ہوجاتی ہے اور آخرت میں (کافروں کے لئے) عذاب شدید اور (مومنوں کے لئے) خدا کی طرف سے بخشش اور خوشنودی ہے۔ اور دنیا کی زندگی تو متاع فریب ہے

(بندو)دوڑو اپنے پروردگار کی بخشش کی طرف اور جنت کی (طرف) جس کا عرض آسمان اور زمین کے عرض کا سا ہے۔ اور جو ان لوگوں کے لئے تیار کی گئی ہے جو خدا پر اور اس کے پیغمبروں پر ایمان لائے ہیں لپکو۔ یہ خدا کا فضل ہے جسے چاہے عطا فرمائے۔ اور خدا بڑے فضل کا مالک ہے

کوئی مصیبت ملک پر اور خود تم پر نہیں پڑتی مگر پیشتر اس کے کہ ہم اس کو پیدا کریں ایک کتاب میں (لکھی ہوئی) ہے۔ (اور) یہ (کام) خدا کو آسان ہے

تاکہ جو (مطلب) تم سے فوت ہوگیا ہو اس کا غم نہ کھایا کرو اور جو تم کو اس نے دیا ہو اس پر اترایا نہ کرو۔ اور خدا کسی اترانے اور شیخی بگھارنے والے کو دوست نہیں رکھتا

End of Recitation of the Holy Scripture.

اے بنی نوع انسان ، کوئی آفت، بیماری  یا مصیبت زمین پر یا تم پر نہیں آتی مگر وہ ایک کتاب میں ہے اس سے پہلے کہ تمہارا خداوند اسے وجود میں لائے ۔  اور جو بھی آفت تم پر آتی ہے وہ  تمہارے اپنے ہاتھوں کی کمائی ہے۔  اور تم زمین پر اس سےبچ کر کہیں بھاگ نہیں سکتےاور خدا کے علاوہ تمہارا کوئی تحفظ فراہم کرنے والا یا کوئ مددگار  نہیں ہے ۔ 

اے بنی نوع انسان حالانکہ تمہارے خداوند نے اس دنیا کو ایک آزمائش گاہ بنایا ہےاور یہ کائنات ایک  کامل جگہ نہیں ہے۔ پھر بھی صرف یہی ایک مادی دنیا نہیں ہےاور اس کے اسباب اور اثرات ہی  تمام  واقعات کا سبب  نہیں بنتے ہیں  بلکہ اس کے علاوہ بھی کچھ ہے۔  یہاں مجھے متشکک لوگوں کو جواب دینے دیجئے جو یہ کہتے ہیں کہ اگر کوئی تخلیق نگار ہے تو اسے یہ اپنی تخلیق سے ظاہر کرنا چاہئے۔ وہ کہتے ہیں کہ جو کائنات ہم اپنے گرد دیکھتے ہیں وہ کامل نہیں ہے۔ کیونکہ آج  جو  کائنات ہم دیکھتے ہیں اس  تک پہنچنے کے لئے ہمیں  15 ارب سال انتظار کرنا پڑا ۔ پھر کائنات میں بہت سی جگہیں 99فیصد سے ذیادہ زندگی کو فوراً ختم کر دیتی ہیں ۔ وہ کہتے ہیں کہ ستاروں کا بننا بالکل inefficient ہےکیونکہ اس کے لئے صرف 3فیصد گیس استعمال ہو رہی ہے۔ اکثر سیاروں کے مدار مستحکم نہیں ہیں ۔  اور وہ مزید کہتے ہیں کہ جو کائنات ہم اپنے گرد دیکھتے ہیں وہ کامل نہیں ہیں کیونکہ زمین پر اب تک رہنے والی تمام زندگیوں میں سے  99 فیصد اب موجود نہیں ہے۔ پھر زمین  پر غلطیوں اور اصلاح  اور مختلف حادثات کے ذریعے سے ایک ذہانت بھری زندگی پیدا ہونے کے لئے3.5 ارب سال لگے۔ پھر یہاں زلزے، سیلاب، وبا اور پیدائشی نقائص ہیں۔ 

سو ان کے نظریے کے مطابق یہ ایک موثر منصوبہ یا ڈیزائن نہیں ہے۔ جواب یہ ہے کہ یہ کائنات بہت سی کائنات میں سے ایک ہے جسے تمہارے رب نے تخلیق کیا۔ دوسری اس کی طرح نہیں ہیں ۔  اور اس کی کاملیت کے بارے میں تمہارے خداوند نے تمہیں پہلے ہی اپنے وحی اور صحیفوں میں  بتا دیا ہے کہ  اس نے اسے  ایک آزمائش کے طور پر بنایا اور اس مخصوص کائنات میں اس نے شیطان کی منفی طاقت کو بھی تخلیق کیا۔  شیطان ایک waste کی طرح  تخلیق کی پیدائش کی ضمنی پیداوار ہے جیسا کے تمہاری فیکٹریوں میں کچھ اچھی مصنوعات کی پیداوار کے ساتھ  کچھ waste کچھ فاضل مادہ بھی پیدا ہوتا ہے۔  لیکن اس کے علاوہ اور  دنیائیں اور  کائناتیں بھی ہیں  جو اس کی مانند نہیں ہیں ۔ جو کامل ہیں  ۔ جن میں کوئی بیماری،  مسئلہ ، شدید گرمی، شدید ٹھنڈ، بھوک پیاس اور کوئی اسباب اور اثرات نہیں  ہیں جیسے کہ یہاں ہیں ۔  اب  میں متشکک لوگوں کے ہی انداز میں آپ سے ایک سوال پوچھتا ہوں ۔ آپ کے خیال میں کونسا خدا عظیم ہے۔ وہ خدا جس نے ایک کامل کائنات کی تخلیق کی یا وہ خدا جو کامل اور غیر کامل ہر طرح کی کائنات تخلیق کرسکتا ہے۔  اگر تمہارے خداوند نے صرف کامل دنیائیں ہی تخلیق کیں ھوتیں تو تم کہہ سکتے تھے کہ کیا اس کے پاس کچھ مختلف تخلیق کرنے کی طاقت نہیں تھی ؟

میری بات کی طرف آتے ہیں۔  حالانکہ تمہارے خداوند نے یہ دنیا ایک آزمائش کے طور پر بنائی ہےاور یہ کائنات کامل نہیں ہے۔ پھر بھی جو بھی مسئلہ، مصیبت یا وبا آپ پر آتی ہےاس کا اور مقصد بھی ہوتا ہےاور وہ صرف اسباب اور وجوہات کی بنا پر نہیں آتی بلکہ انصاف میں تمہارے خداوند کے متوازی حکم کے مطابق ہوتی ھےجس کا مقصد تمہیں آگاہ کرنا،  تمہیں آزمانا یا تمہیں سزا دینا ھوتا ھے۔ 

اس لئے مادی اسباب اور وجوہات،  جسمانی حادثات اور بیماریوں کے علاوہ بھی اور کچھ ہے جو اسی وقت میں ہو رہا ہے۔  تمہارا خداوند اتنا انصاف پسند ہےکہ  حالانکہ اس کائنات کے تمام نظام قدرتی قوانین ،  طبعیات،  اور اسباب اور وجوہات کے مطابق چلتے ہیں  تو بھی اتنا انصاف ہے کہ یہ حادثات، مسائل، بیماریاں بغیر کسی وجہ کے نہیں آتیں۔ وہ سب جو صادق ہیں یہ ان کے لئے چھوٹے گناہوں سے پاک ہونے کا ایک ذریعہ ہیں یا ان کی پاکیزگی کو بڑھانے کا ایک ذریعہ ہیں ۔ آزمائش اور ثابت قدمی کے ذریعے تاکہ ان میں اور صبر پیدا کیا جائے۔ دوسروں کے لئے وہ آگاہی اور نشانات ہیں تاکہ انہیں ان گناہوں سے روکا جا سکے جو وہ کرنے جا رہے ہیں  یا انہیں ان گناہوں سے توبہ کی طرف مائل کیا جاسکے جو وہ کر چکے ہیں ۔ لیکن کچھ لوگوں پر یہ اصول لاگو نہیں ہوتے ۔ ان کو پہنچاننے کا بہترین طریقہ ہے کہ ان کو دیکھا جائے جو غلط کام کرتے ہوئے اپنی بستیوں میں بہت بڑے مجرم ہیں اور دنیا میں تمام بُرے کام کر رہے ہیں لیکن بدلے میں انہیں کچھ نہیں مل رہا ۔ نا کوئی بیماری، نا مصیبت بلکہ دِن بدِن وہ پھلتے پھولتے جا رہے ہیں ۔ مجھے ان پر افسوس ہوتا ہے کیونکہ انہیں اس دنیا میں کچھ نہیں مل رہا ہے تو یہ لازمی تمہارے خداوند کی اس تخلیق میں سے ہونگے جو جہنم کے لئے تخلیق کی گئی ہے۔ 

میرا یقین کیجئے کوئی ایسا  واقعہ نہیں ہے جو آپ کے ساتھ صرف ظاھری اسباب اور وجوہات کی بنیاد پر ہو رھا ہو۔ اس کے مزید اور بھی  مقاصد  ہیں ۔ ذہن پر زور ڈالیےاور اندر کہیں آپ کے شعور نے اس بارے میں  ایک  احساس   ذخیرہ کر رکھا ہو گا کہ یہ حالیہ یا ماضی کا حادثہ ، زخم، آپ کے کام میں رکاوٹ یا گاڑی کا چھوٹا سا حادثہ کیوں آ پ کے ساتھ ہوا۔  تفصیل سے تحقیق کیجئے اور آپ کو معلوم ہو گا کہ اس دنیا کے اسباب اور وجوہات مثلاً، گاڑی چلانے میں بے احتیاطی یا سڑک پر ذیادہ ٹریفک کے علاوہ بھی ایسا کچھ تھا جو اس دن یا  اس سے پہلے  ہوا ہو۔ مثلاً آپ کسی غلط مقصد کے لئے کوئی کام کرنے جا رہے تھے ، اپنے والدین کی بےعزتی کرنے بعد گھر چھوڑ کر نکلے تھے، یا اپنے ازدواجی ساتھی کا دل دکھایا ہو یا کسی ناجائز یا غیر شادی شدہ رشتے کی طرف جا رہے ہوں گے۔ اپنے اندر جھانکئے اور آپ ک جواب مل جائے گا۔ 

لوگ پوچھتے ہیں  ایسا کیوں ہے کہ سچے لوگوں کو ہر طرح کی مصیبتوں، آفتوں اور مشکلات کا سامنا کرنا  پڑتا ہے۔ میں آپ کو بتاتا ہوں کیوں۔ شیطان کا پہلا مقصد اپ پر حملہ کرنا اور آپ کو راہ سے گمراہ کرکے آپ کو غلط چیزوں کی جانب راغب کرنا ہے، گناہ کی طرف۔ ذیادہ تر لوگوں کے لئے وہ یہ راستہ اپناتا ہے کہ انہیں گمراہ کرے اور یہاں اور آخرت میں انہیں تکلیف میں مبتلا کرے۔ لیکن صادقوں اور خدا کے چنے ہوئے لوگوں کے لئے اکثر وہ ناکام رہتا ہےاور پھر ایک اور طرح سے حملہ کرتا ہے تاکہ ان کو باہری دنیا کے ذریعے بے چینی پیدا کرے۔ الجھن کے ذریعے، خوف کے ذریعے، بے آرام راتوں کے ذریعے، آپ کے گرد  دوسرے انسانوں کی سازشوں اور برے مشوروں کے  ذریعے وغیرہ۔ تمام تاریخ ایک جیسی ہے۔ اسے یہ آذادی خدا کی طرف سے ملی ہے کہ وہ کوئی بھی طریقہ اختیار کرتے ہوئے اس کے بندوں کو گمراہ کر سکتا ہے۔تمام  تاریخ گواہ ہے کہ صادقوں کو ہر طرح کی مصیبت ذیادہ برداشت کرنی پڑی ہے۔  پیغمبروں کو اور خدا کے دوستوں کو۔ لیکن اس میں جو فائدہ ہے اس کا علم شیطان کو نہیں ہے۔ پہلے case میں اگر وہ انہیں راہ سے گمراہ کرنے کے لئے  ان پر حملہ کرتا ہے تو وہ کبھی دنیا میں مزہ اور کبھی تکلیف پاتے ہیں اور آخرت میں ان کے حساب میں  ایک یقینی گناہ ہوتا ہے۔ دوسرے case میں اگر وہ کوئی مصیبت یا تکلیف برداشت کرتے ہیں تو ان کے لئے اجر لکھا جاتا ہے اس ہر لمحے  کیلئے جس میں وہ اس تکلیف  میں رہتے ہیں ۔ اور سب سے اہم یہ کہ اس دنیا کی زندگی پلک جھپکتے سے بھی کم مدت کی ھے۔ اس لئے مصیبت کا یہ تھوڑا سا دور اس زندگی کے مقابلے میں بہت کم ہے جو آگے آنے والی ہے۔

Recitation of the Holy Scripture.

جب  خدا آپ کی طرف ہے تو ماتم کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ خداوند رب میری روشنی اور میری نجات ہے۔ میں کس سے ڈروں؟ خداوند م